روسی سلطنت کے پوگروم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
تصویر جس کے بارے مانا جاتا ہے کہ متاثرین کی ہے، زیادہ تر یہودی بچے ہیں جو 1905ء کے یکاٹرینوسلاو (موجودہ ڈنیپرو )

روسی سلطنت میں سام مخالف پوگروم ( روسی: Еврейские погромы в России ؛ عبرانی: הסופות בנגבہا-سوفٹ با- نیگیو ؛ ادب "جنوبی طوفان")سے مراد 19 ویں صدی میں شروع ہونے والے یہودیوں کے خلاف بڑے پیمانے پر، متعین اور دنگے تھے ۔ 1835ء-1791ء کے دوران روسی سلطنت کے یہودی آبادی والے پولستانی-لتھوینیائی دولت متحدہ کے علاقوں پر تسلط حاصل کرنے کے بعد پوگروم تواتر سے ہونے لگے۔ یہ علاقے روسی بادشاہت کی جانب سے "تحدیدی آبادکاری " نامزد کیے گئے تھے، جن میں یہود کو بے دلی سے رہنے کی اجازت دی گئی تھی اور انہی علاقوں کے اندر بڑے پیمانے پر پوگروم رونما ہوئے۔ زیادہ تر یہود کو سلطنت کے دیگر حصوں میں منتقل ہونے کی ممانعت تھی تا حدیکہ وہ روسی راسخ الاعتقاد عیسائت قبول نہ کر لیتے ۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

  • روسی سلطنت میں انمادیمزم
    • مشرقی آرتھوڈوکس اور یہودیوں کے درمیان تعلقات
  • سوویت یونین میں انسٹی ٹیوٹ
  • روسی سلطنت میں یہودیوں کے خلاف جنگجوؤں کے خلاف برطانوی رد عمل
  • انگلینڈ میں یہودیوں کی آزمائش # روس میں پگرم
  • روس میں یہودیوں کی تاریخ اور سوویت یونین
  • یہودی آزادی

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. "ترجمہ سکھلائی".