اکسائی چن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

کشمیر کے دیگر علاقو ں پر مضامین کے لئے کشمیر (ضد ابہام)

پاکستان، بھارت اور چین کی سرحد، اکسائی چن واضح ہے

اکسائی چن سادہ چینی: 阿克赛钦; روایتی چینی: 阿克賽欽; ،) چین، پاکستان اور بھارت کی سرحد پر واقع ایک علاقہ ہے جو چین کے زیر انتظام ہے جبکہ بھارت اس پر اپنا دعوی رکھتا ہے۔ اکسائی چن بھارت اور چین کے درمیان دو سرحدی تنازعات میں سے ایک ہے۔ جغرافیائی طور پر یہ علاقہ سطح مرتفع تبت کا حصہ ہے۔ ہمالیہ اور دیگر پہاڑی سلسلوں کے باعث علاقے میں آبادی بہت کم ہے۔

تاریخی طور پر یہ علاقہ مملکت لداخ کا حصہ تھا جو 19 ویں صدی میں کشمیر میں شامل ہوگئی۔ چین کے علاقوں تبت اور سنکیانگ کے درمیان اہم ترین شاہراہ اسی علاقے سے گذرتی ہے جس کے باعث یہ چین کے لئے انتہائی اہمیت کا حامل علاقہ ہے۔ یہ مسلم اکثریتی سنکیانگ صوبے کا حصہ ہے۔

تاریخ[ترمیم]

اریخی طور پر یہ علاقہ کشمیر کا حصہ تھا اٹھارہویں صدی میں سکھ سلطنت نے کشمیر(بشمول اکسائی چن) سمیت پنجاب خیبر پختونخوا پر قبضہ کر لیا سکھ سلطنت نے 1841ء میں چین کے علاقے تبت پر بھی حملہ کر دیا لیکن چینی فوج نے اسے شکست فاش دی اور اکسائی چن پر بھی قبضہ کر لیا 1846ء میں سکھ سلطنت کا خاتمہ ہوگیا اکسائی چن بدستور چین کے قبضے میں رہا 1947ء میں بھارت کی آزادی کے بعد بھارت نے اس علاقے کا دعوی کرنا شروع کردیا