عقيدہ واسطيہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
عقيدہ واسطيہ
(عربی میں: العقيدة الواسطية ویکی ڈیٹا پر (P1476) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مصنف ابن تیمیہ  ویکی ڈیٹا پر (P50) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اصل زبان عربی  ویکی ڈیٹا پر (P407) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ادبی صنف الٰہیات  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ناشر دارالسلام پبلشرز  ویکی ڈیٹا پر (P123) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آئی ایس بی این 603-500-082-7  ویکی ڈیٹا پر (P957) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عقيدة واسطيہ (عربی: العقيدة الواسطية) ابن تیمیہ کی لکھی ہوئی اسلامی عقیدہ کی کتاب ہے۔ عقیدہ پر ابن تیمیہؒ کے دیگر کاموں کے مقابلے میں اسے سمجھنا نسبتاً آسان سمجھا جاتا ہے۔ [1] [2]۔ابن تیمیہؒ نے اسے لکھنے کا مقصد اس طرح بیان کیا ہے:

هَذِهِ كَانَ سَبَبُ كِتَابَتِهَا أَنَّهُ قَدِمَ عَلَيَّ مِنْ أَرْضِ وَاسِطٍ بَعْضُ قُضَاةِ نَوَاحِيهَا شَيْخٌ يُقَالُ لَهُ رَضِيُّ الدِّينِ الواسطي مِنْ أَصْحَابِ الشَّافِعِيِّ قَدِمَ عَلَيْنَا حَاجًّا وَكَانَ مِنْ أَهْلِ الْخَيْرِ وَالدِّينِ وَشَكَا مَا النَّاسُ فِيهِ بِتِلْكَ الْبِلَادِ وَفِي دَوْلَةِ التتر مِنْ غَلَبَةِ الْجَهْلِ وَالظُّلْمِ وَدُرُوسِ الدِّينِ وَالْعِلْمِ وَسَأَلَنِي أَنْ أَكْتُبَ لَهُ عَقِيدَةً تَكُونُ عُمْدَةً لَهُ وَلِأَهْلِ بَيْتِهِ فَاسْتَعْفَيْت مِنْ ذَلِكَ وَقُلْت قَدْ كَتَبَ النَّاسُ عَقَائِدَ مُتَعَدِّدَةً فَخُذْ بَعْضَ عَقَائِدِ أَئِمَّةِ السُّنَّةِ فَأَلَحَّ فِي السُّؤَالِ وَقَالَ مَا أُحِبُّ إلَّا عَقِيدَةً تَكْتُبُهَا أَنْتَ فَكَتَبْت لَهُ هَذِهِ الْعَقِيدَةَ وَأَنَا قَاعِدٌ بَعْدَ الْعَصْرِ وَقَدْ انْتَشَرَتْ بِهَا نُسَخٌ كَثِيرَةٌ؛ فِي مِصْرَ وَالْعِرَاقِ وَغَيْرِهِمَا

تفصیل[ترمیم]

یہی وجہ ہے کہ میں نے اسے لکھا: میرے پاس واسط کی سرزمین سے ایک شخص آیا، اس کے علاقوں کے قاضیوں میں سے ایک شیخ، جن کا نام ردی الدین الواسطی تھا، وہ شافعی مکتب کے عالم تھے۔ انہوں نے حج کے دوران ہم سے رابطہ کیا اور وہ نیک اور دین دار لوگوں میں سے تھے۔ انہوں نے تاتار حکومت کے ماتحت اس سرزمین میں اپنے درمیان کے لوگوں کی، جہالت اور ظلم کے پھیلاؤ، دین اور علم کے ضائع ہونے کی شکایت کی۔ اس نے مجھ سے اس کے لیے ایک عقیدہ لکھنے کو کہا جس پر وہ اور اس کا گھرانہ بھروسہ کر سکیں۔ میں نے اس سے پرہیز کیا اور کہا کہ لوگوں نے بہت سی سندیں لکھی ہیں، لہٰذا ائمہ اہلسنت کے لکھے ہوئے عقیدوں میں سے کوئی ایک عقیدہ لے لو، وہ پوچھنے پر اڑے رہے اور کہنے لگے کہ میں تمہارے علاوہ کوئی اور نہیں چاہتا۔ چنانچہ میں نے یہ عقیدہ ان کے لیے اس وقت لکھا جب میں ظہر کے بعد بیٹھا تھا اور اس کے بہت سے نسخے مصر، عراق اور دیگر جگہوں پر تقسیم کیے گئے ہیں۔

ماخذ: 4 [3]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Tamer، Georges؛ Krawietz، Birgit (1 ستمبر 2012). Islamic Theology, Philosophy and Law: Debating Ibn Taymiyya and Ibn Qayyim Al-Jawziyya. Walter de Gruyter & Co. صفحہ 194. ISBN 978-3110285345. 
  2. Rafiabadi، Hamid Naseem (2005). Saints and Saviours of Islam (بزبان انگریزی). Sarup & Sons. صفحہ 72. ISBN 9788176255554. اخذ شدہ بتاریخ 13 نومبر 2019. 
  3. Taymiyyah، Ahmad (2009). Majmū’ al-Fatāwá 3/16 (PDF). Darussalam. صفحہ [1].