ماتریدی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
بسم الله الرحمن الرحيم
الله

مضامین بسلسلہ اسلام :

وصلة=اہل سنت

ماتریدیعقائد میں احناف امام الہدی ابو منصور محمد ماتریدی حنفی کے متبع ہیں۔

ماتریدیۃ کے کلامی عقائد[ترمیم]

مسلک ماتریدیہ سرزمین ماوراء النہرمیں وجود میں آیا ہے ماتریدیہ کے بانی ابومنصور ماتریدی ہیں جن کی پیدائش 238ھ اور وفات 333ھ میں ہوئی ابو منصور ذکاوت اور علم جدال میں کافی مہارت رکھتے تھے انہون نے اپنے مسلک کی تاسیس میں بزرگ اساتذہ سے استفادہ کیا ہے ان مین محمد بن مقاتل رازی، ابو نصر عیاضی، ابوبکر احمد بن اسحاق الجوزجانی اور نصیر جن یحی بلخی قابل ذکر ہیں ۔ ابو منصور نے بزرگ اساتذہ سے استفادہ کرنے کے علاوہ بہت سے شاگردوں کی تربیت کی ہے ان میں ابوالقاسم حکیم سمرقندی، علی رستغفنی، ابو محمد عبدالکریم بردوی، اور احمد عیاضی قابل ذکر ہیں ۔ ابو منصور نے تاویلات قرآن کے بارے میں ایک تاویلی تفسیر لکھی ہے اور علم کلام میں کتاب التوحید تحریر کی ہے جس میں مختلف فرقوں کے کلامی آراء کا ذکر کیا ہے ان کی دو اور کتابیں ہیں جس کے نام شرح فقہ الاکبر اور رسالۃ فی العقیدہ ہے ان کی فقہی کتابوں میں ماخذالشرایع والجدل قابل ذکر ہیں ۔

ماتریدیہ کی مشہور شخصیتیں[ترمیم]

1. ابو یسر بزدوی 2. ابولمعین نسفی 3. نجم الدین نسفی 4. نورالدین صابونی ماتریدیہ کے نزدیک عقل و سمع دین و شریعت کے سمجھنے کے دواہم منابع ہیں اور ان کا عقیدہ ہےکہ خدا کی معرفت حصول نقل سے پہلے عقل سے ثابت ہوتی ہے اورہر انسان پر لازم ہے کہ وہ خدا کی معرفت عقل کے ذریعے حاصل کرے اسی بناپر حسن و قبح عقلی پر بھی یقین رکھتے ہیں، ان کے دیگر نظریات بطوراختصار حسب ذیل ہیں ۔ ماتریدیہ اور ابومنصور کا عقیدہ ہےکہ نصوص کو ان کے حقیقی معنی پر حمل کرنے سے تجسم وتشبیہ لازم آتی ہے بنابریں قرآن و حدیث میں مجاز کا استعمال ہواہے لھذا تاویل و تفویض ایسے اصول ہیں جن پر ماتریدیہ کے اصول عقائد استوار ہیں

ماتریدیہ کی نظر میں توحید کی کئي قسمیں ہیں ۔ 1. توحید درصفات یعنی خدا کی کس صفت میں اس کاکوئي نظیر نہیں ہے ۔ 2.توحید در ذات یعنی ذات خداوندی میں کثرت نہیں ہے ۔ 3. توحید در افعال یعنی نفی خدا اپنے افعال کی انجام دہی میں غیر خدا سے تاثیر قبول نہیں کرتا ہے ۔ 4. توحید ربوبی یعنی انسان کے لۓ خدا کی معرفت فطری معرفت سے مکمل نہیں ہوتی اور اسے صرف عقل سے ہی مکمل کیا جاسکتا ہے ۔ نبوت اثبات نبوت اور عوام کا اسے قبول کرنا نبی کی طرف سے معجزہ پیش کئے جانے پراور اس کی طرف سے چلینج قبول کرنے پر منحصرہے ماتریدیہ کے نزدیک اولیاء کی کرامات بھی یہی حکم رکھتی ہی‍ں ۔ قابل ذکر ہے کہ اہل سنت کے کلامی فرقوں میں ماتریدیہ کا اس وقت مذہب اشعری کے بعد اہل سنت کا دوسرا کلامی مکتب ہے اور اہل سنت کی ایک بڑی تعداد بالخصوص مذہب حنفی کے پیروکلام ماتریدی کی اتباع کرتے ہیں ۔[1]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

سانچہ:Islamic philosophy