معرفت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

مقالات بہ سلسلۂ مضامین
تصوف
Allah.svg
تصوف کی تاریخ

عقائد و عبادات
خدا کی وحدانیت
قبولیت اسلام
نمـاز · روزہ · حج · زکوٰۃ
صوفي شخصیات
اویس قرنی · عبدالقادر جيلانی
رابعہ بصری · سلطان باہو · حسن بصری · ابن عربی· مولانا رومی
نظام الدین اولیاء
تصوف کی معروف کتابیں
احياء علوم الدين · کشف المحجوب · مكتوبات الرباني · مکاشفة القلوب · القول الجمیل فی بیان اسوالسبیل
صوفی مکاتبِ فکر
سنی صوفی · شـیعہ صوفی
سلاسلِ طریقت
قادریہ · چشتیہ · نقشبندیہ
سہروردیہ · مجددی · قادری سروری
قادری المنتہی
علمِ تصوف کی اصطلاحات
طریقت · معرفت · فناء · بقاء · لقاء
سالک · شیخ · طریقہ · نور · تجلی
وحدت الوجود · وحدت الشہود
مساجد
مسجد الحرام · مسجد نبوی
مسجد اقصٰی
تصوف کی نسبت سے معروف علاقے
دمشق · خراسان · بیت المقدس
بصرہ · فاس

بنیادی طور پر معرفت کا مطلب جاننا ، استعراف یا عارف کا ہوتا ہے اور اسے انگریزی میں gnosis کہا جاتا ہے جبکہ اسکی عملی پیروی یا تجربے کو معرفت یا انگریزی میں Gnosticism کہا جاتا ہے۔ گو معرفت عام زندگی میں اکثر استعمال کیا جانے والا لفظ ہے مگر اسکا علمی مفہوم اس مفہوم سے بہت وسیع ہے کہ جس میں یہ روزمرہ زندگی میں آتا ہے۔ اس میں مذہب سے زیادہ فلسفے اور انسانی نفسیات کی ملاوٹ شامل ہوچکی ہے اور اگر یہ کہا جاۓ کہ یہ دراصل وجدان اور تصوف سے بہت قریب ہے تو بیجا نہ ہوگا۔


مزید دیکھیۓ[ترمیم]