خلافت راشدہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
خلافت راشدہ

الخلافة الراشدة
632–661
خلافت راشدہ عثمان بن عفان کے دور میں 654ء میں اپنے عروج پر پہنچی
خلافت راشدہ عثمان بن عفان کے دور میں 654ء میں اپنے عروج پر پہنچی
دار الحکومتمدینہ منورہ (632–656)
کوفہ (656–661)
عام زبانیںکلاسیکی عربی (دفتری)، آرامی زبان/سریانی زبان، آرمینیائی زبان، بلوچی زبان، بربر زبانیں، قبطی زبان، جارجیائی زبان، یونانی زبان، میانہ فارسی، کردی زبان، عامیانہ لاطینی، پراکرت، سامی زبانیں، ایرانی زبانیں
مذہب
اسلام
حکومتخلافت
خلافت 
• 632–634
ابوبکر صدیق (پہلے)
• 634–644
عمر بن خطاب
• 644–656
عثمان بن عفان
• 656–661
علی بن ابی طالب
• 661
حسن ابن علی (آخری)
تاریخ 
• قیام
8 جون 632
• پہلا فتنہ (اندرونی تنازع) کا اختتام
28 جولائی 661
رقبہ
655[1]6,400,000 کلومیٹر2 (2,500,000 مربع میل)
آبادی
• 
21,400,000
کرنسیدینار، درہم
آیزو 3166 رمز[[آیزو 3166-2:|]]
ماقبل
مابعد
محمد بن عبد اللہ کی مدنی زندگی
بازنطینی سلطنت
ساسانی سلطنت
صوبہ افریقا
عرب قبل از اسلام
دولت امویہ

محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے وصال کے بعد ابوبکر صدیق، عمر فاروق، عثمان غنی اور علی المرتضی، حسن المجتبی کا عہد خلافت خلافت راشدہ کہلاتا ہے۔ اس عہد کی مجموعی مدت تیس سال ہے جس میں ابوبکر صدیق اولین اور علی آخری خلیفہ ہیں، حسن کی خلافت کے چھ ماہ خلافت علی میں شمار ہوتے ہیں جیسا کہ جمہور اسلاف کی رائے ہے۔ اس عہد کی نمایاں ترین خصوصیت یہ تھی کہ یہ قرآن و سنت کی بنیاد پر قائم نظام حکومت تھا۔

خلافت راشدہ کا دور اس لحاظ سے بہت اہم ہے کہ اس زمانے میں اسلامی تعلیمات پر عمل کیا گیا اور حکومت کے اصول اسلام کے مطابق رہے۔ یہ زمانہ اسلامی فتوحات کا بھی ہے۔ اوراسلام میں جنگ جمل اور جنگ صفین جیسے واقعات بھی پیش آئے۔جزیرہ نما عرب کے علاوہ ایران، عراق، مصر، فلسطین اور شام بھی اسلام کے زیر نگیں آ گئے۔ شیعہ خلافت راشدہ کو تسلیم نہیں کرتے۔ان کے نزدیک رسول اللہ کے جائز جانشین حضرت علی تھے۔ ان میں خلافت کی بجائے امامت کا تصور پایا جاتا ہے۔

قیام

خلافتِ راشدہ اپنی وُسعت کی انتہاء پر (نقشہ نگاری)

10ھ میں رسُول اللہ کی رحلت کے بعد صحابہ کرام کے زیرِ بحث رسول اللہ ﷺ کی جانشینی کا ہی مسئلہ تھا کہ کون رسول اللّٰہ ﷺ کے بعد اُمّتِ مسلمہ کے معمولات کو سنبھال سکے، جبکہ اہلِ بیت ؓ، رسول اللّٰہ ﷺ کی تجہیز و تکفین میں مصروف تھے۔ عمر بن خطاب اور ابو عبیدہ بن جراح نے ابوبکر صدیق سے وفا کا عہد کیا اور تمام انصار اور قریش نے بھی اُن کی تائید کی۔ یوں ابو بکر صدیق کو خَـلِـيْـفَـةُ رَسُـوْلِ اللهِ کا لقب ملا اور آپ نے ترویجِ اسلام کی غرض سے باقاعدہ عسکری مُہمّات کا بھی آغاز کیا۔ آپ کے ذمے، قبل از تمام یہ تھا کہ وہ اُن عرب قبائل کی بغاوتوں کو کچل ڈالیں، جنہوں نے رسول اللّٰہ صَلَّی اللّٰہٗ عَلَیْہٖ وَآلِہٖ وَسَلَّم سے بیعت کرکے اسلام قبول کرنے کے باوجود اللّہ کے اہم ترین احکامات امیر المومنین کی اتباع سے انکار کر دیا تھا۔ بحیثیتِ خلیفہ، ابو بکر صدیق نہ تو بادشاہ تھے اور نہ ہی آپ یا دیگر خُلفائے راشدین نے کبھی بادشاہت کا دعویٰ کیا۔ اُن کا انتخاب اور قیادت، سراسر لیاقت و استعداد پر مبنی تھے۔[2][3][4][5]

بالخُصوص، سُنّی علماء کے مُطابق، چاروں خُلفائے راشدین، رسول اللّٰہ ﷺ کے قریب ترین صحابہ کرام میں سے ایک تھے، قبل از تمام اسلام قبول کرنے والے تھے[6] اور عَشْرَہ مُبَشَّرَہ میں بھی شامل تھے۔

تاریخ

رسول اللّٰہ کی رحلت کے بعد تمام انصارِ مدینہ، بنو ساعدہ کے سقیفہ میں اکٹھے ہوئے[7]، تاکہ اُمّتِ مُسلمہ کے لیے ایک امیرِ نو کا انتخاب کیا جاسکے۔ کہا جاتا ہے کہ اس انتخاب سے مہاجرینِ مکہ کو مکمل طور پر مُستثنیٰ رکھا جانا تھا، لیکن اس موضوع پر بہت سے ابہام پائے جاتے ہیں۔[8]

بہرحال، حضرت ابو بکر صدیق اور حضرت عُمر فارُوق، دونوں صحابہ کرام عرب قبائل کی مُمکِنہ بغاوتوں سے خائف تھے، لہٰذا آپ دونوں فی الفور اس اجتماع میں پہنچے اور حضرت ابو بکر نے وہاں ایک خُطبہ دیتے ہوئے اہلِ محفل کو مُتنبہ کیا کہ رسول اللّٰہ کے قبیلے قُریش سے باہر کسی کا انتخاب کیا گیا تو یہ سخت اختلاف کا باعث ہوگا۔

خلافت راشدہ کی خصوصیات

جمہوریت

اس دور کی پہلی خصوصیت جمہوریت تھی۔ حضرت ابو بکر سے حضرت علی تک کی خلافت کے لیے نامزدگی میں جمہوری روح کار فرما تھی۔ ان میں کوئی خلیفہ ایسا نہ تھا جس کو امیر مقرر کرنے میں مسلمانوں کی عام رائے اور مرضی شامل نہ ہو۔ یا جسے مسلمانوں پر زبردستی مسلط کر دیا گیا ہو۔ سقیفہ بنو ساعدہ میں مسلمانوں کا حضرت ابو بکر کو نامزد کرنا، حضرت عمر فاروق کے لیے حضرت ابو بکر کی تمام صحابہ کرام سے رائے لینا اور مسلمانوں کا ان کے لیے متفق ہونا۔ حضرت عمر فاروق کی چھ صحابہ کرام کی کمیٹی میں حضرت عثمان کی خلافت کے لیے متفق ہونا اور حضرت علی سے مسلمانوں کا خلافت کا بار اٹھانے پر اصرار۔ یہ تمام طریقے اسلامی سلطنت میں خلیفہ کے انتخاب کے لیے جمہوریت کی انتہائی عمدہ اور واضح مثالیں ہیں۔ پھر ان کے عہد میں ہر موقع پر اس نظام میں جمہوریت کی روح کار فرما رہی۔

شوریٰ

خلافت راشدہ کی دوسری خصوصیت یہ تھی کہ اس کا نظام ایک شورائی نظام تھا۔ مجلس شوریٰ کی بنیاد پر عام مسلمانوں سے رائے لی جاتی اور مشوروں پر عمل کیا جاتا۔ ہر مسلمان کو مشورہ اور رائے کا حق حاصل تھا اور حکومت پر نکتہ چینی کا حق بھی رکھتا تھا۔ صدیوں کے حکام اور والی بھی لوگوں سے مشورے کے بعد مقرر ہوتے اور لوگوں کی شکایات پر ان کی تبدیلی بھی کر دی جاتی۔ جس سے معلوم ہوتا ہے کہ خلافت راشدہ میں عوام سے مشورے اور رائے کو کتنی اہمیت حاصل تھی۔

عوام کے حقوق

خلافت راشدہ میں تمام عوام کو بنیادی حقوق حاصل تھے۔ ان کی شخصی و سیاسی آزادی کی حفاظت کی جاتی تھی۔ مسلمان اور غیر مسلم دونوں کے حقوق یکساں تھے اور ان حقوق کا تحفظ حکومت کی ذمہ داری تھی۔ کوئی شخص کسی دوسرے کی حق تلفی نہیں کر سکتا تھا اور نہ ہی کسی پر زیادتی کی اجازت دی جاتی تھی۔ غیر مسلموں کو مذہبی آزادی دینے کے ساتھ ساتھ ان کی جان، مال اور عزت و آبرو کی حفاظت بھی کی جاتی تھی۔ غرض سلطنت اسلامیہ میں اس عہد میں کوئی ایک فرد بھی اپنے حقوق سے محروم نہ تھا۔

عدل و انصاف

خلافت راشدہ میں عدل و انصاف فراہم کرنا ایک بڑی خصوصیت تھی۔ اس عدل کے لیے سب برابر تھے۔ نہ کوئی امیر تھا اور نہ کوئی غریب۔ نہ کوئی بادشاہ تھا اور نہ کوئی رعایا۔ نہ کوئی گورا تھا اور نہ کوئی کالا اور نہ ہی رنگ و نسل اور طبقہ کا امتیاز قائم تھا۔ سب برابر کا درجہ رکھتے تھے۔ مجرم مجرم ہی تھا خواہ کوئی ہی کیوں نہ ہو۔

فلاحی ریاست

خلافت راشدہ میں فتوحات کا سلسلہ بھی جاری ہوا اور سلطنت وسیع ہوئی۔ نظام حکومت کی طرف بھی توجہ دی گئی اور ایک مکمل نظام جمہوریت کے مطابق قائم ہوا۔ اندرونی فتنوں کو بھی دبایا گیا اور بیرونی خطرات کا مقابلہ بھی ہوا لیکن ان تمام کاموں میں ایک چیز مشترک تھی وہ یہ کہ ان کا مقصد عوام کی فلاح، ان کی خوشحالی و آسودہ حالی، ان کو امن و سکون اور اسلامی ریاست و اسلام کا تحفظ تھا۔ یہ ایک مکمل فلاحی ریاست تھی۔ جس میں ہر شخص کے حقوق و فرائض اور ان کی ادائیگی کے طریقۂ کار مقرر تھے۔ اس ریاست کا مقصد آئینی فلاح اور اسلامی تصور فراہم کرنا تھا جو اس کی بڑی خصوصیت تھی۔

حکام اور عمال کی باز پرس

اس عہد میں نظام حکومت کی توسیع کے ساتھ ہر صوبے میں حکام اور عمال کا تقرر ہوتا تھا جس کو خلیفہ خود مقرر کر کے بھیجتے لیکن ان کی طرف سے غفلت نہیں برتی جاتی تھی۔ ان کے لیے تاکیدی احکامات ہوتے اور ان کی نگرانی ہوتی۔ ان کے خلاف کسی بھی قسم کی شکایت کے لیے حج کے موقع پر تمام عماد کو جمع کرنے کی تاکید ہوتی اور اعلان کیا جاتا جس کسی کو اپنے صوبے کے والی یا حاکم سے شکایت ہو کھلم کھلا پیش کرے۔ شکایات درج ہونے کے بعد ان کی تحقیق ہوتی اور درست ثابت ہونے پر ذمہ دار افراد کو سزا دی جاتی۔ حکام اور عمال کے خلاف اس طرح سختی سے باز پرس ہوتی جو اس کے بعد کے دور حکومت میں نظر نہیں آتی۔ ایک کامیاب حکومت کی یہ بڑی خوبی ہے کہ اس کے عوام حکومت کے مقرر کردہ عمال سے مطمئن رہیں۔

خلفاء کا کردار

ان تمام خصوصیات کے علاوہ سب سے بڑی خصوصیت خلفائے راشدین کا بلند کردار ہے۔ کیونکہ حکومت کی کامیابی کا تمام تر دار و مدار خلیفہ کی ذات پر تھا۔ اگر سربراہ حکومت خوبیوں کا مالک نہ ہو، اس کا کردار بلند نہ ہو تو باوجود کوشش کے حکومت کامیاب نہیں ہو سکتی۔ خلفائے راشدین کے کردار کی تو بات ہی کچھ اور ہے۔ ایسا پاک و صاف اور بلند کردار کسی اور حکمران میں دیکھنے میں نہیں آیا۔

ایسا کردار جو ہر لمحہ امت کی بھلائی میں کوشاں رہے۔ عوام کی تکلیف پر خود تکلیف میں مبتلا ہو جائے۔ ذمہ داری کا احساس اتنا کہ بھوک پیاس نیند آرام سب کچھ بھول کر عوام کی خدمت کے لیے اپنے آپ کو وقف رکھا۔ سادگی و انکسار اتنی کہ ان کی مثال خلافت راشدہ کے علاوہ اور کہیں نہیں ملتی۔ شرم و حیا جو وہ سخا کے پیکر، خدا ترسی اور ایثار و خلوص، عزم و حوصلہ اور بے لوث خدمت کے جذبے جیسی خصوصیات اور کردار کے مالک خلفائے راشدہ تھے جن کا ہر لمحہ اسلام کی بقا اور مسلمانوں کی فلاح کے لیے گزرا۔ خلافت راشدہ کے یہ خلفا اپنے بلند کردار کی وجہ سے دنیا کی دوسری تمام حکومتوں کے سربراہوں میں اولیت کا درجہ رکھتے ہیں جن کے کردار کی خوبیوں کی مثال کہیں اور تلاش کرنا ممکن نہیں۔

دینی حکومت

خلافت راشدہ تو ایک دینی حکومت تھی جس کی بنیاد قرآن و سنت تھی۔ دنیاوی غرض اور لالچ سے پاک حکومت دین کو پھیلانے اور دینی علوم کو مسلمانوں تک پہنچانے کا کام کرتی رہی اس حکومت کے تمام فرائض دین کا جزو تھے۔ لوگوں کو قرآن و سنت کی تعلیم اور صحیح اسلامی تصور بہم پہنچانا اس حکومت کی ذمہ داری تھی۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی قائم کی ہوئی اسلامی ریاست اور 23 سال کی جدوجہد سے قائم ہونے والا دین 'دینِ اسلام' ہی اس حکومت کی بنیاد تھی۔

خلافت راشدہ کا دور ایک اہم دور تھا جس میں اسلام اور مسلمانوں کی بے لوث خدمت کا جذبہ تھا۔ اس دور کی تمام خصوصیات میں اس دور کو چلانے والی وہ مقدس ہستیاں تھیں جن کا نصب العین اسلامی ریاست کو سیاسی اور اجتماعی نظام دین کے اصولوں کے مطابق فراہم کرنا تھا۔

علی ابن ابی طالبعثمان ابن عفانعمر ابن خطابابو بکر
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

مزید دیکھیے

حوالہ جات

  1. Rein Taagepera (ستمبر 1997). "Expansion and Contraction Patterns of Large Polities: Context for Russia". International Studies Quarterly 41 (3): 495. doi:10.1111/0020-8833.00053. http://www.escholarship.org/uc/item/3cn68807. 
  2. Azyumardi Azra (2006). Indonesia, Islam, and Democracy: Dynamics in a Global Context. Equinox Publishing (London). صفحہ 9. ISBN 9789799988812. 
  3. C. T. R. Hewer؛ Allan Anderson (2006). Understanding Islam: The First Ten Steps (ایڈیشن illustrated). Hymns Ancient and Modern Ltd. صفحہ 37. ISBN 978-0-334-04032-3. 
  4. Anheier، Helmut K.؛ Juergensmeyer، Mark، ویکی نویس (9 Mar 2012). Encyclopedia of Global Studies. SAGE Publications. صفحہ 151. ISBN 978-1-4129-9422-4. 
  5. Claire Alkouatli (2007). Islam (ایڈیشن illustrated, annotated). Marshall Cavendish. صفحہ 44. ISBN 978-0-7614-2120-7. 
  6. Catharina Raudvere, Islam: An Introduction (I.B.Tauris, 2015)، 51-54.
  7. Coeli Fitzpatrick, Adam Hani Walker Muhammad in History, Thought, and Culture: An Encyclopedia of the Prophet of God (2014)، p. 3 [1]
  8. Madelung، Wilferd (1997). The Succession to Muhammad. صفحہ 31. 

بیرونی روابط

خلافت کا اسلامی نقطہ نظر