محمد محسن کاکوروی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد محسن کاکوروی
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1827  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
تاریخ وفات 24 اپریل 1905 (77–78 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
وجۂ وفات اسہال  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وجۂ وفات (P509) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ شاعر  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
P literature.svg باب ادب

سید محمد محسن کاکوروی کو ’’حسانِ وقت‘‘ کے لقب سے یاد کیا جاتا تھا۔ محسن کاکوروی نعتیہ ادب کا اوّلین ستون ہیں۔

نام[ترمیم]

محمد محسن نام، مولوی حسن بخش کے بیٹے تھے۔ جن کا سلسلہ نسب علی المرتضیٰ سے ملتا ہے۔

ولادت[ترمیم]

محسن کاکوروی کی پیدائش 1242ھ 1825ء اودھ کے قصبے کاکوری میں ہوئی۔

تعلیم و تربیت[ترمیم]

باپ اور دادا کی آغوش میں تربیت پائی۔ مولوی عبد الرحیم سے تحصیل علم کی۔ بادی علی اشک کے شاگرد تھے۔ امیر مینائی سے بھی مشورہ سخن کیا۔ علوم متداولہ کے حصول کے بعد انگریزی تعلیم حاصل کی اور عدالتی کاموں میں مشغول هوگئے۔ بعد ازاں وکالت کا امتحان پاس کیا اور آگرہ میں پریکٹس کرتے رہے۔

نعت گوئی[ترمیم]

محسن کاکوروی نے ابتدا میں غزلیں قصیدے اور مثنویاں لکھیں۔ اس کے بعد ساری عمر نعت گوئی کی اور نعت کے سوا کچھ نہیں لکھا۔ محسن کاکوروی اُردو کے اوّلین عظیم شاعر ہیں جن کی شاعری کا موضوع نعت ہے آپ نے محض سولہ سال کی عمر میں ایک ایساشان دار نعتیہ قصیدہ لکھا جو خیالات کی پاکیزگی، جذبات کی صداقت، ندرتِ بیان اور تعظیم و محبت کے حدود میں قائم رہنے کی وجہ سے ایک شاہ کار قصیدہ سمجھاجاتا ہے۔ محسنؔ کا قصیدہ سراپائے رسول‘‘بھی کافی مقبولیت رکھتا ہے۔ محسنؔ نے قصائد کے علاوہ کئی مذہبی مثنویاں بھی لکھیں۔ آپ کا کلام مختلف امتحانات کے نصاب میں شامل ہے۔

تصنیفات[ترمیم]

ان کا کلیات نعت شائع ہو گیا ہے۔ مشہور قصیدہ "سمت کاشی سے چلا جانب متھرا بادل" ہے۔

  • گلدستہ ِ کلام رحمت
  • ابیات ِ نعت
  • مدیح خیر المرسلین
  • نظم دل افروز
  • انیس آخرت
  • مثنویات
  • صبح تجلی
  • فغانِ محسن
  • چراغ کعبہ
  • نگارستانِ الفت
  • شفاعت و نجات
  • اسرار معنی در عشق
  • حلیہ مبارک سراپا رسول
  • رباعیاں 1857ءکے دوران میں

نمونہ کلام[ترمیم]

سخن کو رتبہ ملا ہے میری زبان کے لیےزباں ملی ہے مجھے نعت کے بیاں کے لیے
ازل میں جب ہوئیں تقسیم نعمتیں محسنؔکلام ِ نعتیہ رکھا میری زباں کے لیے

وفات[ترمیم]

10؍ صفر 1323ھ مطابق 24 اپریل 1905ء کو مین پوری میں وفات پائی۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. کلیات نعت محسن کاکوروی،:اترپردیش اردو اکادمی، لکهنؤ، 1982