مریم سلطانہ نوحانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Mariyam Sultana Noohani
مريم سلطانا نوحاڻي
پیدائش19 جون 1932(1932-06-19)
حیدرآباد، سندھ، پاکستان
وفات25 نومبر 2014(2014-11-25)
حیدرآباد
پیشہماہر تعلیم، تعلیمی رہنما، معلمہ
شہریتپاکستانی
تعلیمماسٹر آف آرٹس اسلامی ثقافت
دور1953 - 2014
اہم اعزازاتخدیجۃ الکبری ایوارڈ (1962)
شریک حیاتعبدالرحمن نوحانی
رشتہ دارغلام قادر نوحانی(والد)
عبدالستار نوحانی (بھائی)
فرید نواز بلوچ (کزن)
نذیر نواز بلوچ (کزن)

مریم سلطانہ نوحانی ( سندھی : مريم سلطانہ نوحاڻي ) (19 جون 1932 - 25 نومبر 2014) حیدرآباد ، سندھ ، پاکستان کی ایک ماہر تعلیم اور علمی رہنما تھیں۔ انہوں نے آل پاکستان ویمن ایسوسی ایشن اور فیڈریشن آف پاکستان ویمن آرگنائزیشن کی سربراہی کی۔ [1] اس نے خاص طور پر لڑکیوں کو تعلیم اور تربیت پر زور دیا اور انہیں اسکول کی تعلیم کی اہمیت سے آگاہ کیا۔ [2] وہ ایک ماہر مضمون کی حیثیت سے سندھ پبلک سروس کمیشن اور سندھ یونیورسٹی سے بھی وابستہ رہی۔ انہوں نے حیدرآباد ریجن کے ڈائریکٹر کالج ایجوکیشن کی حیثیت سے خدمات سر انجام دیں۔ وہ "آپا مریم نوحانی" کے نام سے مشہور ہیں جہاں آپا کا مطلب "بزرگ بہن" ہے۔

بچپن اور تعلیم[ترمیم]

مریم نوحانی 19 جون 1932 کو پاکستان کے شہر حیدرآباد سندھ میں پیدا ہوئیں۔ اس کے والد کا نام رئیس غلام قادر خان نوحانی تھا جو ایک زمیندار اور صحافی تھا۔ [3] اس کا ایک بھائی اور ایک بہن تھی۔ اس نے اپنی ابتدائی تعلیم نیو ماڈل گرلز اسکول گیری کھٹو حیدرآباد سے حاصل کی اور مدرسۃ البنات گرلز ہائی اسکول حیدرآباد سے میٹرک پاس کیا۔ انہوں نے مسلم تاریخ میں بی اے (آنرز) اور اسلامی ثقافت میں ایم اے بھی کیا۔ 

کیریئر[ترمیم]

انہوں نے 1953 میں گورنمنٹ گرلز کالج حیدرآباد میں اسلامی تاریخ کے لیکچرار کی حیثیت سے اپنے کیریئر کا آغاز کیا۔ 1958 میں اسسٹنٹ پروفیسر کی حیثیت سے ان کی ترقی ہوئی۔ 24 اپریل 1970 سے 21 مئی 1971 تک انہوں نے گورنمنٹ گرلز کالج سکھر کی پرنسپل کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ مئی 1971 سے اکتوبر 1972 تک وہ بیورو آف نصاب جامشورو میں سبجیکٹ اسپیشلسٹ رہی۔ اکتوبر 1972 سے اکتوبر 1973 تک وہ گورنمنٹ گرلز کالج سکھر کی پروفیسر اور پرنسپل کے عہدے پر فائز رہیں۔ 8 مئی 1974 سے 3 مئی 1983 تک انہوں نے حیدرآباد ریجن میں ڈپٹی ڈائریکٹر کالج ایجوکیشن کی حیثیت سے خدمات انجام دیں اور 26 ستمبر 1996 کو وہ حیدرآباد ریجن کے ڈائریکٹر کالج ایجوکیشن کی حیثیت سے شامل ہوگئیں۔ انہوں نے 1983 سے 1990 تک زبیدہ گرلز کالج حیدرآباد کی پرنسپل کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دیں۔[حوالہ درکار]

26 جون 2014 کو ، انہوں نے گورنمنٹ زبیدہ گرلز کالج میں اپنے نام سے منسوب ایک لائبریری کا افتتاح کیا ، جس کی سربراہی انہوں نے پرنسپل کی حیثیت سے کی تھی۔[حوالہ درکار]

وفات[ترمیم]

وہ 25 نومبر 2014 کو دل کا دورہ پڑنے سے انتقال کر گئیں۔ [4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Sindhipeoples (2014-10-06). "سنڌي شخصيتون: آپا مريم نوحاڻي - عطيه علي ٻرڙو". سنڌي شخصيتون. اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020. 
  2. "Rich tribute paid to Professor Mariyam Sultana – Business Recorder" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020. 
  3. "آپا مريم سلطانا نوحاڻي : هڪ شفيق استاد ۽ مثالي عورت". SindhSalamat. اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020. 
  4. Correspondent، The Newspaper's Staff (2014-11-26). "Academic Apa Noohani passes away". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020.