مندرجات کا رخ کریں

مسجد نبوی

متناسقات: 24°28′06″N 39°36′39″E / 24.468333°N 39.610833°E / 24.468333; 39.610833
آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
مسجد نبوی
ٱلْمَسْجِدُ ٱلنَّبَويّ
مسجد نبوی is located in سعودی عرب
مسجد نبوی
موجودہ سعودی عرب میں مقام
بنیادی معلومات
متناسقات24°28′06″N 39°36′39″E / 24.468333°N 39.610833°E / 24.468333; 39.610833
مذہبی انتساباسلام
ملکسعودی عرب
انتظامیہحکومت سعودی عرب
ویب سائٹwmn.gov.sa
تعمیراتی تفصیلات
نوعیتِ تعمیرمسجد
طرز تعمیرکلاسیکی اور معاصر اسلامی طرز تعمیر؛ عثمانی طرز تعمیر؛ اسلامی طرز تعمیر
تاریخ تاسیس18 ربیع الاول 1 ہجری ، 622 عیسوی
تفصیلات
گنجائش600,000 (حج کے دوران 1,000,000 تک اضافہ)
گنبدسبز گنبد (مرکزی گنبد)، 170 سیسہ گنبد، 27 گول گنبد
گنبد کی اونچائی (خارجی)سبز گنبد: 8.88 میٹر منقولہ گنبد: 3.55 میٹر
مینار10
مینار کی بلندی105 میٹر (344 فٹ)

170PX

بسلسلہ مضامین:
اسلام

مسجد نبوی دنیا کی سب سے بڑی مساجد میں سے ایک ہے اور اسلام کا دوسرا مقدس ترین مقام ہے۔ مکہ مکرمہ میں مسجد حرام مسلمانوں کے لیے مقدس ترین مقام ہے جبکہ بیت المقدس میں مسجد اقصی اسلام کا تیسرا مقدس مقام ہے ۔ مسجد نبوی سعودی عرب کے شہر مدینہ منورہ میں واقع ہے۔ تاریخ میں مسجد نبوی میں کئی بار توسیع کی گئی جن میں خلفائے راشدین، خلافت امویہ، خلافت عباسیہ، سلطنت عثمانیہ اور آخر کار سعودی ریاست کے دور میں توسیع ہوئیں۔ سعودی دور میں اس کی سب سے بڑی توسیع 1994ء میں ہوئی تھی۔ مسجد نبوی جزیرہ نما عرب میں پہلی جگہ ہے جسے 1909ء میں برقی چراغوں کے استعمال سے روشن کیا گیا تھا۔ [2] عمر بن عبدالعزیز کی طرف سے 91 ہجری میں توسیع کے بعد حجرہ نبوی کو مسجد میں شامل کیا گیا[3] (جو اس وقت " پیغمبر کے حجرے" کے نام سے جانا جاتا ہے جو مسجد کے جنوب مشرقی کونے میں واقع ہے) جس میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم، ابوبکر صدیق اور عمر بن خطاب کو دفن کیا گیا تھا،[4] اور اس پر گنبد خضریٰ بنایا گیا تھا، یہ مسجد نبوی کے سب سے نمایاں نشانیوں میں سے ایک ہے۔ مسجد نبوی نے سیاسی اور سماجی زندگی میں ایک اہم کردار ادا کیا، کیونکہ یہ ایک سماجی مرکز، عدالت اور مذہبی درسگاہ کے طور پر کام کرتی تھی۔ مسجد نبوی مدینہ منورہ کے مرکز میں واقع ہے، جس کے ارد گرد بہت سے ہوٹل اور پرانے بازار ہیں۔ جو لوگ یہاں حج یا عمرہ کرتے ہیں وہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر کی بھی زیارت کرتے ہیں۔

تاریخ اور تعمیر

مسجد الحرام کے بعد دنیا کی سب سے اہم مسجد ”مسجد نبوی“ کی تعمیر کا آغاز 18 ربیع الاول سنہ کو ہوا۔ حضور اکرم ﷺ نے مدینے ہجرت کے فوراً بعد اس مسجد کی تعمیر کا حکم دیا اور خود بھی اس کی تعمیر میں بھر پور شرکت کی۔ مسجد کی دیواریں پتھر اور اینٹوں سے جبکہ چھت درخت کی لکڑیوں سے بنائی گئی تھی۔ مسجد سے ملحق کمرے بھی بنائے گئے تھے جو آنحضرت ﷺ اور ان کے اہل بیت اور بعض اصحاب رضی اللہ تعالٰی عنہم کے لیے مخصوص تھے ۔

مسجد نبوی جس جگہ قائم کی گئی وہ دراصل دو یتیموں کی زمین تھی۔ان کے نام سہل اور سہیل تھے۔سیرت ابن ہشام جلد دوم ورثاء اور سرپرست اسے ہدیہ کرنے پر بضد تھے اور اس بات کو اپنے لیے بڑا اعزاز سمجھتے تھے کہ ان کی زمین شرف قبولیت پا کر مدینہ منورہ کی پہلی مسجد بنانے کے لیے استعمال ہو جائے مگر محمدﷺ نے بلا معاوضہ وہ زمین قبول نہیں فرمایا، دس دینار قیمت طے پائی اور آپ ﷺ نے حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ تعالٰی عنہم کو اس کی ادائیگی کا حکم دیا اور اس جگہ پر مسجد اور مدرسہ کی تعمیر کا فیصلہ ہوا۔ پتھروں کو گارے کے ساتھ چن دیا گیا۔ کھجور کی ٹہنیاں اور تنے چھت کے لیے استعمال ہوئے اور اس طرح سادگی اور وقار کے ساتھ مسجد کا کام مکمل ہوا۔ مسجد سے متصل ایک چبوترا بنایا گیا جو ایسے افراد کے لیے دار الاقامہ تھا جو دوردراز سے آئے تھے اور مدینہ منورہ میں ان کا اپنا گھر نہ تھا۔ آپﷺ نے اپنے ہاتھ سے مسجد نبوی کی تعمیر شروع کی ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے سنہ [5] 1 ہجری بمطابق 622ء میں 18 ربیع الاول کے مہینے میں مسجد کی بنیاد رکھی اور اس وقت اس کی لمبائی تقریباً 35 میٹر اور چوڑائی 30 میٹر تھی اور اس کا رقبہ 1050 مربع میٹرتھا۔ اس کی چھت تقریباً 2.5 میٹر اونچی تھی۔ مسجد کے ستون کھجور کے تنے سے بنے ہوئے تھے، اس کی چھت کھجور کے پتوں (کھجور کی شاخوں) سے بنی تھی، اس کی بنیاد پتھروں سے ہوئی تھی اور اس کی دیواریں اڈوبی (کچی اینٹیں جو آگ سے نہیں جلتی تھیں) سے بنی تھیں۔ کشادہ (صحن) بنایا گیا تھا ۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے خود پتھر اور اینٹیں اٹھائیں اور تعمیر میں حصہ لیا ۔ اس مسجد کے 3 دروازے بنائے گئے جن میں : رحمت کا دروازہ اور اسے عاتکہ کا دروازہ (مغرب کی طرف)، عثمان کا دروازہ کہا جاتا ہے اور اسے اب جبریل کا دروازہ کہا جاتا ہے جس سے نبی اکرم ﷺ داخل ہوتے تھے۔ مشرق کی طرف) اور پیچھے (جنوب کی طرف) ایک دروازہ بنایا اور مسجد [6] قبلہ بیت المقدس کی طرف بنایا۔ ایک دروازہ بند کر دیا گیا اور دوسرا دروازہ کھولا گیا جس کا رخ شمالی طرف تھا۔ [7] اسی طرح آپ نے اپنی بیویوں عائشہ بنت ابی بکر اور سودہ بنت زمعہ کے لیے دو گھر بنائے۔ [5] [8]

محمد بن اسماعیل بخاری نے اس کی تعمیر کا قصہ انس بن مالک سے ایک طویل حدیث میں بیان کیا ہے، جس میں وہ کہتے ہیں: "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد کی تعمیر کا حکم دیا، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد کی تعمیر کا حکم دیا۔ بنو نجار کی ایک جماعت آئی اور وہ آ گئے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اے بنو النجار، مجھے اپنی اس دیوار کا درجہ دو، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تو وہی تھا جو میں تم سے کہتا ہوں، وہاں مشرکین کی قبریں تھیں۔ اس میں کھنڈر تھے اور اس میں کھجور کے درخت تھے، دروازے کے دونوں طرف پتھر تھے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: انھوں نے اس پتھر کو حرکت دی جب وہ کانپ رہے تھے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ان کے ساتھ یہ کہہ رہے تھے: اے خدا، آخرت کی بھلائی کے سوا کوئی بھلائی نہیں، پس انصار اور مہاجرین کو فتح عطا فرما۔ [9] نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد کی تعمیر اور آرائش سے انکار کر دیا تھا جیسا کہ عبادہ بن صامت نے بیان کیا ہے کہ: انصار نے رقم جمع کی اور اسے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس لے کر آئے اور انھوں نے کہا: یا رسول اللہ: اس مسجد کو بنائیں اور اس کو سنواریں، کیوں کہ؟ ہم کب تک اس درخت کے نیچے نماز پڑھیں گے؟ اس نے کہا: مجھے اپنے بھائی موسیٰ علیہ السلام کے درخت کی خواہش نہیں ہے۔ [10] 7 ہجری بمطابق 628 ہجری میں محرم کے مہینے میں جنگ خیبر کے بعد اور مدینہ میں مسلمانوں کی تعداد میں ہجرت کے نتیجے میں اضافہ ہونے کی وجہ سے مسجد نبوی نمازیوں سے کھچا کھچ بھر گئی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کا رقبہ بڑھانے کا فیصلہ کیا تو اس کی چوڑائی میں 20 میٹر اور لمبائی میں 15 میٹر اضافہ ہوا تو اس کا رقبہ 2500 میٹر مربع ہو گیا اور یہ زمین عثمان بن عفان نے خریدی تھی۔ [11] مسجد جنوبی کی طرف سے اپنی سرحد پر قائم رہی اور شمالی طرف سے اس کی سرحد اس شاندار چھت والی عمارت کے ساتھ ختم ہونے تک تھی اور مغربی جانب سے، اس کی سرحد منبر کا پانچواں سلنڈر تھا، جس پر۔ اس پر لکھا تھا "مسجد نبوی کی سرحد، خدا ﷺ دعاؤں اور سلام اللہ علیہا،" اور اس کی چھت کی اونچائی تقریباً 3.5 میٹر تھی۔

کئی مسلم حکمرانوں نے اس میں توسیع اور تزئین و آرائش کا کام کیا۔ گنبد خضراء کو مسجد نبوی میں امتیازی خصوصیت حاصل ہے جس کے نیچے محمدﷺ، حضرت ابوبکر صدیق اور حضرت عمر فاروق کے روضہ مبارک ہیں۔ یہ مقام دراصل ام المومنین حضرت عائشہ کا حجرہ مبارک تھا۔ ریاست مدینہ میں مسجد نبوی کی حیثیت مسلمانوں کے لیے عبادت گاہ، کمیونٹی سینٹر، عدالت اور مدرسے کی تھی۔

مسجد کے درمیان میں عمارت کا اہم ترین حصہ محمدﷺ کا مزار واقع ہے جہاں ہر وقت زائرین کی بڑی تعداد موجود رہتی ہے۔ مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ یہاں مانگی جانے والی ہر دعا مقبول ہوتی ہے۔ خصوصاً حج کے موقع پر رش کے باعث اس مقام پر داخلہ انتہائی مشکل ہوجاتا ہے۔ اسی مقام پر منبر رسول بھی ہے۔ سنگ مرمر کا بنا حالیہ منبر عثمانی سلاطین کاتیار کردہ ہے۔

سعودی عرب کے قیام کے بعد مسجد نبوی میں کئی مرتبہ توسیع ہوئی لیکن شاہ فہد بن عبد العزیز کے دور میں مسجد کی توسیع کاعظیم ترین منصوبہ تشکیل دیا گیا جس کے تحت حضرت محمد ﷺ کے دور کے تمام شہر مدینہ کو مسجد کا حصہ بنادیا گیا۔ اس عظیم توسیعی منصوبے کے نتیجے میں مسجد تعمیرات کا عظیم شاہکار بن گئی۔

عمر بن خطاب کے دور میں

[[فائل:Al-Masjid_Al-Nabawi_Example_6.JPG|بائیں|تصغیر|نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں مسجد نبوی اور حجروں کا نمونہ اور اس دن قبلہ یروشلم کی طرف 17 ہجری میں اور اسلامی فتوحات اور اسلامی ریاست کی توسیع کے نتیجے میں مسلمانوں کی بڑی تعداد کی وجہ سے، خلیفہ عمر بن خطاب نے مسجد نبوی کی توسیع کی اور یہ مسجد نبوی کی پہلی توسیع تھی۔ چونکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں اس کی تعمیر اور توسیع سے کر ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ نے مسجد کے رقبے میں کوئی اضافہ نہیں کیا۔ جب عمر رضی اللہ عنہ نے خلافت سنبھالی تو انھوں نے کہا « "میں مسجد میں مزید اضافہ کرنا چاہتا ہوں اور اگر میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے نہ سنا ہوتا کہ : "مسجد کو بڑھایا جائے" تو میں اس میں کچھ اضافہ نہ کرتا۔   [12]

عمر بن خطاب نے مسجد کی توسیع کے لیے اردگرد مکانات خریدنا شروع کر دیے، سوائے ان مکانات کے جو امہات المؤمنین کے پاس تھے اور مسجد کے قبلہ کی طرف عباس بن عبد المطلب کے گھر کو بھی شامل کرنا تھا۔ جسے بعد میں حضرت عباس نے مسجد نبوی کی توسیع کے لیے عطیہ کر دیا تھا۔ [13] دور نبوی اور عثمانی دور کے درمیان درمیانی برآمدہ جو تقریباً 5 میٹر لمبا تھا، شمال کی جانب سے 15 میٹر اور مغربی جانب سے 10 میٹر بڑھ گیا اور مشرقی جانب سے نہیں بڑھا۔ شمال سے جنوب تک مسجد کی لمبائی 70 میٹر اور چوڑائی 60 میٹر اور اس کی چھت کی اونچائی تقریباً 5.5 میٹر تھی۔ حضرت عمر نے اس کے لیے چھ دروازے بنائے تھے: پرانے تین جو مغربی دیوار کے شروع میں ’’امن کا دروازہ‘‘ اور مشرقی دیوار میں ’’عورتوں کا دروازہ‘‘ اور شمالی دیوار میں ایک دروازہ کھولا۔ عمر کے دور میں کنکریاں (چھوٹے پتھروں) کو جو عقیق سے بنے تھے مسجد نبوی میں پھیلائی گئیں۔ [14] عمر کی توسیع کے لیے ابوبکر کے گھر کو مسجد میں شامل کرنے کی ضرورت تھی جو مغربی جانب مسجد سے متصل تھی۔ [13] عمر بن خطاب نے مسجد کے باہر "البطحہ" کے نام سے ایک جگہ بنائی گئی تھی اور آپ نے فرمایا: "جو کوئی مسجد کے باہر آواز بلند کرے گا یا شعر پڑھنا چاہتا ہے تو وہ یہاں سے نکل جائے۔" [15] البطحہ کو مشرقی جانب، پچھلے حصے میں بنایا گیا تھا۔

عثمان بن عفان کے دور میں

[[فائل:Al-Masjid_Al-Nabawi_Example_4.JPG|بائیں|تصغیر|مسجد نبوی اور حجروں کا ایک نمونہ جو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں ان کے قبلہ کعبہ کی طرف ہو گیا]] مسجد نبوی میں عمر بن خطاب کی توسیع کے بعد حضرت عثمان کے دور میں نمازیوں اور زائرین کے لیے جگہ کم پڑ گئی، لہذا خلیفہ الراشد عثمان بن عفان نے 29 ہجری 649ء میں ربیع الاول کے مہینے میں مسجد نبوی کی توسیع کی۔ توسیع کا کام محرم کے پہلے مہینے میں 30 ہجری میں شروع ہوا اور یہ 10 ماہ میں مکمل ہوا۔ [16] مسجد نبوی کے جنوبی جانب 5 میٹر اور مغربی جانب اس میں مزید 5 میٹر کا اضافہ کیا گیا۔ منبر اور شمالی جانب بھی 5 میٹر کا اضافہ کیا گیا۔ حضرت عثمان نے کندہ شدہ پتھروں اور پلاسٹر سے مسجد نبوی کے ستون بنائے اور مسجد کی چھت کو ساگوان کی لکڑی سے ڈھانپ دیا۔ مسجد کے ایک حصے میں اینٹیوں کا ایک کمرہ بھی بنایا جس میں لوگ عمر بن خطاب کے خوف سے نماز پڑھتے تھے۔ [16] مسجد نبوی کی توسیع کا تعمیراتی کام میں حضرت عثمان رضی اللّٰہ عنہ خود شروع کیا اور اس کی خود نگرانی کی۔ [17]

امویوں کے دور میں

مسجد نبوی کا نظام اسی طرح چلتا رہا جیسے اسے خلیفہ عثمان بن عفان نے بنایا تھا اور اس کے بعد علی بن ابی طالب ، معاویہ بن ابو سفیان اور ان کے بیٹے یزید بن معاویہ اور مروان بن حکم اور ان کے بیٹے عبد الملک بن مروان نے اس میں کچھ اضافہ نہیں کیا اور جب ولید بن عبد الملک نے عمر بن عبد العزیز کو مدینہ منورہ اور مکہ کا گورنر بنایا ، تو ولید بن عبد الملک نے عمر بن عبد العزیز کے پاس ایک قاصد بھیجا اور انھیں حکم دیا کہ مسجد نبوی کی تعمیر اور اس کے چاروں اطراف کی توسیع کی جائے۔ [18] چنانچہ عمر بن عبد العزیز نے امہات المؤمنین کے کمرے اور مسجد کے آس پاس کی دوسرے مکانات خرید لیے (جیسے جنوبی جانب حفصہ بنت عمر کا گھر اور تین منزلیں جو عبدالرحمٰن بن عوف کی تھیں) [19] ۔ [19] 88 ہجری بمطابق 707ء میں ربیع الاول کے مہینے میں تعمیر کا آغاز کیا اور 710ء بمطابق 91 ہجری میں مکمل کیا۔ عمر بن عبد العزیز نے مسجد نبوی کی تعمیر کے تمام مراحل کی نگرانی خود کی تھی۔ اور وہ امہات المؤمنین کے کمروں میں داخل ہوا جو مسجد کے مشرق اور شمالی جانب واقع ہیں اور اس سے پہلے لوگ مسجد کی تنگی کی وجہ سے ان کمروں میں جمعہ کی نماز ادا کرنے کے لیے داخل ہوتے تھے۔ اور شمال کی طرف 20 میٹر۔ [19] اس کی عمارت کندہ پتھروں سے بنی تھی اور اس کے مستول کندہ پتھروں سے بنے ہوئے تھے اور یہ لوہے اور سیسہ کے ستونوں سے بھرا ہوا تھا۔ اس توسیع میں پہلی بار مسجد کے مینار متعارف کرائے گئے، عمر بن عبد العزیز نے مسجد کے چاروں کونوں پر تقریباً 30 میٹر اونچے اور 4 میٹر چوڑے 4 مینار بنوائے تھے، جن میں سے ایک سلیمان بن عبدالملک کے دور میں منہدم ہو گیا تھا۔ [19] اسی طرح پہلی بار مسجد میں محراب بھی بنایا گیا اور مسجد کی دیواروں کو سنگ مرمر اور سونے کی پچکاری سے سجایا گیا اور چھت کی گولائی، دروازوں کی چوکھٹیں، مشرقی جانب توسیع اور مسجد کی دو چھتوں کی تعمیر اور مسجد کے لیے 20 نئے دروازے کھولنا، جن میں 8 دروازے مشرقی جانب 8 مغربی جانب اور شمال کی طرف 4 دروازے شامل تھے۔ [20]

عباسی دور میں

خلافت عباسیہ کے دور میں ابوجعفر المنصور نے مسجد نبوی کی توسیع کا منصوبہ بنایا لیکن مسجد میں کچھ اضافہ کیے بغیر ہی وفات پا گئے۔ پھر اس کے بعد المہدی باللہ نے 160 ہجری میں حج کے دوران مدینہ منورہ کا دورہ کیا اور اس میں اضافے کا حکم دیا تو اس نے اسے شمالی جانب سے 30 میٹر بڑھا دیا۔ اس نے قبلہ کی جانب اور مشرق و مغرب میں کچھ اضافہ نہ کیا۔ [21] تعمیراتی کام 161 ہجری بمطابق 778ء کو شروع ہوا اور 4 سال تک جاری رہا اور یہ 782ء بمطابق 165 ہجری میں مکمل ہوا۔ [22] عباسی خلفاء نے مسجد نبوی کی دیکھ بھال جاری رکھی اور انھوں نے اس کی تزئین و آرائش کی۔ لیکن 654 ہجری میں مسجد نبوی میں پہلی بار آتشزدگی کا واقع پیش آیا اور اس آگ نے مسجد کو جلا ڈالا۔ 654 ہجری میں رمضان المبارک کے پہلے جمعہ کی رات کو مسجد نبوی میں پہلی بار آگ اس وقت لگی جب مسجد کا ایک خادم مسجد کے میناروں کے لیے چراغ نکالنے کے لیے شمال مغربی جانب کے گودام میں داخل ہوا۔ اس نے اپنے پاس موجود چراغ کو بجھائے بغیر گودام میں چھوڑ دیا۔ جب گودام کو آگ نے اپنی لپیٹ میں لے لیا تو مدینہ کے لوگ جمع ہو گئے اور اسے بجھانے کی کوششیں کرتے رہے لیکن اسے بجھانے میں ناکام رہے، آگ نے مسجد کی تمام چھت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا اور مسجد نبوی میں موجود ہر چیز کو تباہ کر دیا۔ جس میں منبر، دروازے، الماریاں، کھڑکیاں، کتابیں اور کمرے کی چادریں جس پر گیارہ پردے تھے، کمروں کی چھتیں بھی گر گئی۔ [23] اس واقعے کے بعد عباسی خلیفہ المستعصم باللہ نے 655 ہجری بمطابق 1257ء میں مسجد نبوی کی تعمیر نو کا حکم دیا اور جب تعمیر کا کام شروع ہوا تو کمرے میں موجود قبروں پر چھتوں سے جو گرا تھا اسے ہٹانے کا ارادہ کیا۔ لیکن مزدوروں نے ایسا کرنے کی ہمت نہ کی اور وہ خلیفہ المستعصم باللہ کے جواب کا انتظار کرتے رہے لیکن ان کے پاس کوئی جواب نہ آیا کیونکہ بغداد پر تاتاریوں نے حملہ کر دیا تھا اور انھوں نے بغداد پر قبضہ کر لیا۔[23]

مملوک دور میں

مسجد کا جنوبی حصہ، سبز گنبد دکھا رہا ہے، جسے پہلی بار سلطان ناصر محمد بن قلاوون نے 678 ہجری میں تعمیر کیا تھا اور پھر سلطان سیف الدین قایتبائی نے اس کی تجدید کی تھی۔ بائیں طرف وہ گنبد بھی نظر آتا ہے جسے سیف الدین قایتبائی نے عثمانی محراب پر بنایا تھا۔

656ھ میں تاتاریوں کے ہاتھوں خلیفہ المستعصم باللہ کے قتل کے ساتھ عباسی خلافت کے خاتمے کے بعد مدینہ کی دیکھ بھال کا معاملہ مصر کی ریاست مملوک کی طرف چلا گیا، چنانچہ مصر کے بادشاہ المنصور نور الدین علی بن ایبک نے اور یمن کے بادشاہ المظفر یوسف بن عمر بن علی بن رسول کی مدد سے تعمیر نو کا عمل مکمل کیا۔ 657 ہجری میں مصر کے بادشاہ المنصور نور الدین کو معزول کر دیا گیا اور اس کی جگہ سیف الدین قطز نے اقتدار سنبھالا تو اس نے اسی سال مسجد نبوی میں کام شروع کروایا۔ لیکن اسے جلد ہی قتل کر دیا گیا اور اس کے بعد مصر کی حکومت بیبرس نے سنبھالی۔ اس نے مسجد نبوی کی توسیع کے لیے لکڑی، لوہا، سیسہ اور 53 کاریگر شہزادہ جمال الدین محمد الصالحی کی زیر نگرانی بھیجے۔ بیبرس نے انھیں مشینری اور اخراجات کے سامان فراہم کرنا شروع کیا اور مسجد کا کام مکمل کروایا۔ [24] 678 ہجری میں ناصر محمد بن قلاوون کے دور میں، جب ایک لکڑی کا گنبد (بعد میں گنبد خضریٰ کے نام سے جانا جاتا ہے) رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے کے اوپر بنایا گیا، جو مربع شکل کا تھا ۔ گنبد کے نیچے اور اوپری حصے کے ستونوں پر لکڑی کھڑی کی گئی تھی۔ اس کے بعد 705 ہجری یا اور 706 ہجری میں سلطان محمد بن قولون نے مشرقی چھت اور مغربی چھت (یعنی مسجد کے صحن کے دائیں اور بائیں ایک) کی تجدید کی۔ 729 ہجری میں سلطان محمد بن قولون نے چھت میں دو پورٹیکو شامل کرنے کا حکم دیا۔ پھر ان میں نقص پیدا ہو گیا اور الاشرف سیف الدین برسبای نے ذی القعدہ میں 831 ہجری میں ان کی تجدید کی۔ اس کے بعد سیف الدین جقمق کے دور میں چھت اور مسجد کی دیگر چھتوں میں نقص پیدا ہوا اور اس کی مرمتی کا کام 853 ہجری میں شہزادہ بردبیک النصر الممر نے کرائی۔ . [24]

881 ہجری میں سیف الدین قایتبائی نے شمس الدین ابن الزمان کے ہاتھوں مسجد کی جامع تعمیر کا حکم دیا۔ لیکن 13 رمضان المبارک 886 ہجری بمطابق 1481ء کی رات کو مسجد نبوی میں دوسری بار آتشزدگی کا واقع پیش آیا۔ تیز بارش کی وجہ بجلی کی چمک مرکزی مینار سے ٹکرا گئی۔ اس شدید بجلی کی چمک کی وجہ سے موذن کا انتقال ہو گیا اور مسجد کے جنوب مشرق میں مرکزی مینار سے متصل چھت میں آگ بھڑک اٹھی مدینہ کے لوگ آگ بجھانے کے لیے جمع ہوئے لیکن وہ آگ بجھانے میں ناکام رہے۔ اس آگ نے مسجد کی تمام چھتوں ، دروازوں ، کتابوں کی الماریوں اور قرآن مجید کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔ [25] اس واقعے کے بعد سلطان سیف الدین قایتبائی نے مسجد کے لیے ایک جامع فن تعمیر کا منصوبہ شروع کیا۔ اس نے سینکڑوں معمار، بڑھئی، سنگ تراش، مجسمہ ساز اور لوہاروں کے علاوہ مشینری، گدھے اور اونٹ بھیجے، تاکہ اس کی تعمیر جلد سے جلد مکمل کی جا سکے۔ مسجد کے فن تعمیر کو بہترین طریقے سے 11 میٹر اونچائی تک پہنچایا گیا اور گنبد خضریٰ دوبارہ تعمیر کیا گیا جو حجرہ نبوی پر آگ لگنے سے پہلے موجود تھا۔ حجرہ نبوی کو اور مسجد کی دیواریں، منبر اور موذن کی جگہ کو سنگ مرمر سے بنایا گیا۔ حضرت عثمان کے دور کے تعمیر کردہ محراب کے اوپر ایک گنبد بھی بنایا اور باب السلام کے سامنے گنبد بھی بنوائے یہ گنبد سیاہ اور سفید سنگ مرمر کے تھے۔ . [25] [26] یہ فن تعمیر 1483 ہجری کی مناسبت سے 888 ہجری میں رمضان المبارک کے آخر میں مکمل ہوئی۔ [27]

عثمانیوں کے دور میں

مسجد کی جنوبی دیوار عثمانی فن تعمیر کا نشان ہے۔
سلطان عبدالمجید اول ، سلطنت عثمانیہ کے دوران مسجد نبوی کی سب سے بڑی اور سب سے زیادہ وسیع توسیع کا مالک
1908 میں عثمانی دور کے اختتام پر مسجد نبوی کی تصویر۔

عثمانی حکمرانوں نے 923 ہجری بمطابق 1517ء میں مملوک ریاست کے خاتمے کے بعد مسجد نبوی کا معاملہ اپنے ہاتھ میں لیا تو انھوں نے اس پر بہت زیادہ توجہ دی۔ ابتدائی دور میں انھوں نے مسجد نبوی کے مملوک فن تعمیر کو محفوظ کیا۔ اور جب بھی ضرورت پیش آئی اس کی مرمت اور بحالی کا کام کیا۔ عثمانی سلطان سلیمان اول نے سب سے پہلے مسجد نبوی کی مرمت کا کام انجام دیا، انھوں 946 ہجری میں مسجد کے سبز گنبد اور میناروں کے اوپر مملوک ہلال جو تا نبے کا تھا کو سونے سے چڑھے ہوئے ہلال میں تبدیل کر دیا۔ انھوں نے گنبد اور منبر پر ایک ہلال اور ہر بتی کے اوپر پانچ ہلال لگائے۔ 947 ہجری بمطابق 1540ء میں شمال مشرقی مینار (السنجریہ) کو منہدم کر کے سلیمانیہ مینار تعمیر کیا۔ اس کی بنیاد کی گہرائی 8.53 میٹر اور چوڑائی 4.59 میٹر تھی۔ سلطان نے عمارت کے لیے درکار تمام تعمیراتی سامان، اونٹوں اور جانوروں پر لے جانے کے ساتھ معماروں اور مجسمہ سازوں کی افرادی قوت بھی بھیجی اور انھیں ضرورت کے مطابق سامان اور دیگر اخراجات فراہم کیے۔ 17 محرم 948ھ بمطابق 13 مئی 1541ء کو سلطان نے حنفی محراب کی تعمیر نو کی۔ 974 ہجری بمطابق 1566ء میں مسجد نبوی میں مرمت اور بحالی کا کام شروع ہوا، جس میں سب سے اہم دروازہ رحمت کی پوری مغربی دیوار کی تعمیر نو تھی۔ اور مسجد نبوی کی مغربی جانب کی چھتوں کو چھوٹے گنبدوں سے بدل دیا گیا اور صحن کے گنبدوں کی تعمیر کی گئی۔ [28]

سلطان عبدالمجید اول کے دور میں مسجد کی سب سے بڑی توسیع کا آغاز 1849ء بمطابق 1265 ہجری میں شروع کیا گیا اور یہ توسیع 1277 ہجری بمطابق 1860ء میں اختتام پزیر ہوئی، اس فن تعمیر کا سلسلہ 13 سال جاری رہا۔ یہ فن تعمیر سب سے بڑی، بہترین اور خوبصورت توسیعات میں سے ایک تھا جو اس سے پہلے مسجد نبوی میں نہیں کی گئیں تھیں۔ اس تعمیر میں مسجد کی چھت مکمل طور پر گنبدوں سے ڈھک دی گئی جو 170 گنبدوں پر مشتمل تھی۔ چھتوں کے اوپر سبز گنبد، پھر عثمانی محراب کا گنبد، پھر باب السلام کا گنبد اور باقی گنبد اتنی ہی اونچائی پر ہیں ان میں سے کچھ کی کھڑکیاں شیشے سے ڈھکی ہوئی ہیں۔ گنبد قدرتی تصاویر، قرآنی آیات اور شاعرانہ تحریروں سے مزین ہیں۔ [29] قرآن کی سورتیں اور نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے نام القبلی مسجد کی دیوار پر عربی خط ثلث میں لکھے گئے تھے۔ [30] مسجد میں، سلطان عبدالمجید نے کاتبوں کو قرآن کی تعلیم دینے کے لیے اور شمالی جانب گوداموں کو شامل کیا اور مشرق میں یہ مرکزی (جنوب مشرقی) مینار سے تقریباً 2.6 میٹر بڑھ کر باب جبریل تک پہنچایا گیا۔ اور توسیع کا رقبہ 1293 مربع میٹر تک پہنچایا گیا۔ [30]

سعودی ریاست کے دور میں

پہلی سعودی توسیع

13 ربیع الاول 1372 ہجری بمطابق 1952ء کو شاہ عبدالعزیز آل سعود کے حکم سے مسجد کی توسیع کا کام شروع ہوا۔ مسجد نبوی کے اطراف سے زمینیں خریدیں گئیں اور مکانوں اور عمارتوں کو منہدم کرکے نئی تعمیر کے لیے تیار کیا گیا۔ مسجد کا کل رقبہ 16,326 مربع میٹر ہے جس میں 28,000 نمازیوں کی گنجائش ہے۔ تعمیر نو کے لیے شہر کے قریب پتھروں کا ایک کارخانہ قائم کیا گیا اور باقی مواد بحری جہازوں کے ذریعے ینبع کی بندرگاہ اور پھر بڑی گاڑیوں کے ذریعے شہر تک پہنچایا جاتا تھا۔ تعمیراتی مقاصد کے لیے بندرگاہ پر اتارے جانے والے مواد کی مقدار 30,000 ٹن سے زیادہ تھی۔ یہ توسیع 1375 ہجری کے اوائل میں مکمل ہوئی اور اس منصوبے کی لاگت 50 ملین سعودی ریال تھی۔ [31]

دوسری سعودی توسیع کے دوران تعمیر کیے گئے دروازوں کے اوپر "ان میں امن و سلامتی کے ساتھ داخل ہوں" کے الفاظ ہیں۔

یہ توسیع ایک مستطیل عمارت ہے جس کی لمبائی 128 میٹر اور چوڑائی 91 میٹر ہے۔ مشرقی جانب شاہ عبدالعزیز مغربی جانب شاہ سعود کا دروازہ کھولا گیا۔ شمالی طرف کے لیے 3 دروازے کھولے گئے جن میں عمر کا دروازہ اور عثمان کا دروازہ اور عبدالمجید کا دروازہ۔ تعمیر کے دوران کالموں کی تعداد 232 تک پہنچ گئی۔ چھت کو 12.55 میٹر کی اونچائی کے ساتھ مربعوں میں تقسیم کیا گیا۔ اس تعمیر کے دوران مسجد کے 5 میناروں کو منہدم کر دیا گیا تھا۔ جن میں سے 3 رحمت کے دروازے کے پاس اور دو مینار شمال کی جانب مشرقی اور مغربی کونوں میں بنائے گئے تھے، اب مسجد کے چاروں کونوں میں 4 مینار ہیں۔ [32] زائرین کی تعداد میں اضافے کے پیش نظر شاہ فیصل بن عبدالعزیز آل سعود نے مسجد الحرام کے مغرب میں نماز کے لیے جگہوں کی تیاری کا حکم دیا۔ اس علاقے کی عمارتوں کو گرا کر سایہ دار چھتریاں بنائی گئیں، جس کا رقبہ تقریباً 35,000 مربع میٹر تھا اور 80 چھتریاں لگائی گئیں تھی۔[33]

دوسری سعودی توسیع

مسجد کے اندرونی صحن میں نصب چھتریاں

1985ء بمطابق 1406 ہجری کے محرم کے مہینے میں، شاہ فہد بن عبدالعزیز آل سعود کے حکم سے مسجد نبوی کی سب سے بڑی توسیع پر کام شروع ہوا اور یہ 1994ء بمطابق 1414 ہجری میں مکمل ہوا۔ اس توسیع میں تقریباً 150,000 نمازیوں کی گنجائش کے لیے 82,000 مربع میٹر کا رقبہ شامل کیا گیا، اس طرح مسجد نبوی کا کل رقبہ 98,326 مربع میٹر تک پہنچ گیا اور 178,000 نمازیوں کی گنجائش ہو گئی اور زمین کا رقبہ 67,000 مربع میٹر ہے جس میں سے 58,250 مربع میٹر نماز کے لیے تیار کیا گیا ہے، اس میں 90,000 نمازیوں کی گنجائش ہوگی، نماز پڑھنے کے لیے کل رقبہ 156,576 مربع میٹر ہے، جس میں 268,000 نمازیوں کی گنجائش ہے۔ مسجد کے اطراف کا رقبہ 135,000 مربع میٹر جس میں سے 135,000 مربع میٹر نماز کے لیے تیار کیا گیا ہے، جس میں 430,000 نمازیوں کی گنجائش ہے، اس طرح نمازیوں کی کل تعداد 698,000 سے زائد ہو گئی ہے۔ [34]

نئے مینار بنائے گئے۔
اندر سے مسجد نبوی کی چھت
طلوع آفتاب کے وقت میناروں کی تصویر

کالموں اور گیلریوں کو پہلے سعودی توسیع کے انداز میں ڈیزائن کیا گیا تھا اور بیرونی دیواروں کو گرینائٹ سے ڈھانپ دیا گیا تھا۔ پہلی سعودی توسیع میں دو میناروں کے ساتھ 6 نئے میناروں کا اضافہ کیا گیا۔ توسیعی عمارت میں جدید نظام فراہم لگائے گئے تھے، جن میں کیمرا سسٹم، مستقل اور بیک اپ الیکٹرک پاور سسٹم، آگ بجھانے کا نظام اور سیوریج سسٹم شامل ہیں۔ ان نئے نظاموں اور سہولیات کی تفصیلات درج ذیل ہیں: [35]

  • زیریں منزل: اس منزل کو توسیعی عمارت میں مرکزی منزل سمجھا جاتا ہے اور اس کا فرش سنگ مرمر سے ڈھکا ہوا ہے اور اس کی اونچائی 12.55 میٹر ہے اور کالموں کی کل تعداد 2104 ہے، جس کی اونچائی 5.6 میٹر ہے۔ محراب، اٹلی اور اسپین سے درآمد کردہ سفید سنگ مرمر سے ملبوس ہے۔
  • خواتین کی مخصوص جگہیں: خواتین کے لیے شمال مشرقی جانب 16,000 مربع میٹر کے رقبے کے ساتھ جگہ مختص کی گئی ہے اور دوسرا شمال مغربی جانب جس کا رقبہ 8,000 مربع میٹر ہے۔
  • مسجد کے دروازے: اس توسیع سے پہلے مسجد کے 11 دروازے تھے، جن میں سے 5 نئی توسیعی عمارت کے اندر بن گئے، جو باب شاہ سعود، باب عمر، باب عثمان، باب عبد المجید اور باب شاہ عبد العزیز ہیں۔ داخلی راستوں کی تعداد 41 ہو گئی ہے جن میں سے کچھ ایک دروازے پر ، کچھ دو ملحقہ دروازوں، 3 دروازوں اور 5 ملحقہ دروازوں پر مشتمل ہیں۔ اس طرح کل تعداد 85 دروازے بنتی ہے۔ یہ داخلی دروازے کنکریٹ کے بنائے گئے تھے اور باہر سنگ مرمر اور گرینائٹ سے ڈھکے ہوئے تھے۔ ان پر لکڑی کے بڑے بڑے دروازے لگائے گئے تھے جو 3 میٹر چوڑے اور 6 میٹر اونچے تھے۔ دروازوں کی تیاری کے لیے سویڈن سے لکڑی درآمد کی گئی اور کانسی کی لیپ کردہ لکڑی کا استعمال کیا گیا۔ ہر دروازے کے اوپر پتھر کی تختی ہے جس پر یہ آیت لکھی ہوئی ہے: "اس میں سلامتی کے ساتھ داخل ہو جاؤ۔"
  • گول گنبد: قدرتی ہوا اور قدرتی روشنی کے مقصد کے ساتھ مسجد کے لیے کئی کھلے صحن رکھے گئے ہیں، کل 27 صحن ہیں جن کا رقبہ 324 مربع میٹر ہے۔ یہ گنبدوں سے ڈھکا ہوا تھا، جس میں توسیعی سطح سے 3.55 میٹر کی اونچائی، زیریں منزل کی سطح سے 16.65 میٹر کی اونچائی اور 7.35 میٹر کا اندرونی رداس تھا۔ ان میں سے ہر ایک کا وزن 80 ٹن تھا اور اندرونی حصہ لکڑی کی تہوں پر مشتمل تھا جس کی موٹائی 20 ملی میٹر تھی، جس میں سنہری فریموں کے اندر قیمتی پتھر جڑے ہوئے تھے، اس میں 67.5 کلو گرام سونا استعمال کیا گیا تھا۔ گنبد کو کھولنے اور بند کرنے لیے بجلی سے چلنے والے کمپیوٹرائزڈ آلات کے ذریعے کنٹرول کیا جاتا ہے اور گنبد کو کھولنے یا بند کرنے میں تقریباً ایک منٹ لگتا ہے۔
  • چھت کی توسیع : توسیع کا سطحی رقبہ تقریباً 67,000 مربع میٹر ہے جس میں سے 58,250 مربع میٹر نماز کے لیے وقف ہے اور اس میں 90,000 نمازیوں کی گنجائش ہے۔
  • مینار: توسیعی عمارت میں 6 مینار بنائے گئے جن میں سے 4 مینار چاروں کونوں میں اور دو مینار شمالی جانب وسط میں ہیں جن کی اونچائی ہلال کے ساتھ 103.89 میٹر ہے۔ ہر مینار 5 حصوں پر مشتمل ہے:
    • پہلا مینار مربع شکل کا ہے، اس کا پہلو 5.5 میٹر ہے اور اس کی اونچائی 27 میٹر ہے۔ یہ گرینائٹ پتھر سے ڈھکا ہوا ہے۔
    • دوسرا مینار شکل میں آکٹونل ہے۔ اس کا قطر میں 5.5 میٹر اور یہ 21 میٹر اونچا ہے۔ یہ رنگین مصنوعی پتھر سے ڈھکا ہوا ہے۔
    • تیسرا مینار شکل میں بیلناکار (Cylindrical)، قطر میں 5 میٹر اور اونچائی میں 18 میٹر ہے۔
    • چوتھا مینار بھی بیلناکار شکل میں ہے اور یہ 4.5 میٹر قطر ہے اور اونچائی 15 میٹر ہے۔
    • پانچواں مینار مخروطی شکل میں، ایک گنبد کے اوپر چڑھا ہوا ہے اور کانسی کے ہلال تک ختم ہوتا ہے یہ 6.7 میٹر لمبا، 4.5 ٹن وزنی، 14 قیراط سونے سے چڑھا ہوا ہے۔
  • دیواریں: یہ دو دیواروں پر مشتمل ہیں جو درمیان میں سے مضبوط کالموں سے جڑی ہوئے ہیں۔ اندرونی دیوار کی موٹائی 30 سینٹی میٹر اور بیرونی دیوار 30 سینٹی میٹر ہے۔ تمام دیواریں، محرابیں اور چھتیں مضبوط کنکریٹ سے بنی ہوئی ہیں اور اندر سے مصنوعی پتھر کی ٹائلوں سے ڈھکی ہوئی ہیں۔
  • سجاوٹ: پہلی سعودی توسیع میں ہر کام میں خوبصورتی لائی گئی۔ جن میں دیواروں کو خوبصورت بنانے کے لیے کارنیس، مینار، لوہے کا کام، تانبے کے لکڑی کے دروازے اور سنگ مرمر سے چڑھے ہوئے کام شامل ہیں۔
  • صحن: مسجد جنوبی، مغربی اور شمالی اطراف سے گھری ہوئی تھی جس کا رقبہ 235,000 مربع میٹر تھا اور اس کا کچھ حصہ حرارت کو منعکس کرنے والے سفید سنگ مرمر سے ڈھکا ہوا تھا اور باقی حصہ گرینائٹ اور مصنوعی پتھر سے ڈھکا ہوا تھا۔ اور اسے گرینائٹ سے ڈھکے 151 کالموں پر نصب روشنی یونٹس کے ذریعے روشن کیا گیا تھا۔ صحن میں تقریباً 430,000 نمازیوں کی گنجائش ہے۔ صحن میں بیت الخلاء کے داخلی راستے، روشنیاں اور زائرین کے لیے آرام کی جگہیں شامل ہیں۔ صحن کی دو زیر زمین منزلوں میں پارکنگ کی سہولت موجود ہے۔
  • تہ خانے: توسیعی کاموں میں 82,000 مربع میٹر کے رقبے اور 4.1 میٹر کی اونچائی کے ساتھ تہ خانے کے فرش کی تعمیر شامل تھی۔ پوری منزل سیرامکس سے ڈھکی ہوئی ہے۔ اسے خاص طور پر مختلف آلات جیسے ایئر کنڈیشنگ، وینٹیلیشن، پانی اور سیوریج ، الارم، آگ بجھانے کا نظام، پینے کے پانی کی سہولت، گنبد کنٹرول آلات، ساؤنڈ سسٹم، کیمرے وغیرہ کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا۔ اس منزل میں 8 داخلی دروازے ہیں۔
  • کار پارکنگ: یہ مسجد کے اردگرد اور صحن کے نیچے واقع ہے، یہ زمین کی سطح سے نیچے دو منزلوں پر مشتمل ہے۔ کاروں کے داخلے کے لیے 6 داخلی اور خارجی راستے مرکزی سڑکوں سے منسلک ہے۔ کار پارک میں تقریباً 4,444 گاڑیاں کھڑی کرنے کی گنجائش ہے۔
  • عوامی سہولیات کی عمارات: پارکنگ لاٹس میں 15 عمارتیں ہیں جن میں سے ہر ایک عمارت 4 منزلوں پر مشتمل ہے اور یہ پارکنگ لاٹ کو ایسکلیٹرز کے ذریعے بیرونی صحن سے جوڑتا ہے۔ ان عمارتوں میں پینے کے پانی کے 690 فوارے، 1890 بیت الخلاء اور 5600 وضو خانے شامل ہیں۔
  • عجائب گھر: سلطان اور شہزادے اس کے اندر رکھنے کے لیے قیمتی نایاب چیزیں تحفے میں دیتے تھے۔ 1981ء میں ان تمام چیزوں کو اس کمرے میں محفوظ کیا گیا تھا جسے مسجد نبوی کی لائبریری کے اوپر بنایا گیا تھا۔ اس عجائب گھر کا داخلی راستہ باب عمر کے اندرونی حصے کے دائیں جانب پرانے سعودی مینار کے نیچے بنایا گیا ہے۔
  • صحن کی چھتریاں: مسجد کے شمال میں ایک مستطیل صحن ہے جس میں زائرین کو دھوپ اور بارش کی شدت سے بچانے کے لیے 12 چھتریاں لگائی گئی تھیں۔ جب ان چھتریوں کو کھولا جاتا ہے تو وہ پانی کے فوارے کی شکل اختیار کر لیتی ہیں۔
  • جنوبی کیبن: قبلہ کی طرف ایک کیبن بنایا گیا تھا اور اس کی لمبائی 87.5 میٹر ہے، جس کا رقبہ 437.5 مربع میٹر ہے اور اس کے 4 دروازے ہیں۔

تیسری سعودی توسیع (عملدرآمد)

مسجد نبوی کے چوکوں کی چھت کا منصوبہ

سعودی فرمانروا عبداللہ بن عبدالعزیز آل سعود کے حکم سے اگست 2010ء میں مسجد نبوی کے صحنوں کا منصوبہ مکمل ہوا۔ یہ منصوبہ مسجد نبوی کے چاروں اطراف 143 ہزار مربع میٹر کے رقبہ کے ساتھ صحنوں کے ستونوں پر برقی چھتریوں پر مشتمل ہے۔ جس کا مقصد نمازیوں کو نماز کے دوران بارش اور سورج کی گرمی سے بچانا ہے۔ اس منصوبے میں مسجد نبوی کے صحنوں کے ستونوں پر 182 چھتریوں کی تیاری اور تنصیب شامل تھی۔ مشرقی صحنوں میں 68 چھتریوں کا منصوبہ اس کے علاوہ تھا۔ چھتریوں کی تنصیب کے بعد چھتریوں کی کل تعداد 250 ہو جائے گئی۔ اس منصوبے کی لاگت 4.7 بلین سعودی ریال لگائی گئی تھی۔ نئی چھتریوں کو خاص طور پر مسجد نبوی کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا۔ ہر چھتری میں تقریباً 800 افراد نماز ادا کر سکتے ہیں۔ تمام چھتریوں کی اونچائی 14.40 میٹر ہے۔ جبکہ تمام چھتریوں کی بند ہونے کی اونچائی یکساں طور پر 21.70 میٹر ہے۔ [36] جون 2012ء میں شاہ عبد اللہ نے مدینہ میں مسجد نبوی کی سب سے بڑی توسیع کو "شاہ عبد اللہ بن عبد العزیز پروجیکٹ برائے حرمت رسول کی توسیع" کے نام سے شروع کرنے کا حکم دیا۔ یہ توسیع تین مراحل میں کی جائے گی۔ پہلے مرحلے میں نمازیوں کی گنجائش کو بڑھایا جائے گا جبکہ دوسرے اور تیسرے مرحلے میں حرم کے مشرقی اور مغربی صحنوں کو کھلا کیا جائے گا تاکہ اضافی 800,000 نمازی عبادت کر سکیں۔ [37]یہ منصوبہ 2012ء میں حج کے موسم کے بعد شروع کیا گیا تھا اور اس منصوبے میں 100 سر زائد جائیدادیں مشرقی اور مغربی اطراف سے خریدیں گئیں۔ اس کا کل رقبہ تقریباً 12.5 ہیکٹر اور معاوضہ کا تخمینہ 25 ارب سعودی ریال لگایا گیا ہے۔ منصوبے کے مطابق مسجد نبوی کے ارد گرد عوامی راستوں اور سڑکوں میں بہتری لائی جائے گی۔[38]

مسجد نبوی کی توسیع

تاريخ میں مسجد نبوى كى توسيع نو مرتبہ ہوئى جس کی تفصیلات درج ذیل ہیں۔

توسيع توسيع كى تاريخ زمانہ حکمران كل علاقہ (مربع میٹر)[39] نسبة الزيادة دروازوں كى تعداد ميناروں كى تعداد ديگر
پہلى مرتبہ مسجد كو بنانے والے 1 هـ
622م
النبوی محمد بن عبد اللہ 1,050 - 3 - پہلى مرتبہ
پہلى توسيع 7 هـ
628م
نبوی محمد بن عبد اللہ 2,475 136% 3 - غزوة خيبر کے بعد مكمل ہوئى
دوسرى توسيع 17 هـ
638م
خلفاء راشدين عمر بن خطاب 3,575 44.4% 6 - كنواں
تيسرى توسيع 29 هـ - مطابق:30 هـ|30 هـ
649م - 650م
خلفاء راشدين عثمان بن عفان 4,071 13.9% 6 - جنوبى توسيع مكمل كى
چوتهى توسيع 88 هـ - مطابق:91 هـ|91 هـ
707م - 710م
اموى دور عمر بن عبد العزيز
بأمر من الوليد بن عبد الملك
6,440 58.2% 20 4 حجره نبوى كو مسجد مين داخل كيا
پہلی مرتبہ اذان كى جگہ بنوائى
پہلى مرتبہ كهوكهلى محراب بنوائى
پانچويں توسيع 161 هـ - مطابق:165 هـ|165 هـ
779م - 782م
عہد عباسيہ ابو عبد الله محمد المہدی 8,890 38% 24 3 -
ترميمات وإصلاحات 654 هـ
1275م
مكمل عہد عباسيہ
شروع عہد مملوكيہ
شروع كى المستعصم بالله
مكمل كى ظاہر بيبرس
8,890 0% 24 3 تمت بعد الحريق الأول للمسجد
ترميمات وإصلاحات 881 هـ
1476م
عہد مملوكيہ قايتباي 8,890 0% 24 3 -
چھٹی توسيع 886 هـ - 888 هـ
1481م - 1483م
عہد مملوكيہ قايتباي 9,010 1.3% 4 4 تمت بعد الحريق الثاني للمسجد
ترميمات وإصلاحات 947 هـ
1540م
عہد عثمانيه سليمان القانونی 9,010 0% 4 4 -
ساتويں توسيع (مجيديہ) 1265 هـ - 1277 هـ
1849م - 1860م
عہدعثمانىه عبد المجيد الأول 10,303 14.4% 5 5 عهد عثمانى كى بنيادى عمارة
آٹھویں توسيع 1372 هـ - 1375 هـ
1952م - 1955م
سعوديہ عبدالعزیز ابن سعود 16,327 58.5% 10 4 50 ملين سعودى ريال كى لاگت
نوىں توسيع 1406 هـ - 1414 هـ
1985م - 1994م
سعوديہ فہد بن عبدالعزیز 98,327
و235,000 چوك
502% 41 10

مسجد نبوی کے محراب

نبی کا محراب
عثمانی محراب ، جس میں امام اس وقت نماز پڑھ رہے ہیں۔
تہجد کے محراب کا مقام لکڑی کے پہیے سے ڈھکا ہوتا ہے۔
سلیمان یا حنفی محراب منبر کے دائیں جانب واقع ہے۔

یہ وہ عبادت گاہیں ہیں جن میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے بعد کے ائمہ نماز پڑھتے تھے۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم یا خلفائے راشدین کے دور میں یہ محراب نہیں تھا۔ محراب کو سب سے پہلے عمر بن عبد العزیز نے متعارف کرایا تھا۔

1- بیت المقدس کی جانب پیغمبر کا محراب :
مسجد نبوی کی تعمیر کے آغاز میں پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم 16 مہینے تک بیت المقدس کی طرف رخ کرکے لوگوں کی نماز پڑھاتے رہے۔ [40] [41]
2- محراب نبوی :
قبلہ کو بیت المقدس سے کعبہ کی طرف منتقل کرنے کے حکم کے نازل ہونے کے بعد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے دس دن تک "حجرہ عائشہ" کی طرف نماز پڑھی۔ مسجد نبوی جو کھجور کے درخت کے تنے کے مقام پر بنائی گئی تھی وہاں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نماز پڑھا کرتے تھے۔ [42] عمر بن عبدالعزیز کے دور میں مسجد کے بائیں جانب ایک محراب بنایا گیا۔ جسے "پیغمبر کا محراب" کہا جاتا تھا اور محراب کے مقام کی وجہ سے، جو اس میں سجدہ کرتا ہے، اس نے نماز میں اپنی پیشانی کو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے قدموں کی جگہ پر رکھا۔ [43] [44] موجودہ محراب کی تعمیر سن 888 ہجری میں مملوک سلطان سیف الدین قایتبائی کے زمانے کی ہے۔ محراب کی پشت پر کندہ تحریر جس میں لکھا ہے: "بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْمِ۔ مہربان اور خدا کی رحمتیں ہمارے آقا محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر ہوں، ابو النصر قائتبی، اللہ تعالیٰ ان کی حکومت کو ہمیشہ کے لیے قائم رکھے، حج کے مقدس مہینے کی تاریخ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی ہجرت کے آٹھ سو اٹھانوے سال میں"۔ اس کے بعد محراب کی تعمیر شاہ فہد بن عبدالعزیز آل سعود کے دور میں ہوئی۔[45]
3- عثمانی محراب :
یہ محراب حضرت عثمان بن عفان کے گھر کی جگہ ہے جنھوں نے اپنے دور حکومت میں اسے بنوایا تھا اور انھوں نے اپنی جائے نماز کے اوپر حجرہ نبوی بنوایا تھا اور اس خوف سے اس میں نماز پڑھتے تھے کہ کہیں عمر رضی اللہ عنہ کی طرح ان پر بھی کوئی مصیبت نہ آئے۔ عمر بن عبد العزیز نے سن 91 ھجری میں جنوبی دیوار میں ایک محراب بنوایا تھا اور اسے "عثمانی محراب" کہا گیا۔ [46]
4- تہجد کا محراب :
یہ رات کے وقت نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی نماز ادا کرنے کی جگہ تھی جہاں آپ ہر رات اپنی چٹائی بچھاتے تھے اور اکیلے میں تہجد کی نماز ادا کرتے تھے۔ یہ حجرہ نبوی (مقصورہ) کے شمال میں واقع ہے اور اس کے ارد گرد اور فاطمہ الزہرا کے گھر کے پیچھے "دقۃ الثوات" ہے۔ اس محراب کی تجدید سلطان سیف الدین قایتبائی کے دور میں 888 ہجری میں کی گئی۔ پھر مجیدی تعمیر کے دوران اس کی تجدید کی گئی تھی۔ محراب اب بھی موجود ہے، سوائے اس کے کہ اسے لکڑی کے پہیے سے ڈھانپ دیا گیا ہے جس میں قرآن مجید رکھے گئے ہیں۔ [47]
5- محراب فاطمہ :
یہ محراب تہجد کے سامنے حجرہ نبوی کے اندر، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے کمرے کے پیچھے واقع ہے۔ یہ سنگ مر مر سے بنا ہوا محراب ہے۔ [48]
6- محراب سلیمانی :
اسے "حنفی محراب" کہا جاتا ہے اور یہ منبر کے مغرب میں جہاں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کھڑے ہوتے تھے، کے دائیں طرف ہے۔ یہ محراب مالکیوں کے لیے تھا اور ساتویں صدی ہجری میں ایک شافعی امام مقرر کیا گیا، سن 860 ہجری میں ایک حنفی امام مقرر کو مقرر کیا گیا۔ اس محراب کو طغان شیخ نے تعمیر کیا تھا۔ حنفی امام مقرر ہونے کے بعد اس محراب کو "حنفی محراب" کے نام سے جانا جاتا تھا۔ [49] اس محراب کو سلطان سلیمان اول کے نام سے جانا جاتا ہے جنھوں نے اسے سفید اور سیاہ سنگ مرمر سے سجایا اور اس پر لکھا۔ : "یہ مبارک محراب مظفر بادشاہ، سلطان سلیمان شاہ، سلطان سلیم خان، سلطان بایزید خان کے بیٹے نے قائم کیا تھا، خدا ان کے حامیوں کو خوش رکھے۔" یہ محراب بعد میں "سلیمان محراب" کے نام سے مشہور ہوا۔ [49]

مسجد نبوی کے دروازے

باب جبریل اس وقت مسجد نبوی کی مشرقی دیوار میں ہے۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں مسجد کے تین دروازے تھے: ایک دروازہ مسجد نبوی کی پچھلی طرف تھا جسے عاتکہ کا دروازہ (یا رحمت کا دروازہ ) کہا جاتا ہے اور یہ وہ دروازہ ہے جس سے آپ داخل ہوتے تھے۔ جب مسلمانوں کو کعبہ کی طرف قبلہ رخ کرنے کا حکم دیا گیا تو پچھلا دروازہ بند کر دیا گیا اور ایک اور دروازہ شمالی طرف کھول دیا گیا۔ عمر بن خطاب کے دور میں جب مسجد کی توسیع کی گئی تو موجودہ دروازوں میں تین دروازے شامل کیے گئے: ایک مشرقی دیوار کی جانب [50] باب النساء (خواتین کا دروازہ)، ایک مغربی دیوار میں باب السلام (سلامتی والا دروازہ) اور شمالی دیوار میں ایک دروازہ شامل کیا گیا۔ عثمان بن عفان [50] کے دور میں جب مسجد کی توسیع کی گئی تو انھوں نے اس میں کچھ اضافہ نہیں کیا۔ عمر بن عبدالعزیز کے دور میں جب مسجد کی توسیع کی گئی تو مسجد کے بیس دروازے تھے: آٹھ مشرقی جانب، آٹھ مغربی جانب اور چار شمالی جانب۔ یہ تمام دروازے ماضی میں مسجد کی دیواروں کی تزئین و آرائش کے وقت بند کر دیے گئے تھے اور ان میں سے صرف چار باقی رہ گئے تھے۔ [51]

مسجد نبوی چار دروازوں پر آباد رہی یہاں تک کہ سن 1277 ہجری میں مجیدی تعمیر کے دوران شمالی جانب ایک نئے دروازے کا اضافہ کیا گیا اور یوں مسجد نبوی کے پانچ دروازے ہو گئے۔ جن میں دو دروازے مشرقی جانب (باب جبریل اور باب النساء) اور دو دروازے مغربی جانب دروازے (باب السلام اور باب رحمت) اور شمالی جانب ایک دروازہ، (باب مجیدی)۔ سن 1955ء بمطابق 1375 ہجری میں پہلی سعودی توسیع کے بعد باب ابوبکر رضی اللہ عنہ، باب سعود، باب عبد العزیز اور باب عمر رضی اللہ عنہ شامل کرنے کے بعد مسجد نبوی کے دس دروازے ہو گئے۔ [52] باب عثمان [53] 1987ء میں مشرقی دیوار میں مزید ایک دروازہ کھولا گیا اور اس طرح دروازوں کی تعداد گیارہ ہو گئی۔ دوسری سعودی توسیع کے بعد مسجد نبوی کے اندر پانچ نئی عمارات بن گئیں اور داخلی راستوں کی کل تعداد اکتالیس ہو گئی۔ جن میں سے کچھ دروازے صرف ایک دروازے پر مشتمل ہیں، کچھ دو جوڑے ہوئے دروازے ہیں ، اسی طرح تین دروازے اور پانچ ملحقہ دروازے ہیں۔[54] جہاں تک مسجد کے سب سے اہم تاریخی دروازوں کا تعلق ہے، وہ یہ ہیں:

باب السلام، جو سلطان عبدالمجید اول کی توسیع کا باقی ہے۔
1- باب جبرائیل :
یہ دروازہ مسجد کی مشرقی دیوار میں واقع ہے اور اسے "نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ﷺ کا دروازہ" کہا جاتا تھا کیونکہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اس دروازے میں سے نماز پڑھنے کے لیے داخل ہوتے تھے۔ اسے "باب عثمان" بھی کہا جاتا تھا کیونکہ یہ دروازہ عثمان بن عفان کے گھر کے بالمقابل واقع تھا۔ [55] اب اسے باب جبریل کہا جاتا ہے کیونکہ روایت ہے کہ جبرائیل علیہ السلام صحابی رسول، حضرت دحیہ الکلبی رضی اللہ عنہ کی شکل میں گھوڑے پر آئے اور مسجد کے دروازے پر کھڑے ہو کر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو بنو قریظہ کی طرف چلنے کا اشارہ کیا۔ [55] جب عمر بن عبدالعزیز نے مسجد کی توسیع کی تو انھوں نے دروازے کی جگہ کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے کے سامنے کا حصہ بنا دیا اور بعد میں دیوار کی تجدید کے بعد اس دروازہ کو بند کر دیا اور اس کی جگہ آج مسجد کے باہر کی طرف ایک کھڑکی ہے جو باب جبریل کے باہر دائیں طرف ہے اور اس کھڑکی کے اوپر یہ آیت لکھی ہوئی ہے۔﴿إِنَّ اللَّهَ وَمَلائِكَتَهُ يُصَلُّونَ عَلَى النَّبِيِّ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا صَلُّوا عَلَيْهِ وَسَلِّمُوا تَسْلِيمًا﴾
2- باب النساء :
یہ دروازہ حضرت عمر بن خطاب نے مسجد کے عقب میں مشرقی دیوار میں بنایا تھا۔ روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ: "کاش ہم اس دروازے کو عورتوں کے لیے چھوڑ دیتے۔" [56] اس لیے اس دروازے کو باب النساء کہا جاتا ہے۔
3- باب رحمت :
مسجد کے جدید دروازے جو دوسری سعودی توسیع میں بنائے گئے تھے۔
یہ دروازہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد کی مغربی دیوار میں کھولا تھا اور جب بھی مسجد نبوی میں توسیع کی گئی تو اسے پہلے والے کے ساتھ بنایا گیا۔ اسےباب عتیقہ کہا جاتا تھا کیونکہ یہ عتیقہ بنت عبد اللہ بن یزید بن معاویہ کے گھر کے سامنے واقع تھا۔ [57] بعد میں اسے باب رحمت کہا جانے لگا، جس میں داخل ہونے والوں میں سے کچھ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے بارش کی درخواست کی تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے رحمت کی بارش کی دعا فرمائی۔ جس کی وجہ سے اسے باب رحمت کہا گیا۔[58]
4- باب السلام:
اسے "خوف کا دروازہ" اور "عاجزی کا دروازہ " بھی کہا جاتا ہے۔ یہ دروازہ عمر بن خطاب نے مسجد کی مغربی دیوار میں کھولا تھا۔ [59]
5- باب عبد المجید :
یہ دروازہ سلطان عبدالمجید اول نے سن 1277 ہجری میں مسجد کے شمالی جانب کھولا تھا اور اسے "باب المجیدیہ" کے نام سے جانا جاتا تھا۔ پہلی سعودی توسیع کے دوران مزید رقبہ مسجد کی شمالی جانب شامل کیا گیا تو دروازے کو اس کی پہلی جگہ منتقل کر دیا گیا۔ [60] اور یہ اب مسجد کے مرکزی دروازے کے ساتھ دوسری سعودی توسیع کے بعد اندر کی جانب ہے۔

مسجد نبوی کے مینار

ایک تصویر جس میں "مرکزی مینار " (درمیان میں)، "باب السلام مینار" (بائیں طرف) اور نئے مینار کو دکھایا گیا ہے جو سعودی توسیع کے دوران (دائیں طرف) قائم کیا گیا تھا۔

مسجد نبوی میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اور خلفائے راشدین کے دور میں کوئی مینار نہیں تھے۔ مسجد نبوی میں سب سے پہلے مینار بنانے والے عمر بن عبدالعزیز تھے جنھوں نے 91 ہجری میں اس کی توسیع کے دوران مسجد کے ہر کونے میں 4 مینار بنائے۔ [61] ان میناروں کی لمبائی تقریباً 27.5 میٹر تھی اور ان کی چوڑائی 4×4 میٹر تھی۔ سلطان عبدالمجید اول [62] کی توسیع میں مسجد نبوی کی عمارت میں 5 مینار تھے، جو یہ ہیں:

1- شمال مغربی مینار :
اسے "الشکلیہ"، "الخشبیہ" اور "المجیدیہ" کہا جاتا ہے اور یہ مسجد نبوی کے شمال مغربی کونے میں ہے۔ اسے پہلی سعودی توسیع میں ہٹا دیا گیا اور اس کی جگہ ایک اور مینار تعمیر کیا گیا تھا۔ [63]
2- شمال مشرقی مینار :
یہ مینار سلطان عبدالعزیز اول کی عمارت کی طرف اور شمال مشرقی کونے میں واقع ہے۔ اس مینار کو "السنجریہ" اور "العزیزیہ" کہا جاتا ہے۔ اسے پہلی سعودی توسیع میں ہٹا دیا گیا تھا۔ اور اس کی جگہ ایک اور مینار تعمیر کیا گیا تھا۔ [64]
3- جنوب مشرقی مینار :
اسے "مین مینار" کہا جاتا ہے۔ یہ گنبد خضریٰ سے متصل مینار ہے اور مسجد نبوی کے جنوب مشرقی کونے میں واقع ہے۔ سلطان سیف الدین قایتبائی نے اسے 886 ہجری ، 888 ہجری اور 892 ہجری میں 3 مرتبہ سیاہ پتھر سے تعمیر کروایا تھا۔ اس مینار کی لمبائی کو تقریباً 60 میٹر تک بڑھایا گیا۔ [65]
4- جنوب مغربی مینار :
اسے "باب السلام کا مینار" کہا جاتا ہے اور یہ 706 ہجری میں سلطان ناصر محمد بن قلاوون کی توسیع کے وقت سے موجود ہے۔ یہ مسجد نبوی کے جنوب مغربی کونے میں واقع ہے۔ [66]
5- مغربی مینار :
اسے "باب الرحمہ کا مینار" کہا جاتا ہے۔ جسے سلطان سیف الدین قایتبائی نے 888 ہجری میں تعمیر کروایا تھا۔ یہ مینار مسجد نبوی کی دیواروں کے باہر باب الرحمہ کے قریب مسجد سے متصل گھر کے اندر تعمیر کیا گیا تھا۔ اس گھر کو محمودیہ مکتب کی رہائش کے لیے بنایا گیا تھا۔ اس مینار کو پہلی سعودی توسیع میں گھر اور اسکول کے ساتھ مسجد نبوی کو مزید توسیع کرنے کے لیے ہٹا دیا گیا تھا۔ [67]

پہلی سعودی توسیع میں 3 مینار منہدم کیے گئے تھے جو رحمت کے دروازے پر تھے جو شمالی جانب السنجاریہ اور المجیدیہ کے مینار تھے۔ اور مزید دو نئے مینار شمالی جانب کے مشرقی اور مغربی کونوں میں تعمیر کیے گئے تھے۔ ہر ایک مینار 72 میٹر بلند ہے۔[68] دوسری سعودی توسیع میں مسجد نبوی میں 6 مینار بنائے گئے۔ جن میں سے 4 توسیع کے چاروں کونوں میں اور دو مینار شمالی جانب وسط میں بنائے گئے۔ ان میناروں کی اونچائی 103.89 میٹر ہے۔

مسجد نبوی کے ستون

ایک ڈرائنگ جس میں مسجد نبوی کے تاریخی مقامات کو دکھایا گیا ہے
ستون سیدہ عائشہ
نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے مقصورہ کا مغربی حصہ

مسجد نبوی کے ستون عثمانی سلطان عبدالمجید اول کی عمارت میں ان ستونوں کی جگہ پر تعمیر کیے گئے تھے جو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں تھے۔ محمد بن عبد اللہ کے دور میں یہ ستون کھجور کے تنوں سے بنائے گئے تھے۔ مسجد نبوی کی تعمیر کرتے وقت انھوں نے ستون بنانے کے مقامات کی چھان بین کی۔ تاریخ سے پتا چلتا ہے کہ مسجد نبوی میں 8 ستون ہیں۔ اور وہ یہ ہیں: [69]

1- مصنوعی ستون :
اسے "پرفیومڈ" ستون کے نام سے جانا جاتا ہے۔ یہ پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے محراب کے قریب واقع ہے۔ اور آپ اس جگہ سلمہ بن اکوع رضی اللہ عنہ کے ساتھ نماز پڑھتے تھے، جب ان سے اس کے متعلق پوچھا گیا تو انھوں نے کہا: میں نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو ان کے ساتھ نماز پڑھتے دیکھا ہے۔ [70] مالک بن انس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے: " نمازوں کے لیے سب سے پیاری جگہیں پیغمبر کا ستون ہے۔" [71]
2-سیدہ عائشہ کا ستون :
یہ منبر سے تیسرا ستون [72] ہے اور اسے " القرعہ " اور "المہاجرین" ستون کے نام سے جانا جاتا ہے۔ آپ نے رات کے وقت یہاں تہجد نمازیں پڑھیں ۔ [73] جہاں تک اسے نام دینے کا تعلق ہے تو یہ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میری مسجد میں اس ستون کے آگے ایک جگہ ہے، اگر لوگوں کو معلوم ہوتا تو نماز نہ پڑھتے۔ [74] جہاں تک اسے مہاجرین کے ستون کے نام کی وجہ تسمیہ یہ ہے کہ اس کے پاس مہاجرین کے بزرگ صحابہ اکٹھے ہوتے تھے اور اس کے گرد بیٹھ کر اس کے پاس نماز پڑھتے تھے۔ [75] یہ وہ ستون ہے جس پر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مسلمانوں کو قبلہ رخ کرنے کے بعد دس دن تک نماز پڑھائی۔ [76]
3- توبہ کا ستون :
اسے " ابو لبابہ " ستون کے نام سے جانا جاتا ہے، کیونکہ اس نے اسے اپنے حلیفوں تک پہنچانے کے لیے دس راتوں بعد خود کو باندھ لیا تھا ۔ بنو قریظہ اور جب وہ اپنے کیے پر پچھتاتے تھے، تو جب نماز آتی تو اس کی بیٹی اسے کھول دیتی اور اس نے قسم کھائی کہ کچھ نہیں ہو گا، اس نے اپنے آپ کو تحلیل کر دیا یہاں تک کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے تحلیل کر دیا اور اس کی توبہ کے ظاہر ہونے کے بعد اس نے اسے تحلیل کر دیا۔ قرآن پاک نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم اس ستون پر اپنی فضیلت کی نمازیں پڑھتے تھے اور فجر کی نماز کے بعد اس میں جاتے تھے اور اس کے پیچھے اعتکاف کرتے تھے۔ [77]
4- ستون بستر :
یہ توبہ کے ستون کے مشرق میں واقع ہے اور الرؤدہ کو دیکھنے والی کھڑکی سے منسلک ہے۔ یہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی خلوت کی جگہ تھی، کیونکہ یہاں کھجور کے پتوں سے بنا ہوا بستر تھا اور آپ کے پاس ایک تکیہ بھی تھا۔ یہاں آپ صلی اللہ علیہ وسلم اسی کھمبے پر اپنے بستر پر لیٹے ہوئے تھے۔  [78]
5- گارڈ ستون :
یہ بستر کے ستون کے پیچھے شمال کی طرف سے واقع ہے اور یہ اس آڑو کے درخت کے سامنے ہے جہاں سے نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم عائشہ بنت ابی بکر رضی اللہ عنہ کے گھر میں روضہ کی طرف نماز ادا کرنے کے لیے نکلتے تھے۔ اسے علی ابن ابی طالب کا ستون بھی کہا جاتا ہے کیونکہ وہ وہاں بیٹھ کر پیغمبر اسلام کی حفاظت کیا کرتے تھے۔ [79]
6- وفود کا ستون :
یہ شمال کی طرف سے گارڈ ستون کے پیچھے واقع ہے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس جب عرب وفود آتے تو اس میں بیٹھا کرتے تھے۔ اسے مجلس القلاد کے نام سے بھی جانا جاتا تھا جس میں بہترین صحابہ بیٹھتے تھے۔ [80]
7- مربع قبر ستون :
اسے "مقام جبریل " کہا جاتا ہے اور یہ حجرہ نبوی میں وفود کے ستون کے درمیان شمال کی طرف مغربی کھڑکی میں واقع ہے۔ [81]
8- تہجد ستون :
یہ شمال کی طرف سے فاطمہ بنت محمد کے گھر کے پیچھے واقع ہے اور اس میں "تہجد کا محراب" ہے اگر نمازی اس کی طرف متوجہ ہوتا تو اس کا بائیں رخ باب عثمان کی طرف ہوتا تھا جسے باب جبریل کہتے ہیں۔ علی بن احمد سمہودی نے اس میں نماز کی فضیلت کے ثبوت کا ذکر کیا ہے، وہ کہتے ہیں: "عیسیٰ نے کہا: مجھ سے سعید بن عبد اللہ بن فضیل نے بیان کیا، انھوں نے کہا: محمد بن الحنفیہ معلم اور میں اس کی نماز پڑھتا ہوں، تو انھوں نے کہا: میں: میں دیکھ رہا ہوں کہ آپ اس جگہ پر قائم ہیں، کیا آپ کو اس کا کوئی سراغ ملا؟ میں نے کہا: نہیں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اس کے ساتھ رہو، کیونکہ یہ رات کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی جائے نماز تھی۔ [82]

حجرات نبوی

ایک ڈرائنگ جس میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے اور اس کے ارد گرد کی دیواریں دکھائی گئی ہیں۔

حجرات نبوی وہ گھر ہیں جن کو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے امہات المؤمنین کے ساتھ آباد کیا تھا۔ جب نبی صلی اللہ علیہ وسلم مدینہ تشریف لائے تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مسجد بنائی اور اپنی دو بیویوں عائشہ بنت ابی بکر اور سودہ بنت زمعہ کے لیے دو کمرے بنائے۔ ان کمروں کو کھجور کے پتوں سے بنایا گیا تھا۔ جب عمر بن عبدالعزیز نے مسجد کی توسیع کی تو انھوں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجروں کو مسمار کر کے مسجد میں شامل کر دیا سوائے عائشہ رضی اللہ عنہا کے حجرے کے۔[83] جس میں آپ کی وفات کے بعد عمر بن خطاب کو دفن کیا گیا تھا۔ حضرت عیسیٰ بن مریم علیہ السلام کو زمین پر نزول کے بعد مسلمانوں کے عقیدہ کے مطابق اسی میں دفن کیا جائے گا۔

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور حکومت میں مسجد نبوی کے ساتھ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے حجروں کا ایک نمونہ

ابتدا میں عائشہ بنت ابی بکر کا کمرہ کھجور کے پتوں سے بنا ہوا تھا جس پر بالوں کا غلاف چڑھا ہوا تھا اور اس کا دروازہ جونیپر یا ساگوان کے شٹر سے ڈھکا ہوا تھا، جب عمر بن الخطاب نے اقتدار سنبھالا تو انھوں نے اس کمرے کو دوبارہ تعمیر کیا اور پتوں کی جگہ اینٹوں کی دیوار لگا دی، پھر عبداللہ بن الزبیر نے کمرے کی دیوار بنائی، انھوں نے ابن سعد سے عبیداللہ بن ابی یزید سے روایت کی، انھوں نے کہا « [84] عمر بن عبدالعزیز نے مسجد کی تعمیر کے دوران اسی علاقے کے سیاہ پتھروں سے اس کمرے کو دوبارہ تعمیر کیا۔ کچھ عرصہ گذر جانے کے بعد کمرے کی دیوار میں ایک شگاف نظر آیا اور اس میں پلاسٹر کو خالی کر کے اسے بند کر دیا گیا اور یہ صورت حال اس وقت تک برقرار رہی جب تک کہ سلطان قطبی کے دور میں کمرے کی دیوار کی تجدید نہ ہو گئی۔

حجرے میں تین قبروں کی تفصیل

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے میں حضرت محمد بن عبد اللہ، ابوبکر صدیق اور عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کی قبریں ہیں۔ علی بن احمد سمہودی نے کہا ہے کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر قبلہ کی سمت میں واقع ہے، اس کے بعد ابوبکر صدیق کی قبر کے پیچھے سے اور ان کا سر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے کندھے پر، اس کے بعد عمر کی قبر اور ان کا سر ابوبکر کے کندھے کی طرف ہے۔ نافع بن عبد الرحمن المدنی سے بھی یہی روایت ہے۔ قبروں کی حالت کے بارے میں درج ذیل روایات ہیں:

  • محمد بن اسماعیل بخاری نے سفیان التمر سے روایت کیا ہے: "انھوں نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر کو دیکھا جو اونچی تھی۔" [85]
  • قاسم بن محمد بن ابی بکر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ: میں عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس آیا اور کہا: اے ماں! میرے لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور آپ کے دو اصحاب کی قبر کو کھول دو، چنانچہ میں نے تین قبریں دیکھیں، جو نہ اونچی اور نہ نیچی، جو سرخ پتھروں سے ڈھکی ہوئی تھیں اور میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر کو دیکھا۔ سیدنا ابوبکر رضی اللہ عنہ کا سر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے کندھوں کے درمیان ہے۔ اور عمر رضی اللہ عنہ کا سر آپ صلی اللہ علیہ وسلم آپ کی طرف ہے۔ [86] مسجد نبوی کے اندر حضرت محمد ، ابوبکر اور عمر کی قبروں کے سامنے والے حصے پر چاندی کی تختی ہے، جو 11ویں صدی ہجری میں عثمانی سلطان احمد اول کی طرف سے تحفہ تھا۔
  • علی بن احمد سمہودی نے 878 ہجری میں کمرے میں داخل ہونے کا واقعہ بیان کیا اور کہا: کہ میں پیچھے کی طرف سے کمرے میں داخل ہوا تو میں نے اپنی زندگی میں اس سے بہتر خوشبو نہیں محسوس کی۔ پھر میں نے سب کو سلام کیا، پھر ان کی دو آرام گاہوں کی طرف دیکھا جو ایک ہموار زمین تھی۔ میں نے اس کی کچھ مٹی اپنے ہاتھ سے لی۔ اور کمرے کے درمیان میں چھوٹی اونچائی ہے جہاں عمر کی قبر ہے۔ [87]
حجرہ نبوی کا ایک نمونہ، جس میں تین قبروں کے مقامات اور حجرے کی دیوار کے گرد پانچ نکاتی دیوار دکھائی گئی ہے۔

کمرے میں چوتھی قبر کے لیے جگہ موجود ہے ، جہاں عائشہ بنت ابی بکر نے عبدالرحمٰن بن عوف کو ان کی موت کے بعد اس جگہ دفن کرنے کی پیشکش کی لیکن انھوں نے انکار کر دیا اور کہا: " میں نے عمر رضی اللہ عنہ کی تدفین کے بعد سے پردہ نہیں ڈالا، اس لیے مجھے یہ ناپسند ہے کہ میں اس گھر کو تنگ کر دوں اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے گھر کو قبرستان بنا دوں۔ [88] انھوں نے اپنی وصیت میں عبداللہ بن الزبیر سے یہ بھی کہا: "مجھے ان کے ساتھ دفن نہ کرو بلکہ مجھے جنت البقیع میں میرے ساتھیوں کے ساتھ دفن کر دو، کیونکہ میں کبھی اس کا خراج ادا نہیں کروں گی۔" [89] حدیث کی کتابوں میں بیان کیا گیا ہے کہ عیسیٰ بن مریم جب آسمان سے اتریں گے تو ان کی وفات کے بعد اسی جگہ دفن کیے جائیں گے جیسا کہ ترمذی نے عبداللہ بن سلام سے روایت کیا ہے کہ انھوں نے کہا: تورات میں اس کی تفصیل درج ہے۔ عیسیٰ بن مریم کو محمد کے ساتھ دفن کیا جائے گا۔ [90]

مسجد نبوی کے اندر محمد بن عبد اللہ، ابوبکر صدیق اور عمر بن خطاب کی قبروں کے اگلے حصے پر 11ویں صدی ہجری میں عثمانی سلطان احمد اول کی طرف سے تحفے کے طور پر چاندی کی تختی لگی ہوئی ہے۔ اس تختی کو توبہ کے دروازے کے اوپر رکھا گیا تھا۔ اس پر چاندی کی تختی یہ 1026 ہجری کی ہے جس پر لکھا ہے کہ، میرے بندوں کو بتا دو کہ میں بخشنے والا مہربان ہوں۔ اے نبی ہم نے آپ کو گواہ بنا کر بھیجا ہے، خبر دینے والا، ڈرانے والا، خدا کی طرف اس کے حکم سے پکارنے والا، روشن چراغ اور مومنین کے لیے بشارت دینے والا کہ ان پر خدا کا بڑا فضل ہے۔ سلطان سلیمان بن سلطان سلیمان, ولد سلطان بایزید، ولد سلطان محمد، ولد سلطان مراد، ولد سلطان مراد، ولد سلطان بایزید، ولد سلطان مراد، ولد سلطان اورخان، ولد سلطان عثمان، ایک عزیز فتح اور اس کو فتح عطا فرما۔ اسی طرح تختی کے دونوں طرف لکھا ہوا ہے: خدا کے سوا کوئی معبود نہیں، بادشاہ، حق، ظاہر، محمد اللہ کے رسول، سچے اور امانت دار ہیں۔ [91]

گول دیوار

حجرہ نبوی کے پردے کا ایک ٹکڑا جو مدینہ کے عجائب گھر میں محفوظ ہے۔

اس دیوار کو "الحائض المخمس" یا "الحدیرہ المخمس" کہا جاتا ہے اور یہ پانچ شکل کی دیوار ہے جسے عمر بن عبدالعزیز نے مسجد نبوی کی تعمیر کے دوران 91 ہجری میں حجرہ نبوی کے گرد تعمیر کیا تھا۔ اس کی اونچائی 6.5 میٹر ہے اور اس کا کوئی دروازہ یا چھت نہیں ہے۔ علی بن احمد سمہودی نے اس کے گول ہونے کی یہ وجہ بتائی کہ : « اس خوف سے کہ یہ اپنی مربع عمارت میں کعبہ سے مشابہ ہو جائے گا اور اس خوف سے کہ لوگ سے خانہ کعبہ قبول کریں گے۔ [92] . [93]

اس کی شمالی جانب چیمبر کی دیوار کے درمیان ایک مثلث شکل میں ایک جگہ ہے جس کی لمبائی 4 میٹر ہے۔ اس طرف ایک خالی جگہ ہے، جس کا پہلا حصہ مشرقی جانب سے ہے۔ دیوار اور مغربی جانب چیمبر کی دیوار کے درمیان کی جگہ۔ [94] دیوار کی لمبائی ہر کونے سے دکھائی دیتی ہے۔ قبلہ کی دیوار کی لمبائی 8.5 میٹر ہے اور مغربی دیوار کی لمبائی قبلہ سے اس کونے تک جس سے یہ شمال کی طرف ہٹتی ہے 8 میٹر ہے۔ گوشہ 6 میٹر ہے اور مشرقی دیوار کی لمبائی قبلہ سے اس کونے تک جس سے یہ شمال کی طرف ہٹتی ہے 6 میٹر ہے۔ اس مقام سے شمالی کونے کی طرف مڑنے والی دیوار کی لمبائی 7 میٹر ہے۔ [95]

البرزنجی نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے کا اپنا خواب بیان کیا جب انھوں نے اسے اوپری گنبد کی کھڑکی سے دیکھا اور فرمایا: "میں نے حجرہ مبارک کو دیکھا، اس پر ایک پردے کا غلاف ہے جو حجرہ اور چھوٹے گنبد کو دیکھنے سے روکتا ہے۔ سوائے اس کے کہ میں نے غلاف محدب کا درمیانی حصہ دیکھا اور خیمے کی شکل کی طرح تھوڑا سا بلند ہوا۔ معزز ایوان کو اطراف سے معلق کر دیا گیا تھا، سوائے اس کے جو مشرقی طرف تھا، کیونکہ پردے کو اس طرف سے دو تختوں پر چلایا گیا تھا جو گودام کے مشرقی اور مغربی سروں سے پھیلے ہوئے تھے۔ خلفائے راشدین اور سلاطین نے برسوں گزرنے کے بعد اس کی دیکھ بھال کی اور اس کی مناسب بحالی کا کام کرتے رہے۔ [96]

نبی کا کیبن (مقصورہ)

مقصورہ کے مغربی جانب "عائشہ کا دروازہ" ظاہر ہوتا ہے، اس کے دائیں جانب "سرپرست کا سلنڈر" اور بائیں جانب "وفود کا سلنڈر" ہے۔

یہ وہ دیوار ہے جو پانچ نکاتی دیوار کے گرد گھومتی ہے اور اس کیبن کو " نبی کے چیمبر " کا نام بھی دیا گیا ہے۔ یہ مسجد کے جنوب مشرقی حصے میں واقع ہے جس کے چاروں طرف تانبے اور لوہے کی دیواریں ہیں، اس کے جنوبی اور شمالی اطراف کی لمبائی 16 میٹر ہے اور اس کے مشرقی اور مغربی اطراف کی لمبائی 15 میٹر ہے۔694 ہجری میں جال بنایا اور اسے مسجد کی چھت سے جوڑ دیا۔ [[1481ء|] ہجری کی مناسبت سے 886ھ میں دوسری آگ میں لکڑی کے کیبن کے جل جانے کے بعد، سلطان سیف الدین قایتبائی نے تانبے اور لوہے کی کھڑکیاں لگانے کا حکم دیا اور انھیں جنوبی جانب رکھا گیا اور مشرقی جانب سبز رنگ کی لوہے کی کھڑکیاں لگائی گئیں۔ اس نے مقصورہ کے اندر ایک لوہے کا گرڈ بھی لگایا جس میں فاطمہ الزہرا اور عائشہ بنت ابی بکر کے گھروں کو الگ کیا گیا، اس طرح شمال کی [97] طرف کی جگہ آزاد ہو گئی، اس کی لمبائی جنوب سے 14 میٹر اور مشرق و مغرب سے 14 میٹر ہو گئی۔ اس کے مثلث کے دائیں اور بائیں 7 میٹر کے دو دروازے ہیں۔ [98]

مقصورہ کے 4 دروازے ہیں: ایک جنوبی دروازہ جسے "توبہ کا دروازہ" کہا جاتا ہے اور مغرب میں ایک دروازہ جسے "عائشہ کا دروازہ" یا "وفود کا دروازہ" کہا جاتا ہے کیونکہ یہ وفود کی جگہ کے پیچھے آتا ہے۔ اور مشرق میں ایک دروازہ جسے "باب فاطمہ" کہتے ہیں کیونکہ یہ ان کے گھر کے قریب ہے۔ اور شمال میں ایک دروازہ ہے اور اسے تہجد کا دروازہ کہا جاتا ہے، کیونکہ یہ تہجد کے محراب کے قریب ہے اور یہ 729 ہجری میں بنایا گیا تھا۔ یہ دروازے فی الحال بند ہیں، سوائے فاطمہ کے دروازے کے، کیونکہ یہ معززین اور کچھ سرکاری وفود کے لیے کام کرتا ہے۔ [99]

گنبد

سبز گنبد جیسا کہ مسجد نبوی کے اندر سے نظر آتا ہے۔

حجرہ نبوی پر دو گنبد بنائے گئے ہیں، پہلا ایک چھوٹا گنبد ہے جو مسجد کی چھت کے نیچے بنایا گیا ہے اور اسے سیف الدین قایتبائی نے لکڑی کی چھت کے بغیر تعمیر کیا تھا۔ اور دوسرا ایک بڑا سبز گنبد ہے جو نظر آتا ہے اسے سلطان قلاون الصالحی نے تعمیر کیا تھا اور سلطان سیف الدین قایتبائی نے اسے دوبارہ تعمیر کیا تھا۔

پہلا گنبد: بیرونی سبز گنبد

نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے مقصورہ کا ایک نمونہ، جس میں پانچ نکاتی دیوار، سبز گنبد اور اندرونی گنبد دکھایا گیا ہے

حجرہ نبوی کے اوپر والی مسجد کی چھت اینٹوں کی دیوار سے گھری ہوئی تھی جس کی اونچائی تقریباً 0.9 میٹر تھی، تاکہ اسے مسجد کی باقی چھتوں سے ممتاز کیا جا سکے ۔ اوپر کی چھت سیسہ پلائی ہوئی تھی اور اس کے چاروں طرف لکڑی کی دیوار تھی جو پرانی دیوار کی جگہ بنائی گئی تھی۔ لکڑی کے ان تختوں کی تجدید 765 ہجری میں ہوئی تھی۔ [100] سیف الدین قایتبائی کے دور میں جب 886 ہجری میں دوسری آگ سے گنبد جل گیا تو انھوں نے لکڑی کے گنبد کی جگہ اینٹ لگانے اور اس کے لیے مسجد کے فرش پر ہڈیوں کے ستون قائم کرنے کا حکم دیا۔ گنبد کے دائیں اور بائیں دو ستون بنائے گئے۔ کچھ عرصہ بعد گنبد کے اوپری حصے میں دراڑیں پڑ گئیں تو آپ نے گنبد کی چوٹی کو گرانے اور مرمت کرنے کی بجائے دوبارہ تعمیر کرنے کا حکم دیا اور یہ 892 ہجری کا واقعہ ہے۔ سلطان محمود بن عبد الحمید خان کے دور میں گنبد کی چوٹی پر ایک شگاف پڑ گیا تو انھوں نے اس کی تجدید کا حکم دیا اس کی چوٹی کو گرا کر دوبارہ تعمیر کر دیا۔ اور اس کے درمیان لکڑی کی رکاوٹ بنا دی۔ تاکہ نچلا گنبد انہدام ہونے سے کچھ نہ گرے۔ یہ 1233 ہجری کا واقعہ تھا۔ 1253 ہجری میں سلطان محمود نے حکم دیا کہ اسے سبز رنگ سے رنگ دیا جائے۔ اس سے پہلے اس کا رنگ نیلا تھا۔ اس لیے اسے "سبز گنبد" کہا جانے لگا۔ [101] 1297 ہجری کے آخر میں تیز ہوا چلنے سے بڑے گنبد کی ایک کھڑکی مشرقی جانب سے حجرہ نبوی کے ایک حصے میں گر گئی اور اسے 1297 ہجری میں دوبارہ تعمیر کیا گیا۔[101]

جہاں تک گنبد میں گرڈ کا تعلق ہے، یہ اندرونی گنبد میں گرڈ کے متوازی ہے اور قبر کے اوپر واقع ہے۔ اور حرم کے خادم اسے بارش کے لیے نماز کے دن کھولا کرتے تھے جیسا کہ ابن حجر عسقلانی نے بیان کیا ہے کہ: اہل مدینہ کو سخت خشک سالی ہوئی تو انھوں نے عائشہ رضی اللہ عنہا سے شکایت کی، تو انھوں نے کہا: دیکھو قبر نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے اوپر آسمان کی طرف کھلا کر دو تاکہ اس کے اور آسمان کے درمیان کوئی چھت نہ رہے۔ انھوں نے ایسا ہی کیا اور بارش ہوئی یہاں تک کہ گھاس بڑھ گئی۔ [102] گنبد کو وہابی تحریک کے کچھ پیروکاروں کی طرف سے تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا، اس لیے انھوں نے اسے مسمار کرنے اور مسجد نبوی سے قبر نبوی کو نکالنے کا مطالبہ کیا۔ مقبل بن ہادی الودعی ( وہابی شیوخ میں سے ایک) نے کہا: "اس کے بعد یہ، مجھے نہیں لگتا کہ آپ کو اس بات میں کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہیں ہوتی کہ مسلمانوں کو مسجد نبوی کو اسی طرح واپس کرنا چاہیے جیسا کہ نبوت کے دور میں مشرقی جانب سے تھا، تاکہ قبر مسجد میں شامل نہ ہو اور وہ گنبد کو ہٹا دیں جس میں بہت سی قبریں ہیں۔ لہٰذا ہم مسلمانوں کے لیے یہ مناسب ہے کہ ہم ان گنبدوں کی طرف جائیں جو قبروں پر بنے ہوئے ہیں، اس لیے ہم انھیں زمین سے اکھاڑ پھینکتے ہیں۔[103]

دوسرا گنبد: اندرونی حجرے کا گنبد

جب سلطان سیف الدین قایتبائی نے 881 ہجری بمطابق 1477ء میں مسجد کی تزئین و آرائش کا کام مکمل کیا تو دوسری آگ لگنے سے پہلے اس نے حجرہ نبوی کی لکڑی کی چھت کو مسجد کی چھت کے نیچے ایک چھوٹے سے گنبد سے بدل دیا تو انھوں نے اس گنبد کو مسجد کی چھت پر باندھ دیا۔ مغربی جانب سیاہ پتھر سے پتھر تراش کر سفید پتھر سے مکمل کیا اور اس کے اوپر تانبے کا ایک ہلال کھڑا کیا جو پہلی مسجد کی چھت کے قریب ہے کیونکہ مذکورہ گنبد اس کے نیچے ہے اور انھوں نے اس کی سفیدی کی۔ گنبد اور اس کی تمام دیواریں باہر سے پلاسٹر کے ساتھ۔ حجرے کے فرش سے ہلال کے آغاز تک گنبد کی اونچائی تقریباً 9 میٹر تھی اور یہ شوال 881 ہجری میں مکمل ہوا۔ [104] اس گنبد کے اوپر جنوبی جانب حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی قبر کی سطح پر ایک چھوٹا سا طاق (سوراخ) ہے اور اس پر روشنی کے تار کا جال ہے جو پرندوں کو اس میں گرنے سے روکتا ہے اور اس کی سطح پر سبز گنبد میں ایک اور جگہ ہے۔ [105]

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم، ابوبکر اور عمر رضی اللہ عنہ کے جسم کو چرانے کی کوشش

اسلامی تاریخ کی کتابوں میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے حجرے میں مدفون تین قبروں کو چرانے کی پانچ کوششیں بیان کی گئی ہیں، جن میں،

  1. پہلی کوشش: پانچویں صدی ہجری کے شروع میں الحکیم بِامر اللہ کے اشارے سے ابو الفتوح نے کوشش کی۔ جب ابو الفتوح کو معلوم ہوا کہ وہ غلط تھا، تو وہ توبہ کرتے ہوئے مصر واپس چلا گیا۔ [106]
  2. دوسری کوشش: یہ بھی الحاکم العبیدی کے حکم پر، " الحکیم بن عمرو اللہ " نے مختلف لوگوں کو بھیجا، تو وہ لوگ مسجد نبوی کے قریب ایک مکان میں رہنے لگے اور زمین کے نیچے کھدائی شروع کر دی۔ قبر تک پہنچے تو مدینہ کے لوگوں کو معلوم ہوا اور انھیں قتل کر دیا۔ [107]
  3. تیسری کوشش: یہ منصوبہ عیسائی بادشاہوں نے بنایا تھا اور سلطان نورالدین زنگی کے دور میں 557 ہجری میں دو مراکشی عیسائیوں نے اس پر عمل کیا تھا۔ اور تاریخ کی کتابوں میں لکھا ہے کہ سلطان نور الدین زنگی نے اپنی نیند میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو ان دو آدمیوں کے بارے میں بتاتے ہوئے دیکھا تو وہ مدینہ تشریف لائے اور انھوں نے تلاش شروع کر دی اور پتہ چلا کہ وہ لوگ ایک تہ خانے کھود رہے تھے اور وہ بالکل قبر تک پہنچ گئے، چنانچہ سلطان کے حکم سے انھیں قتل کرنے کا حکم دیا گیا۔ [107] اس کے بعد نورالدین زنگی نے چوری کی کسی بھی کوشش کو روکنے کے لیے تینوں قبروں کے گرد سیسے کی ٹھوس خندق تعمیر کرنے کا حکم دیا۔
  4. چوتھی کوشش: 578 ہجری میں جب لیونٹ کے عیسائیوں کا ایک گروہ بحیرہ احمر پہنچ گیا اور اس گروہ نے بہت سے مسلمانوں کو قتل کر دیا۔ وہ مدینہ جا کر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی لاش کو نکالنے کا ارادہ رکھتے تھے۔ لیکن مصر کے لوگوں نے ان کو پکڑ لیا، انھیں قتل کر دیا اور دوسروں کو گرفتار کر لیا۔ [108]
  5. پانچویں کوشش: ساتویں صدی ہجری کے وسط میں جب شام سے حلب کے 40 آدمیوں نے ابوبکر، اور عمر بن الخطاب کی لاشیں نکالنے کی کوشش کی تو انھوں نے مدینہ کے امیر کو بہت زیادہ رقم دی اور ان سے کہا۔ انھیں کمرہ کھولنے کے قابل بنائیں۔ جب وہ حجرہ نبوی کے قریب پہنچے تو زمین نے انھیں نگل لیا۔ [109]

مسجد نبوی کے دیگر مقامات

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا منبر

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کے بارے میں فرمایا: میرے گھر اور منبر کے درمیان جنت کے باغوں میں سے ایک ہے۔  رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پہلے کھجور کے درخت کے تنے پر تبلیغ کیا کرتے تھے اور پھر ان سے منبر بناتے تھے اور اس پر تبلیغ کرنا شروع کر دیتے تھے۔ بخاری نے جابر سے اپنی حدیث میں بیان کیا ہے کہ: "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جمعہ کے دن ایک درخت یا کھجور کے درخت پر کھڑے ہوتے تھے: یا رسول اللہ کیا ہم آپ کے لیے منبر نہیں بناتے؟ تو آپ نے کہا کہ: اگر تم چاہو تو۔ چنانچہ انھوں نے ان کے لیے منبر بنایا۔"[110][111][112]

روضہ رسول

یہ مسجد نبوی میں منبر اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے کمرے کے درمیان واقع ہے اور مسلمانوں کے لیے اس کی فضیلت میں سے ایک یہ ہے کہ بخاری نے ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے اپنی صحیح میں نقل کیا ہے: "رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: میرے گھر اور منبر کے درمیان جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے اور میرا منبر میرے تالاب پر ہے۔ یہ منبر سے کمرے تک تقریبا 26.5 میٹر لمبا ہے اور اب مسجد کے باقی قالینوں سے مختلف سبز قالینوں سے نشان زد ہے۔

صفت یا بینچ

قبلہ کعبہ میں تبدیل ہونے کے بعد حضور اکرم صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے شمالی دیوار پر چھت کی تعمیر کا حکم دیا جو مسجد کے عقبی حصے میں بن گئی اور اس جگہ کو بے گھر یا خاندانی لوگوں کے رہنے کے لیے تیار کیا گیا تھا اور اسے صحابہ کرام کی صفت جیسے لوگ منسوب کیے گئے تھے جن میں سب سے مشہور ابو ہریرہ تھے۔ صفت کے لوگوں کا کام یہ تھا کہ وہ قرآن اور شرعی احکام رسول اللہ صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم سے سیکھیں یا ان لوگوں سے سیکھیں جن کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا کرنے کا حکم دیا تھا۔ زیادہ تر اقوال اس بات پر متفق ہیں کہ تقریبا 9 سال میں چار سو صحابہ اس صفت سے جڑے ہوئے تھے، ابو ہریرہ کہتے ہیں کہ: "میں نے اپنے ساتھ تین سو سے زیادہ صفات میں دیکھا، پھر میں نے ان میں سے ہر ایک کو گورنر یا شہزادے کے طور پر دیکھا"۔

کنواں

یہ مدینہ کے کنوؤں میں سے ایک ہے، یہ صحابی ابو طلحہ انصاری کی ملکیت ہے اور جب آیت نازل ہوئی (جب تک تم اپنی پسند کا خرچ نہیں کرو گے) تو ابو طلحہ نے اس پر یقین کیا اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اس کے پانی کو اذیت دے رہے تھے اور اب یہ شاہ فہد کے دروازے کے قریب شمال کی طرف سے مسجد نبوی کے اندر واقع ہے۔[113]

خوخا ابو بکر

آڑو ایک چھوٹا سا دروازہ ہے اور اس کی اصل دیوار میں کھلنا ہے۔  بکر کا آڑو مسجد کے مغرب میں منبر کے قریب تھا۔  جب عمر بن خطاب نے ابو بکر کے گھر کو مسجد میں متعارف کرایا تو اس نے الخوخا کو اس کی پہلی جگہ پر رکھا۔ مجیدیہ فن تعمیر میں یہ دروازہ (الخوخہ) ایک گودام میں کھلتا تھا اور اس کی جگہ پہلے سعودی فن تعمیر کے دوران الصدیق کا دروازہ تھا جس سے ملحقہ تین دروازے ہیں اور جنوبی دروازہ ابوبکر کا کھوخا ہے۔[114]

مسجد نبوی کی لائبریری

مسجد نبوی کی لائبریری 1352ہجری بمطابق 1933ء میں مدینہ منورہ میں اس وقت کے ڈائریکٹر اوقاف جناب عبید مدنی کی تجویز پر قائم کی گئی تھی اور اس کے پہلے ڈائریکٹر جناب احمد یاسین الخیری تھے۔ لائبریری میں کچھ کتابیں موجود ہیں جو لائبریری کے قیام کی تاریخ سے پہلے کی ہیں، جیسے شیخ محمد العزیز الوزیر کی لائبریری، جسے 1320 ہجری میں روک دیا گیا تھا اور یہ ان کتابوں میں سے ایک ہے جو اس کے قیام کے بعد لائبریری میں متعارف کرائی گئیں اور معزز کنڈرگارٹن میں کتابیں موجود تھیں، جن میں سے کچھ لائبریری کے قیام کی تاریخ سے جدید تاریخ رکھتی ہیں۔ کتاب "عرب بک کیسز" کے مصنف کا کہنا ہے کہ مسجد نبوی کی لائبریری 13 رمضان 886 ہجری کو مسجد نبوی میں آگ لگنے سے پہلے بنائی گئی تھی، جہاں قرآن کی الماریاں اور کتابیں اس آگ میں جل گئی تھیں اور الماریوں میں قیمتی کتابیں اور عظیم قرآن شامل تھے۔ لائبریری کا مقام اس وقت مسجد نبوی کے اندر ہے، جہاں مسجد نبوی میں آنے والے تمام زائرین کو لائبریری اور اس میں فراہم کی جانے والی خدمات سے فائدہ اٹھانے کی اجازت ہے۔[115]

موذن ستون

اسے "المقبریہ" کہا جاتا ہے، جو وہ کیبن ہے جس پر موذن اس وقت کھڑا ہے اور منبر کے شمال میں واقع ہے اور یہ ستون پر مبنی ایک اونچا مربع سنگ مرمر کا بینچ ہے۔ یہ دکا سلطان قتابے کے دور حکومت سے موجود ہے اور 1982 میں اس کی توسیع کی گئی تھی۔

جنت البقیع

یہ پیغمبر اسلام کے زمانے سے مدینہ کے لوگوں کا مرکزی قبرستان ہے اور مسجد نبوی کی دیوار کے جنوب مشرقی حصے کے سامنے واقع ہے اور اس کا موجودہ رقبہ 180،000 مربع میٹر ہے۔ اس میں شہر کے ہزاروں لوگوں کی باقیات اور ہمسایوں اور زائرین سے مرنے والوں کی باقیات شامل ہیں یا گذشتہ صدیوں میں صحابہ کرام کی قیادت میں ان کی لاشوں کی منتقلی شامل ہے، جیسا کہ بیان کیا گیا ہے کہ اس میں دس ہزار صحابہ دفن ہوئے ہیں، جن میں عثمان بن عفان، خلفائے راشدین میں سے تیسرے اور اہل ایمان کی زیادہ تر مائیں، حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی بیویاں، ان کی بیٹی فاطمہ زہرا، ان کے چچا، ان کے چچا محمد بن عباس، ان کے چچا حسن بن عباس، ان کے چچا محمد بن عباس اور ان کے چچا محمد بن عباس شامل ہیں۔ اور جعفر صادق۔

مسجد نبوی کے امام

مسجد الحرام اور مسجد نبوی کے ائمہ کو مسلمانوں کے اندر ایک خاص حیثیت ہے۔ [116]

عہد نبوی کے دور میں

نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں، وہ خود مسجد کے امام تھے اور کسی اور نے مسجد نبوی کی امامت نہیں کی، سوائے اس کے جب وہ بیمار ہو گئے تھے، انھوں نے حکم دیا کہ ابوبکر صدیق لوگوں کی امامت کریں۔ [117] جہاں تک فتوحات کا معاملہ تھا نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے عبداللہ بن ام مکتوم (جو پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں مؤذن تھے) کو مدینہ پر مقرر کرتے تھے تاکہ لوگوں کو مسجد میں نماز پڑھائیں۔ [118]

خلفائے راشدین کے دور میں

اموی دور میں امامت کی ذمہ داری مدینہ اور مکہ کے شہزادوں کے سپرد تھی۔ جب عبد اللہ بن زبیر کو مکہ کا گورنر بنایا گیا تو وہ مسجد نبوی کی امامت کرتے تھے۔ اموی دور کے مشہور ائمہ میں سے ایک امام سعید بن مسیب تھے جو اپنے وقت کے سب سے زیادہ علم رکھنے والے افراد میں سے ایک تھے اور انھیں فقہا کا فقیہ کہا جاتا تھا۔ [119]

عباسی دور میں

عباسی ریاست کے دوران علویوں کی جانب سے محمد نفس الزکیہ جو 145ھ/762ء میں خلیفہ المنصور کے دور حکومت میں مدینہ پر قابض ہوئے، لیکن ان کا یہ انقلاب ان کے خاتمے اور عباسیوں کے پاس شہر کی واپسی کے ساتھ ختم ہوا۔ امام مالک بن انس (جن کی طرف مالکی مکتبہ منسوب کیا جاتا ہے) اس دور میں ظاہر ہونے والے سب سے ممتاز ائمہ میں سے تھے اور وہ بعض عباسی خلفاء جیسے المنصور کی پالیسی پر سخت موقف رکھتے تھے۔ اور جب عباسی دور میں یہ شہر آزاد ریاستوں مثلاً طولونید اور اخشیدوں کے تابع ہوا تو ان کا کنٹرول برائے نام تھا اور عباسیوں کے ساتھ منبروں پر ان کے نام کے ذکر سے زیادہ نہیں تھا اور انھوں نے مداخلت نہیں کی۔ [120]

لیکن جب فاطمی نمودار ہوئے تو وہ شہر پر قابو پانے میں کامیاب ہو گئے، جہاں انھوں نے عباسی گورنر کو بے دخل کر دیا اور عباسیوں کے سیاہ جھنڈے نیچے کر دیے گئے اور اس کی جگہ پر انھوں نے امارت اور حرم کے میناروں پر سفید جھنڈے گاڑ دیے اور خطبہ مکہ اور مدینہ میں فاطمیوں کو منتقل کیا گیا اور ائمہ کی حیثیت متاثر ہوئی۔ ان اثرات میں سب سے نمایاں اہل تشیع کی ترقی اور اس کا بڑھتا ہوا اثر تھا۔ پھر ایوبیوں نے حجاز پر قابو پانے اور 1167 ہجری کے مطابق 563 ہجری میں فاطمی ریاست کو ختم کرنے میں کامیاب ہو گئے اور یہ شہر عباسیوں کے پاس واپس آ گیا اور عباسی خلیفہ کے ساتھ جمعہ کے خطبہ میں ایوبیوں کا نام آیا۔ [121]

مملوک دور میں

مملوک دور کے آغاز میں مسجد نبوی کے امام سنان بن عبد الوہاب بن نمیلا کے خاندان سے تھے، جو بنو ہاشم میں سے اور اہل تشیع کے پیروکار تھے، لیکن اس وقت شہر کے حکمران اہل سنت تھے۔ اس زمانے میں کوئی مبلغ یا امام نہیں تھا۔ اور اہل سنت شیعہ اماموں کے پیچھے نماز پڑھنے سے پرہیز کرتے تھے، جس کی وجہ سے مملوک ریاست نے مداخلت کرتے ہوئے 1283ء میں سنان خاندان سے خطبہ لیا اور اسے سنی امام کے سپرد کیا۔ سلطان ناصر محمد بن قلاوون کے دور میں اس نے عدلیہ کے کردار کو امامت میں شامل کیا۔ اور اس زمانے میں اہل سنت کے درمیان امامت، بیان بازی اور عدلیہ کے انچارجوں کے لیے شافعی مکتب فکر کے پیروکار ہونے کا رواج تھا۔ 1373ء میں جج محب الدین ابن ابی الفضل النویری کو مدینہ کا قاضی مقرر کیا گیا اور انھوں نے مسجد نبوی میں تبلیغ اور امامت کی۔ [122] مملوک دور میں سرکاری لباس ان لوگوں کے لیے تھا جو امام کی پیروی کرتے تھے اور سیاہ رنگ میں بیان بازی کرتے تھے، لہٰذا اس دور میں لباس کالا، پگڑی سیاہ اور طلسان (اسکارف) سیاہ تھا۔ مملوکوں نے مسجد نبوی میں امامت کی شرائط جو رکھی تھیں اس میں یہ بھی شامل کیا کہ امام قرأت اور دینی فرائض کے علم سے پوری طرح واقف ہو۔

عثمانیوں کے دور میں

عثمانی دور میں مسجد نبوی کے ائمہ مذہبی طور پر آزاد تھے۔ مبلغین کے شیخ، امامت اور خطبہ کی نگرانی کرتا تھا اور اس منصب کے لیے ضروری تھا کہ وہ ان پر عمل اور کافی تجربہ کار ہو۔ عثمانیوں نے مسجد نبوی میں امامت اور مسجد کے کاموں کے متعلق خاص خیال رکھا۔ جیسے انھوں نے روشنی جلانے والا، خطبہ دینے والا، اصلاح کرنے والا، جھنڈا اٹھانے والا اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے محراب کا قالین پھیلانے والا یہ سب کام علاحدہ علاحدہ لوگوں سے شروع کروائے۔ سلطنت عثمانیہ نے رمضان المبارک میں اماموں کو فراخدلی سے تنخواہیں فراہم کیں۔ عثمانی دور میں ائمہ سے متعلق انتظامی انتظامات میں جو بات قابل ذکر ہے وہ یہ ہے کہ حنفی ائمہ دیگر فرقوں سے ممتاز رہے اور وہ اماموں میں سب سے زیادہ تعداد میں رہے تھے۔ عثمانی دور میں سب سے نمایاں ائمہ اور مبلغین خاندانوں کا تعلق العرکلی خاندان، الازہری خاندان، البرزانجی خاندان، الجامع خاندان، الحجر۔ خاندان، الخیاری خاندان اور السمہودی خاندان سے تھا۔ [123]

سعودی دور میں

جدید سعودی ریاست کے دور میں، حرمین شریفین کی امامت پڑوسی علاقوں کے علما کر رہے تھے، کیونکہ ائمہ کا انتخاب ریاست کے علما کی سفارش سے کیا جاتا تھا۔ امام کے لیے شاہ عبد العزیز نے 1977ء میں مسجد نبوی کے لیے "دو مقدس مساجد کی انتظامیہ" کے نام سے ایک خصوصی انتظامیہ قائم کی، 1986ء میں اس کا نام تبدیل کر کے " مسجد نبوی کے امور کے لیے جنرل پریذیڈنسی" رکھ دیا گیا۔ اس انتظامیہ کو جو اہم ترین کام تفویض کیے گئے ہیں ان میں امام کا تقرر، اس کے لیے مناسب شرائط کا تعین، نماز کا اہتمام کرنا، ہر امام کے لیے ایک خاص نظام الاوقات بنانا، اس کی نماز کی فرضیت اور خطبات کے لیے بھی شیڈول بنانا۔ یہ تمام معاملات باہمی ہم آہنگی کے ساتھ حل کیے جاتے ہیں۔ سعودی دور میں زیادہ تر ائمہ عدلیہ میں کام کرتے تھے اور مسجد نبوی میں امامت سنبھالنے والے پہلے شخص شیخ الحامد بردان تھے۔ سعودی دور کے آغاز میں دو مقدس مساجد کی امامت کرنے والوں میں سے اکثر کا تعلق سعودی ملک سے باہر سے تھا۔ مصر سے تعلق رکھنے والے شیخ محمد بن عبد الرزاق حمزہ مدینہ میں مسجد نبوی کے امام اور مبلغ تھے۔ [124]

مسجد نبوی کے مؤذنین

ان کی تعداد 15 ہے اور وہ یہ ہیں: [125]

  • حضرت بلال حبشیؓ
  • كامل بن صالح بن احمد نجدى.
  • مصطفى بن عثمان بن حسن نعمانى.
  • عبد المطلب بن صالح بن احمد نجدى.
  • عصام بن حسين بن عبد الغنى بخارى.
  • عبد الرحمن بن عبد الإله بن إبراهيم خاشقجي (شيخ المؤذنين).
  • عمر بن يوسف بن محمد كمال۔
  • سامي بن محمد حسن ديولی۔
  • فيصل بن عبد الملك بن محمد سعيد نعمان۔
  • سعود بن عبد العزيز بن حسين بخاری۔
  • محمد بن ماجد بن حمزة حكيم۔
  • إياد بن أحمد بن عباس شكری۔
  • أشرف بن محمد بن حمزة عفيفی۔
  • عبد المجيد بن سلامة بن عودة السريحی۔
  • عمر بن نبيل سنبل۔

مسجد نبوی کی اہمیت

اسلام میں حرم المکی کے بعد سب سے زیادہ اہمیت اسی حرم النبوی کو حاصل ہے۔

قرآن مجید میں

قرآن کریم کی سورۃ التوبہ میں مسجد نبوی کی طرف اشارہ اس آیت میں ملتا ہے:

لَا تَقُمْ فِيهِ أَبَدًا لَمَسْجِدٌ أُسِّسَ عَلَى التَّقْوَى مِنْ أَوَّلِ يَوْمٍ أَحَقُّ أَنْ تَقُومَ فِيهِ فِيهِ رِجَالٌ يُحِبُّونَ أَنْ يَتَطَهَّرُوا وَاللَّهُ يُحِبُّ الْمُطَّهِّرِين
ترجمہ:جو مسجد پہلے روز سے ہی تقویٰ کی بنیاد پر بنائی گئی ہے وہ اس بات کے لیے زیادہ موزوں ہے کہ تم اس میں (عبادت کے لیے) کھڑے ہو، اس میں ایسے لوگ (عبادت کرنے) آتے ہیں جو پاک رہنا پسند کرتے ہیں اور اللہ تعالیٰ پاک رہنے والوں سے محبت کرتا ہے۔

احادیث میں

اس مسجد کی اہمیت کا اندازہ رسول ﷺ کی درج ذیل احادیث سے لگایا جا سکتا ہے:

عن جَابِرٍ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قال صَلَاةٌ في مَسْجِدِي أَفْضَلُ من أَلْفِ صَلَاةٍ فِيمَا سِوَاهُ إلا الْمَسْجِدَ الْحَرَامَ وَصَلَاةٌ في الْمَسْجِدِ الْحَرَامِ أَفْضَلُ من مِائَةِ أَلْفِ صَلَاةٍ فِيمَا سِوَاهُ۔[126]
حضرت جابر () سے روایت ہے كہ رسول الله صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمايا کہ ميرى اس مسجد ميں نماز (اجر كے اعتبار سے )دوسرى مساجد ميں نماز پڑهنے سے ایک ہزار گنا افضل ہے، سوائے مسجد حرام كے اور مسجد حرام ميں نماز پڑهنا اس كے سوا مساجد ميں ایک لاكھ نمازيں پڑهنے سے افضل ہے۔

ایک اور جگہ فرمایا:

لاَ تَشُدُّوا الرِّحَالَ إِلاَّ إِلَى ثَلاَثَةِ مَسَاجِدَ مَسْجِدِى هَذَا وَالْمَسْجِدِ الْحَرَامِ وَالْمَسْجِدِ الأَقْصَى
ترجمہ:تین مساجد کے علاوہ کسی دوسری مسجد کا (زیادہ ثواب حاصل کرنے کی نیت سے ) سفر اختیار نہ کیا جائے۔ یعنی مسجد الحرام، مسجد النبوی اور مسجد الاقصیٰ

ایک اور حدیث ہے :

مَا بَيْنَ بَيْتِي وَمِنْبَرِي رَوْضَةٌ مِنْ رِيَاضِ الْجَنَّةِ وَمِنْبَرِي عَلَى حَوْضِي
یعنی کہ آپ ﷺ کے منبر شریف اور حجرہ مبارک کا درمیانی حصّہ جنت کے باغوں میں سے ایک باغ ہے۔

مسجد نبوى كا مقام

رسول اللہ ﷺ نے اسی مسجد کے سنگریزوں پر بیٹھ کر معاشرہ کے تمام مسائل کو قرآن کریم کی روشنی میں حل فرمایا۔ آپ کی تمام اصلاحی اور تعمیری سرگرمیاں یہیں سے سر انجام پاتی تھیں۔ سینکڑوں مہاجرین کی اس چھوٹی سی بستی میں منتقل ہونے کے نتیجہ میں آبادی کے مسائل تھے اور ان نووارد افراد کو معاشرے میں ضم کرنے کے مسائل تھے۔ اس مسئلہ کو مسجد نبوی کے صحن میں بیٹھ کر مواخات کی شکل میں حل کیا گیا۔ نئی مملکت کے تمام سیاسی مسائل کے حل اور قانون سازی کے لیے اس مسجد نے پارلیمنٹ ہاوس کا کردار ادا کیا۔ عدالتی فیصلوں کے لیے اسی مسجد نے سپریم کورٹ کا کردار ادا کیا۔ ہر قسم کی تعلیمی کارروائیاں اسی مسجد سے سر انجام پانے لگیں۔ تمام رفاہی کاموں کا مرکز یہی مسجد قرار پائی۔ تجارت و زراعت کے مسائل کے لیے یہی کامرس چیمبر اور یہی ایگریکلچر ہاوس قرار دیا گیا۔ دفاعی اقدامات اور جنگی حکمت عملی کے لیے بھی یہی مسجد بطور مرکز استعمال ہونے لگی۔ رسول اللہ ﷺ نے جب کسی علاقے میں جہاد کے لیے لشکر روانہ کرنا ہوتا تو اسی مسجد سے اس کی تشکیل کی جاتی اور ایک موقع پر مجاہدین نے جہاد کی تربیت کا مرحلہ بھی اس مسجد کے صحن میں مکمل کیا۔ حضرت عائشہ ا فرماتی ہیں کہ حبشہ کے کچھ لوگ آئے ہوئے تھے اور عید کے روز مسجد نبوی کے صحن میں وہ نیزہ بازی کی مشق کر رہے تھے جسے میں نے رسول اللہ ﷺ کی اوٹ میں کھڑے ہوکر دیکھا۔ رسول اللہ ﷺ نے مسجد و مدرسہ کو مسلم معاشرہ کا محور بنا دیا تھا اور مسجد و مدرسہ کا کردار زندگی کے ہر شعبہ پر محیط تھا، جس کے نتیجے میں دیکھتے ہی دیکھتے صدیوں کے الجھے ہوئے تمام مسائل حل ہو گئے اور مدینہ منورہ کا معاشرہ دنیا کے لیے ایک عظیم الشان مثال بن گیا۔

رسول اکرم ﷺ نے مسجد نبوی کو صرف عبادت کی جگہ قرار نہیں دیا بلکہ اس سے لوگوں کی سماجی، سیاسی، علمی اور زندگی کے دیگر امور سے متعلق مسائل کے حل کے لیے بھی استفادہ کرتے تھے اسی لیے یہ مسجد مسلمانوں کے لیے انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔ برسوں سے لاکھوں مسلمان مسجد نبوی اور اس کے احاطے میں واقع روضہ نبوی کی زیارت کے لیے نہایت عقیدت و احترام اور ذوق و شوق کے ساتھ مدینے جاتے ہیں۔

تصاویر

مزید دیکھیے

بیرونی روابط

حوالہ جات

  1. Google maps۔ "Location of Masjid an Nabawi"۔ Google maps۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 ستمبر 2013 
  2. "البدايات الأولى لدخول الكهرباء للمملكة السعودية."۔ 01 اکتوبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  3. Ariffin 2005, pp. 88–89, 109
  4. Ariffin 2005, pp. 88–89, 109
  5. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج1، ص249-275، دار الكتب العلمية، ط1.
  6. الطبقات الكبرى، ابن سعد، ج1، ص239.
  7. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص39-42، ط1996.
  8. بوابة الحرمين الشريفين - أبواب المسجد النبوي
  9. فتح الباري، ابن حجر العسقلاني، ج7، ص266.
  10. دلائل النبوة، البيهقي، ج2، ص542.
  11. سنن الترمذي، 5/3703.
  12. وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص67-81، دار الكتب العلمية، ط1.
  13. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص67-81، دار الكتب العلمية، ط1.
  14. تحقيق النصرة بتلخيص معالم دار الهجرة، أبو بكر المراغي، ص46-47.
  15. وفاء الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي ج2، ص497-498.
  16. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص81-89، دار الكتب العلمية، ط1.
  17. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص43-46، ط1996.
  18. تاريخ الإسلام، الذهبي، ج6، ص31.
  19. ^ ا ب پ ت وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص89-105، دار الكتب العلمية، ط1.
  20. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص47-48، ط1996.
  21. وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص105-108، دار الكتب العلمية، ط1.
  22. المدينة المنورة تطورها العمراني وتراثها المعماري، صالح لمعي مصطفى، ص75-79، دار النهضة.
  23. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص150-155، دار الكتب العلمية، ط1.
  24. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص150-155، دار الكتب العلمية، ط1.
  25. ^ ا ب وفاء الوفاء بأخبار دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص175-185، دار الكتب العلمية، ط1.
  26. "موسوعة المدينة المنورة: قباب المسجد النبوي الشريف."۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  27. المدينة المنورة تطورها العمراني وتراثها المعماري، صالح لمعي مصطفى، ص84، دار النهضة.
  28. "موقع الحج والعمرة: المسجد النبوي الشريف في العهد العثماني التركي."۔ 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  29. "موسوعة المدينة المنورة: قباب المسجد النبوي الشريف."۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  30. ^ ا ب فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص87-88، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  31. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص65-69، ط1996.
  32. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص65-69، ط1996.
  33. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص65-69، ط1996.
  34. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص71-102، ط1996.
  35. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص71-102، ط1996.
  36. جريدة الشرق الأوسط: شؤون المسجد النبوي الشريف تعلن اكتمال مشروع المظلات العملاقة. آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ classic.aawsat.com (Error: unknown archive URL) تاريخ الوصول 14 يوليو 2013. [مردہ ربط]
  37. جريدة العربية: الملك عبد الله يأمر بتنفيذ توسعة كبرى للحرم النبوي. تاريخ الوصول 14 يوليو 2013. آرکائیو شدہ 2016-03-04 بذریعہ وے بیک مشین
  38. المدينة نيوز: أكبر توسعة للمسجد النبوي. تاريخ الوصول 14 يوليو 2013. آرکائیو شدہ 2015-09-28 بذریعہ وے بیک مشین
  39. بوابة الحرمين الشريفين: عمارة وتوسعة المسجد النبوي
  40. فتح الباري، ابن حجر العسقلاني، ج1، ص96.
  41. الدر الثمين، غالي محمد الشنقيطي، ص22.
  42. البداية والنهاية، ابن كثير، ج6، ص131.
  43. وصف المدينة المنورة، علي بن موسى، ص60.
  44. عمدة الأخبار في مدينة المختار، أحمد بن عبد الحميد العباسي، ص137.
  45. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص104-111، ط1996.
  46. تحقيق النصرة بتلخيص معالم دار الهجرة، أبو بكر المراغي، ص46-47.
  47. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص104-111، ط1996.
  48. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص104-111، ط1996.
  49. ^ ا ب مرآة الحرمين، إبراهيم رفعت باشا، ج1، ص469-470.
  50. ^ ا ب أخبار مدينة الرسول، ابن النجار، ص69-94.
  51. كتاب المناسك، حمد الجاسر، ص384، دار اليمامة.
  52. نزهة الناظرين، جعفر بن إسماعيل البزنجي، ص82-84، المطبعة الجمالية.
  53. المدينة المنورة في التاريخ، عبد السلام حافظ، ص75-76، دار التراث.
  54. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص71-102، ط1996.
  55. ^ ا ب خلاصة الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي، ص339-344، المكتبة العلمية.
  56. سنن أبي داود، ج2، ص462.
  57. خلاصة الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي، ص339-344، المكتبة العلمية.
  58. التحفة اللطيفة في تاريخ المدينة الشريفة، السخاوي، ج1، ص50، مطبعة السنة المحمدية.
  59. وفاء الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي ج2، ص681
  60. فصول من تاريخ المدينة المنورة، تأليف: علي حافظ، ص91-93، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  61. خلاصة الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي، ص630، المكتبة العلمية.
  62. أخبار مدينة الرسول، ابن النجار، ص108.
  63. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص78-81، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  64. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص78-81، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  65. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص78-81، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  66. عمدة الأخبار في مدينة المختار، أحمد بن عبد الحميد العباسي، ص109.
  67. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص78-81، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  68. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص65-69، ط1996.
  69. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  70. صحيح البخاري، رقم: 502.
  71. الفتاوى، تأليف: ابن تيمية، ج1، ص70.
  72. أخبار المدينة، ابن زبالة، تحقيق: صلاح عبد العزيز زين سلامة، ص100، مركز بحوث ودراسات المدينة المنورة، ط2003.
  73. الكعبة المعظمة والحرمان الشريفان عمارة وتاريخاً، عبيدالله محمد أمين كردي، ص251.
  74. المعجم الأوسط، الطبراني، حديث رقم: 866، تحقيق محمود الطحان، ج1، مكتبة المعارف، 1985، 475-476.
  75. "مجلة الحجاز: أسطوانة عائشة رضي الله عنها، عمر حريق."۔ 27 اپریل 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  76. فصول من تاريخ المدينة المنورة، تأليف: علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  77. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  78. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  79. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  80. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  81. فصول من تاريخ المدينة المنورة، علي حافظ، ص69-71، ط3، شركة المدينة المنورة للطباعة والنشر.
  82. عمارة وتوسعة المسجد النبوي الشريف عبر التاريخ، ناجي بن محمد حسن عبد القادر الأنصاري، ص68-73، ط1996.
  83. البداية والنهاية، ابن كثير، ج5، صفة قبر النبي
  84. الطبقات الكبرى، ابن سعد، ج2، ص494.
  85. رواه البخاري في صحيحه عن سفيان التمار، رقم: 1390.
  86. السنن الكبرى، البيهقي عن القاسم بن محمد بن أبي بكر، الصفحة أو الرقم: 4/3، وقال عنه: أصح حديث في الباب، وأولى أن يكون محفوظاً.
  87. وفاء الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي ج2، ص625-626.
  88. تاريخ المدينة المنورة، عمر النميري
  89. البداية والنهاية، ابن كثير، ج5، صفة قبر النبي
  90. سنن الترمذي، حديث رقم: 3696.
  91. "من أسرار الحرم النبوي الشريف لوحة من الفضة هدية من السلطان العثماني أحمد الأول في القرن 11 هجري وضعت فوق باب التوبة في المواجهة الشريفة"۔ 03 مئی 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  92. مرآة الحرمين، إبراهيم رفعت باشا، ج1، ص663.
  93. نزهة الناظرين، جعفر بن إسماعيل البزنجي، ص69-71، المطبعة الجمالية.
  94. مرآة الحرمين، إبراهيم رفعت باشا، ج1، ص473.
  95. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص71-73، ط1996.
  96. نزهة الناظرين، جعفر بن إسماعيل البزنجي، ص69-71، المطبعة الجمالية.
  97. مرآة الحرمين، إبراهيم رفعت باشا، ج1، ص475-476.
  98. الرحلة الحجازية، محمد لبيب البتنوني، ص246.
  99. تاريخ المسجد النبوي الشريف، محمد إلياس عبد الغني، ص185-188، ط1996.
  100. وفاء الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص609-608.
  101. ^ ا ب نزهة الناظرين، جعفر بن إسماعيل البزنجي، ص71-77، المطبعة الجمالية.
  102. أخرجه ابن حجر العسقلاني في تخريج مشكاة المصابيح، وقال عنه: حسن كما قال في المقدمة.
  103. حكم القبة المشيدة على قبر الرسول، من كتاب رياض الجنة، تأليف: مقبل بن هادي الوادعي، بإشراف: حماد الأنصاري، ص41.
  104. المدينة المنورة تطورها العمراني وتراثها المعماري، صالح لمعي مصطفى، ص83، دار النهضة.
  105. التحفة اللطيفة في تاريخ المدينة الشريفة، السخاوي، ص69، مطبعة السنة المحمدية.
  106. عمدة الأخبار في مدينة المختار، أحمد بن عبد الحميد العباسي، ص128-129.
  107. ^ ا ب وفاء الوفا بتاريخ دار المصطفى، السمهودي، ج2، ص648-653.
  108. رحلة ابن جبير، ابن جبير، ص31-32، دار الهلال.
  109. ألوفا بما يجب لحضرة المصطفى، السمهودي، ص153.
  110. صحيح البخاري رقم (1196-1888-6588) ومسلم رقم (1391).
  111. فتح الباري، (6/601).
  112. رواه الإمام أحمد في المسند (2/329-518) عن أبي هريرة.
  113. موسوعة معالم المدينة : الآبار الأثرية النبوية بالمدينة المنورةآرکائیو شدہ 2017-01-18 بذریعہ وے بیک مشین
  114. فتح الباري، ابن حجر العسقلاني، ج1، ص558
  115. بوابة الحرمين الشرفين: تأسيس وموقع مكتبة المسجد النبوي. [مردہ ربط] آرکائیو شدہ 2020-03-28 بذریعہ وے بیک مشین
  116. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  117. صحيح مسلم، عن عائشة بنت أبي بكر، حديث رقم: 418.
  118. "التحفة اللطيفة في تاريخ المدينة."۔ 28 مارچ 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  119. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  120. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  121. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  122. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  123. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  124. "أئمة الحرمين الشريفين، إبراهيم الأقصم."۔ 01 مارچ 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2023 
  125. بيان تصريح الرئاسة العامة لشؤون المسجد الحرام والمسجد النبوي بتعيين خمسة مؤذنين في المسجد النبوي. آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ gph.gov.sa (Error: unknown archive URL) "نسخة مؤرشفة"۔ 22 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 يوليو 2017 
  126. ابن ماجہ، حدیث :1406