مندرجات کا رخ کریں

راما کانت ڈیسائی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
راما کانت ڈیسائی
ذاتی معلومات
مکمل نامرماکانت بھیکاجی دیسائی
پیدائش20 جون 1939(1939-06-20)
بمبئی، برٹش انڈیا
وفات27 اپریل 1998(1998-40-27) (عمر  58 سال)
ممبئی، انڈیا
عرفننھا
قد5 فٹ 4 انچ (1.63 میٹر)
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا تیز گیند باز
حیثیتگیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 90)6 فروری 1959  بمقابلہ  ویسٹ انڈیز
آخری ٹیسٹ15 فروری 1968  بمقابلہ  نیوزی لینڈ
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ فرسٹ کلاس
میچ 28 150
رنز بنائے 418 2,384
بیٹنگ اوسط 13.48 18.19
100s/50s 0/1 1/9
ٹاپ اسکور 85 107
گیندیں کرائیں 5,597 23,906
وکٹ 74 468
بولنگ اوسط 37.31 24.10
اننگز میں 5 وکٹ 2 22
میچ میں 10 وکٹ 2
بہترین بولنگ 6/56 7/46
کیچ/سٹمپ 9/0 50/0
ماخذ: ای ایس پی این کرک انفو، 3 فروری 2021ء

راماکانت بھیکاجی دیسائی (پیدائش: 20 جون 1939ء بمبئی) | (انتقال: 27 اپریل 1998ء ممبئی) ایک بھارتی کرکٹ کھلاڑی تھا جس نے 1959ء سے 1968ء تک ایک تیز گیند باز کے طور پر ٹیسٹ کرکٹ میں ہندوستان کی نمائندگی کی۔

زندگی اور کیریئر[ترمیم]

راماکانت ڈیسائی ایک بھارتی تیز گیند باز تھا، جو 5 فٹ 4 انچ لمبا تھا، جس کی وجہ سے انھیں "ٹائنی" کا لقب ملا۔ اس نے 1958-59ء میں ویسٹ انڈیز کے خلاف اپنا ٹیسٹ ڈیبیو کیا تھا، 49 اوورز میں 169/4 وکٹ لیے تھے۔ اس نے باؤنسر سے بلے بازوں کو پریشان کیا، جو اس وقت ہندوستانی بولر کے لیے غیر معمولی تھا۔ انھوں نے 1959ء میں انگلینڈ ، 1961-62ء میں ویسٹ انڈیز اور 1967-68 میں آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کا دورہ کیا۔ 1960-61ء میں پاکستان کے خلاف سیریز میں انھوں نے 21 وکٹیں حاصل کیں۔ بمبئی میں اس نے نمبر 10 پر تیز بیٹنگ کرتے ہوئے 85 رنز بنائے، جو ایک ہندوستانی ریکارڈ ہے اور نانا جوشی کے ساتھ نویں وکٹ کے لیے ریکارڈ 149 کا اضافہ کیا۔ ٹیسٹ میں ان کی بہترین باؤلنگ کارکردگی 1964-65ء میں بمبئی میں نیوزی لینڈ کے خلاف 56 رنز کے عوض 6 رہی۔ ڈنیڈن میں 1967-68ء میں ڈک موٹز کی گیند سے ان کا جبڑا ٹوٹ گیا، اس کے باوجود انھوں نے بشن بیدی کے ساتھ آخری وکٹ کے لیے 57 رنز جوڑے۔ [1] رنجی ٹرافی میں اپنے پہلے سال میں اس نے 7 میچوں میں 11.10 کی اوسط سے 50 وکٹیں حاصل کیں۔ [2] یہ اب بھی بمبئی کے لیے ایک ریکارڈ ہے۔ اس میں سوراشٹرا کے خلاف 10 رن پر 5 اور 28 رن پر 6 کی کارکردگی شامل تھی۔ [3] 1960-61 میں رنجی ٹرافی کے فائنل میں اس نے راجستھان کے خلاف بمبئی کی جیت میں 46 رن پر 7 اور 74 رن پر 4 وکٹ لیے۔ [4] دو سال بعد، فائنل میں بھی راجستھان کے خلاف، اس نے ایک اور فتح میں اپنی واحد اول درجہ سنچری، 107 اسکور کی۔ [5] بمبئی ٹیم میں اپنے 11 سالوں میں (1958-59ء تا 1968-69ء)، وہ کبھی ہارنے والی ٹیم میں ختم نہیں ہوئے۔ ڈیسائی نے 1968-69ء رنجی ٹرافی فائنل کی تقسیم انعامات کی تقریب میں اپنی ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا۔ [6] ہندوستانی ٹیم کے واحد تیز گیند باز کے طور پر، وہ ہمیشہ سے زیادہ کام کرتے تھے۔ جب ڈیسائی نے 1968-69ء کے سیزن کے بعد باقاعدہ فرسٹ کلاس کرکٹ سے ریٹائرمنٹ لے لی، جب وہ ابھی صرف 29 سال کے تھے، پی این سندریسن نے لکھا کہ اس نے "ہندوستان کی مردہ پچوں پر اپنا دل پھینک دیا۔ رنجی ٹرافی اور دیگر میچوں میں ان کی صلاحیتوں کا زیادہ معقول استعمال انھیں ایک تیز گیند باز کے طور پر طویل عرصے تک محفوظ رکھ سکتا تھا۔" [7] ڈیسائی 1996-97ء تک سلیکٹرز کے چیئرمین تھے۔ انھوں نے اپنی موت سے ایک ماہ قبل اس عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔

انتقال[ترمیم]

وہ 27 اپریل 1998ء کو ممبئی، انڈیا کے ایک ہسپتال میں داخل ہونے کے چار دن بعد دل کا دورہ پڑنے سے 58 سال کی عمر میں انتقال کر گئے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Wisden 1969, p. 854.
  2. Wisden 1960, p. 886.
  3. Saurashtra v Bombay 1958–59
  4. Rajasthan v Bombay 1960–61
  5. Rajasthan v Bombay 1962–63
  6. Indian Express, February 20, 1969
  7. Wisden 1970, p. 960.