یہودی فلسفہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مضامین بسلسلہ
یہودیت
Star of David.svg
Lukhot Habrit.svg  Menora.svg

باب یہودیت

یہودی فلسفہ یہودیت کے الہامی افکار اور یہودی فلسفیوں کے نوشتہ جات پر مشتمل ہے۔[1][2][3] یہودی ربیوں کے مطابق نبی ابراہیم سب سے پہلے فلسفی تھے۔ جبکہ غیر مذہبی اسکالر فیلو یودیس کو اولین اور قدیم ترین فلسفی قرار دیتے ہیں۔ یہودی فلسفہ تشریح بنی اسرائیل ماخذ کائنات اور خدا کی صفات و قدرت پر بحث کرتا ہے۔ اس کا بنیادی ماخذ عبرانی کی کتاب مقدس ہے جسے تنخ کہا جاتا ہے چنانچہ یہ کہا جا سکتا ہے کہ یہودی فلسفے کی عمارت تنخ کی بنیادوں پر کھڑی ہے۔ پہلی صدی قبل مسیح سے لے کر دوسری صدی عیسوی عہد تنائیم کے ربی اور ربیان عہد امورائیم جو دوسری صدی عیسوی سے چھٹی صدی عیسوی میں ہوئے، اسے بصیرت خدا شناسی اور فہم کائنات قرار دیتے ہیں۔ یہ موضوعات فکر جیسے وحدت، علم مطلق، قدرت مطلق، فیض رسانی پروردگار، برائے اسرائیل اوراس کے قبیلوں کے نصب العین ، مفہوم مسیح و نجات ، شریعت کی منشا و مقاصد اور ہلاخاہ پر مشتمل ہیں۔ تالمود کے علاوہ درمیشنا اور میدارش بھی یہودی مکتب فکر کے دانشوروں کے الہیاتی اور فلسفی مباحث میں شامل رہے۔ مزید یہ کہ کبالہ ، یہودیت کے سری علوم ، صوفی ازم اور خدا کی بعید الفہم تخلیقات بھی فلسفیوں اور دانشوروں کے زیر مطالعہ رہیں۔

قدیم یہودی فلسفہ[ترمیم]

فلسفہ کتاب مقدس[ترمیم]

قرون وسطی کے یہودی نوشتہ جات اور اسلامی احادیث کے مطابق، ابراہیم موحد تھے اور انہیں وحی الہی کے ذریعے توحید کی خبر دی گئی تھی۔ کتاب مزامیر داوود اور امثال سلیمان اس کے علاوہ کتاب ایوب یہودی فلسفے کے اہم ترین ماخذات ہیں۔

فیلو یودیس[ترمیم]

فیلو یودیس نے اپنی کتب میں دین یہودیت کے افکار اور فلسفہ یونانی کو باہم مرتبط کرنے کی کوشش کی ہے۔ اس نے کتاب مقدس کے انداز تفسیر کو اختیار کرتے ہوئے یہوداہ کو قدیم یونانی فلسفے کی شاخوں کے ساتھ ممتزج کیا اور یہودیت کو خدا، بشریت اور عالم امکان کی نئی جہتوں سے روشناس کر وایا۔

قرون وسطی[ترمیم]

قرون وسطی سے پہلے کے دور میں فلیون نے تعلیمات یہودیت کو فلسفہ یونان سے مربوط کرنے کی سعی کی؛ قرون وسطی میں یہودی فلسفے پر اسلامی ، معتزلی اور اشاعری اثرات غالب ہوئے۔ اس عہد کے یہودی فلسفیوں میں ابن میمون، یوسف بصیر، سلیمان بن جبریل، بحیہ بن پقودہ، یہودا لاوی، حسدائی کرسکاس اور یوسف آلبو کے نام ملتے ہیں۔

چودہویں اور پندرہویں صدی[ترمیم]

ان آخری صدیوں کے دوران یہودی فلسفے میں حیرت انگیز تبدیلیاں واقع ہوئیں۔ اور اس کی وجہ وہ صدمات اور سانحات ہیں جو چودہویں اور پندرہویں صدی کے دوران یہودی قوم پر گزرے۔ شم طوو بن طوو پہلا شخص تھا جس نے کہا کہ افکار ارسطو نے دین یہودیت کو نقصان پہنچایا، اس کے خیال میں یہودی فلسفہ قدیم یونانی فلسفے سے بھی خطرناک ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "" Saʿadyā Ben Yōsēf." Encyclopaedia of Islam, Second Edition"۔ Brillonline.com۔ 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 2012-10-22۔ 
  2. "Halakhic Latitudinarianism: David Hartman on the commanded life"۔ Etd.lib.fsu.edu۔ اصل سے جمع شدہ 2012-06-24 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 2012-10-22۔ 
  3. Google books) وثق شدہ بتاریخ 27 جون 2017 در وے بیک مشین
  • Wikipedia Contributers, "Jewish philosophy" from Wikipedia, From Wikipedia, the free encyclopedia