مندرجات کا رخ کریں

تشارعمران

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
تشار عمران
ذاتی معلومات
مکمل نامشیخ تشار عمران
پیدائش (1983-12-10) 10 دسمبر 1983 (عمر 40 برس)
کھاڑکی، جیسور، کھلنا، بنگلہ دیش
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا میڈیم گیند باز
حیثیتبلے باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 28)28 جولائی 2002  بمقابلہ  سری لنکا
آخری ٹیسٹ11 جولائی 2007  بمقابلہ  سری لنکا
پہلا ایک روزہ (کیپ 54)23 نومبر 2001  بمقابلہ  زمبابوے
آخری ایک روزہ31 دسمبر 2007  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
ایک روزہ شرٹ نمبر.55
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
2001– تاحالکھلنا ڈویژن
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 5 41 171 168
رنز بنائے 89 574 11,433 4,279
بیٹنگ اوسط 8.90 14.35 43.30 27.60
100s/50s 0/0 0/2 31/59 1/28
ٹاپ اسکور 28 65 220 106*
گیندیں کرائیں 60 126 2,847 1,436
وکٹ 0 1 30 27
بالنگ اوسط 103.00 50.83 39.26
اننگز میں 5 وکٹ 0 0 0
میچ میں 10 وکٹ 0 0 0
بہترین بولنگ 1/24 3/22 4/26
کیچ/سٹمپ 1/– 6/– 77/– 49/–
ماخذ: ای ایس پی این کرک انفو، 24 مارچ 2019ء

شیخ تشار عمران (پیدائش: 10 دسمبر 1983ء) بنگلہ دیش سے تعلق رکھنے والے ایک کرکٹ کھلاڑی ہیں جنھوں نے ٹیسٹ میچوں اور ایک روزہ بین الاقوامی میں اپنے ملک کی نمائندگی کی ہے۔ جنوری 2018ء میں وہ فرسٹ کلاس کرکٹ میں 10,000 رنز بنانے والے پہلے بنگلہ دیشی کھلاڑی بن گئے۔ [1] نومبر 2021ء میں انھوں نے اول درجہ اور بین الاقوامی کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا۔ [2]

کیریئر[ترمیم]

عمران پہلی بار صرف 17 سال کی عمر میں سرخیوں میں آئے جب انھوں نے 2000-01ء میں کھلنا ڈویژن کے لیے ایک ڈومیسٹک میچ میں 106 گیندوں پر 131 رنز بنائے۔ یہ وہی سیزن تھا جس میں بنگلہ دیش کو ٹیسٹ کا درجہ دیا گیا تھا اور اگرچہ اسے ٹیسٹ ٹیم میں شامل ہونے کے لیے کچھ دیر انتظار کرنا پڑا تھا، اس نے 2001ء میں اپنا ون ڈے ڈیبیو کیا۔ ان کا ٹیسٹ ڈیبیو سری لنکا کے خلاف کولمبو میں 28 جولائی 2002ء کو ہوا۔ انھوں نے 8 اور 28 رنز بنائے اور بنگلہ دیش کو 288 رنز سے شکست ہوئی۔ کھیل کھیلنے کے لیے اس نے بنگلہ دیشی ٹیم کے تین سابق کپتانوں نعیم الرحمن ، اکرم خان اور امین الاسلام کو باہر کر دیا تھا جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سلیکٹرز ان میں سرمایہ کاری کرنے کو تیار تھے۔ انھوں نے اب تک بین الاقوامی سطح پر جدوجہد کی ہے لیکن وہ بنگلہ دیش اے کے لیے باقاعدہ ہیں جس کی وہ کپتانی کرتے ہیں۔ وہ بنگلہ دیش اے کے دورے کا پہلا حصہ تھا جب وہ 2005ء کے موسم گرما میں انگلینڈ گئے تھے۔ عمران نے سرے کے خلاف ایک گیند پر 70 رنز بنا کر متاثر کیا۔ دسمبر 2016ء میں 2016-17ء نیشنل کرکٹ لیگ کے دوران اس نے اپنی 19ویں سنچری بنائی جو کسی بنگلہ دیشی کی طرف سے فرسٹ کلاس کی سب سے زیادہ سنچریاں ہیں۔ [3] وہ 2016–17 بنگلہ دیش کرکٹ لیگ میں 731 رنز کے ساتھ سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی تھے۔ [4] جنوری 2018ء میں 2017–18ء بنگلہ دیش کرکٹ لیگ کے دوران اس نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں اپنا 10,000 واں رن بنایا۔ [5] وہ اس تاریخی مقام تک پہنچنے والے پہلے بنگلہ دیشی کھلاڑی بن گئے۔ [6] وہ سنٹرل زون کے لیے 2017–18ء بنگلہ دیش کرکٹ لیگ میں 6 میں 725 رنز کے ساتھ سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی تھے۔ [7] اکتوبر 2018ء میں 2018-19ء نیشنل کرکٹ لیگ کے دوران وہ بنگلہ دیش میں ڈومیسٹک کرکٹ میں ایک ہی سال میں 7 سنچریاں بنانے والے پہلے بلے باز بن گئے۔ [8] اس نے ٹورنامنٹ میں کھلنا ڈویژن کے لیے سب سے زیادہ رنز بنانے والے کھلاڑی کے طور پر پانچ میچوں میں 518 رنز بنائے۔ [9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Tushar reaches 10k landmark"۔ The Daily Star۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 جنوری 2018 
  2. "Tushar bids adieu to his prolific First-class career"۔ Dhaka Tribune۔ 2021-11-21۔ 25 نومبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2021 
  3. "Imran's record-breaking ton gives Khulna full points"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 دسمبر 2016 
  4. "Bangladesh Cricket League, 2016/17 Records: Most runs"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2017 
  5. "Nurul Hasan hits rapid ton in high-scoring draw"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جنوری 2018 
  6. "Abdur Razzak and Tushar Imran climb first-class summits"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جنوری 2018 
  7. "Bangladesh Cricket League 2017/18, South Zone: Batting and Bowling Averages"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2018 
  8. "Soumya Sarkar impresses with bat and ball in NCL"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2018 
  9. "National Cricket League, 2018/19 - Khulna Division: Batting and bowling averages"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2018