رضیہ سجاد ظہیر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
رضیہ سجاد ظہیر
معلومات شخصیت
پیدائشی نام رضیہ دلشاد
پیدائش 15 اکتوبر 1918(1918-10-15)
اجمیر
وفات دسمبر 18، 1979(1979-12-18) (عمر  61 سال)
دہلی
شریک حیات سجاد ظہیر
عملی زندگی
دور 1948ء–1979ء
ادبی تحریک انجمن ترقی پسند مصنفین
مادر علمی الہ آباد یونیورسٹی
پیشہ مصنف، مترجم
P literature.svg باب ادب

رضیہ سجاد ظہیر (15 اکتوبر 1918ء، اجمیر – 18 دسمبر 1979ء، دہلی) ایک بھارتی اردو زبان کی مصنف، ترجمہ نگار، اور ترقی پسند تحریک کی ممتاز رکن تھیں۔ وہ اتر پردیش ساہتیہ اکادمی اعزاز کے ساتھ ساتھ سوویت لینڈ نہرو اعزاز کی بھی فاتح تھیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

رضیہ دلشاد کی پیدائش اجمیر، راجستھان میں 15 اکتوبر 1918ء[2] کو ایک علمی گھرانے میں ہوئی۔ ان کے والد اجمیر اسلامیہ کالج کے پرنسپل تھے۔[3] انھوں نے اجمیر میں انڈرگریجویٹ ڈگری حاصل کی۔[4]

انھوں نے 20 سال کی عمر میں شاعر اور کمیونسٹ کارکن سجاد ظہیر سے شادی کی۔ وہ ترقی پسند تحریک (PWA) کے بانیوں میں سے ایک تھیں، اور وہ قانون میں کیریئر بنانے میں دلچسپی نہیں رکھتا تھیں، جس کے لیے انھوں نے تربیت حاصل کی تھی۔ ان کی شادی کے کچھ عرصے بعد، انھیں ان کی انقلابی سرگرمیوں کی وجہ سے انگریزوں نے گرفتار کر لیا اور دو سال تک قید میں رکھا۔[3]

رضیہ نے الہ آباد یونیورسٹی سے پوسٹ گریجویٹ کی ڈگری حاصل کی۔[4] 1940ء کی دہائی میں، رضیہ اور اس کے شوہر بمبئی میں تھے، جہاں وہ ثقافتی شعبے میں سرگرم تھے، ہفتہ وار PWA دعوتوں کا اہتمام کرتے تھے۔[3] اس نے اپنی سیاست کو بنیاد پرست بنانے میں PWA کے اثر کو تسلیم کیا، [5] اور ان سرگرم خواتین میں شامل تھی جو ""گاندھی واد خواتین کی فطرت اور مقام کے نظریات پر سوال اٹھانے لگی تھیں۔"[6]

1948ء تک، رضیہ کی چار بیٹیاں تھیں، اور ان کے شوہر بھارتیہ کمیونسٹ پارٹی کے کہنے پر پاکستان میں تھے، جس نے تقسیم ہند کی حمایت کی تھی۔ وہ اپنی بیٹیوں کے ساتھ لکھنؤ چلی گئیں۔[3]

کیرئیر[ترمیم]

رضیہ اپنے بچپن سے ہی ’’پھول‘‘، ’’تہذیب نسواں‘‘ اور ’’عصمت‘‘ جیسے جریدوں میں مختصر کہانیاں لکھتی رہی ہیں۔[7] روزی کمانے کے لیے لکھنؤ میں رضیہ نے تدریس، تصنیف و تالیف اور ترجمہ نگاری کا کام شروع کیا۔ انھوں نے تقریباً 40 کتابوں کا اردو میں ترجمہ کیا۔[8] ان کا برتولت بریخت کے لائف آف گلیلیو کا اردو ترجمہ زبردست سمجھا جاتا ہے۔[9] انھوں نے سیارام شرن گپتا کی ناری کا "عورت" کے نام سے ترجمہ کیا (جسے ساہتیہ اکادمی نے شائع کیا)، [10] اور 1962ء میں ملک راج آنند کی سیوین یرس کا سات سال کے نام سے ترجمہ کیا۔[11]

1953ء میں ان کا ناول ’’سر شام‘‘ شائع ہوا، ’’کانٹے‘‘ 1954ء میں ریلیز ہوا، جبکہ ’’سمن‘‘ (ایک اور ناول) 1964ء میں منظر عام پر آیا۔ انھوں نے جیل سے اپنے شوہر کے خطوط ’’نقوش زندہ‘‘ (1954ء) کو ترتیب دے کر شائع کیا۔ [4]

انھوں نے شاعر مجاز لکھنوی پر مشتمل ایک ناول پر بھی کام کیا، جو ادھورا رہ گیا۔ اپنی ادبی کوششوں کے ساتھ ساتھ، انھوں نے اپنے شوہر کی تحریروں کو بھی ترتیب دے کر شائع کیا۔ [8]

ان کی مختصر کہانیوں کو سماجی مقصد کے طور پر نمایاں کیا گیا ہے۔[12] مثال کے طور پر، "نیچ" میں انھوں نے ایک مراعات یافتہ عورت اور پھل بیچنے والے کے درمیان میں طبقاتی فرق کو تلاش کیا، اور ان تعصبات کو بھی، جو پہلے والے کو بعد میں سے طاقت حاصل کرنے کے لیے الگ کرنے پڑتے ہیں۔[13] مزید برآں، ترقی پسند تحریک کے انقلابی نظریے کو دیکھتے ہوئے، اس کے کام - جیسا کہ گروپ میں اس کے ساتھیوں نے - صنفی تعلقات اور مردوں اور دوسری عورتوں کے ذریعہ خواتین پر ظلم، [14] خواتین میں جدیدیت پسندانہ شناخت کی نشوونما کے ساتھ ساتھ مزید مضر اثرات جیسے پسماندہ خواتین پر غربت اور ظلم کا بھی جائزہ لیا۔ [15]

زرد گلاب (1981ء) اور اللہ دے بندہ لے (1984ء) ان کے دو مختصر کہانیوں کے مجموعے تھے جو بعد از مَرگ شائع ہوئے۔[4]

بعد کی زندگی[ترمیم]

رضیہ کے شوہر 1956ء تک پاکستان کی جیل میں تھے، جس کے بعد وہ بھارت واپس آگئے اور لکھنؤ میں اپنے خاندان کے ساتھ شامل ہوگئے۔ 1964ء میں وہ دہلی چلے گئے۔ سجاد کا انتقال 1973ء میں سوویت یونین میں ہوا۔[8]

رضیہ سجاد ظہیر کا انتقال 18 دسمبر 1979ء کو دہلی میں ہوا۔[7]

قلمی خدمات[ترمیم]

درج ذیل کتابیں رضیہ سجاد ظہیر کے ادبی خدمات میں شامل ہیں:[7]

  • سر شام (1953ء)
  • کانٹے (1954ء)
  • سمن (1963ء)
  • Allah Megh De. 1973. ISBN 978-81-7587-511-1. 
  • زدر گلاب (1981ء)
  • اللہ دے بندہ لے (1984ء)
  • نہرو کا بھتیجا (1954ء)
  • سلطان زین العابدین بڈشاہ

اعزازات[ترمیم]

  • سوویت لینڈ نہرو ایوارڈ (1966ء)۔[16]
  • اتر پردیش ساہتیہ اکادمی ایوارڈ (1972ء)۔[4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Salman 2018.
  2. SA 1961, p. 410.
  3. ^ ا ب پ ت Mahmood 2020a.
  4. ^ ا ب پ ت ٹ Tharu & Lalita 1993, p. 144.
  5. Gopal 2009, p. 142.
  6. Gopal 2005, p. 21.
  7. ^ ا ب پ Naeem 2019.
  8. ^ ا ب پ Mahmood 2020b.
  9. Husain 1972, pp. 146-147.
  10. Rao 2004, p. 165.
  11. Husain 1963, p. 145.
  12. Machwe 1977, p. 148.
  13. Tharu & Lalita 1993, p. 82.
  14. Gopal 2005, p. 31,68.
  15. Singh 2006, p. 256.
  16. Machwe 1977, p. 145.

کتابیات[ترمیم]

  • Gopal، Priyamvada (2005). Literary Radicalism in India: Gender, Nation and the Transition to Independence. Psychology Press. ISBN 978-0-415-32904-0. 
  • Gopal، Priyamvada (2009). The Indian English Novel: Nation, History, and Narration. Oxford University Press. ISBN 978-0-19-954437-0. 
  • Husain، S. Ehtesham (1963). "Urdu Literature—1962". Indian Literature. 6 (2). JSTOR 23329422. 
  • Husain، S. Ehtesham (1972). "Urdu Literature—1971". Indian Literature. 15 (4): 142–149. JSTOR 24157192. 
  • Machwe، Prabhakar (1977). "Prominent Women Writers In Indian Literature After Independence". Journal of South Asian Literature. 12 (3/4): 145–149. JSTOR 40872164. 
  • Mahmood، Nazir (5 جنوری 2020a). "Raziya, Shaukat, and the PWA – Part I". The News International. 
  • Mahmood، Nazir (6 جنوری 2020b). "Raziya, Shaukat, and the PWA – Part II". The News International. 
  • Naeem، Raza (18 دسمبر 2019). "Razia Sajjad Zaheer: The forgotten virtuoso of Urdu literature". The Express Tribune. 
  • Rao، D. S. (2004). Five Decades: The National Academy of Letters, India: A Short History of Sahitya Akademi. Sahitya Akademi. ISBN 978-81-260-2060-7. 
  • "Razia Sajjad Zaheer". Who's Who of Indian Writers. Delhi: Sahitya Akademi. 1961. 
  • Salman، Peerzada (29 نومبر 2018). "All about mother". Dawn. 
  • Singh، V. P. (2006). "Emerging From the Veil: A Study of Selected Muslim Women's Feminist Writing From the Indian Subcontinent". In Prasad، Amar Nath؛ Joseph، S. John Peter. Indian Writing In English: Critical Ruminations Part 2. Sarup & Sons. ISBN 978-81-7625-725-1. 
  • Tharu، Susie J.؛ Lalita، K.، ویکی نویس (1993). Women Writing in India: The twentieth century. Feminist Press at CUNY. ISBN 978-1-55861-029-3.