ویبز فرسٹ ڈیپ فیلڈ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
A picture of many galaxies and stars
ویب کا پہلا ماورا رقبہ

ویبز فرسٹ ڈیپ فیلڈ جیمز ویب اسپیس ٹیلی سکوپ کے ذریعے لی گئی پہلی آپریشنل تصویر ہے، جس میں کہکشاں کلسٹر SMACS 0723 کو دکھایا گیا ہے، جو زمین سے 4.6 بلین نوری سال دور ہے۔ 11 جولائی 2022 کو عوام کے سامنے پیش کی گئی جامع تصویر ٹیلی سکوپ کے قریب انفراریڈ کیمرے (NIRCam) کے ذریعے لی گئی تھی اور یہ جنوبی نصف کرہ سے نظر آنے والے آسمان کے ایک چھوٹے سے علاقے کا احاطہ کرتی ہے۔ تصویر میں ہزاروں کہکشائیں نظر آتی ہیں، جو ابتدائی کائنات کی اب تک لی گئی سب سے زیادہ ریزولوشن والی تصویر ہے۔

پس منظر[ترمیم]

جیمز ویب اسپیس ٹیلی سکوپ (JWST) انفراریڈ فلکیات کا انعقاد کرتی ہے۔ ویب کا پہلا گہرا میدان دوربین کے قریب انفراریڈ کیمرا (NIRCam) نے لیا تھا اور یہ مختلف طول موج پر تصاویر سے تیار کردہ ایک مرکب ہے، جس کی کل لمبائی 12.5 گھنٹے ہے۔ [1][2] تصویر نے ہبل اسپیس ٹیلی سکوپ کے سب سے گہرے فیلڈز سے باہر اورکت طول موج پر گہرائیاں حاصل کیں، جس میں ہفتے لگے۔ خلائی جہاز زمین کے دوسرے لگرینج پوائنٹ (L 2 ) کے گرد چکر لگا رہا ہے، تقریباً 1.5 ملین کلومیٹر (900,000 میل) زمین سے، 24 جنوری 2022 سے۔ L2 پر، سورج اور زمین دونوں کی کشش ثقل کی کھینچیں سورج کے گرد دوربین کی حرکت کو زمین کے ساتھ ہم آہنگ رکھتی ہیں۔

SMACS 0723 آسمان کا ایک کہکشاں کا جھرمٹ ہے جو زمین کے جنوبی نصف کرہ سے نظر آتا ہے، [3] اور گہرے ماضی کی تلاش میں اکثر ہبل اور دیگر دوربینوں کے ذریعے اس کی جانچ کی جاتی رہی ہے۔

سائنسی نتائج[ترمیم]

تصویر میں کہکشاں کلسٹر SMACS 0723 کو دکھایا گیا ہے جیسا کہ یہ 4.6 بلین سال پہلے ظاہر ہوا تھا۔ [2] ویب کی تصویر آسمان کے ایک ٹکڑوں پر محیط ہے جس کا زاویہ سائز تقریباً ریت کے ایک دانے کے برابر ہے جو زمین پر کسی کے بازو کی لمبائی پر رکھا ہوا ہے۔ [1] بہت ساری کائناتی ہستیوں کو دکھایا گیا ہے جو ان سے نکلنے والی روشنی کے انتہائی فاصلے کی وجہ سے قابل ذکر سرخ شفٹ سے گزر چکے ہیں۔ [4]

کہکشاں کے جھرمٹ کا مشترکہ ماس ایک کشش ثقل لینس کے طور پر کام کرتا ہے، جو اس کے پیچھے بہت زیادہ دور دراز کہکشاؤں کو بڑھاتا ہے۔ Webb کے NIRCam نے دور دراز کی کہکشاؤں کو تیز توجہ میں لایا، جس سے چھوٹے، دھندلے ڈھانچے کو ظاہر کیا گیا جو پہلے کبھی نہیں دیکھے گئے تھے، بشمول ستارے کے جھرمٹ اور پھیلی ہوئی خصوصیات۔ [1]

اہمیت[ترمیم]

گہری فیلڈ کائنات کی اب تک لی گئی سب سے قدیم اور سب سے زیادہ ریزولیوشن والی تصویر ہے۔ [5]

ویب کا پہلا ڈیپ فیلڈ JWST کی پہلی مکمل جھوٹی رنگین تصویر ہے، اور کائنات کا سب سے زیادہ ریزولوشن والا انفراریڈ منظر ابھی تک پکڑا گیا ہے۔ تصویر وسیع کائنات کے ایک چھوٹے سے ٹکڑے میں ہزاروں کہکشاؤں کو ظاہر کرتی ہے، اور ویب کے تیز قریب اورکت نظارے نے انتہائی دور کی کہکشاؤں میں دھندلے ڈھانچے کو سامنے لایا، جو ابتدائی کائنات کا آج تک کا سب سے مفصل منظر پیش کرتا ہے۔ ہزاروں کہکشائیں، جن میں اب تک اورکت میں دیکھی جانے والی سب سے دھندلی چیزیں شامل ہیں، پہلی بار ویب کے منظر میں نمودار ہوئی ہیں۔ [6][1]

یہ سب سے پہلے امریکی صدر جو بائیڈن کے ذریعہ 11 جولائی 2022 کو وائٹ ہاؤس کے ایک پروگرام کے دوران میں عوام کے سامنے آیا تھا۔

مزید دیکھییے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت Garner، Rob (2022-07-11). "NASA's Webb Delivers Deepest Infrared Image of Universe Yet". NASA. 11 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2022. 
  2. ^ ا ب "Webb's first deep field" (بزبان انگریزی). یورپی خلائی ایجنسی. جولائی 12, 2022. 12 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2022. 
  3. "SRELICS". IRAS. 12 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2022. 
  4. Isabella Isaacs-Thomas (جولائی 11, 2022). "Here's the deepest, clearest infrared image of the universe ever produced". PBS. 
  5. Strickland، Ashley (جولائی 11, 2022). "President Biden reveals the James Webb Space Telescope's stunning first image". CNN. 12 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2022. 
  6. Chow، Denise (جولائی 11, 2022). "The Webb telescope's first full-color photo is here — and it's stunning". NBC News (بزبان انگریزی). 12 جولا‎ئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2022. 

سانچہ:James Webb Space Telescope متناسقات: فلکی نقشہ 07h 23m 19.5s, −73° 27′ 15.6″