اسرائیلی یہود

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اسرائیلی یہود
יהודים ישראלים
کل آبادی
بنیادی یہودی آبادی:
6,556,000
74.6% of the اسرائیلی آبادی
توسیع شدہ یہودی آبادی (بشمول یہودیوں کے غیر یہودی رشتہ دار):
6,705,000
اسرائیلی آبادی کا 79.3%
گنجان آبادی والے علاقے
 اسرائیل        6,300,000 (ستمبر 2015)
 ریاستہائے متحدہ 500,000
 روس 100,000 ( ماسکو میں 80,000)
 کینیڈا 10,755–30,000
 مملکت متحدہ ≈30,000
 آسٹریلیا 15,000
 جرمنی ≈10,000
زبانیں

تاریخی عبرانی، یہودی زبان
یدیش زبان، لاڈینو، یہودی عربی اور دیگر یہودی زبانیں
عبادتی زبانیں
عبرانی زبان اور آرامی زبان

اہم بولی جانے والی زبانیں
جدید عبرانی، انگریزی زبان، روسی زبان، ہسپانوی زبان، عربی زبان، فرانسیسی زبان، امہری زبان
متعلقہ نسلی گروہ
اشکنازی یہود · سفاردی یہودی · مزراحی یہودی،
دیگر سامی قوم (شامی عربی، آشوری قوم) اور دوسری یہودی نسلی گروہ

اسرائیلی یہود (انگریزی: Israeli Jews، عبرانی: יהודים ישראלים) کا اطلاق ان افراد پر ہوتا ہے جو یہودیت پر ایمان لاتے ہوں اور ان کےپاس ریاست اسرائیل کی شہریت ہو اور وہ اسرائیلی یہودی مہاجرین کی اولاد میں سے ہو۔ اسرائیلی زیادہ تر اسرائیل اور مغربی ممالک میں پائے جاتے ہیں۔ کچھ دیگر ممالک میں بھی آباد ہیں۔ یہ ضروری نہیں ہے کہ صرف یہودی علاقوں میں ہی پناہ گزین ہوں۔ زیادہ تر اسرائیلی یہود عبرانی زبان بولتے ہیں۔ اور ان میں اکثر کچھ نہ کچھ یہودی مذہبی تعلیمات کی پاسداری کرتے ہیں۔ موجودہ وقت میں دنیا میں یہود کی آبادی نصف حصہ ریاست اسرائیل میں آباد ہے۔ اسرائیل میں کی تعریف میں یہود کے تمام فرقے شامل ہیں۔ جیسے اشکنازی یہود، سفاردی یہودی، مزراحی یہودی ، [[بيتا ] اسرائیل]]، کوچین یہود، بنے اسرائیل، قرائی یہود اور ان کے علاوہ بہت سارے یہودی فرقے ہیں جو اسرائیل میں آباد ہیں۔ کثیر تعداد میں فرقوں کا وجود اسرائیل میں وسیع یہودی ثقافت اور تہذیب کا ذمہ دار ہے اور بہت سارے مذہبی رسومات اور عبادات احاطہ کرتے ہیں۔ حریدی یہودیت سے لیکر سیکیولر یہودیت سب کے سب یہودی ثقافت کے احاطے میں اپنی زندگی گزارتے ہیں۔ یہودی آبادی میں تقریباً 25 فیصد اسکولی بچے اور 35 فیصد سے زیادہ نومولود سفاردی یہودی اور مزراحی یہودی کی مخلوط اولادیں ہیں اور ان کی تعداد ہر سال 0۔5 فیصد کی در سے بڑھ رہی ہے۔ 50 فیصد سے زیادہ یہودی آبادی آیا نصف سفاردی ہے یا نصف مزارحی۔[1] باوجود یہ کہ اسرائیلی یہود کے درمیان اب بھی یہ بحث جاری ہے کہ یہودی کون ہے؟، اسرائیل میں یہود ہونا قومی شعار مانا جاتا ہے اور اسرائیلی انتظامیہ اس کی دیکھ ریکھ کرتی ہے۔ ایک مکمل یہود ہونے کے سارے معیار جنہیں یہودی کون ہے؟ کے تحت ترتیب دیاگیا ہے اور اسرائیلی وزارت داخلہ اس فردکو بطور یہود رجسٹر کرتی ہے جو اس معیار پر پورا اترا ہو۔ مرکزی ادارہ شماریات، اسرائیل کے اعداد و شمار کے مطابق دسمبر 2017ء تک اسرائیل میں یہودیوں کی آبادی تقریباً 6,556,000 ہے۔ ( کل آبادی کا 74.6 فیصد ، اگر مشرگی یروشلم اور گولان عرب کی آبادی بھٰ شامل کی جائے)۔[2][3] اسرائیلی ادارہ جمہوریت کی 2008ء کی رپورٹ کے مطابق 47 فیصد آبادی خود کو پہلے ایک یہودی کے طور پر تسلیم کرتی ہے پھر ایک اسرائیلی کے طور پر۔ صرف 39 فیصد آبادی خود کو پہلے اسرائیلی مانتی ہے۔ [4]

تاریخ[ترمیم]

آغاز سخن[ترمیم]

یہود شروع سے ہی ارض اسرائیل کو اپنا مادر وطن تسلیم کرتے رہے ہیں۔ اس وقت بھی جب کہ وہ منتشر تھے۔ اسرائیل کو اپنا گھر مانتے تھے۔ تنک کی تعلیمات کے مطابق یہود کا اسرائیل سے ناتا اس وقت سے شروع ہوتا ہے جب خدا نے ابراہیم کو سرزمین کنعان دینے کا وعدہ کیا تھا۔ ابراہیم کنعان میں آباد ہو گئے جہاں ان کے فرزند ارجمند اسحاق اور پوتے یعقوب کی ولادت ہوئی اور وہیں ان کا خاندان آباد ہوا۔ بعد ازاں یعقوب اپنی اولاد کے ساتھ مصر کی طرف ہجرت کر گئے تھے۔ صدیوں بعد ان کی نسل موسی اور ہارون کے ساتھ مصر سے نکل گئی، خدا نے موسی کو الواح عطا کی تھیں۔ اور وہ یعقوب کی اولاد کو اپنے آبائی وطن کنعان لے آئے۔ انہوں نے یوشع بن نون کی قیادت میںکنعان کو فتح کیا۔اسرائیلی قضاۃ کے دور میں اسرائیلیوں کے پاس کوئی منظم حکمران نہیں تھا۔ پھر اس دور کے بعد مملکت اسرائیل کو قائم کیا گیا اور ہیکل سلیمانی کی تعمیر عمل میں آئی۔ جلد ہی یہ بادشاہت دو حصوں مملکت یہوداہ اور مملکت اسرائیل میں منقسم ہو گئی۔ ان بادشاہتوں کی تباہی کے بعد 597 قبل مسیح میں محاصرہ یروشلم پیش آیا اور اسرائیلوں کو اسیری بابلکی طرف دھکیل دیا گیا۔ 70 برسوں کے بعد کچھ اسرائیلیوں کو علاقے میں آنے کی اجازت ملی اور پھر ہیکل دوم تعمیر کیا گیا۔ پھر انہوں نے حشمونی سلطنت کی بنیاد رکھی۔ 63 قبل مسیح میں رومی سلطنت نے حشمونی سلطنت پر قبضہ کر لیا۔ دوسری صدی کے دوران رومی سلطنت کے خلاف بغاوتی سلسلہ کا آغاز ہوا اور نتیجتا ہیکل دوم کی مسماری ہوئی اور یہودیوں کا دیس نکالا ہوا۔

7 ویں صدی میں اسلام کا عروج ہو ا اور بازنطینی سلطنت کی فوج نے اس علاقے کو شام کی اسلامی فتح جنگ میں فتح کر کے مسلم خلافت میں ملا لیا۔ صدیاں بیت گئیں اور علاقے میں یہودی آبادی گھٹتی بڑھتی رہی۔ 1880ء میں جدید صہیونیت سے قبل، 19 ویں صدی ڪے اوائل میں 1000 یہودی جدید اسرائیل میں آباد تھے۔

یہودی ایک زمانہ تک راندہ درگاں رہے، پھر 19 ویں صدی صہیونیت کے عروج کا پیغام لے کر آئی۔ قومی یہودی تحریک آغاز ہوا جس کا مقصد فلسطین میں یہودی ریادت قائم کر کے یہودیت اور صہیونیت کو دنیا میں ایک پہچان دینا تھا۔ 1880ء سے لیکر اب تک ایک کثیر تعداد نے فلسطین کی طرف ہجرت کی ہے۔ 1933ء میں نازیت کی آمد تک صہیونیت ایک اقلیتی تحریک تھی۔ نازیوں نے یہودیوں کو ختم کرنے کی متعدد کوششیں کیں اور انہوں نے مرگ انبوہ میں یورپ کے کئی علاقے فتح کر لیے تھے۔ [5] 19 ویں صدی کے اواخر میں یہودی کی ایک کثیر تعداد اولا عثمانی فلسطین پھر انتداب فلسطین کی طرف ہجرت کرنے لگی ۔ سنہ 1917ء مٰں برطانیہ نے اعلان بالفور کے ذریعے تعہدی فلسطین میں اسرائیل کا گھر تسلیم کر لیا۔ اس علاقے میں یہودی آبادی 1922ء میں 11 فیصد سے بڑھ کر 1922ء میں 30 فیصد ہو گئی۔ [6]

سنہ 1973ء میں عرب بغاوت کے بعد پلی کمیشن نے تقسیم کا منصوبہ پیش کیا جسے عرب رہنماؤں نے مسترد کر دیا۔ لیکن صہیونی رہنما داؤد بن غوریان نے اسے ہاتھوں ہاتھ لیا۔ نتیجہ کے طور پر چونکہ دوسری جنگ عظیم میں برطانیہ کو عرب دنیا کے مدد کی ضرورت تھی لہذا عرب کے دباو میں آکر یہود کے قومی مادر وطن کا سپنا ٹھنڈے بستے میں ڈال دیا۔ اور تقسیم 1939 کے سفید دستاویز کی گفتگو کو ملتوی کر دیا کہ عرب لیگ کی رضامندی کے بعد پر سے غور کیا جائے گا۔ اس سے یہودی ہجرت پر پابندی لگ گئی۔اس کی دوسری پالیسی میں ایک ایسی حکومت کا قیام تھا جہاں یہود اور عرب ایک ساتھ مل کر جکومت کریں۔ یہود نے اس پالیسی کو اپنی ہزیمت گردانا کیونکہ یہودی یجرت پر پابندی لگ چکی تھی جب کہ عرب ہجرت پر کوئی پابندی نہ تھی۔ 1947ء میں جب کشیدگی بڑھنے لگی تو برطانیہ نے تعہدی فلسطین سے برطرف ہونے کا فیصلہ کیا۔ اقوام متحدہ کا منصوبہ تقسیم-1947 کی رو سے دو ریاست کا فیصلہ آیا۔ ایک یہودی اور دوسری عرب۔ تعہدی فلسطین کا تقریباً 56 فیصد رقبہ یہود ی ریاست کو دے دیا گیا۔اقوام میحدہ کی جنرل اسبملی نے اس فیصلہ کو تسلیم کیا اور ادھر عرب رہنماؤں نے اسے سرے سے خارج کر دیا اور گوریلا جنگ شروع کردی۔

داوید بن گوریون proclaiming Israeli independence from the United Kingdom on 14 May 1948, below a portrait of تھیوڈور ہرتزل

تعہدی فلسطین کے خاتمے سے ایک دن قبل ، 14 مئی 1948ء کو وزیر اعظم داوید بن گوریون کی قیادت میں یہودی رہنماؤں نے فلسطین میں اسرائیلی ریاست کے قیام کا اعلامنکر دیا اور ساتھ ہی یہ اسرائیل کی آزادی کا بھی اعلان تھا۔ حالانکہ اس وقت سرحدوں کا کوئی تعین نہیں ہوا تھا۔ [7]

عرب اسرائیلی جنگ 1948[ترمیم]

اردن، سوریہ، لبنان ، مصر اور عراق کی افواج نے عرب ریاست کے تقسیم زدہ علاقے پر حملہ کر دیا اور اس طرح 1948ء کی عرب اسرائیلی جنگ کا آغاز ہو گیا۔ حال ہی میں وجود میں آئی اسرائیلی دفاعی افواج نے عرب اقوام کے چھکے چھڑادئے اور اپنی سرحدوں کو اقوام متحدہ کے ذریعے متعین کی گئی خطوں سے بھی آگے بڑھا دیا۔ [8] دسمبر 1948ء تک اسرائیل نے تعہدی فلسطین کے زیادہ تر حصہ پر دریائے اردن کے مغربی علاقے تک قبضہ کر لیا۔ باقی علاقوں میں مغربی کنارہ (اردنی حکومت) اور غزہ پٹی (مصر حکومت) رہ گئے تھے۔ اس جنگ کے دوران اور اس سے قبل ہی 711,000[9] فلسطینی عرب اپنی سرزمین چھوڑ کر بھاگ گئے اور دوسرے ملکوں میں فلسطینی پناہ گزین بن گئے۔

زیادہ تر اسرائیلی 1948ء کی عرب اسرائیلی جنگ کو جنگ آزادی مانتے ہیں جبکہ فلسطینی عرب اسے نکبہ سے تعبیر کرتے ہیں۔ [10] 1947ء میں جب کشیدگی بڑھنے لگی تو برطانیہ نے تعہدی فلسطین سے برطرف ہونے کا فیصلہ کیا۔ اقوام متحدہ کا منصوبہ تقسیم-1947 کی رو سے دو ریاست کا فیصلہ آیا۔ ایک یہودی اور دوسری عرب۔ تعہدی فلسطین کا تقریباً 56 فیصد رقبہ یہود ی ریاست کو دے دیا گیا۔اقوام میحدہ کی جنرل اسبملی نے اس فیصلہ کو تسلیم کیا اور ادھر عرب رہنماؤں نے اسے سرے سے خارج کر دیا اور گوریلا جنگ شروع کردی۔

داوید بن گوریون proclaiming Israeli independence from the United Kingdom on 14 May 1948, below a portrait of تھیوڈور ہرتزل

تعہدی فلسطین کے خاتمے سے ایک دن قبل ، 14 مئی 1948ء کو وزیر اعظم داوید بن گوریون کی قیادت میں یہودی رہنماؤں نے فلسطین میں اسرائیلی ریاست کے قیام کا اعلامنکر دیا اور ساتھ ہی یہ اسرائیل کی آزادی کا بھی اعلان تھا۔ حالانکہ اس وقت سرحدوں کا کوئی تعین نہیں ہوا تھا۔ [7]

1948 تا حال[ترمیم]

The دیوار گریہ in Jerusalem, 2010.

مرگ انبوہ کے بچنے والوں اور عرب ممالک سے یہودی پناہ گزینوں وجہ سے اسرائیل کی آزادی کے بعد ایک سال کی مدت میں ہی کی اسرائیل کی آبادی دوگنی ہو گئی۔ 850,000 سے زیادہ سفاردی یہودی اور مزراحی یہودی پڑوسی عرب ممالک سے یا تو بھاگ کر آگئے یا بھگا دیے گئے۔ اور کچھ قلیل تعداد انغانستان، بھارت، ترکی اور ایران سے بھی آ بسی۔ ان میں 680,000 لوگ اسرائیل میں آباد ہو گئے۔

(مزید دیکھیں مسلم اور عرب ممالک سے یہودیوں کا اخراج)

کچھ برسوں تک اسرائیل کی یہودی آبادی برق رفتاری سے ترقی کررہی تھی۔ اس کی سب سے بڑی وجہ عالیہ (دنیا کے کونے کونے سے یہودیوں کی ہجرت) تھی۔ ان میں بھی سوریت یہودی قابل ذکر ہیں جو سوویت کے زوال کے بعد 1990ء میں اسرائیل کی طرف ہجرت کر گئے اور پہونچتے ہی ان کو اسرائیل کی شہریت دے دی گئی۔ صرف سال 1990-1991 میں ہی 380,000 یہودیوں کی آمد ہوئی۔ عین اسی وقت 1980 سے اس وقت تک تقریباً 80,000–100,000 ایتھوپیائی یہود اسرائیل میں آباد ہوئے۔

1948ء کے بعد اسرائیل متعدد فوجی لڑائیوں میں مشغول رہا ہے۔ جن میں سوئز بحران, 1967 6 روزہ جنگ, 1973 جنگ یوم کپور, 1982ء کی جنگ لبنان اور 2006ء لبنان جنگ شامل ہیں، ان کے علاوہ کچھ چھوٹی جنگوں کے سلسلے بھی ہیں۔ فلسطین کے ساتھ اسرائیلی مقبوضہ علاقے میں اسرائیل-فلسطینی جاری تنازعات بھی مسلسل جاری ہے۔ یہ علاقے چھ دن کی جنگ کے بعد سے ہی اسرائیل کے قبضہ میں ہے۔ حالانکہ 13 ستمبر 1993ء کو اوسلو معاہدے پر دستخط ہوئے، اسرائیل اور فلسطین کی کوششیں بھی ہوئیں اور ساتھ ہی بین القوامی امن کے پیامبروں نے بھی خوب کوششیں کیں اگر اسرائیل فلسطینی تنازعات ختم ہوتے نظر نہیں اتے۔

آبادی[ترمیم]

Israeli soldiers

مرکزی ادارہ شماریات، اسرائیل کے مطابق فرورہ 2013ء تک اسرائیل کی 8 ملین آبادی میں 75.4 ( کسی بھی نسل کے ) یہود ہیں۔ [11] ان میں 68 فیصد صبرا یعنی اسرائیل میں پیدا ہوئے ہیں۔ یہ اسرائیل کی دوسری یا تیسری نسل ہے۔ باقی مہاجرین ہیں۔ جن میں 22 فیصد یورپ اور امریکن ممالک سے اور 10 فیصد ایشیا اور افریقا ( ابشمول عرب ) سے، ہیں۔ [12] تقریباً نصف آبادی عالیہ کے دوران یورپ سے آئے مہاجرین کی نسل ہے۔ اتنی ہی تعداد میں عالیہ کے دوران عرب، ایران، ترکی اور وسطی ایشیا سے آئے یہود کی اولادیں ہیں۔ تقریباً 200000 یہودی یا ان کی نسل ایتھوپیا اور بھارت (بھارت میں یہودیت) کے مہاجرین ہیں۔ [13]

ترقی[ترمیم]

اسرائیل دنیا کا وہ واحد ملک جہاں یہودیوں کی آبادی فطری طور پر بڑھ رہی ہے بر خلاف دیگر ممالک کے کہ وہاں آیا آبادی گھٹ رہی ہے یا جوں کی توں ہے۔ راسخ العقیدہ یہودیت اور حریدی یہودیت اس سے مستثنی ہے کیونکہ ان کے نزدیک اب بھی ضبط تولید ایک ناپسندیدہ فعل ہے لہذا ان کی آبادی میں زبردست اضافہ دیکھنے کو ملتا ہے۔ [14] Haredi women have 7.7 children on average while the average Israeli Jewish woman has over 3 children.[15] 1948ء میں جب اسرائیل کا قیام عمل میں آیا تھا تو اس وقت ریاستہائے متحدہ امریکا اور سوویت اتحاد کے بعد یہودی آبادی کا تیسرا سب سے بڑا ملک تھا۔ 1970ء میں سوویت اتحاد کو پیچھے چھوڑ کر یہودی آبادی والا دوسرا سب سے بڑا ملک بن گیا۔ [16] 2003ء میں مرکزی ادارہ شماریات، اسرائیل نے خبر دی کہ اسرائیل ریاستہائے متحدہ امریکا کو پیچھے چھوڑ کر یہودی آبادی کا سب سے بڑا ملک بن گیا ہے۔، مردم شماری کے ماہر اور جامعہ عبرانی یروشلم کے پروفیسر سرجیو ڈالا پیگولا نے اس خبرپر اعتراض جتایا اور کہا کہ امریکا اور اسرائیل کے درمایان یہودی آبادی کے اس فاصلے کو ختم ہونے میں ابھی مزید 3 برس لگیں گے، ۔ [17] جنوری 2006ء میں ڈالا پرگولا نے کہا کہ اب اسرائیل میں امریکا سےزیادہ یہود ہیں۔ انہوں نے مزید کیا کہ تل ابیب میٹروپولیٹن نے نیو یارک میٹروپولیٹن علاقہ کو کسی ایک میٹروپہلیٹن علاقہ میں سب سے زیادہ یہود ہوئے معاملے میں پیچھے چھوڑ دیا ہے۔،[18] حالانکہ کچھ ماہرین کا کہنا ہے کہ اسرائیل نے یہودی آبادیکے معاملے میں امریکا کو 2008ء میں پیچھے چھوڑا ہے۔ [19] یہود سے باہر شادی اور اختلاط کی وجہ سے یہود کی بیرون اسرائیل آبادی میں زبردست کمی دیکھنے کو ملی ہے۔ اور ساتھ ہی اسرائیل کی یہودی آبادی اسی رفتار سے ترقی ہو رہی ہے۔ اسی سے یہ تخمینہ لگایا جارہا ہے کہ اگلے 20 برسوں میں دنیا کے زیادہ تر یہود اسرائیل میں آباد ہو جائیں گے۔ [20] مارچ 2012ء کو مرکزی ادارہ شماریات، اسرائیل نے وائی نیٹ عدم موجودگی میں یہ پہشن گوئی کی کہ 2019ء میں اسرائیل میں 6,940,000 ہوں گے۔ جن میں 5.84 ملین غیر اسرائیلی ہوں گے، 2009ء میں یہ تعداد 5.27 ملین تھی۔ اور 2050ء تک یہ تعداد 6.09 سے 9.95 تک پہونچنے کی امید ہے۔ یعنی 2011ء کی آبادی میں 16%–89% کا اضافہ ہونے امید ہے۔ ادارہ نے یہ بھی بتایا کہ 2019ء میں راسخ العقیدہ یہود 1.1 ملین ہوں گے۔ 2009ء میں یہ تعداد 750,000 تھی۔ اور 2059ء تک حریدی یہود کی تعداد 2.73 ملین سے 5.84 ملین ہونے کی امید ہے۔ یعنی 264%–686% کا اضافہ ہوگا۔ اس طرح اسرائیل میں 2059ء تک یہود کی کل آبادی 8.82 ملین سے 15.790 ملین ہونے کی امید ہے۔ [21] جنوری 2014ء میں ماہر مردم شماری جوزف شیمی نے بتایا کہ 2025ء تک اسرائیل میں یہود کی آبادی 9.84 ملین کے آس پاس ہوگی اور 2035ء میں یہی ان کی آبادی 11.40 ملین ہو جائے گی۔ [22]

پہلی صدی تخمینہ 2,500 000[23]
ساتویں صدی تخمینہ 300,000–400,000[24]
1800 تخمینہ 6,700[25][26]
1880 تخمینہ 24,000[25][26]
1915 تخمینہ 87,500[25][26]
1931 تخمینہ 174,000[25][26]
1936 تخمینہ > 400,000[25][26]
1947 تخمینہ 630,000[25][26]
1949 مردم شماری 1,013,900[27]
1953 مردم شماری 1,483,600[28]
1957 مردم شماری 1,762,700[29]
1962 مردم شماری 2,068,900[29]
1967 مردم شماری 2,383,600[27]
1973 مردم شماری 2,845,000[27]
1983 مردم شماری 3,412,500[27]
1990 مردم شماری 3,946,700[27]
1995 مردم شماری 4,522,300[27]
2000 مردم شماری 4,955,400[27]
2006 مردم شماری 5,393,400[27]
2009 مردم شماری 5,665,100
2010 مردم شماری 5,802,000[30]
2017 مردم شماری 6,556,000[2][3]

یہودی آبادی کے عظیم مراکز[ترمیم]

ضلع در ضلع اسرائیلی یہود
درجہ ضلع کل یہودی آبادی
(2008)
% یہودی
(2008)
1 ضلع وسطی (اسرائیل) 1,592,000 92%
2 ضلع تل ابیب 1,210,000 99%
3 جنوبی ضلع (اسرائیل) 860,000 86%
4 ضلع حیفا 652,000 76%
5 ضلع یروشلم 621,000 69%
6 شمالی ضلع (اسرائیل) 562,000 46%
7 یہودا و سامرا 304,569 ≈15–20%
یروشلم is the largest Jewish city in Israel.
تل ابیب is the second largest Jewish city in Israel and the centre of the largest Jewish metropolitan area in Israel and in the world.
حیفا is the third largest Jewish city in Israel and the centre of the second largest Jewish metropolitan area in Israel.
آبادی کے عظیم مراکز
درجہ شہر آبادی
(2009)
% یہودی
(2008)
ضلع
1 یروشلم 773,800 63.4% ضلع یروشلم
2 تل ابیب 393,900 91.4% ضلع تل ابیب
3 حیفا 265,600 80.9% ضلع حیفا
4 ریشون لضیون 227,600 93.9% ضلع وسطی (اسرائیل)
5 اشدود 211,300 91.0% جنوبی ضلع (اسرائیل)
6 فتح تکو 197,800 92.5% ضلع وسطی (اسرائیل)
7 نتانیا 181,200 93.4% ضلع وسطی (اسرائیل)
8 بیر سبع 187,900 87.9% جنوبی ضلع (اسرائیل)
9 حولون 172,400 92.8% ضلع تل ابیب
10 بنی براک 155,600 98.6% ضلع تل ابیب
11 رمت غان 135,300 95.2% ضلع تل ابیب
12 بات یام 128,900 84.9% ضلع تل ابیب
13 رحوووت 109,500 94.8% ضلع وسطی (اسرائیل)
14 عسقلان 111,700 88.4% جنوبی ضلع (اسرائیل)
15 ہرتزیلیا 85,300 96.3% ضلع تل ابیب

شماریات کے استعمال کے لیے اسرائیل میں 3 اہم میٹروپولیٹن علاقہ جات ہیں۔ اسرائیل میں یہودی آبادی کی اکثریت ملک کے وسطی علاقہ میں رہتی ہے ، جن میں تل ابیب میٹرو پولیٹن علاقہ شامل ہے۔ تل ابیب میٹرو پولیٹن علاقہ فی الحال دنیا کا سب سے بڑا یہودی آبادی کا مرکز ہے۔

اسرائیل کے میٹروپولیٹن علاقوں میں یہودی آبادی [31]
درجہ میٹروپولیٹن علاقہ کل آبادی
(2009)
یہودی آبادی
(2009)
% یہودی
(2009)
1 تل ابیب میٹرو پولیٹن علاقہ 3,206,400 3,043,500 94.9%
2 [[حیفا میٹرو پولیٹن علاقہ]] 1,021,000 719,500 70.5%
3 [[بئر السبع‎ میٹرو پولیٹن علاقہ]] 559,700 356,000 63.6%

یہ بات مدلل ہے کہ یروشلم ، اسرائیل کی حالیہ اعلان دار الحکومت ، دنیا میں یہودی آبادی کا سب سےبڑا سہر ہے۔ اس کی آبادی 732,100 سے زیادہ ہے۔ اور شہری علاقوں میں 1,000,000 آبادی ہے ( ان میں مشوری یروشلم میں رہ رہے 280,000 فلسطینی ہیں جو اسرائیل کے باشندے نہیں ہیں۔) اس طرح یہوشلم میں اسرائیلی یہود کی کل آبادی 700,000 ہے۔ [32] دوسرا شہر ناصرہ ہے جس میں 65,500 یہود آباد ہیں۔ شہری علاقوں میں 200,000 لوگ آباد ہیں جن میں 110,000 سے زیادہ اسرائیلی یہود آباد ہیں۔ [33]

اسرائیل میں یہودی تنظیمیں[ترمیم]

ریاست اسرائیل کےاعلان کے وقت ریاست میں زیادہ تر اشکنازی یہودآباد تھے۔ جیسے ریاست کے قیام کا اعلان ہوا، یورپ اور امریکا سے یہودی مہاجرین اور پناہ گزینوں کا اسرائیل میں داخلہ شراع ہو گیا۔ یہود جوق در جوق اسرائیل میں آنے لگے۔ یہاں تک کہ عراب اور مسلم ممالک کے راسخ العقیدہ یہود بھی اسرائیل کا رخ کرنے لگے۔ 1950ء اور 1960ء کے دوران ہجرات کرنے والے زیادہ تر وہ یہود تھے جو مرگ انبوہ میں زندہ بچ گئے تھے۔ ان کے علاوہ سفاردی یہودی اور مزراحی یہودی بھی تھے جو زیادہ تر مغربی یہود،الجزائری یہود، تونسی یہود،یمنی یہود تھے ۔ لبنان، سوریہ، لیبیا، مصر، بھارت، ترکی اور افغانستان سے بھی یہود کے طھوٹے چھوٹے گروہ نے اسرائیل کی طرف ہجرت کی۔

اسرائیلی یہود میں 75 فیصد اسرائیل میں پیدا ہوئے ہیں۔ زیادہ تر اسرائیلیوں کی دوسری یا تیسری نسل میں سے ہیں۔ اور باقی مدوسرے ملکوں کے مہاجرین ہیں۔ ان میں 19 فیصد یورپ، امریکن اور اوقیانوسیہ سے ہیں۔ 9 فیصد ایشیا اور افریقا سے ہیں جو زیادہ تر عالم اسلام کے ہیں۔ اسرائیلی حکومت بیرون اسرائیل رہ رہے یہود کو شمار نہیں کرتی ہے۔

بیرون اسرائیل یہود یوں کی جائے پیدائش[ترمیم]

سی بی ایس نے بیرون اسرائیل رہ رہے اسرائیلی یہودیوں کے آبائی وطنوں کی نشان دہی کی ہے۔ ان میں غیر ہلاخاہ اور وہ یہودی مہاجرین جو واپسی کا قانون کے تحت آئے تھے، شامل ہیں۔ ڈاٹا بمطابق سنہ 2010ء[34]

اصل وطن بیرون اسرائیل میں پیدا ہوئے اسرائیل میں پیدا ہوئے کل %
کل 1,610,900 4,124,400 5,753,300 100.0%
ایشیا 201,000 494,200 695,200 12.0%
ترکی 25,700 52,500 78,100 1.4%
عراق 62,600 173,300 235,800 4.1%
یمن 28,400 111,100 139,500 2.4%
ایرانی یہودی/افغانستان 49,300 92,300 141,600 2.5%
بھارت میں یہودیت/پاکستان میں یہودیت 17,600 29,000 46,600 0.8%
سوری یہودی/لبنان 10,700 25,000 35,700 0.6%
دیگر 6,700 11,300 18,000 0.3%
افریقا 315,800 572,100 887,900 15.4%
المغرب 153,600 339,600 493,200 8.6%
الجزائر/تونس 43,200 91,700 134,900 2.3%
لیبیا 15,800 53,500 69,400 1.2%
مصر 18,500 39,000 57,500 1.0%
ایتھیوپیا 81,600 38,600 110,100 1.9%
دیگر 13,100 9,700 22,800 0.4%
[اوقیانوسیہ/ امریکن/یورپ 1,094,100 829,700 1,923,800 33.4%
سوویت اتحاد 651,400 241,000 892,400 15.5%
پولینڈ 51,300 151,000 202,300 3.5%
رومانیا 88,600 125,900 214,400 3.7%
بلگاریہ/یونان 16,400 32,600 49,000 0.9%
جرمنی/آسٹریا 24,500 50,600 75,200 1.3%
زیچ ریپبلک/سولواکیہ/ہنگری 20,000 45,000 64,900 1.1%
فرانس 41,100 26,900 68,000 1.2%
مملکت متحدہ 21,000 19,900 40,800 0.7%
دیگر، یورپ 27,000 29,900 56,900 1.0%
شمالی امریکا/اوقیانوسیہ 90,500 63,900 154,400 2.7%
ارجنٹائن 35,500 26,100 61,600 1.1%
لاطینی امریکا/دیگر 26,900 17,000 43,900 0.8%
اسرائیل 2,246,300 2,246,300 39.0%

اسرائیل میں تقریباً 300,000 ایسے یہود انسل شہری ہیں جن کو ہلاخاہ کے راسخ العقیدت کے معیار پر پورے نہیں اترتے ہیں۔ ان میں تقریباً 10 فیصد مسیحی اور 89 فیصد آیا یہودی اور لامذہبی ہیں۔ 2005ء میں آئی ڈی ایف کے تبدیلی مذہب پروگرام کے تحت 640 لوگوں کی گھر واپسی ہوئی اور 2006ء میں 450 یہودیوں کی۔ 2002ء سے 1 اکتوبر 2007ء تک 2,213 فوجی جوان مذہب بدل چکے تھے۔ [35] In 2003, 437 Christians converted to Judaism; in 2004, 884; and in 2005, 733.[36] حاکیہ دنوں میں ربانی کے صدر نے کئی ہزار لوگوں کا مذہب تبدیل کروایا۔ ان کو سرکاری یہودی درجہ ملا ۔ ان میں زیادہ تر سوویت اتحاد کے مہاجرین تھے۔ [37]

امریکا اور یورپی ممالک سے ہجرت کرنے والے اسرائلی یہود[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. My Promised Land, by Ari Shavit, (London 2014)
  2. ^ ا ب "Israel Boasts 8.8 Million on Eve of 2018, 74.6% Jewish"۔ Jewish Press۔ دسمبر 31, 2017۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ |archiveurl= اور |archive-url= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت); |archivedate= اور |archive-date= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت)
  3. ^ ا ب Amir Alon (دسمبر 31, 2017)۔ "Nearing nine million: Israel in numbers on eve of 2018"۔ Ynet News۔
  4. "Poll: Most Israelis see themselves as Jewish first, Israeli second – Israel Jewish Scene, Ynetnews"۔ Ynet.co.il۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2012۔
  5. Lucy S. Dawidowicz۔ The war against the Jews, 1933–1945۔ Bantam Books۔ صفحہ 403۔ آئی ایس بی این 978-0-553-20534-3۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  6. "The birth of Israel"۔ BBC News۔ 27 اپریل 1998۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 5 مئی 2010۔
  7. ^ ا ب Harris, J. (1998) The Israeli Declaration of Independence The Journal of the Society for Textual Reasoning, Vol. 7
  8. Charles D. Smith۔ Palestine and the Arab-Israeli Conflict: A History with Documents۔ Bedford/St. Martin's۔ صفحہ 198۔ آئی ایس بی این 978-0-312-43736-7۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  9. General Progress Report and Supplementary Report of the United Nations Conciliation Commission for Palestine, Covering the period from 11 December 1949 to 23 October 1950, GA A/1367/Rev.1 23 October 1950.
  10. M. Amara؛ Abd Al-Rahman Mar'i (31 مئی 2002)۔ Language Education Policy: The Arab Minority in Israel۔ Springer۔ آئی ایس بی این 978-1-4020-0585-5۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  11. "Population, by Population Group" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Monthly Bulletin of Statistics۔ Israel Central Bureau of Statistics۔ 7 مارچ 2013۔ مورخہ 3 دسمبر 2013 کو اصل (پی‌ڈی‌ایف) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2013۔
  12. Government of Israel Central Bureau of Statistics۔ "Jews and others, by origin, continent of birth and period of immigration" (PDF)۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 اپریل 2006۔
  13. "JEWS AND OTHERS(1), BY COUNTRY OF ORIGIN(2) AND AGE"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2014۔
  14. Gartner (2001), pp. 400–401.
  15. Paul Morland (7 اپریل 2014)۔ "Israeli women do it by the numbers"۔ The Jewish Chronicle۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2014۔
  16. "Star-News - Google News Archive Search"۔ news.google.com۔
  17. Statistics bureau: Israeli Jews outnumber Jews in the U.S. Haaretz
  18. "Israel´s Jewish Population Surpasses United States"۔ Israel National News۔ 17 جنوری 2006۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2012۔
  19. Stuart E. Eizenstat (3 مئی 2012)۔ The Future of the Jews: How Global Forces are Impacting the Jewish People, Israel, and Its Relationship with the United States۔ Rowman & Littlefield Publishers۔ آئی ایس بی این 978-1-4422-1629-7۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  20. Bayme, Steven: Jewish Arguments and Counterarguments: Essays and Addresses (Page 385)
  21. "CBS predicts Arab-haredi majority in 2059 Haredim, Arabs will outnumber Jewish secular population in 47 years"۔ Ynet۔ 28 مارچ 2012۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 اپریل 2013۔
  22. "Israeli-Palestinian Population Growth and Its Impact on Peace"۔ PassBlue۔ 2 فروری 2014۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 13 جولا‎ئی 2015۔
  23. http://archive.iussp.org/Brazil2001/s60/S64_02_dellapergola.pdf p:5
  24. Israel Cohen (1950). Contemporary Jewry: A Survey of Social, Cultural, Economic, and Political Conditions. Methuen p. 310
  25. ^ ا ب پ ت ٹ ث "Arab–Israel Conflict." The Continuum Political Encyclopedia of the Middle East. Ed. Avraham Sela. New York: Continuum, 2002. pp. 58–121.
  26. ^ ا ب پ ت ٹ ث Y. Gorny, 1987, 'Zionism and the Arabs, 1882–1948', p. 5 (italics from original)
  27. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ Israeli Central Bureau of Statistics "Statistical Abstract of Israel, No. 55, 2004 نسخہ محفوظہ 28 September 2011 در وے بیک مشین", and "Statistical Abstract of Israel 2007: Population by district, sub-district and religion نسخہ محفوظہ 28 September 2011 در وے بیک مشین" ICBS website
  28. Alexander Berler (1 جنوری 1970)۔ New Towns in Israel۔ Transaction Publishers۔ صفحات 5–۔ آئی ایس بی این 978-1-4128-2969-4۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  29. ^ ا ب "Population, by Population Group" (پی‌ڈی‌ایف)۔ Monthly Bulletin of Statistics۔ Israel Central Bureau of Statistics۔ اگست 2013۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 اکتوبر 2013۔
  30. Ruth Eglash (29 دسمبر 2011)۔ "On eve of 2012, Israel's population surp... JPost – National News"۔ Jpost.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2012۔
  31. "Localities, Population, and Density"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2010۔
  32. "Jerusalem: From Town to Metropolis"۔ University of Southern Maine۔ مورخہ 7 مارچ 2008 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 اپریل 2008۔
  33. "Initiated Development in the Nazareth Region"۔ مورخہ 12 نومبر 2007 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 اپریل 2008۔
  34. "Jews, by Country of Origin and Age"۔ Statistical Abstract of Israel (English and Hebrew زبان میں)۔ مرکزی ادارہ شماریات، اسرائیل۔ 26 ستمبر 2011۔ مورخہ 5 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 فروری 2012۔
  35. "Rabbis Blamed for Fewer 'IDF Converts'"۔ مورخہ 26 دسمبر 2013 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جولا‎ئی 2017۔
  36. Nurit Palter۔ "2006: More Jews converting to Islam"۔ Ynet۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2014۔
  37. "Thousands of conversions questioned"۔ Ynet۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2014۔