یتیم خانہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
تختی جہاں ایک بار روتا کھڑا تھا (ویل") ، وینس میں ایک یتیم خانے کے چرچ چیسا ڈیلا پیٹی کے پہلو میں بچوں کو چھوڑنے کی جگہ۔
برلن-پانکو میں یہودیوں کا سابق یتیم خانہ
نووسیبیرسک ، روس میں سینٹ نکولس یتیم خانہ

تاریخی طور پر ، یتیم خانہ ایک رہائشی ادارہ یا گھر ہوتا ہے ، جو یتیموں اور دیگر ایسے بچوں کی دیکھ بھال کے لیے وقف ہوتا ہے جو اپنے حیاتیاتی گھرانوں سے الگ ہو گئے تھے۔ بچوں کو یتیم خانے میں رکھنے کا کیا سبب ہو سکتا ہے، اس کی مثال یہ ہے کہ جب والدین کا انتقال ہو گیا ہو تو حیاتیاتی کنبہ بچہ کے ساتھ بدسلوکی کرتا تھا ، حیاتیاتی گھر میں سخت لہجے یا ذہنی بیماری بچہ کے لیے نقصان دہ ہوتی یا والدین کہیں دوسری جگہ پر کام پر جانے کے لیے انہیں چھوڑ دیں یا وہ بچے کو اپنے ساتھ لے جانے سے قاصر ہوں۔ ان بچوں کی حمایت کے لیے قانونی ذمہ داری کا کردار جن کے والدین (والدین) فوت ہو چکے ہیں یا دوسری صورت میں دیکھ بھال فراہم کرنے سے قاصر ہیں وہ بین الاقوامی سطح پر مختلف ہیں۔

بیسوی صدی کے آخر میں ریاستہائے متحدہ ، کینیڈا ، برطانیہ اور یورپی یونین کے ارکان ممالک میں حکومت کے زیر انتظام یتیم خانوں کے استعمالمرحلہ وار بند ہوچکا ہے لیکن وہ ابھی بین الاقوامی سطح پر بہت سے دوسرے خطوں میں اپنا کام جاری رکھے ہوئے ہے۔ اگرچہ اب "یتیم خانے" کی اصطلاح عام طور پر ریاستہائے متحدہ میں استعمال نہیں کی جاتی ہے ، لیکن قریب قریب ہر ریاست میں بچوں کو رہنے کے لیے ایک محفوظ جگہ کی ضرورت کے لیے رہائشی گروپ ہوم چلانے کا کام جاری رکھے ہوئے ہے اور جس میں ان کے تعلیمی اور زندگی کی مہارت کے حصول میں مدد حاصل کی جاسکتی ہے۔ پنسلوانیا میں ملٹن ہرشی سکول [1] ، ایلی میں موز ہارٹ[2] میں اور نارتھ کیرولینا میں کراس نور سکول اور چلڈرنز ہوم [3] جیسے گھروں میں بچوں کی دیکھ بھال اور مدد فراہم کرنے کا سلسلہ جاری رکھا گیا۔ ملٹن ہرشی اسکول جیسی جگہ میں تقریبا 2،000 بچے رہتے ہیں ، ہر بچہ "گھر کے والدین" کے ساتھ گروہ خانہ کے ایک چھوٹے ماحول میں رہتا ہے [4] جو اکثر اس گھر میں کئی سال رہتے ہیں۔ جو بچے ان رہائشی گھروں میں بڑے ہوتے ہیں ان میں ہائی اسکول اور کالج سے گریجویشن کی شرح زیادہ ہوتی ہے جو امریکی فوسٹر کیئر سسٹم میں برابر کے سال گزارتے ہیں ، جس میں صرف 44 سے 66 فیصد بچے ہائی اسکول سے فارغ التحصیل ہوتے ہیں۔ [5] [6]

بخارسٹ ابتدائی مداخلت پروجیکٹ (بی ای ای پی) کی تحقیق میں اکثر یہ بتایا جاتا ہے کہ رہائشی ادارے بچوں کی فلاح و بہبود پر منفی اثر ڈالتے ہیں۔ بی ای ای پی نے بخارسٹ ، رومانیہ میں یتیم خانوں کا انتخاب کیا جس نے بچوں اور بچوں کی نشو و نما میں ہونے والی تبدیلیوں کا مطالعہ کرنے کے لیے معاشرتی اور جذباتی طور پر محروم ماحول کو ترک کیا ، جب انہیں مقامی برادری میں خصوصی تربیت یافتہ رضاعی خاندانوں کے ساتھ رکھا گیا تھا۔ [7] اس طاقتور مطالعہ نے یہ ظاہر کیا کہ عام طور پر ان کے والدین یا دیکھ بھال کرنے والوں کے ذریعہ بچوں کو دی جانے والی محبت کی توجہ کا فقدان خاص طور پر دماغ کی زیادہ سے زیادہ انسانی ترقی کے لیے اہم ہے جبکہ صرف مناسب غذائیت ہی کافی نہیں ہے۔ [8] مشرقی یورپی ممالک کے اداروں سے لے کر امریکا جانے والے بچوں کے بارے میں مزید تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ ہر 3.5 ماہ میں جب ایک نوزائیدہ بچے نے ادارے میں وقت گزارا تو ، وہ 1 ماہ تک بڑھنے میں اپنے دیگر ساتھیوں سے پیچھے رہ گئے۔ [9] مزید یہ کہ یتیم خانے میں بچوں کے آئی کیو پر تحقیق کے ایک میٹا تجزیے میں بہت سارے اداروں میں بچوں میں کم آئی کیو پایا گیا، لیکن یہ نتیجہ کم آمدنی والے ممالک کی ترتیب میں نہیں ملا۔ [10]

آج کے بچوں کے رہائشی اداروں ، جنہیں اجتماعی نگہداشت کے طور پر بھی بیان کیا گیا ہے ، ان میں گروپ ہاؤسز ، رہائشی بچوں کی دیکھ بھال کرنے والی جماعتیں ، بچوں کے گھر ، پناہ گیزن ، بحالی مراکز ، نائٹ شیلٹرز اور نوجوانوں کے علاج معالجے شامل ہیں ۔

دنیا بھر میں[ترمیم]

یورپ[ترمیم]

یورپ میں یتیم خانے اور دیگر ادارے عام طور پر سرکاری رقوم سے چلائے جاتے ہیں۔

البانیہ[ترمیم]

البانیہ میں لگ بھگ 10 چھوٹے یتیم خانے ہیں۔ ہر ایک کے یہاں صرف 12-40 بچے رہتے ہیں۔ [11]

بوسنیا اور ہرزیگوینا[ترمیم]

240 یتیم بچوں کو امداد فراہم کرنے والے ایس او ایس چلڈرن ویلج ۔ [12]

بلغاریہ[ترمیم]

بلغاریہ کی حکومت نے بچوں کے حقوق کو مستحکم کرنے میں دلچسپی ظاہر کی ہے۔

ایسٹونیا[ترمیم]

2009 تک ، یہاں 35 یتیم خانے ہیں ، جن میں تقریبا 1300 یتیم بچے رہتے ہیں۔ [13] [14]

ہنگری[ترمیم]

بچوں کے حقوق کو مستحکم بنانے کے لیے ایک جامع قومی حکمت عملی 2007 میں پارلیمنٹ نے منظور کی تھی اور 2032 تک چلے گی۔

لتھوانیا[ترمیم]

لیتھوانیا میں 105 ادارے ہیں۔ اور 41 فیصد اداروں میں 60 سے زیادہ بچے ہیں۔ شمالی یورپ میں لتھوانیا میں سب سے زیادہ یتیم بچوں کی تعداد ہے۔ [15] [16]

پولینڈ[ترمیم]

بچوں کے حقوق کو پولینڈ میں نسبتا مضبوط تحفظ حاصل ہے ۔ یتیم بچوں کو اب سماجی خدمات کے ذریعہ محفوظ کیا گیا ہے۔

مالڈووا[ترمیم]

ریاستی اداروں میں 8800 سے زیادہ بچوں کی پرورش کی جارہی ہے ، لیکن ان میں سے صرف تین فیصد یتیم ہیں۔ [17]

رومانیہ[ترمیم]

رومانیہ میں بچوں کے بہبود کے نظام پر نظر ثانی کی جارہی ہے اور اس نے یتیم خانے میں بچوں کا بہاؤ کم کر دیا ہے۔

سربیا[ترمیم]

بہت سے ریاستی یتیم خانے ہیں جہاں "ہزاروں بچوں کو رکھا جاتا ہے اور جو اب بھی بچوں کی دیکھ بھال کے فرسودہ نظام کا حصہ ہیں"۔ ان کے لیے حالات خراب ہیں کیونکہ حکومت سربیا کے یتیم خانوں اور طبی اداروں میں معذور بچوں کے معیار زندگی کو بہتر بنانے میں خاطر خواہ توجہ نہیں دے رہی ہے۔

سلوواکیا[ترمیم]

کمیٹی نے سفارشات پیش کیں ، جیسے کم از کم اگلے پانچ سالوں کے لیے بچوں کے لیے ایک نیا "نیشنل 14" ایکشن پلان اپنانے اور بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے ایک آزاد ادارہ بنانے کے لیے تجاویز۔ [18]

سویڈن[ترمیم]

سویڈن میں سب سے پہلے یتیم خانے میں سے ایک اسٹاک ہوم میں اسٹورا برنہوسیٹ (1633-191922) تھا ، [19] جو صدیوں تک سویڈن میں سب سے بڑا یتیم خانہ رہا۔ تاہم ، 1785 میں ، سویڈن کے گوستااو III کی ایک اصلاح میں یہ کہا گیا تھا کہ یتیموں کو سب سے پہلے اور سب سے پہلے رضاعی گھروں میں رکھنا چاہیے جب یہ ممکن تھا۔

مملکت متھدہ[ترمیم]

وکٹورین دور کے دوران ، بچوں کو ترک کرنا ایک بہت بڑا عمل تھا اور بچوں کی اموات کو کم کرنے کے لیے یتیم خانے قائم کیے گئے تھے۔ اس طرح کے مقامات اکثر بچوں سے اتنے بھرا ہوتے تھے کہ نرسوں نے اکثر بچے کی تکلیف کو راحت بخشنے کے لیے ، گڈفری کورڈیئل ، افیون وغیرہ کا بھی استعمال کیا گیا۔ [20]


سب صحارا افریقہ[ترمیم]

ملاوی میں ایڈز سے متاثرہ یتیم بچے

افریقی یتیم خانوں کی اکثریت (خاص طور پر سب صحارا افریقہ میں ) مقامی حکومتوں کی بجائے اکثر مغربی ممالک کے عطیہ دہندگان کے ذریعہ مالی اعانت فراہم کی جاتی ہے۔

ایتھوپیا[ترمیم]

"مثال کے طور پر ، یروشلم ایسوسی ایشن چلڈرن ہوم (جے اےچ) میں ، 785 میں سے صرف 160 بچے باقی ہیں جو جاچ کے تین یتیم خانوں میں تھے۔" / "حالیہ برسوں میں ایتھوپیا میں بچوں کی ادارہ جاتی دیکھ بھال کے حوالے سے رویوں میں ڈرامائی انداز میں تبدیلی آئی ہے۔

گھانا[ترمیم]

اویفریکا (اس سے قبل آرفن ایڈ افریقہ) کے زیر کفالت 2007 کے سروے میں اور محکمہ سوشل ویلفیئر کے ذریعہ کیے گئے 148 یتیم خانوں میں ادارہ نگہداشت کے 4،800 بچوں کی تعداد سامنے آئی ہے۔ [21] حکومت فی الحال رضاعی دیکھ بھال کی جگہوں اور گود لینے کے حق میں یتیم خانے کے استعمال کو آگے بڑھانے کی کوشش کر رہی ہے۔ یتیموں اور کمزور بچوں کے لیے نیشنل پلان آف ایکشن کے گزرنے کے بعد سے کم از کم اٹھاسی[22] یتیم خانے بند ہیں۔ ویب سائٹ www.ovcghana.org میں ان اصلاحات کی تفصیلات موجود ہیں۔

کینیا[ترمیم]

1999 کے 36،000 یتیموں کے سروے میں ادارہ نگہداشت میں درج ذیل تعداد ملی: رجسٹرڈ اداروں میں 64 اور غیر رجسٹرڈ اداروں میں 164۔ [23]

ملاوی[ترمیم]

ملاوی میں 101 کے قریب یتیم خانے ہیں۔ یونیسف / حکومت کے زیر انتظام ایک پروگرام ترتیب دیا گیا ہے جس میں ایسے اداروں کا اخراج عمل پزیر ہے تاہم ابھی کچھ یتیم خانے اس پروگرام میں شامل ہیں۔

روانڈا[ترمیم]

چار لاکھ یتیموں میں سے 5،000 ہزار یتیم خانوں میں رہ رہے ہیں۔ [24] روانڈا کی حکومت بچوں کے لیے امید اور یتیم خانوں کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہے تاکہ پہلا ادارہ بند کیا جاسکے اور کمیونٹی پر مبنی بچوں کی نگہداشت کے لیے ایک نمونہ تیار کیا جاسکے جو پورے ملک اور بالآخر افریقہ میں استعمال ہو سکے [25]

تنزانیہ[ترمیم]

"اس وقت تنزانیہ میں 52 یتیم خانے ہیں جن میں 3،000 یتیم اور کمزور بچوں کی دیکھ بھال کی جا رہی ہے۔" [26] تنزانیہ کے بارے میں عالمی بینک کی ایک دستاویز سے پتہ چلتا ہے کہ وہاں کے بچے کی ادارہ سازی کرنا چھ گنا زیادہ مہنگا ہے اس سے کہ کنبے کو فعال بننے میں مدد ملے اور وہ خود اس بچے کی مدد کریں۔

نائیجیریا[ترمیم]

1960 کی دہائی کے آخر میں نائیجیرین یتیم خانے

نائیجیریا میں ، یونیسف کی مدد سے 2004 میں یتیموں اور کمزور بچوں کے ایک جائزہ نے انکشاف کیا کہ 2003 میں تقریبا سات ملین بچے یتیم تھے اور اسی سال میں 800،000 مزید یتیموں کو شامل کیا گیا تھا۔ اس کل تعداد میں سے ، تقریبا 18لاکھ یتیم  ایچ آئی وی / ایڈز کے سببیتیمہوئے۔ 2010 تک آنے والے سالوں میں یتیموں کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہوکر 8.2 ملین ہونے کا خدشہ ظاہر کیا گیا ہے۔ [27]

جنوبی افریقہ[ترمیم]

2000 کے بعد سے ، جنوبی افریقہ یتیم خانوں کو مزید لائسنس نہیں دیتا ہے لیکن وہ غیر منظم اور ممکنہ طور پر زیادہ مؤثر مقامات پر قائم ہے۔ نظریاتی طور پر یہ پالیسی برادری پر مبنی خاندانی گھروں کی حمایت کرتی ہے لیکن ایسا ہمیشہ نہیں ہوتا ہے۔ اس کی ایک مثال وہ گھر ہیں جو تھوکومالا کے ذریعہ چلائے جاتے ہیں۔ [28]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Milton Hershey School Website"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  2. "Mooseheart"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  3. "Crossnore School & Children's Home - Foster Care - Clinical Services"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  4. "Careers as Houseparents - Milton Hershey School"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  5. Conger, D. Rebeck, A. "How Children's Foster Care Experiences Affect Their Education." Vera Institute of Justice. 2001.
  6. "A Critical Look at The Foster Care System: Foster Care Outcomes." 2015
  7. Cognitive Recovery In Socially Deprived Young Children: The Bucharest Early Intervention Project. 2007. 
  8. Media، American Public۔ "American RadioWorks - Rewiring the Brain"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  9. International Adoptions: Implications for Early Interventions. 1999. https://journals.lww.com/iycjournal/abstract/1999/04000/international_adoptions__implications_for_early.8.aspx. 
  10. van IJzendoorn, MH, Luijk. M, Juffer, F. IQ of Children Growing Up in Children's Homes: A Meta-Analysis on IQ Delays in Orphanages. Merrill-Palmer Quarterly, Volume 54, Number 3, July 2008, pp. 341-366
  11. "Albanian's Children Photo"۔ Adoptionworx.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-04-03۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  12. "Helping Orphans in Bosnia and Herzegovina"۔ Soschildrensvillages.ca۔ اخذ شدہ بتاریخ 2012-04-03۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  13. "Tyvärr hittar vi inte sidan du söker" (PDF)۔ Humanrights.gov.se۔ اخذ شدہ بتاریخ 2013-07-01۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  14. http://www.manskligarattigheter.gov.se/dynamaster/file_archive/080314/74c53f5440e23b5fa2b948c7b40eb5ca/Estland.pdf
  15. "Tyvärr hittar vi inte sidan du söker" (PDF)۔ Humanrights.gov.se۔ اخذ شدہ بتاریخ 2013-07-01۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  16. http://www.manskligarattigheter.gov.se/dynamaster/file_archive/080314/5c08d4415225dfc8695e0f535fbfe168/Litauen.pdf
  17. "Tyvärr hittar vi inte sidan du söker" (PDF)۔ Humanrights.gov.se۔ اخذ شدہ بتاریخ 2013-07-01۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  18. "Microsoft Word - Slovakien.doc" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 2013-07-01۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  19. Allmänna barnhuset 1713-1900 (in Swedish). Stockholm: Storstockholms genealogiska förening. 2008.
  20. Abernethy, Virginia D. Population Politics. New York: Plenum Press, 1993.
  21. "OrphanAid Africa" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 June 2012۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  22. "Gov't closes down 89 orphanages"۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  23. "Social Protection and Risk Management – Social Safety Nets" (PDF)۔ Worldbank.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 October 2011۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  24. "Africa – Africa Region Human Development Working Paper Series" (PDF)۔ Worldbank.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 October 2011۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  25. "Ministry of Gender and Family Promotion – MINISTER'S VISIT TO HOPE AND HOMES FOR CHILDREN (HHC)"۔ Migeprof.gov.rw۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 October 2011۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  26. "Table of Contents" (PDF)۔ Synergyaids.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 October 2011۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  27. "Press centre – Millions of orphans in Nigeria need care and access to basic services"۔ UNICEF۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 October 2011۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  28. "Thokomala"۔ Thokomala۔ مورخہ 12 March 2012 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 April 2012۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)

بیرونی روابط[ترمیم]

ویکیمیڈیا العام پر یتیم خانہ سے متعلقہ وسیط