الدوایمہ قتل عام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

الدویمہ قتل عام (انگریزی: Al-Dawayima massacre)، یہ واقعی 29 اکتوبر 1948 کو عرب اسرائیلی جنگ کے دوران رونما ہوا تھا۔ جب اسرائیلی فوج نے فلسطینی عرب قصبے الدویمہ پر حملہ کر دیا اور عام شہریوں کے قتل کر دیا۔ یہ واقعہ اس موقع پر پیش آیا جب اس آپریشن پر یوآیو کے دوران آئی ڈی ایف کی 89 ویں کمانڈو بٹالین نے قبضہ کر لیا تھا۔فوج جس کا پہلا کمانڈر موشے دایان (Moshe Dayan) تھا، یہ فوجیں سابق ارگن اور لیہی مشتمل تھیں۔

بینی مورس (Benny Morris) نے اندازہ لگایا ہے کہ سیکڑوں افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اردن کے عرب لشکر کے برطانوی کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل جان باگوٹ گلب (John Bagot Glubb) نے بتایا کہ تعداد بہت کم ہے، اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ہلاک ہونے والوں تعداد 30 خواتین اور بچوں تھی۔[1] عرب ریفیوجی کانگریس کے ایک وفد کے ذریعہ اقوام متحدہ کو دی جانے والی رپورٹ میں بتایا گیا کہ اردن کی عرب لشکر قتل عام کی حد کو نچھاور کرنے میں دلچسپی رکھتا ہے، جو دعویٰ کرتا ہے کہ دیر یسین قتل عام سے بھی بدتر تھی۔[2] گاؤں کے مختار حسن محمود احدیب نے ایک حلف برداری میں، متاثرین کی تعداد کا تخمینہ 145 بتایا۔[3][2]

پس منظر[ترمیم]

الدویمہ کا بنیادی قبیلہ، احدبس نے 7 ویں صدی میں عمر بن خطاب کے ذریعہ فلسطین کی فتح تک اپنے آبا و اجداد کا سراغ لگایا۔[4] قتل عام وقت، قصبے کی آبادی 6،000 تھی چونکہ اس قتل عام سے قبل قریب 4،000 فلسطینی عرب مہاجرین گاؤں میں پناہ لے چکے تھے۔[5] ہگاناہ انٹیلیجنس سروس اس گاؤں کو 'بہت ہی دوستانہ' سمجھتی تھی۔[4] الدویمہ، الخلیل سے چند کلومیٹر مغرب میں واقع تھا۔

گواہی[ترمیم]

گاؤں کے مختار[ترمیم]

گاؤں کے مختار، حسن محمود احدیب کے مطابق، دوپہر کی نماز کے بعد آدھے گھنٹے کے بعد، اس گاؤں سے فوجیوں کے تین گروہوں، مغرب، شمال اور جنوب سے رابطہ کیا گیا: قبیبہ - الدویمہ روڈ پر 20 بکتر بند کاریں، دوسرا گروپ جو تھا وو بیت جبرن-الدویمہ روڈ اور بکتر بند کاروں کا آخری گروپ مفخر - الدویمہ روڈ سے آئے تھے۔ گاؤں کے مختار نے کہا کہ ہتھیار ڈالنے کی کال کا اعلان نہیں کیا گیا اور یہ کہ کوئی مزاحمت نہیں ہوئی۔ فائرنگ کا آغاز 1/2 کلومیٹر کے فاصلے پر ہوا جب فورسز کا نیم سرکلر آرک اندر بند ہوا۔ اسرائیلی فوج نے ایک گھنٹہ سے زائد وقت کے لیے اندھا دھند فائرنگ کی، اس دوران بہت سے لوگ فرار ہو گئے اور دو فلسطینی گروپ بالترتیب قریب مسجدمیں اور عراق الجاغ نامی قریبی غار میں پناہ لی۔ دوسرے دیہاتیوں کے ساتھ واپسی کے دن آنے پر، 60 افراد کی لاشیں مسجد میں پائی گئیں، جن میں زیادہ تر بوڑھے تھے۔ مردوں، خواتین اور بچوں کی بے شمار لاشیں سڑکوں پر پڑی تھیں۔ اس کے بعد مردوں، عورتوں اور بچوں کی 80 لاشیں عراق الجاغ غار کے داخلہ سے ملی تھیں۔ مردم شماری کرنے پر، یہ بات سامنے آئی کہ 455 افراد لاپتا ہیں، 280 مرد اور بقیہ خواتین اور بچے۔[2]

اقوام متحدہ کا معائنہ کرنے والا گروه[ترمیم]

یگل ایلون (Yigal Allon) نے 'ان افواہوں' کی جانچ پڑتال کے لیے جنرل یزٹاک سعدے (Yitzhak Sadeh) کو مدد فراہم کی کہ 89 ویں بٹالین نے 'الدویمہ کی فتح کے دن' کئی دسیوں قیدیوں کو ہلاک کیا تھا اور اس کا جو بھی حقیقت ہے اس کا جواب جواب دیں "۔[4] 5 نومبر کو ممکنہ طور پر اقوام متحدہ میں ہونے والی تحقیقات سے پریشان یگل ایلون (Yigal Allon) نے یزٹاک سعدے (Yitzhak Sadeh) کو پھر اس یونٹ کو ہدایت دینے کا حکم دیا:

کی جن عرب لوگوں کا الدویمہ میں قتل کیا گیا ہےگاؤں جاکر اپنے ہی ہاتھوں سے قتل ہونے والوں کی لاشوں کو دفن کر دیں۔

اگرچہ یگل ایلون شاید اس سے بے خبر تھے، 89 ویں بٹالین نے یکم نومبر 1948 کو قتل عام کے مقام کو صاف کیا تھا۔[6]

7 نومبر کو جب اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں نے ایک قتل عام کے الزامات کی تحقیقات کے لیے گاؤں کے جائے وقوع کا دورہ کیا، جو الزام گاؤں کے مصریوں اور مہاجرین نے لگایا ہے۔ اس ٹیم کو "متعدد منہدم عمارتیں اور ایک لاش ملی لیکن کسی قتل عام کا کوئی اور جسمانی ثبوت نہیں ملا"۔[4] تاہم اقوام متحدہ کی ٹیم نے گاؤں کے مختار سے گواہ کا بیان لیا۔[5]

آئی ڈی ایف انٹیلیجنس سروس کے کمانڈر (Military Intelligence Directorate (Israel)) ایسر بیری (Isser Be'eri) جس نے ایک آزاد تحقیقات کی، انہونے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ الدویمہ کے قبضے کے دوران 80 افراد ہلاک ہوئے تھے اور 22 افراد کو پکڑا گیا تھا اوران سب لوگوں کو پھانسی دے دی گئی تھی۔ ایسر بیری نے پلاٹون او سی کے خلاف مقدمہ چلانے کی سفارش کی، جنھوں نے اس قتل عام کا اعتراف کیا تھا ، لیکن ایسر بیری کی سفارشات کے باوجود، کسی کو بھی مقدمے کی سماعت یا سزا نہیں دی گئی۔[4]

14 نومبر کو اسرائیلی کابینہ نے وزیر اعظم ڈیوڈ بین گوریئن کو بھی تحقیقات کا آغاز کرنے کی ہدایت کی۔ اس کی نتیجہ آج تک خفیہ ہے۔

رد عمل[ترمیم]

یروشلم میں امریکی قونصل، ولیم برڈٹ (William Burdett)، جنھوں نے 16 نومبر کو واشنگٹن کو ہونے والے قتل عام کے بارے میں خبر دی، "اقوام متحدہ کی تحقیقات سے پتہ چلتا ہے کہ قتل عام ہوا ہے لیکن مبصرین ملوث افراد کی تعداد کا تعین کرنے سے قاصر ہیں"۔

اس قتل عام کی خبر مغربی الخلیل اور یہودی دامن کی پہاڑیوں میں دیہاتی برادریوں تک پہنچی "ممکنہ طور پر مزید لڑائی کا آغاز کرنا"۔[4]

البتہ،

اس قتل عام کے بارے میں اتنا ہی کم معلوم کیوں ہوا ہے کہ جو بہت سارے معاملات میں، دیر یسین قتل عام سے زیادہ سفاکانہ تھا یہ اس کی وجہ ہے کہ عرب لشکر کو خدشہ تھا کہ اگر اس خبر کو پھیلانے دیا گیا تو اس کے حوصلے پر بھی وہی اثر پڑے گا دیسر یاسین کی کسانیت، یعنی عرب مہاجرین کے ایک اور بہاؤ کا سبب بنی۔[5]

مزید پڑھیے[ترمیم]

  • Benvenisti, Meron (2002). Sacred Landscape: The Buried History of the Holy Land Since 1948. University of California Press. ISBN 0-520-23422-7
  • Morris, Benny (2004). The Birth of the Palestinian Refugee Problem Revisited. Cambridge: Cambridge University Press. ISBN 0-521-00967-7
  • Khalidi, Walid (1991). "ALL THAT REMAINS: The Palestinian Villages Occupied and Depopulated by Israel in 1948", The Institute of Palestine Studies, Washington, D.C. ISBN 0-88728-224-5

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Sir John Bagot Glubb, A Soldier with the Arabs, London 1957, pp. 211-212."On October 31st, United Nations observers reported that the Israelis had killed thirty women and children at Dawaima (Dawayima), west of Hebron. It would be an exaggeration to claim that great numbers were massacred. But just enough were killed, or roughly handled, to make sure that all the civilian population took flight, thereby leaving more and more land vacant for future Jewish settlement. These particular villages west of Hebron were to remain vacant and their lands uncultivated for eight years."
  2. ^ ا ب پ "'The Dawaymeh Massacre'". UNITED NATIONS CONCILIATION COMMISSION FOR PALESTINE. United Nations A/AC.25/Com.Tech/W.3, 14 June 1949.'The reason why so little is known about this massacre which, in many respects, was more brutal than the Deir Yassin massacre, is because the Arab Legion (the Army in control of that area) feared that if the news was allowed to spread, it would have the same effect on the moral of the peasantry that Deir Yassin had, namely to cause another flow of Arab refugees.'. 
  3. "The Mukhtar's sworn testimony – more on the 1948 Dawaymeh Massacre". mondoweiss. 
  4. ^ ا ب پ ت ٹ ث Morris، Research Fellow Truman Institute Benny؛ Morris، Benny؛ Benny، Morris (2004). The Birth of the Palestinian Refugee Problem Revisited (بزبان انگریزی). Cambridge University Press. صفحات pp. 469–471. ISBN 978-0-521-00967-6. 
  5. ^ ا ب پ "United Nation Conciliation Commission for Palestine Technical committee Report Submitted by the Arab Refugee Congress Dated 14 June 1949" (PDF). United Nation Conciliation Commission. 
  6. Morris، Research Fellow Truman Institute Benny؛ Morris، Benny؛ Benny، Morris (2004). The Birth of the Palestinian Refugee Problem Revisited (بزبان انگریزی). Cambridge University Press. صفحات pp 495. endnote 49. ISBN 978-0-521-00967-6.