انسانی بازارکاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

انسانی بازارکاری انسانوں کی تجارت کو کہا جاتا ہے جو جبری مزدوری، جنسی غلامی یا تجارتی جنسی استحصال کے لیے مخصوص بازارکار یا کسی اور کی جانب سے انجام پاتی ہے۔[1][2] اس عمل میں یہ بھی ممکن ہے کہ شریک حیات کو جبری شادی میں دیا جاتا ہو،[3][4][5] یا جسم کے اعضا یا پٹھوں کا الگ کیا جانا،[6][7] یا رحم کا عاریتی استعمال اور عورتوں کے بیضوں کا نکالا جانا جیسا اعمال کا کیا جانا۔[8] انسانی بازارکاری ملک یا بیرون ملک اور بین الممالک ممکن ہے۔ انسانی بازارکاری ایک شخص کے خلاف جرم ہے کیوں کہ یہ مظلوم کی نقل و حرکت کے حق کی نفی کرتی ہے اور اس میں تجارتی استحصال شامل ہے۔ انسانی بازارکاری لوگوں کی تجارت ہے، خصوصًا عورتوں اور بچوں کی تجارت ہے اور یہ ضروری نہیں کہ اس کے لیے ایک شخص ایک جگہ سے دوسری چگہ جائے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "UNODC on human trafficking and migrant smuggling"۔ اقوام متحدہ کا دفتر برائے منشیات و جرائم۔ 2011۔ اخذ کردہ بتاریخ 22 مارچ 2011۔ 
  2. %7B%7Bcite web |url=https://www.amnesty.org.au/refugees/comments/20601/ |title=Amnesty International – People smuggling |publisher=Amnesty.org.au |date=23 مارچ 2009 |accessdate=22 مارچ 2011 |deadurl=yes |archiveurl=https://web.archive.org/web/20110309163736/http://www.amnesty.org.au/refugees/comments/20601/ |archivedate=9 مارچ 2011 |df=dmy-all}}
  3. "Child Trafficking for Forced Marriage"۔ اصل سے جمع شدہ 18 جولائی 2013 کو۔ 
  4. "Slovakian 'slave' trafficked to Burnley for marriage"۔ بی بی سی نیوز۔ 
  5. "MARRIAGE IN FORM, TRAFFICKING IN CONTENT: Non – consensual Bride Kidnapping in Contemporary Kyrgyzstan"۔ اصل سے جمع شدہ 15 اپریل 2014 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 2 نومبر 2016۔ 
  6. "Trafficking in organs, tissues and cells and trafficking in human beings for the purpose of the removal of organs" (PDF)۔ United Nations۔ 2009۔ اخذ کردہ بتاریخ 18 جنوری 2014۔ 
  7. "Human trafficking for organs/tissue removal"۔ Fightslaverynow.org۔ اخذ کردہ بتاریخ 30 دسمبر 2012۔ 
  8. "Human trafficking for ova removal or surrogacy"۔ Councilforresponsiblegenetics.org۔ 31 مارچ 2004۔ اخذ کردہ بتاریخ 30 دسمبر 2012۔ 

بیرونی روابط[ترمیم]