حیات بلوچ کا قتل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

حیات بلوچ بلوچستان کاایک طالب علم تھا ، اسے 13 اگست 2020 کو فرنٹیئر کور (ایف سی) نے تربت میں بم دھماکے کے بعد ہلاک کر دیا تھا۔[1][2][3][4]

پس منظر[ترمیم]

13 اگست کو ابسار روڈ پر بلوچی بازار میں ایف سی کی دو گاڑیاں پھٹ گئیں ، ایک ایف سی اہلکار نے اپنی رائفل سے قریبی کھیتوں میں حیات پر فائرنگ کردی۔ وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق شیریں مزاری نے پاکستان کی قومی اسمبلی میں ایک بیان جاری کیا اور واقعے کی مذمت کی۔ اگست 2020 میں ، حملے میں ایف سی اہلکار کو گرفتار کر لیا گیا اور آئی جی ایف سی ساؤتھ نے اس واقعے پر غم کا اظہار کرنے کے لیے مقتول کے گھر گئے۔

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. Abbas Nasir (16 August 2020). "Travesty unlimited". dawn.com. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2021. 
  2. Asim Khan (18 August 2020). "Pakistan minister demands inquiry into Baloch student's killing in Turbat". samaa.tv. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2021. 
  3. Noor ul Ain Ali (18 August 2020). "#JusticeForHayatBaloch trends on Twitter as netizens mourn his death". dailytimes.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2021. 
  4. محمد کاظم (17 August 2020). "حیات بلوچ کے مبینہ قتل کا معاملہ: طالب علم کے والد نے شناخت پریڈ میں مبینہ ملزم ایف سی اہلکار کو شناخت کر لیا". bbc.com. اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2021.