جراب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جراب

جراب یا موزہ (Sock) لباس کا ایک حصہ ہے جو پاؤں پر پہنا جاتا ہے۔ یہ اکثر ٹخنوں اور پنڈلی کے کچھ حصے کو بھی ڈھانپتا ہے۔

كسی قسم کا جوتا یا بوٹ عام طور پر موزوں پر پہنا جاتا ہے۔ قدیم زمانے میں، جرابوں کو چمڑے یا میٹڈ جانوروں کے بالوں سے بنایا جاتا تھا۔ سولہویں صدی کے آخر میں، مشین بنا ہوا موزے پہلے تیار کیے گئے تھے۔ 1800 تک دونوں ہاتھ سے بنائی اور مشین بنائی موزوں کو تیار کرنے کے لئے استعمال ہوتی رہی، لیکن 1800 کے بعد، مشین بننا بنیادی طریقہ کار بن ہو گیا[1]۔

موزہ عمومًا سرد موسم میں استعمال كيا جاتاہے، موزہ روئی یا اون سے بنی ہے۔ موزوں سے ٹھنڈے پاؤں گرم کرنے میں مدد ملتی ہے۔ جس کے نتیجے میں ٹھنڈ کاٹنے کے خطرے کو کم کرنے میں كافى مدد ملتی ہے۔ پاؤں کو ٹھنڈا رکھنے کے لئے گرمی کے مہینوں میں پتلی موزے سب سے زیادہ پہنی جاتی ہیں۔ ہلکے رنگ کے جرابوں کو عام طور پر کھیلوں کے جوتے اور گہرے رنگ کے موزوں کے ساتھ لباس کے جوتے (اکثر سیاہ یا بحریہ کے نیلے لباس جرابوں) کے ساتھ پہنا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ، گہرے رنگ کے موزے گرمی کو جذب کرتے ہیں جس کے نتیجے میں پاؤں کو گرم رکھنے میں مدد ملتی ہے جبکہ ہلکے رنگ کے موزے گرمی کی عکاسی کرتے ہیں جس کے نتیجے میں پاؤں کو ٹھنڈا رہنے میں مدد ملتی ہے[2]۔

تاريخ[ترمیم]

جرابوں (موزوں ) کا آغاز صدیوں کے اوائل میں ماڈلوں سے ہوا ہے، جو جانوروں کی کھالوں سے بنائے گئے تھے اور ٹخنوں کے گرد بندھے ہوئے تھے۔ یونانی شاعر ہیسیوڈ کے مطابق، آٹھویں صدی قبل مسیح میں، قدیم یونانیوں نے "پیلی" نامی موزے پہنے تھے، جو جانوروں کے پالے ہوئے بالوں سے بنے تھے۔ رومیوں نے بھی اپنے پیروں کو چمڑے یا بنے ہوئے کپڑے سے لپیٹا۔ دوسری صدی عیسوی کے آس پاس، رومیوں نے مل کر کپڑوں کی سلائی شروع کردی جس میں "اڈونز" کے نام سے موزوں جرابیں تیار کی گئیں۔ پانچویں صدی عیسوی تک، یورپ کے مقدس لوگوں نے پاکیزگی کی علامت کے لئے "پٹیاں" نامی جرابیں پہنی تھیں[3]۔

قرون وسطی کے دوران میں، پتلون کی لمبائی بڑھا دی گئی اور جراب ٹانگ کے نچلے حصے کو ڈھکنے والا ایک تنگ، چمکدار رنگ کا کپڑا بن گیا۔ چونکہ جرابوں میں لچکدار بینڈ نہیں ہوتا تھا، لہذا گارٹس کو جرابیں کے اوپر اوپر رکھا جاتا تھا تاکہ انھیں نیچے گرنے سے بچا جاسکے۔ جب بریکیاں چھوٹی ہوجائیں تو، موزے لمبے ہونے لگے (اور زیادہ مہنگے)۔ 1000 عیسوی تک، موزے شرافت کے درمیان میں دولت کی علامت بن گئے۔ سولہویں صدی کے بعد سے، ٹخنوں یا ٹخنوں کے اوپر ٹخنوں کی زینت ڈیزائن کو گھڑی کہا جاتا ہے[4]۔

1589 میں بنائی والی مشین کی ایجاد کا مطلب یہ تھا کہ جرابوں کو ہاتھ سے چھ گنا تیزی سے بنا ہوا تھا۔ بہر حال، 1800 تک بنائی کی مشینیں اور ہاتھ سے چلنے والوں نے ساتھ ساتھ کام کیا۔

جراب کی پیداوار میں اگلا انقلاب 1938 میں نا 19لون کا تعارف تھا۔ تب تک جرابیں عام طور پر ریشم، کپاس اور اون سے تیار کی جاتی تھیں۔ نایلان جرابوں کی تیاری میں دو یا دو سے زیادہ سوت ملاوٹ کا آغاز تھا، یہ عمل آج بھی جاری ہے[5]۔

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. ["Howstuffworks "Why do feet stink?"". Health.howstuffworks.com. Retrieved 2010-03-05. ""Howstuffworks "Why do feet stink?"". Health.howstuffworks.com. Retrieved 2010-03-05."] تحقق من قيمة |url= (معاونت). 
  2. ["LacusCurtius – Roman Shoes – Soccus". Penelope.uchicago.edu. Retrieved 2010-03-19. ""LacusCurtius – Roman Shoes – Soccus". Penelope.uchicago.edu. Retrieved 2010-03-19."] تحقق من قيمة |url= (معاونت). 
  3. "http://www.etymonline.com/index.php?allowed_in_frame=0&search=sock&searchmode=none".  روابط خارجية في |title= (معاونت)
  4. [Take Me Back. New York, New York: Dorling Kindersley Limited. 2008. p. 292. ISBN 978-0-7566-4090-3. "Take Me Back. New York, New York: Dorling Kindersley Limited. 2008. p. 292. ISBN 978-0-7566-4090-3."] تحقق من قيمة |url= (معاونت). 
  5. "http://www.merriam-webster.com/dictionary/clock%5B3%5D".  روابط خارجية في |title= (معاونت)