دنقلا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
دنقلا is located in سوڈان
دنقلا
دنقلا
سوڈان میں مقام
متناسقات: 19°10′11.37″N 30°28′29.62″E / 19.1698250°N 30.4748944°E / 19.1698250; 30.4748944
ملکFlag of Sudan.svg سوڈان
ریاستشمالی
آبادی (2010)
 • کل۱۳۴۷۳

دنقلا ایک شہر ہے جو سوڈان کی شمالی ریاست میں دریائے نیل کے مغربی کنارے پر سطح سمندر سے ۲۲۷ میٹر (۷۴۵ فٹ) کی بلندی پر واقع ہے۔ یہ شمالی ریاست کا دار الحکومت ہے اور خرطوم سے ۵۳۰ کلومیٹر (۳۲۹ میل) شمال میں واقع ہے، دارالحکومت۔ قدیم سوڈانی تہذیبوں کے آثار سے مالا مال۔

لسانیات[ترمیم]

اللفظ دُنْقُلا مشتق من الدنقل (بضم حرف الدال وتسكين النون ورفع القاف) وهو الطوب الأحمر باللغات النوبية، وسميت كذلك لأن مبانيها كانت تبنى من الطوب الأحمر على خلاف ما جاورہا من الطوب الأحمر على خلاف ما جاورہا من أمصار مشيدة الأحمر الأحمر على خلاف ما جاورہا من أمصار مشيد الأحمر الأحمر على خلاف ما جاورہا من أمصار مشيدة وهناك من يقول بأن دنقلا كلمة نوبية تتكون من مقطعين هما «دونقي» أي المال، و «لا» (النافية) أي انادام المال، وبذلك يشير لفظ دنقي–لا إلى مكان «بلا مال»۔

ثمة رواية ثالثة تذهب إلى أن الكلمة مركبة من لفظين هما «دا» بمعنى دار و «قُل» (بضم القاف) بمعنى قلب، أو مركز فيكون معنى الاسم «قلب الديار»۔ وتنسب رواية رابعة الاسم إلى ملك نوبي حكم المنطقة يسمى دنقل۔

یہ لفظ ہر اس چیز کے لیے بھی استعمال ہوتا ہے جو مضبوط اور ٹھوس ہو، اور یہی وجہ ہے کہ کچھ لوگ اس شہر کے نام کو اس کے بادشاہ کی وضاحت سے منسوب کرتے ہیں، "دو- إن - قل بالنوبية” میں کہتے ہیں، یعنی مضبوط۔ دریائے نیل پر ایک بڑے قلعے میں رہائش پزیر۔

جب اسماعیل پاشا نے ۱۸۲۱ میں سوڈان کی فتح کے دوران میں اسے اپنی فوج کے لیے ایک مرکز بنایا تو دنقلا ایک "شونا" تھا، یعنی ایک ایسا مرکز جہاں اناج، اناج اور مویشیوں کی نمائندگی کرنے والے ٹیکس اور دسواں حصہ فنج کو بھیجے جانے سے پہلے جمع کیا جاتا تھا۔ سنار میں سلطان جو اس علاقے پر حکومت کر رہا تھا۔ اس لیے اس نے اسے "الاورتا" کا نام دیا جو ایک ترکی-مصری فوجی اصطلاح ہے جس کا مطلب ہے فوجی بینڈ یا فوجی بینڈ کا ہیڈکوارٹر۔ لوگوں نے اس لفظ کو "اردو" اور پھر آخر میں "الوردی" میں تبدیل کر دیا۔ دنقلا کا عرفی نام بن گیا۔

دنقلا کو بندر یا بندر دنقلا بھی کہا جاتا ہے، یعنی دنقلا شہر۔

دنقلا نام کا ذکر عرب مورخین کی تحریروں میں دمکلا کے نام سے ہوا ہے۔

درحقیقت شمالی امریکا میں دنقلا کے نام سے 7 شہر ہیں جن میں سے ۶ ریاستہائے متحدہ امریکا کی ۶ ریاستوں میں ہیں جن میں آرکنساس، الینوائے، کینٹکی، انڈیانا، میسوری، کیلیفورنیا اور ساتواں ریاستیں ہیں۔ کینیڈا کا صوبہ اونٹاریو، جس میں سب سے مشہور ریاست الینوائے ہے اور اس کا نام موجودہ دنقلا کے نام پر رکھا گیا ہے جو سوڈان میں ہے اور یونین کاؤنٹی میں واقع ہے، اور اس کی آبادی تقریباً ۸۶۰ افراد پر مشتمل ہے۔

پرانا دنقلا[ترمیم]

جہاں تک اولڈ دنقلا کا تعلق ہے، اس کا مطلب وہ علاقہ ہے جس میں ریاست مکوریا کے عیسائی دارالحکومت کے قدیم کھنڈر موجود ہیں، جو دریائے نیل کے مشرقی کنارے پر واقع ہے، دنقلا سے ۱۰۵ کلومیٹر جنوب میں اور الدیبہ شہر سے ۳۰ کلومیٹر شمال میں واقع ہے۔ عبداللہ ابن ابی سرح مسجد، ایک آثار قدیمہ کی مسجد اور سوڈان میں تعمیر ہونے والی پہلی مسجد سمجھی جاتی ہے۔

تاریخ[ترمیم]

قدیم تاریخ[ترمیم]

دنقلا نے ایک پراگیتہاسک تہذیب کا مشاہدہ کیا اور ابدمک کے مندروں کے لیے مشہور تھا، جو جنگ اور صحرا کے کُش دیوتا ہے۔ اسے نیوبین تہذیب کا مرکز سمجھا جاتا ہے، جیسا کہ اس میں موجود نوادرات سے ثبوت ملتا ہے، جس میں اہرام اور البیت معاہدے (مسجد) کی باقیات شامل ہیں جو مصر میں عرب مسلمانوں کے ساتھ طے پایا تھا۔ قرون وسطی میں، دنقلا سوڈان میں مکوریا کی عیسائی سلطنت کا دارالحکومت تھا، اور اس کا مقام دریائے نیل کے کنارے سے ۸۰ کلومیٹر کے فاصلے پر اس علاقے میں تھا جسے اب اولڈ دنقلا کہا جاتا ہے۔ اس پر عبداللہ بن ابی سرح کی قیادت میں مصر سے آنے والی مسلم فوجوں نے حملہ کیا اور فقیہ غلام اللہ الرکابی کو چودھویں صدی کے پہلے نصف میں یمن سے اس کے حوالے کیا گیا تاکہ وہ اپنے بچوں کو اسلام کے قوانین سکھائیں۔ اس کا ذکر ابن خلدون کے تعارف میں دریائے نیل کے کنارے ایک شہر کے طور پر کیا گیا ہے۔

ترک مصری دور[ترمیم]

دنقلا کی بنیاد ۱۸۱۲ عیسوی میں ایک جدید شہر کے طور پر رکھی گئی تھی، مملوکوں کے ایک گروپ نے مصر میں اقتدار پر قبضہ کرنے کے بعد مصر کے گورنر محمد علی پاشا کی طرف سے ان کے خلاف روا رکھے گئے ظلم و ستم اور بدسلوکی سے بھاگ کر، اور ان کے رہنماؤں اور ان کے خاندانوں کے افراد پر قتل عام کیا۔۔ ۱۸۲۱ء میں محمد علی پاشا نے اپنے تیسرے بیٹے اسماعیل پاشا کامل کو ایک بڑی فوج کی سربراہی میں بھیجا تاکہ مملوکوں کی باقیات کو ختم کر کے سوڈان کی باقی ریاستوں پر قبضہ کر کے ان کو اپنی سلطنت میں شامل کر لیا جائے۔ اسماعیل پاشا کامل شمالی سوڈان میں گھس گئے یہاں تک کہ وہ دنقلا پہنچ گئے، جہاں اس نے اپنی فوج کے لیے اورٹا کیمپ کے نام سے ایک کیمپ قائم کیا۔مملوکوں نے دنقلا کو شیندی کے علاقے اور اس سے آگے جنوب میں چھوڑ دیا، دنقلا کا تذکرہ انگریز سیاح جان لیوس برکھارٹ کی تحریروں میں ملتا ہے جس نے ۱۸۱۴ میں اس شہر کا دورہ کیا اور اس کی تفصیل دی تھی۔ دنقلا نے ترکوں کی حکمرانی کی مذمت کی، اور ۱۸۸۵ء میں یہ سوڈان میں ترکوں کے قائم کردہ چار اضلاع (صوبوں) میں سے ایک تھا، اور عبدین بے نے اپنا پہلا ترک حکمران مقرر کیا۔

انیسویں صدی کے وسط میں دنقلا کی آبادی ۶ ہزار افراد تک پہنچ گئی اور وہ دریائے نیل کے کنارے کھیتی باڑی کر رہے تھے اور زمینوں کو سیراب کرنے کے لیے ندیوں کا استعمال کر رہے تھے، اس وقت یہ شہر آنے والے زائرین کے قافلوں کے لیے آرام گاہ میں تبدیل ہو گیا تھا۔ دارفور سے سواکن شہر تک، مکہ اور مدینہ کی مقدس سرزمین