مائے پیور لینڈ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
My Pure Land
My Pure Land.jpg
Film poster
ہدایت کار سرمد مسود
پروڈیوسر بل کنوریغٹ
تحریر سرمد مسود
ستارے سوھاۓ ابڑو
سلمان احمد خان
رضیا ملک
طیب افضال
عمان فاطمہ
موسیقی ٹریستان کیسل - ڈیلیویس
سنیماگرافی Haider Zafar
ایڈیٹر او للے ستوتھرٹ
تقسیم کار بل کنوریغٹ فلمز
تاریخ اشاعت
  • 24 جون 2017 (2017-06-24) (EIFF)
  • 15 ستمبر 2017 (2017-09-15) (UK)
دورانیہ
92 minutes
ملک United Kingdom
زبان اردو
باکس آفس $17,157[1][2]

میرا پاک لینڈ برطانوی پاکستانی فلم ساز سرمد مسود کی طرف سے ہدایت کی گئی 2017 برطانوی ڈراما کی فلم ہے. [3] یہ 90 ویں اکیڈمی ایوارڈز میں بہترین غیر ملکی زبانی فلم کے لیے برطانوی داخلہ کے طور پر منتخب کی گئی تھی، لیکن یہ نامزد نہیں کی گئی تھی. [4] پہلی بار ہوا تھا کہ برطانیہ نے اردو زبان کی فلم پیش کی تھی. [5]

حوصلہ افزائی[ترمیم]

براڈفورڈ میں تارکین وطن والدین کو پیدا ہونے والے برطانوی پاکستانی فلم ساز سرمد (سم) مسود، نے 2012 کی ایکسپریس ٹریبیون میں نازو دھاریجو کی کہانی  " سندھ میں سب سے سخت عورت" کے عنوان سے پڑھنے کے بعد،  نازو دھاریجو کی زندگی پر فلم کی بنیاد رکھی. [6] [7] [8] مسود نے اس فلم کو "پاکستان میں ایک جدید فیمنسٹ مغربی سیٹ" کے طور پر بیان کیا، جس میں ایک خاتون اور اس کے خاندان، جس نے اپنے گھر کا دفاع کیا اور 200 ڈاکو سے زمین کا دفاع کیا، یہ ان کی غیر معمولی سچی کہانی پر مبنی فلم ہے. [9]

پلاٹ[ترمیم]

نازو دھاریجو سندھ کے ایک دیہاتی گاؤں میں اپنے والدین، دو بہنوں اور ایک بوڑھے بھائی کے ساتھ رہتی ہے۔ فلم کی ابتدائی میں، اس کے والد نے اپنی بیٹیوں اور اپنے بیٹے کو  بھی زمین کی قدر کرنے اور اس کا دفاع کرنے کے لیے حوصلہ افزائی کی ہے : " کچھ بھی ہوجائی کوئی فرق نہیں پڑتا ہے، آپ کو اس زمین کی حفاظت کرنے  کی ضرورت ہے۔ یہ صرف زمین نہیں ہے۔ یہ آپ کا اعزاز ہے." [6] نازو کے والد اور بھائی  کے گرفتار ہونے کے بعد، اس کا ایک سازشی چاچا خاندان کے فارم پر دعوی کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ نازو، اپنی والدہ اور بہنوں کے ساتھ، اپنی زمین کا دفاع کرتے ہیں، یہاں تک کہ جب چاچا کی طرف سے بھاڑے پربلائے گئے 200  ڈاکو حملہ کرتے ہیں. [10]

استقبال[ترمیم]

2017 ایڈنبرگ انٹرنیشنل فلم فیسٹیول میں اپنی پہلی فلم شوکے بعد، میرا پاک لینڈ 90th اکیڈمی ایوارڈز میں بہترین داخلی غیر ملکی زبان کی فلم کے لیے برطانوی داخلہ (انٹری) کے طور پر منتخب کی گئی تھی، پہلی مرتبہ برطانیہ نے اردو زبان کی فلم پیش کی تھی. [5] اگرچہ یہ اکیڈمی کے نامزد ہونے والی فلمز میں سے ایک نہیں بن پائی، "آسکر کنکشن" کی طرف سے فلم کی پروفائل کو فروغ دینے میں مدد ملی. [11]

تجزیہ کاروں نے عام طور پر فلم کی خوبصورتی، اس کے جذباتی اثرات اور پاکستانی نرتکی سوہائے ابڑو کے نوجوان مکھیا خاص کردار نازو دھاریجو کے طور پر اداکاری کی تعریف کی ہے۔ فلیش بیک کا وسیع پیمانے پر استعمال کچھ کے لیے دلچسپی اورکچھ دوسروں کے لیے الجھن رکھتا تھا.. [11] گارڈین نے اس فلم کو  "اچھا خیال تھوڑا سا ترچھا ہو گیا" بلاتے ہوئے پانچ ستاروں میں سے دو ستارے دیے. [12] ٹائمز ، جس نے فلم کو "لیریکل, ہارٹ-پوندنگلے تینسے اینڈ سٹرکنگلے فیمنسٹ" کہتے ہوئے پانچ ستاروں میں سے چار ستارے دئے. [13]

رنی ٹماٹر نے ٹوماٹومیٹر پر اس کو 94 فیصد دیا، جس میں ناظرین کا سکور 75 فیصد تھا. [14]

کاسٹ[ترمیم]

  • نازو کے طور پر سوھائے ابڑو
  • سلمان احمد خان ، عامرکے طور پر
  • تنویر حسین سید، بابا کے طور پر
  • رضیہ ملک ،وڈیری کے طور پر
  • طیب افضال ،ذو الفقار کے طور پر
  • عمان فاطمہ

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "My Pure Land"۔ باکس آفس موجو۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2017۔
  2. "My Pure Land"۔ The Numbers۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 اکتوبر 2017۔
  3. Ashley Carter۔ "Could This Nottingham Filmmaker Win An Oscar?"۔ Left Lion۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 ستمبر 2017۔
  4. Steve Pond۔ "Oscars Foreign Language Shortlist Includes 'The Square,' 'A Fantastic Woman'"۔ The Wrap۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2017۔
  5. ^ ا ب Scott Roxborough۔ "Oscars: U.K. Selects 'My Pure Land' for Foreign-Language Category"۔ The Hollywood Reporter۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 ستمبر 2017۔ The U.K. has picked My Pure Land, an Urdu-language feature from first-time director Sarmad Masud, as its submission for consideration for the 2018 Oscars in the foreign-language film category. This marks the first time Britain has submitted an Urdu-language title to be its Oscar hopeful.
  6. ^ ا ب Anealla Safdar۔ "Sarmad Masud on feminism, My Pure Land, and Pakistan"۔ Al Jazeera۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 دسمبر 2018۔ I came across an article in The Express Tribune - "Meet Nazo Dhajero: The toughest woman in Sindh" - and sent the journalists who wrote it an email. That's how I got to speak to Nazo.
  7. Saba Imtiaz۔ "Meet Nazo Dharejo: The toughest woman in Sindh"۔ دی ایکسپریس ٹریبیون۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 دسمبر 2018۔ xx
  8. Isha Sharma۔ "In A First, An Urdu Film Has Made A Cut As England's Official Submission To The Oscars!"۔ India Times۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 دسمبر 2018۔ The film is based on the real story of Nazo Dharejo, who grew up in a rural pocket of Sindh with her two sisters and elder brother. Nazo's father, Khuda Buksh was a farmer and her mother Waderi Jamzadi had to raise her children.
  9. Ashley Carter۔ "Interview: My Pure Land director Sam Masud"۔ LeftLion۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 دسمبر 2018۔ It’s a modern-day feminist Western set in Pakistan, based on the extraordinary true story of one woman and her family who defended their home and land from 200 bandits. The film was self-funded via friends and family and our last investor was the great supporter of Pakistani cinema - Mr Bill Kenwright.
  10. "British Council Film: My Pure Land"۔ film.britishcouncil.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2019۔
  11. ^ ا ب Stephen Dalton۔ "'My Pure Land': Film Review"۔ Hollywood Reporter۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 دسمبر 2018۔
  12. "My Pure Land review – a good idea gone slightly awry"۔ The Guardian۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 دسمبر 2018۔ It’s a good idea (a female-centric Pakistani western, shot on location!) that doesn’t quite hang together, though there are things to appreciate, such as Haider Zafar’s cinematography, which captures the gorgeous, stoic Nazo in silhouette at sunset and lit by moonlight.
  13. Ed Potton۔ "Film review: My Pure Land"۔ The Times۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 دسمبر 2018۔

بیرونی روابط[ترمیم]