غلام حیدر شاہ جلالپوری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پیر سیّد غلام حیدر علی شاہ جلالپوری، جلالپور شریف ضلع جہلم کے روحانی مرکز کے بانی ہیں۔

ولادت[ترمیم]

پیر سیّد غلام حیدر علی شاہ جلالپوری کی ولادت 3 صفر المظفر 1254ھ مطابق 1838ء کو جلالپور شریف ( تحصیل پنڈ دادنخان ضلع جہلم ) ہوئی۔

نسب[ترمیم]

دسویں پشت میں آپ کا سلسلہ نسب مخدوم جہانیاں جہاں گشت سیّد حسین سہروردی بخاری سے جا ملتا ہے۔ آپ کے والد سید جمعہ شاہ بن سید کاظم شاہ بن سید سخی شاہ نہایت عبادت گزار ،منکسر المزاج اور متوکل بزرگ تھے، والدہ گجرات ضلع (پنجاب ،پاکستان ) کے مشہور بزرگ سیّد غلام شاہ ہ کی صاحبزادی تھیں۔ آپ بھی عبادت گزار اور صالحہ خاتون تھیں۔

سیرت و خصائل[ترمیم]

غلام حیدر شا ہ پانچ،چھ سال کی عمر سے ہی نماز، روزے کی پابندی فرماتے تھے اور اتنی چھوٹی سی عمر میں سخت گرمی کے موسم میں بھی روزے رکھتے تھے۔ جب کچھ ہوش سنبھالا تو سب سے پہلے قرآن پاک کی تعلیم حاصل کی پھر جید علمائے کرام کی بارگاہ میں حاضر ہوئے اورعلمی استفادہ کیا۔ آپ کا اخلاق نہایت اعلیٰ تھا، عاجزی و انکسار آپ میں کوٹ کوٹ کر بھری ہوئی تھی ،غریبوں کی طرف خاص توجہ فرماتے تھے اور کبھی کسی کے لیے بد دعا نہ فرماتے تھے۔

بیعت و خلافت[ترمیم]

17 رجب المرجب 1271ھ کو خواجہ شمس الدین سیالوی کے دست مبارک پر بیعت ہوئے۔ بیعت ہو جانے کے بعد آپ کا یہ دستور تھا کہ ہر دسویں دن پیر و مرشد کی خدمت میں حاضر ہوتے تھے ،چھٹی مرتبہ جب شیخ کی خدمت میں حاضر ہوئے تو انھوں نے آپ کو خرقہ خلافت سے نوازا اور اجازت بیعت سے سرفرازفرمایا۔ آپ خواجہ شمس العارفین کے پہلے خلیفہ ہیں۔ آپ کواپنے پیرو مرشد سے بے پناہ محبت تھی، اتنا ادب کرتے تھے کہ شیخ کے سامنے بولنے کی بھی ہمت نہ ہوتی تھی ،ایک مرتبہ پیر و مرشد کے نام ایک منظوم مکتوب لکھا مگر ادب کی وجہ سے شیخ کی خدمت میں پیش نہ کر سکے ۔

وفات[ترمیم]

آپ کا وصال 6 جمادی الثانی 1326ھ کو ہوا۔ مزار جلالپور شریف (ضلع جہلم ) میں مُرجَعِ خَلائِق ہے ۔[1]

قطعاتِ تاریخ[ترمیم]

علامہ اقبال اور اکبر الہ آبادی نے آپ کے قطعات تاریخ وصال لکھے ہیں

ہر کہ بر خاکِ مزارِ پیر حیدر شاہ رفت

تربت او را امینِ جلوہ ہائے طور گفت

ہاتف از گردوں رسید و خاک او را بوسہ داد

گفتمش سالِ وفات او بگو "مغفور" گفت

(علامہ اقبال)

لفظ "مغفور" سے (1326 ھجری) آپ کا سن وصال نکلتا ہے۔

اکبر الہ آبادی نے قطعہ تاریخ کہا

معرفت کی جس کو ہو دولت نصیب

پھر اسے کیا فکرِ مال و جاہ ہے

حضرتِ مرحوم تھے مرد ِ خدا

ان کا جو پیرو ہے حق آگاہ ہے

ان کی تاریخ ِ وصال از روئے درد

انتقالِ پیر حیدر شاہ ہے

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تاریخ مشائخ چشت ،ص538، خلیق احمد نظامی، : مکتبہ عارفین کراچی،