اگھور پنتھ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ایک اگھور پنتھی برہنہ سادھو

اگھور پنتھ ایک خانہ بہ دوش شیو پرست سادھوؤں کا فرقہ ہے۔ یہ لوگ عمومًا وارانسی اور اس کے آس پاس پاس کے علاقوں میں بستے ہیں۔[1]

عجیب و غریب عادات و اطوار[ترمیم]

اگھور پنتھی یا اگھوری لوگ اپنے آپ میں عجیب و غریب عادات و اطوار رکھتے ہیں۔ ان میں سے چند اس طرح ہیں :

  • فطری طور پر انتقال ہونے والے انسانوں کا گوشت کھانا۔
  • انسانی کھوپڑی سے بھیجا نکال کر کھانا
  • خود کے فضلات کو کھانا
  • صفائی ستھرائی کی کمی۔[1]

فرقے کی عالمی شہرت پانے کے اسباب[ترمیم]

اگھور پنتھ فرقہ 2017ء میں اس وقت عالمی سرخیوں میں آگیا جب سی این این کے پیش کنندہ رضا اسلم نے اس فرقے کا انٹرویو لینے کی کوشش کی۔ وہ انسانی کھوپڑی سے پیتے ہوئے دکھے، ان جلی لاش کا راکھ ملا گیا اور ان پر سادھوؤں نے اپنے فضلات بھی پھینکیں، حالانکہ یہ فرقے کے سادھوؤں کی تعداد سو سے متجاوز نہیں تھی۔[1]

ہندو تنظیموں کا احتجاج[ترمیم]

ان واقعات کو دکھائے جانے پر ناقدین نے رضا اسلم پر ہندو مت کی غلط اور انتہاپسندانہ تصویر پیش کرنے کا الزام عائد کیا۔ امریکی کانگریس کے واحد ہندو رکن نے ٹویٹر پر کہا:[1]

میں اس بات سے پریشان ہوں کہ سی این این اپنی موجودہ طاقت اور اثر کا استعمال کر کے لوگوں کے بیچ ہندومت کے تیئیں غلط فہمیوں اور خوف کو بڑھا رہا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]