عبرانی زبان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبرانی
עִבְרִית
Temple Scroll.png
عبرانی زبان میں ایک صحیفہ
مقامی اسرائیل
عبرانی
رسمی حیثیت
دفتری زبان
Flag of Israel.svg اسرائیل
زبان رموز
آیزو 639-1he
آیزو 639-2heb
آیزو 639-3heb

عبرانی زبان (عبرانی: עִבְרִית، نقحرعِڤْرِيتْ‎) افریقی ایشیائی خاندانِ زبان کی ایک سامی زبان ہے۔ اسرائیل میں 48 لاکھ افراد یہ زبان بولتے ہیں۔ عبرانی یہودیوں کی مذہبی زبان ہے۔ اسرائیل میں عربی کے ساتھ عبرانی بھی سرکاری زبان کا درجہ رکھتی ہے۔ یہ عبرانی رسمِ خط میں دائیں سے بائیں کی طرف اِرقام کی جاتی ہے۔ [1]

الفاظ اور طرزِ تحریر[ترمیم]

حرف حروف کے نام سٹینڈرڈ اسرائیلی
تلفظ
دیگر اسرائیلوی عبرانی
تلفظ
یدیش زبان / اشکنازی عبرانی
تلفظ
اردو حروف[2] نقلحرفی عبرانی[3]
א ا اَلیْف אָלֶף /ˈalef/   /ˈalɛf/
בּ ب بئیت בֵּית /bet/   /bɛɪs/
ב ڤ ڤئیت בֵית /vet/ /vɛɪs/
ג گ گِیمَل גִּימל /ˈɡimel/   /ˈɡim:ɛl/
ד د دَلیْت דָּלֶת /ˈdalet/ /ˈdaled/ /ˈdalɛs/
ה ہ ہہ הֵא /he/ /hej/ /hɛɪ/
ו و وَو וָו /vav/   /vɔv/
ז ز زَیِن זַיִן /ˈza.in/ /ˈzajin/
ח خ[4] خئیت חֵית /ħet/ /χet/ /χɛs/
ט ط طئیت טֵית /tet/   /tɛs/
י ی یود יוֹד /jod/ /jud/ /jud/
כּ ک کَف כַּף /kaf/   /kɔf/
כ כַף /χaf/ /χɔf/
ךּ کَف سوفِیت כַּף סוֹפִית /kaf sofit/ /laŋɡɛ kɔf/
ך כַף סוֹפִית /χaf sofit/ /laŋɡɛ χɔf/
ל ل لَمیْد לָמֶד /ˈlamed/   /ˈlamɛd/
מ م مئم מֵם /mem/   /mɛm/
ם مئم سوفِیت מֵם סוֹפִית /mem sofit/ /ʃlɔs mɛm/
נ ن نُون נוּן /nun/   /nun/
ן نُون سوفِیت נוּן סוֹפִית /nun sofit/ /laŋɡɛ nun/
ס س سَمیْک ְסָמֶך /ˈsameχ/   /ˈsamɛχ/
ע ع عَیِن עַיִן /ˈʔa.in/ /ˈajin/
פּ پ پہ פֵּה /pe/ /pej/ /pɛɪ/
פ ف فہ פה /fe/ /fej/ /fɛɪ/
ף پ پہ/فہ سوفِیت פֵּא/פה סוֹפִית /pe sofit/ /pej sofit/ /laŋɡɛ fɛɪ/
צ ص صَدِی، صدیق צַדִי, צדיק /ˈtsadi/   /ˈtsɔdi/، /ˈtsɔdik/، /ˈtsadɛk/
ץ صَدِی/صدیق سوفِیت צַדִי /צדיק סוֹפִית /ˈtsadi sofit/ /laŋɡɛ ˈtsadɛk/
ק ق قوف קוֹף /kof/ /kuf/ /kuf/
ר ر رئیش רֵישׂ /ʁeʃ/ /ʁejʃ/ /rɛɪʃ/
שׁ ش شِین שִׁין /ʃin/   /ʃin/
שׂ س سِین שִׂין /sin/   /sin/
תּז ت تَو תו /tav/ /taf/ /tɔv/، /tɔf/
ת תָיו, תָו /sɔv/، /sɔf/

مقام و استعمال[ترمیم]

عبرانی زبان نہ صرف یہودیوں بلکہ مسلمانوں اور مسیحیوں کے لیے بھی پچھلے زمانوں میں مقدّس رہی ہے چونکہ اس میں تورات کا نزول ہوا تھا اور بے شمار اسرائیلی انبیا اکرام ؑ اس زبان سے وابستہ ہے۔ تاہم آخری نبی محمد(صلی اللہ علیہ و الہ وسلم) کی بعثت کی بعد عربی زبان نقشہِ عالم پہ ایک عظیم زبان بن کر اُبھری اور اس سے نہ صرف سامی زبانوں بلکہ ہندوستانی اور ایرانی زبانوں پر بھی گہرا اثر پڑھ گیا تاہم عبرانی زبان فلسطین اور اسرائیل میں قائم رہی اور چونکہ عربی اس کی پڑوسی زبان ہے تو عربی اور عبرانی میں بے شمار مترادفات ہیں (مثلاً عربی میں: السلام علیکم، عبرانی میں: شالوم علیخم)۔ عبرانی جدید مسلم عالم میں اتنی اہمیت نہیں رکھتی تاہم دنیا میں یہودی اور کچھ مسیحی اسے سیکھتے اور استعمال کرتے ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. گیلاد تسوکرمن Zuckermann، Ghil'ad (2003). Language Contactس and Lexical Enrichment in Israeli Hebrew. England: Palgrave Macmillan. ISBN 9781403917232. 
  2. "Merriam Webster's Collegiate Dictionary". 20 مئی 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 جون 2014. 
  3. Kaplan, Aryeh. Sefer Yetzirah: The Book of Creation. pp. 8, 22.
  4. یہ عربی "ح" کے برابر ہے حالانکہ جدید عبرانی میں اس حرف کا تلفظ "خ" کے قریب ہے