پریتی شینائے

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
پریتی شینائے
 

معلومات شخصیت
پیدائش 21 دسمبر 1971ء (53 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ مصنفہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

پریتی شینائے ایک ہندوستانی خاتون مصنفہ، اسپیکر اور مصور ہیں۔ [1] [2]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

اپنے اسکول کے سالوں کے دوران، شینائے نے کیندریہ ودیالیہ میں تعلیم حاصل کی۔ شینائے ایک خود سکھایا ہوا فنکار بھی ہے۔

تحریری کیریئر[ترمیم]

ایک بلاگر کے طور پر لکھنے کے بعد شینائے نے اپنی پہلی کتاب، 34 ببلگمز اینڈ کینڈیز شائع کی جو حقیقی زندگی کے واقعات پر مبنی مختصر کہانیوں کا مجموعہ ہے۔ [3]شینائے کی دوسری کتاب، لائف اِز واٹ یو میک اٹ ، 1 جنوری 2011ء کو شائع ہوئی اور اس کے سیکوئل، ویک اپ، لائف اِز کالنگ کے ساتھ، ایک قومی بیسٹ سیلر بن گئی۔ ٹی فار ٹو اینڈ اے پیس آف کیک آر ایچ آئی نے یکم فروری 2012ء کو شائع کیا تھا۔ [4] [5] اس کی چوتھی کتاب دی سیکرٹ وش لسٹ اکتوبر 2012ء میں ریلیز ہوئی۔ [6] [7] [8] [9] اس کی پانچویں کتاب، وہ جو آپ کے پاس نہیں ہو سکتا، نومبر 2013ء میں ریلیز ہوئی۔ دسمبر 2014 میں، اس نے ایک اور افسانوی ناول، اٹ ہیپنز فار اے ریزن ، ایک اکیلی ماں وپاشا کی کہانی جاری کی۔ اس کی کتاب ہم اپنے طریقے سے کیوں پیار کرتے ہیں۔ تعلقات پر مضامین کا مجموعہ ہے۔ یہ سب سیارے میں ہے۔ ستمبر 2016ء میں شائع ہوا تھا۔ اے ہنڈریڈ لٹل فلیمز نومبر 2017ء میں ریلیز ہوئی۔ تھوڑا مضبوط پیار کریں۔ 27 اپریل 2018ء کو ریلیز ہوئی۔ رول بریکرز 17 ستمبر 2018ء کو جاری کیا گیا تھا۔ پریتی کی تازہ ترین کتاب 'آل دی لو یو ڈیزرو' ہے، جو 17 نومبر 2023ء کو ریلیز ہوگی۔

استقبالیہ[ترمیم]

ٹائمز آف انڈیا سے مشرا اپنی کتاباے ہنڈریڈ لٹل فلیمز کے بارے میں کہتی ہیں، 'شینوئے ان دونوں کرداروں کو خوبصورتی سے تیار کرتی ہیں، جس سے دونوں مردوں کو مکمل طور پر قابل اعتماد بنایا جاتا ہے۔ گوپال شنکر، خاص طور پر، وہ بزرگ رشتہ دار ہیں جو ہم سب کے اپنے خاندانوں میں ہیں - بدمزاج اور رائے رکھنے والے لیکن، اس معاملے میں، ہمارے ساتھ ایک حیرت انگیز پس پردہ کہانی کا برتاؤ کیا جاتا ہے جو بالکل واضح کرتی ہے کہ ایسا کیوں ہے۔' [10] ویک اپ لائف کالنگ کے بارے میں فری پریس جرنل کے ریمارکس 'کہانی آگے بڑھتے ہی آپ مرکزی کردار انکیتا کے درد کو محسوس کر سکتے ہیں۔ ایسی مثالیں تھیں جب قاری کتاب کو بند کرنا چاہتا تھا کیونکہ یہ بہت مشکل تھی - ایک زندگی بہت افسردہ تھی۔ لیکن جیسا کہ میں 'آگے بڑھتا رہا'، میں جانتا تھا کہ کچھ ضرور بدلے گا۔ بائپولر ڈس آرڈر - جتنا خوفناک لگتا ہے - ایک ایسی چیز ہے جسے مصنف نے لوگوں کے سمجھنے کے لیے آسان بٹس میں توڑ دیا ہے۔' [11] کاسموپولیٹن نے انھیں "ہندوستان کی مقبول ترین مصنفین میں سے ایک" کے طور پر بیان کیا ہے۔ [12]

اعزاز[ترمیم]

انھیں برانڈز اکیڈمی [13] کی طرف سے انڈین آف دی ایئر ایوارڈ سے نوازا گیا اور نئی دہلی مینجمنٹ انسٹی ٹیوٹ سے بزنس ایکسیلنس ایوارڈ بھی ملا۔ [14] [15] وہ برمنگھم لٹریچر فیسٹیول میں کلیدی مقرر تھیں۔ [16] [17] [18] وہ اپنی کتاب 'جب محبت کی کال آئی' کے لیے اوتھر پیپل چوائس ایوارڈ بھی جیت چکی ہیں۔ [19]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Nielsen India Consumer Rankings" (PDF)۔ Nielsen.com۔ 11 دسمبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  2. "Forbes India Celebrity 100 Nominees List for 2015; Forbes India Blog"۔ Forbesindia.com۔ 05 نومبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2015  "Forbes Celebrity 100 Nominees List 2014"۔ Forbes India  "Forbes Celebrity 100 Nominees List 2013"۔ Forbes India 
  3. "Life is beautiful"۔ The Hindu۔ 15 October 2008۔ 18 اکتوبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  4. Catherine Rhea Roy (22 February 2012)۔ "Along the way"۔ The Hindu۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  5. "Hindustan Times e-Paper"۔ Hindustan Times۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 [مردہ ربط]
  6. "DNA E-Paper – Daily News & Analysis -Mumbai,India"۔ Daily News and Analysis۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  7. Varsha Bansal (5 January 2013)۔ "Preeti's secret wish list"۔ The New Indian Express۔ 23 فروری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  8. "Of that never-sinking ship..."۔ The Hindu۔ 8 February 2013۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  9. "REVEALED: The books India read in 2012! - Rediff Getahead"۔ Rediff.com۔ 27 December 2012۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 فروری 2015 
  10. "Book Review: A Hundred Little Flames - Times of India"۔ The Times of India (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 مارچ 2021 
  11. "Wake up to good mental health"۔ Free Press Journal (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 مارچ 2021 
  12. "Preeti Shenoy"۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2015 
  13. "DESIblitz presents Asian Literature at Birmingham Literature Festival 2017"۔ Business Standard 
  14. "It is written in the stars"۔ The Hindu 
  15. "A League of Their Own"۔ India Today 
  16. "DESIblitz presents Asian Literature at Birmingham Literature Festival 2017"۔ DESIblitz 
  17. "Author Preeti Shenoy Unveils the Cover of Her New Book A Hundred Little Flames at Birmingham Literary Festival 2017"۔ International News and Views 
  18. "Stories Crossing Borders: An Afternoon with Preeti"۔ The Box 
  19. "AutHer Awards 2021 declares its top winners"