خاور ممتاز

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خاور ممتاز
Khawar Mumtaz.jpg

معلومات شخصیت
پیدائش 29 جون 1945
کراچی، پاکستان
قومیت پاکستانی قوم
عملی زندگی
تعليم ایم اے بین الاقوامی تعلقات، جامعہ کراچی
پیشہ خواتین کے حقوق کی کارکن
مصنفہ
تنظیم شرکت گاہ
چیئر پرسن، قومی کمیشن برائے وقار نسواں (2016 - 2019)

خاور ممتاز (ولادت: 1945ء) پاکستانی خواتین کی حقوق کی کارکن، یونیورسٹی لیکچرر اور مصنفہ ہیں جنھوں نے 2013ء سے 2019ء تک مسلسل دو بار قومی کمیشن برائے وقار نسواں کی چیئر پرسن کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ [1]

خاندان[ترمیم]

خاور ممتاز کی شادی معمار کامل خان ممتاز سے ہوئی ہے۔ اس شادی سے ان کے 3 بچے ہیں: ایک بیٹی سمیعہ ممتاز، جو ایک ممتاز اداکارہ ہیں اور 2 بیٹے ہیں۔[2]

تعلیم[ترمیم]

خاور ممتاز نے ابتدائی اور ثانوی تعلیم کے لیے پاکستان کے سینٹ جوزف کانونٹ اسکول، میں داخلہ لیا۔ انہوں نے سینٹ جوزف کالج سے اپنی ثانوی تعلیم مکمل کی اور جامعہ کراچی سے بین الاقوامی تعلقات میں بی اے اور ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔[3] جامعہ کراچی میں وہ امتحان میں اول نمبر پر رہیں۔ انہوں نے فرانسیسی زبان میں ڈپلوما کیا ہے۔[4] خاور ممتاز کو ایک بار پیرس کے سوربن یونیورسٹی میں تعلیم حاصل کرنے کا موقع بھی ملا تھا۔[2]

کیریئر[ترمیم]

خاور ممتاز بین الاقوامی تعلقات میں ماسٹر آف آرٹس اور فرانسیسی میں ڈپلوما رکھتی ہیں [1] 1981 میں وہ ویمن ایکشن فورم (ڈبلیو اے ایف) کی بانی رکن تھیں اور تب سے ہی وہ پاکستان میں خواتین کے حقوق سے وابستہ ہیں۔ فروری 1983 کا ایک واقعہ ہے، جب لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس کو درخواست پیش کرنے والی خواتین مظاہرین پر پولیس کے ذریعہ توڑ پھوڑ کی ، اس نے ان پر بہت دیرپا تاثر چھوڑا۔ خواتین کے حقوق میں اپنے مشن کے بارے میں ، ممتاز نے کہا کہ: خواتین کو برابر کے شہری کی حیثیت سے دیکھنا ہوگا ، انہیں تحفظ فراہم کرنا ہوگا اور انہیں ان کے حقوق دلوانا ہوں گے۔ ملالہ یوسف زئی سے پتہ چلتا ہے کہ ایسے عناصر موجود ہیں جو یہ سمجھتے ہیں کہ خواتین کو اپنی خواہشات ، اپنے خوابوں ، اپنی تقدیروں کی پیروی کرنے کا حق نہیں ہے اور اگر خواتین کو ان کا حق دیا گیا تو وہ تباہ کن ہوجائیں گی۔ ہمیں اپنی حکمرانی میں بھی زیادہ چوکس رہنے کی ضرورت ہے اور اس ضمن میں ، بلدیاتی نظام کو بحال کرنا بہت ضروری ہے۔ یہ واقع خواتین کی سیاسی شمولیت کا محرک تھا اور خاص طور پر انحراف کے بعد خواتین کے لیے ایک سیاسی اسکول تھا۔ " ممتاز کو لیکچرز اور تربیتی مراکز میں خصوصا خواتین اور ترقی ، سیاست ، خواتین کو درپیش معاشی اور ماحولیاتی چیلنجوں اور صحت جیسے شعبوں میں عوامی سطح پر بولنے کا بہت تجربہ ہے۔ 1989 میں انہوں نے اپنی کتاب ویمن آف پاکستان کے لیے وزیر اعظم کا ایوارڈ حاصل کیا۔ دو قدم آگے بڑھا ایک قدم پیچھے؟ [1] ایک مصنف کی حیثیت سے اس نے خواتین کی صحت اور تولیدی صحت پر لکھا ہے۔ سماجی خدمت میں کام کرنے اور خواتین کی مساوات کو فروغ دینے کے لیے ستارہ امتیاز ایوارڈ وصول کنندہ ، 2005 میں انہیں نوبل امن انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا تھا۔ [1]

ایوارڈ اور پہچان[ترمیم]

خواتین کو بااختیار بنانے میں ان کی شراکت کے لیے انہیں بہت سے ایوارڈ ملے ہیں۔[5]

  • 1989 میں، خاور ممتاز کو ان کی کتاب ویمن آف پاکستان؛ایک قدم پیچھے دو قدم آگے؟ (Women of Pakistan; Two Steps Forward One step Back?)، کے لیے وزیر اعظم کا ایوارڈ ملا۔ اس کتاب کو انہوں نے فریدہ شہید کے ساتھ مل کر لکھا ہے۔[6]
  • خاور ممتاز 2005 میں امن کے نوبل انعام کے لیے نامزد 100 افراد میں سے ایک تھیں۔.[7]
  • 2006 میں، انہوں نے خواتین کے حقوق اور معاشرتی خدمات کے فروغ کے لیے ستارہ امتیاز حاصل کیا۔[8][9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "Q&A with H.E Khawar Mumtaz, Chairperson of the National Commission on the Status of Women, Pakistan". UN Women. 11 February 2013. اخذ شدہ بتاریخ 08 نومبر 2017. 
  2. ^ ا ب "Inspiring change: Khawar terms religious extremism, discrimination biggest challenge". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2014-05-14. اخذ شدہ بتاریخ 23 نومبر 2020. 
  3. "International Resource Panel - Khawar Mumtaz". 
  4. "Ms. Khawar Mumtaz | RSPN". Rural Support Programmes Network (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 23 نومبر 2020. 
  5. "LWAP2014 Polling". www.dawoodglobal.org. 02 اکتوبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 دسمبر 2020. 
  6. "Pride of Pakistan Khawar Mumtaz". Daily Times (بزبان انگریزی). 2018-07-31. اخذ شدہ بتاریخ 08 دسمبر 2020. 
  7. Uploader (2016-10-06). "NCSW to conduct survey on obstacles of women empowerment: Khawar Mumtaz". Associated Press Of Pakistan (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 23 نومبر 2020. 
  8. "Report, bionote of members" (PDF). Law and Justice Commission of Pakistan.