ایرک وون ڈانیکن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
ایرک وون ڈانیکن
Erich von Däniken
(جرمن میں: Erich von Dänikenخاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
ایرک وون ڈانیکن 2009
ایرک وون ڈانیکن 2009

معلومات شخصیت
پیدائشی نام (جرمن میں: Erich Anton Paul von Dänikenخاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیدائشی نام (P1477) ویکی ڈیٹا پر
پیدائش 14 اپریل 1935 (82 سال)[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Switzerland.svg سویٹزرلینڈ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ مصنف
تصنیفی زبان جرمن[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں بولی، لکھی اور دستخط کی گئیں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
مجال العمل مصنف  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں باضابطہ ویب سائٹ (P856) ویکی ڈیٹا پر
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں آئی ایم ڈی  بی - آئی ڈی (P345) ویکی ڈیٹا پر

ایرک وون ڈانیکن ( جرمنی: ایرک انتون پاؤل فان ڈانیکن | پیدائش: 14 اپریل، 1935ء ) ایک سوئس مصنف ہیں ، جو سال 1965ء میں لکھی گئی بیسٹ سیلر کتاب چیریٹس آف دی گاڈز سے پہچانے جاتے ہیں۔ ایرک وون ڈانیکن کی کتب قدیم عہد میں غیر ارضی خلانورد کے اثرات پر مبنی نظریات پر مشتمل ہوتی ہیں، ان کی 26 کے قریب کتابیں 32 زبانوں میں ترجمہ ہوچکی ہیں اور مجموعی طور پر 6 کروڑ 30 لاکھ کاپیاں فروخت ہوچکی ہیں ۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ایرک وون ڈانیکن، زوفنجین آراگاؤ ، سوئٹزرلینڈ کے ایک کٹر کیتھولک گھرانے میں پیدا ہوئے، ابتدائی تعلیم کیتھولک سینٹ مائیکل اسکول فرائی برگ سے حاصل کی۔ بچپن سے ہی ایرک وون ڈانیکن نے مذہبی تعلیمات کے بجائے خلاء اور اڑن طشتریوں کے متعلق دلچسپی تھی۔ 19 سال کی عمر میں، وون ڈانیکن چوری کے الزام میں چار ماہ کے لئے معطل رہے اور بعد میں اسکول سے نکال دئیے گئے ۔ پھر وہ ایک سوئس ہوٹل مالک کے شاگرد بن گئے. مصر میں جانے کے بعد، وہ دھوکا دہی اور غبن کے الزام میں بھی سزا دی گئی.[3]

اس کے بعد وہ، ڈیووس، سوئٹزرلینڈ میں ہوٹل روزن ہوگل کے مینیجر بن گئے، اس دوران رات گئے وہ اپنی کتاب چیریٹس آف دی گاڈز (دیوتاؤں کی رتھیں) پر کام کرتے رہے، دسمبر 1964 میں، ایرک وون ڈینیکن نے جرمن کینیڈین مجلہ آودک ڈیر نورڈویسٹن کے لئے ایک مضمون ("کیا ہمارے آباواجداد خلا کی طرف سے آئے تھے؟")لکھا. چیریٹس آف دی گاڈز (دیوتاؤں کی رتھیں) اوائل 1967 ء میں ایک پبلیشر کی طرف سے قبول کر لیا، اور مارچ 1968 میں چھپا تھا. نومبر 1968 میں ایرک وون ڈینیکن کو 12 سال کے دوران بینک سے لیے ایک لاکھ تیس ہزار ڈالر قرضہ کی عدم ادائیگی پر دھوکا دہی کے الزام میں گرفتار کیا گیا. یہ پیسے انہوں نے اپنی کتاب کی تحقیق کے لیے غیر ملکی اسفار میں خرچ کیے تھے، ان کا ارادہ بدنیتی پر مبنی نہیں تھا بلکہ کریڈٹ کارڈ ادارے غلطی پر تھے۔ انہیں ایک ڈیڑھ سال قید اور 3،000 فرانکس جرمانہ کی سزا سنائی گئی لیکن وہ جلد ہی رہا ہوگئے. ان کی پہلی کتاب، چیریٹس آف دی گاڈز (دیوتاؤں کی رتھیں)، ان کے مقدمے کی سماعت کے وقت شائع ہوئی، اور اس کی فروخت میں ملنے والی رقم نے ان کا قرض ادا کردیا، اور وون ڈٖانیکن نے جیل میں اپنی دوسری کتاب لکھنا شروع کی. رہا ہونے کے بعد انہوں نے ہوٹلنگ کا بزنس چھوڑ دیا اور مستقل طور پر ایک مصنف بن گئے۔[4][5]

بحیثیت مصنف[ترمیم]

ایرک وون ڈانیکن کی کتب قدیم عہد میں غیر ارضی خلانورد کے اثرات پر مبنی نظریات پر مشتمل ہوتی ہیں، ان کی 26 کے قریب کتابیں 32 زبانوں میں ترجمہ ہوچکی ہیں اور مجموعی طور پر 6 کروڑ 30 لاکھ کاپیاں فروخت ہوچکی ہیں

کتب[ترمیم]

  • ۔چیریٹس آف دی گاڈز (دیوتاؤں کی رتھیں)۔ سن اشاعت: 1969ء ۔ سووینئر پریس لمیٹڈ
  • ۔ ریٹرن ٹو دی اسٹار (ستاروں کی جانب واپسی)۔سن اشاعت: 1970ء۔ سووینئر پریس لمیٹڈ
  • ۔ گاڈز فرام آؤٹر اسپیس (بیرونِ خلاء کے دیوتا)۔سن اشاعت: 1972ء۔ بینتھم (ریٹرن ٹو دی اسٹار کا ترمیمی ایڈیشن)
  • ۔ دی گولڈ آف دی گاڈز (دیوتاؤں کا سونا)۔سن اشاعت: 1973ء۔ سووینئر پریس لمیٹڈ
  • ۔ میراکلز آف دی گاڈز ۔ (دیوتاؤں کے کرشمے)۔سن اشاعت: 1975ء۔ سووینئر پریس لمیٹڈ
  • ۔ ان دی سرچ آف اینشنٹ گاڈز ۔ (قدیم دیوتاؤں کی تلاش میں)۔سن اشاعت: 1976ء۔ کورگی بکس
  • ۔ اکارڈنگ ٹو دی ایویڈینس ۔ (ٹبوت کے مطابق)۔سن اشاعت: 1977ء۔ سووینئر پریس لمیٹڈ
  • ۔ سائنز آف دی گاڈز ۔ (دیوتاؤں کی نشانیاں)۔سن اشاعت: 1980ء۔ کورگی بکس

حوالہ جات[ترمیم]

  1. جی این ڈی- آئی ڈی: http://d-nb.info/gnd/118523260 — اخذ شدہ بتاریخ: 21 جولا‎ئی 2015 — اجازت نامہ: سی سی زیرو
  2. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb14052164r — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  3. "ایرک وون ڈانیکن"، پلے بوائے میگزین (جلد21 شمارہ8)، اگست 1974ء۔ 
  4. "ایرک وون ڈانیکن کی ابتداءنیویارک ٹائمز، 31 مارچ 1974ء، http://select.nytimes.com/gst/abstract.html?res=F20710FF3B5F107A93C3AA1788D85F408785F9۔ 
  5. پیٹر کراسہ (1976ء)، اے بائیوگرافی آف ایرک وون ڈانیکن، ایلن اینڈ کمپنی، لمیٹڈ، صفحہ 74