طفل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ابتدائی مدرسہ میں بچے

طفل جس کی جمع اطفال ہے اور عرف عام میں اردو میں بچہ یا بچے کہا جاتا ہے ان کم سن افراد کو کہتے ہیں جن کی عمریں مختلف ممالک کے قوانین میں مختلف ہوں۔ مثلاً بعض ممالک میں 16 سال تک طفل کہلاتا ہے اور بعض میں 18 سال تک۔ اسلام میں طفل کا تصور بلوغت تک ہے چاہے وہ 13 سال کی عمر تک ہو چاہے 16 تک۔ طفل کسی نہ کسی کی اولاد ہوتے ہیں اور ان کی تعلیم و تربیت کی ذمہ داری ان کے والدین پر ہوتی ہے۔ اگر والدین نہ کر سکیں تو ریاست پر ذمہ دار عائد ہوتی ہے اقوام متحدہ کی تعریف کے مطابق 18 سال کی عمر تک طفل کہلائے گا۔ لیکن اگر کسی اور ملک کے قوانین اس سے پہلے اس کا بڑا ہونا مان لیں تو قانون فوقیت رکھے گا۔[1]

اطفال احادیث میں[ترمیم]

حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم اطفال سے بہت محبت فرماتے تھے۔ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ارشاد فرمایا :

"جنت میں ایک گھر ہے جسے دارالفرح (خوشیوں کا گھر) کہا جاتا ہے اس میں وہ لوگ داخل ہوں گے جو اپنے بچوں کو خوش رکھتے ہیں‘‘۔[2]

ایک اور موقع پر فرمایا

” وہ شخص ہم میں سے نہیں ہے جو چھوٹوں کے ساتھ شفقت اور بڑوں کے ساتھ عزت و اکرام کا معاملہ نہ کرتا ہو“۔ [3]

اطفال کی تربیت[ترمیم]

دنیا کی سبھی قوموں کا قیمتی سرمایہ "بچے‘‘ ہوا کرتے ہیں ۔ اگر اس وقت وہ گود کا کھلونا ہیں تو آگے چل کر وہی مستقبل کے معمار بنیں گے۔ ماں کی گود بچے کی درسگاہ اول ہے۔ اسی عظیم درسگاہ سے وہ اخلاق حسنہ، اطاعت و فرمانبرداری اور دنیا میں زندگی گزارنے کے سلیقے، ڈھنگ اور طور طریقے لے کر معاشرے کا حصہ بنتا ہے۔ اس لئے ماں کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی اولاد کی تربیت اس طرز پر کرے کہ ان کے رگ و ریشہ میں دین کی روح پھونک دے[4]


اطفال شماریات میں[ترمیم]

اطفال کی آبادی دنیا کے مختلف حصوں میں

اطفال یا بچے کسی بھی ملکی آبادی کا اہم حصہ ہوتے ہیں۔ ترقی کے ساتھ ان کی پیدائش کی شرح کم ہو جاتی ہے۔ جاپان مين 15 سال اور اس سے چھوٹے بچوں کی تعداد میں 2009ء میں ریکارڈ کمی واقع ہوئی ہے۔[5] ترقی یافتہ ممالک میں بچے کم اور بوڑھے افراد زیادہ ہوتے ہیں۔ ترقی یافتہ ممالک بچوں کی پیدائش پر مختلف رعایات دیتے ہیں۔ اس کے برخلاف ترقی پذیر ممالک میں بچوں کی پیدائش پر ٹیکس بھی ہے اور اس کی حوصلہ افزائی نہیں کی جاتی۔ ترقی پذیر ممالک میں بچے کسی بھی آبادی کا بہت بڑا حصہ ہوتے ہیں۔ مثلاً صرف بھارت میں 35 کروڑ سے زیادہ بچے ہیں۔ دوسری طرف عالمی یومِ خوراک کے موقع پر ایک بین الاقوامی تنظیم ‘ایکشن ایڈ’ کے ذریعے جاری کی گئی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بھارت میں چھ سال سے کم عمر کے 47فی صد بچے غذائیت کی کمی کا شکار ہیں۔ اِس رپورٹ میں یہ چونکا دینے والی حقیقت بھی سامنے آئی ہے کہ بھارت میں خوراک کی کمی اور بھوک کی صورتِ حال بنگلہ دیش اور نیپال جیسے ممالک سے بھی خراب ہے۔ یونی سیف اور صحت کی عالمی تنظیم کی ایک تازہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسہال کی بیماری میں ہر سال دنیا میں 15 لاکھ بچوں کی موت واقع ہوتی ہے جِن میں تین لاکھ 86ہزار بچوں کا تعلق بھارت سے ہے۔ [6] ازبکستان جیسے ممالک میں بچے آبادی کے ساٹھ فی صد تک پہنچ جاتے ہیں۔[7]

یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ جس ترقی یافتہ ملک میں تارکین وطن زیادہ ہوں وہاں آبادی میں اضافہ کی شرح بڑھ جاتی ہے مثلاً برطانیہ میں شرح پیدائش اور بچوں کی تعداد میں غیرمعمولی اضافہ ہوا ہے۔ آبادی میں اضافے میں سب سے بڑا حصہ تارکین وطن کا ہے جو پچاس فیصد ہے۔ [8]۔ یہ بات بھی قابلِ غور ہے کہ مذہب کا اثر بھی بچوں کی تعداد پر ہوتا ہے مثلاً مسلمانوں میں زیادہ بچے پیدا ہوتے ہیں۔ یوٹیوب کی ایک ویڈیو ”مسلم ڈیموگرافکس “ کے مطابق آئندہ چند عشروں میں اسلام یورپ میں اکثریتی آبادی کا مذہب ہوگا کیونکہ بچوں کی بڑی تعداد جو یورپ میں پیدا ہو رہی ہے مسلمانوں کی ہے۔ اس ویڈیو کے مطابق گزشتہ 20برس میں یورپ میں کی آباد میں نوے فیصد اضافہ مسلمان تارکین وطن کے یہاں سکونت اختیار کرنے کی وجہ سے ہوا جن کے ہاں شرح پیدائش اور بچوں کی فی خاندان تعداد بہت زیادہ ہے۔ ویڈیو کے مطابق فرانس کی 20سال یا اس سے کم عمرکی 30فیصدآبادی مسلمانوں پر مشتمل ہے۔ہالینڈ کے بارے اسی ویڈیو میں کہا گیا کہ وہاں پیداہونے والے بچوں میں سے نصف مسلمان ہیں۔[9]۔ اگرچہ ہو سکتا ہے کہ اس ویڈیو میں یہ شرحیں مبالغہ آمیز ہوں مگر بچوں کے بارے میں ان شماریاتی اشاریوں کی سمت کے بارے میں کوئی شبہ نہیں۔


اطفال اور تعلیم[ترمیم]

دنیا کے آدھے ممالک میں3 سال سے کم عمر بچوں کی تعلیم کا کوئی پروگرام نہیں۔ جنوبی و مغربی ایشیا میں کم از کم تعلیمی قابلیت سے محروم بالغ افراد کی شرح 59 فیصد، سب صحارا افریقہ 61، عرب ممالک 66 اور کربین میں70 فیصد ہے۔ دنیا میں203 میں سے 192 ممالک میں لازمی تعلیم کے قوانین موجود ہیں اس کے باوجود10 ممالک ایسے ہیں جن میں (ہر ایک میں الگ الگ) 10 ملین سے زیادہ بالغ ان پڑھ ہیں جس میں سے صرف آدھے ممالک1990ء سے ان پڑھ افراد کی تعداد میں خاطرخواہ کمی لا سکے ہیں۔[10]۔ ایک اندازے کے مطابق بھارت میں سات کروڑ بچوں کو سکول جانا نصیب نہیں ہوتا۔[11]

پاکستان کے 30فیصد بچوں کو تعلیم تک رسائی کی سہولت حاصل نہیں ہے۔ 70 فیصد طالبات پرائمری کی تعلیم ہی مکمل کرسکتی ہیں۔ دو کروڑ سات لاکھ بچے تعلیم حاصل کرنے کے بنیادی حق سے محروم ہیں۔ ایک کروڑ 30لاکھ بچے غربت کے اندھیروں میں ڈوب جانے کی وجہ سے تعلیم حاصل کرنے کاسوچ بھی نہیں سکتے۔[12]

اطفال ادب میں[ترمیم]

اطفال ادب کا ایک خاص موضوع رہے ہیں۔ خصوصاً مختلف کہانیوں، افسانوں اور شاعری میں۔ اردو کے مشہور شاعر ابن انشاء نے بچوں کے بارے میں ایک مشہور نظم لکھی[13] (مکمل نظم کا ربط مآخذ میں ہے) جس سے ترقی یافتہ اور ترقی پذیر دنیا کے بچوں میں فرق بھی پتہ لگتا ہے۔ اس کے کچھ اشعار یہ ہیں:

یہ بچہ کس کا بچہ ہے

یہ بچہ کالا کالا سا

یہ کالا سا مٹیالا سا

یہ بچہ بھوکا بھوکا سا

یہ بچہ سوکھا سوکھا سا

یہ بچہ کس کا بچہ ہے


مآخذ[ترمیم]

‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=طفل&oldid=726757’’ مستعادہ منجانب