غزل (طبیعیات)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
  • غزل کے لفظ کے دیگر استعمالات کے لیۓ دیکھیۓ۔ غزل

ذراتی طبیعیات میں غــزل کا لفظ ، زیرجوہری ذرات کی گردش یا چکروں کے لیۓ استعمال ہوتا ہے اور اسکو انگریزی میں Spin کہا جاتا ہے۔ غــزل سے مـراد کسی بھی جسم کے اندرونی یا داخلی زاویائی معیارحرکت (angular momentum) کی ہوتی ہے، جو کہ مداری زاویائی معیارحرکت (orbital angular momentum) سے ایک الگ خیال ہے۔ دونوں کی مزید تفصیل انکے مخصوص صفحات پر موجود ہے جبکہ ان میں فرق کو مختصرا نیچیے درج کیا گیا ہے۔

  • زاویائی معیارحرکت : اس میں چکر کھانے والے جسم کا کمیئتی مرکز ایک ہی مقام پر رہتے ہوۓ گردش کرتا ہے۔
    • مثلا یوں سجھا جا سکتا ہے کہ جیسے کوئی گیند اپنی ہی جگہ لٹو کی طرح گھمتی رہے ، اس طرح اسکا مرکز ایک ہی مقام پر ہوگا
  • مداری زاویائی معیارحرکت : اس میں چکر کھانے والے جسم کا کمیئتی مرکز کسی بیرونی نکتہ کے گرد گردش کرتا ہے۔
    • مثلا یوں کہ جیسے کسی گیند کو رسی میں باندھ کر (مداری شکل میں) گھمایا جاۓ ، اس طرح اسکا مرکز بھی زاویائی حرکت میں ہوگا

روائتی آلاتیات (classical mechanics) میں ، غزلی زاویائی معیارحرکت (اسپن اینگولر مومینٹم) سے مراد کسی بھی جسم کی خود اسکے اپنے ہی کمیئتی مرکز کے گرد گردش کی ہوتی ہے۔ اسکی مثال یوں ہے کہ جیسے زمین کی اپنے قطبی محور پر محوری گردش ہوتی ہے، جبکہ مداری حرکت کی مثال زمین کی سورج کے گرد اپنے مدار میں گردش کی ہے۔

مقداریہ طبیعیات یعنی کوانٹم میکینکس میں غزل یا اسپن ، جوہر اور زیرجوہری ذرات (مثلا ، الیکٹران ، پروٹان) کی خصوصیات کی وضاحت کے لیۓ بہت اہم ثابت ہوتی ہے۔ یہ زیرجوہری اور بنیادی ذرات اور انکی غزل (جو کہ ایک مقداریہ آلاتی نظام یا quantum mechanical system کی حیثیت رکھتی ہے) سے بہت سی ایسی خصوصیات کا اظہار ہوتا ہے کہ جن کی وضاحت روائتی طبیعیات کی رو سے نہیں کی جاسکتی ، اور اس طرح کے نظاموں کے لیۓ غزلی زاویائی معیارحرکت کو گردش (rotation) سے منسلک نہیں کیا جاسکتا بلکہ یہ اسکو ایک علیحدہ ، مقداریہ آلاتی نظام کہا جاتا ہے۔