مندرجات کا رخ کریں

بنو امیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
بنو امیہ
بَنُو أُمَيَّةَ
الأمويون
ملکخلافت امویہ
(661–750)
اندلس
(756–1031)
قیام661
بانیMu'awiya I
خطابخلافت (خلافت امویہ)
امیر (امارت قرطبہ)
خلافت (خلافت قرطبہ)

اموی خاندان ( عربی: بَنُو أُمَيَّةَ ' امیہ ' ) یا اموی ( عربی: الأمويون 661ء اور 750ء کے درمیان اور بعد میں 756ء اور 1031ء کے درمیان الاندلس کا حکمران خاندان تھا۔ زمانہ جاہلیت میں، جو قریش کے مکی قبیلے کا ایک ممتاز قبیلہ تھا، جو امیہ بن عبد شمس سے تعلق رکھتا تھا۔

یہ قبیلۂ قریش کی دو بڑی شاخوں میں سے ایک ہے جن میں سے بعض افراد نے تقریباً ایک صدی    (41-132ھ) تک اسلامی سرزمینوں پر حکومت کی۔ بنو امیہ کا دور سنہ 41 ہجری میں حضرت معاویہ کی سلطنت کے آغاز سے شروع ہوا اور سنہ 132 ہجری میں مروان بن محمد کی شکست پر زوال پزیر ہوا۔ اس عرصے میں اس خاندان کے 14 افراد نے  اسلامی ممالک پر حکمرانی کی۔ معاویہ کے بعد اس کا بیٹا یزید تخت نشین ہوا اور اس کے بعد اس کا بیٹا معاویہ بن یزید جس کے بعد خلافت مروانیوں کو منتقل ہوئی۔ مروانیوں نے مشرقی سرحدوں نیز روم کی سرحدات پر جنگیں لڑ لڑ کر اسلامی سرزمین کو ہر روز وسیع سے وسیع تر کیا۔  اہل بیت اور خوارج کی سرکوبی بنو امیہ کی دائمی پالیسی کا حصہ رہی۔

بنی امیہ کا ظہور جزیرہ نمائے عرب کے شمال اور مرکز میں شہر نشینی کے آغاز اور کم و بیش ظہور اسلام کے ساتھ  پیش آیا۔مکہ قبل از اسلام ایک زیارتی اور بعد ازاں تجارتی شہر تھا۔ روم کے شامی قلمرو کے ساتھ ہاشم بن عبد مناف کے تجارتی تعلق نے مکہ کے باشندوں حالت بدل دی۔

ہاشمی اور اموی  بنیادی طور پر قریش کے ہی دو ذیلی قبایل ہیں۔ جن کا فرق  آسان الفاظ میں یہ ہے۔

ہاشمی:  ہاشم بن عبد مناف

اموی: امیہ بن عبد شمس بن عبد مناف

چنانچہ بنی ہاشم اور بنی امیہ کا نسب عبد مناف سے جا ملتا ہے اور عبد مناف ان دونوں خاندانوں کے مورث ہیں۔

امیہ کے بارے میں چند ہی روایات کے سوا کچھ دستیاب نہیں ہے۔ یہ چند روایات  بھی بنی ہاشم اور بنی امیہ کے درمیان دشمنی اور خون خرابے کی تصویر کشی کرتی ہیں۔ طبری کے مطابق ایک روایت میں ہے کہ عبد شمس اور ہاشم جڑواں بھائی تھے اور ولادت کے وقت ایک کی انگلی دوسرے کے سر سے چپکی ہوئی تھی؛ ان دو کو الگ کیا گیا تو خون جاری ہوا۔ایک دوسری اور بہت رائج روایت میں کہا گیا ہے کہ امیہ نے اپنے تایا  ہاشم  کے ساتھ حسد کیا تاہم صاحب ثروت ہونے کے باوجود کشادہ دستی کا مظاہرہ نہیں کر سکا اور عوام کے درمیان خوار ہوا؛ حتی کہ اس کا کام ہاشم کے ساتھ اختلاف اور تنازعے کی صورت اختیار کر گیا اور 10 سال تک شام میں جلاوطنی کی سی زندگی گذارنے پر مجبور ہوا۔

کہا جاتا ہے کہ امیہ کے 10 بیٹے تھے حرب، ابو حرب، سفیان و ابو سفیان ان چار کو عنابس کہا جاتا تھا؛ عاص، ابو العاص، عیص، ابو العیص یہ چار  اعیاص کے عنوان سے مشہور ہیں؛ (9 اور 10) عمرو اور ابوعمرو۔ ان میں سے دو افراد طفولت میں ہی انتقال کرگئے اور دو مقطوع النسل ہوئے۔

حرب امیہ کا بڑا بیٹا اور ابو سفیان کا باپ تھا جو زعمائے مکہ میں شمار ہوتا تھا؛ وہ کچھ عرصہ عبد المطلب بن ہاشم کا دوست تھا اور ان کے درمیان چال چلن کا سلسلہ بھی جاری تھا لیکن آخر کار ان کا کام بھی جھگڑے اور جرگے پنچائت پر منتج ہوا۔ اگرچہ بعید از قیاس نہیں ہے کہ یہ موضوع بھی افسانہ ہی ہو جو امیہ اور ہاشم کے درمیان منافرت کی بنیاد پر گھڑ لیا گیا ہو۔ وہ یوم عکاظ اور فجار کی دو جنگوں میں قریش کا سپہ سالار تھا اور اس کے بعد یہ منصب ابو سفیان کو ملا۔

امیہ کا ایک بیٹا ابو العاص عثمان بن عفانؓ اور مروان بن حکم اور اس کے خلافت کا عہدہ سنبھالنے والے بعض بیٹوں کا مورث تھا۔

بنی امیہ کی ایک شاخ اسید بن ابی العیص بن امیہ کے ذریعے جاری رہی اور اسید کے دو بیٹے عتاب اور خالد فتح مکہ کے بعد مسلمان ہوئے۔

بنو امیہ کی دیگر شاخیں اس امیہ کے بیٹوں عاص اور سعید بن عاص کی اولاد میں سے ہیں جن میں سے بعض نے سیدنا عثمانؓ  کے دور کے تاریخی واقعات میں کردار ادا کیا اور اہم مناصب پر فائز ہوئے۔

اس خاندان کی ایک شاخ ابو عمر بن امیہ کے توسط سے وجود میں آئی تھی اور عقبہ بن ابی معیط اور اس کا بیٹا ولید اس شاخ کے مشہور ترین افراد تھے۔شاید بنو امیہ کی نہایت کم اہم شاخ سفیان بن امیہ کی اولاد ہے جن کی تعداد کم تھی ۔

بعض مورخین   کے بقول ظہور اسلام کے زمانے میں ابو سفیانؓ نمایاں ترین اموی شخصیت سمجھے جاتے تھے  اور ان چار افراد میں سے تھے جن کا حکم مانا جاتا تھا۔ حضرت عثمان بن عفانؓ  جو بنو امیہ میں سے تھے ، ان خلیفہ چن لیا گیا تو امویوں نے اپنے اثر و رسوخ اور طاقت میں زبردست اضافہ کیا۔ سیدنا  علیؓ  کی خلافت کے آغاز پر بنو امیہ کے اکابرین بھاگ کر مکہ چلے گئے اور پھر اصحاب جمل کے ساتھ مل کر سیدنا عثمان کی خونخواہی کے بہانے، بغاوت و مخالفت کا جھنڈا اٹھایا، لیکن خلافت کے موضوع پر ان سے شدید اختلاف رکھتے تھے حتی کہ روایات کے مطابق مروان نے حضرت طلحہؓ  کوعین جنگ کے دوران شہید کر ڈالا۔

حضرت معاویہ کے خلافت سنبھالتے ہی  خلافت کا مفہوم ملوکیت اور سلطنت میں بدل گیا۔ معاویہ اور ان کے اعوان و انصار نے بارہا اپنی حکومت کے لیے "مُلک" (یا بادشاہت) کا لفظ استعمال کیا۔ مروی ہے کہ حضرت عمر بن خطابؓ نے بھی معاویہ کو "کسرائے عرب" کا خطاب دیا تھا۔ حتی کہ معاویہ خود اپنے لیے کہتے تھے کہ میں عربوں کا پہلا بادشاہ ہوں۔

حضرت معاویہ کہ کوششوں سے یزید کو خلافت کے لیے نامزد کیا گیا۔ یزید کے دور حکومت میں بہت سے اسلامی مظاہر و اقدار کو حملے اور  فوج کشی کا سامنا کرنا پڑا؛ سنہ 61 ھ میں واقع کربلا، سنہ 62 ہجری میں مسلم بن عقبہ کے ذریعے   واقعۂ حرہ اور کعبہ کو نذر آتش کرنے کے واقعات ہر تاریخی منابع میں درج ہیں۔

اسلامی پیغمبر حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی سخت مخالفت کے باوجود، امویوں نے 632ء میں آپ کی وفات سے پہلے اسلام قبول کیا۔ حضرت عثمان، امیہ قبیلے سے حضرت محمد کے ابتدائی ساتھی، تیسرے خلیفہ تھے، جنھوں نے 644-656ء میں حکمرانی کی، جبکہ دیگر اراکین نے مختلف گورنری سنبھالے۔ ان گورنروں میں سے ایک شام کے معاویہ اول نے پہلی مسلم خانہ جنگی (656-661) میں حضرت علی کی مخالفت کی اور اس کے بعد اموی خلافت کی بنیاد دمشق میں رکھی۔ اس سے اموی خاندان کا آغاز ہوا، جو اسلام کی تاریخ کا پہلا موروثی خاندان ہے اور اپنے وقت کی پوری اسلامی دنیا پر حکمرانی کرنے والا واحد خاندان ہے۔

دوسری مسلم خانہ جنگی میں اموی حکومت کو چیلنج کیا گیا تھا، جس کے دوران 684ء میں معاویہ کی سفیانیت کی جگہ مروان اول نے لے لی، جس نے اموی خلفاء کے مروانی سلسلہ کی بنیاد رکھی، جس نے خلافت پر خاندان کی حکمرانی کو بحال کیا۔ امویوں نے ابتدائی مسلمانوں کی فتوحات پر گامزن کیا، شمالی افریقہ، ہسپانیہ، وسطی ایشیا اور سندھ کو فتح کیا، لیکن مسلسل جنگ نے ریاست کے عسکری وسائل کو ختم کر دیا، جبکہ علید اور خارجی بغاوتوں اور قبائلی دشمنیوں نے ریاست کو اندر سے کمزور کر دیا۔ آخر کار، 750ء میں عباسیوں نے خلیفہ مروان دوم کا تختہ الٹ دیا اور خاندان کے بیشتر افراد کا قتل عام کیا۔[1] زندہ بچ جانے والوں میں سے ایک، خلیفہ ہشام بن عبد الملک کا پوتا، عبدالرحمٰن فرار ہو کر مسلم اسپین چلا گیا، جہاں اس نے قرطبہ کی امارت کی بنیاد رکھی، جسے اس کی اولاد، عبدالرحمٰن III ، نے ایک اعلیٰ عہدے پر فائز کیا۔ 929ء میں خلافت نسبتاً مختصر سنہری دور کے بعد، قرطبہ کی خلافت 1031ء میں کئی آزاد طائفہ سلطنتوں میں منتشر ہو گئی، اس طرح اموی خاندان کے سیاسی خاتمے کی نشان دہی ہوئی۔

اموی حکمرانوں کی فہرست[ترمیم]

شام میں مقیم اموی خلفاء[ترمیم]

اموی خلافت
خلیفہ راج کرنا
معاویہ اول ابن ابی سفیان 28 جولائی 661 - 27 اپریل 680
یزید اول بن معاویہ 27 اپریل 680 - 11 نومبر 683
معاویہ ثانی ابن یزید 11 نومبر 683 تا جون 684
مروان اول ابن الحکم جون 684-12 اپریل 685
عبد الملک بن مروان 12 اپریل 685 - 8 اکتوبر 705
الولید اول ابن عبد الملک 8 اکتوبر 705 - 23 فروری 715
سلیمان بن عبد الملک 23 فروری 715 - 22 ستمبر 717
عمر ثانی بن عبد العزیز 22 ستمبر 717 - 4 فروری 720
یزید ثانی ابن عبد الملک 4 فروری 720 - 26 جنوری 724
ہشام بن عبد الملک 26 جنوری 724 - 6 فروری 743
الولید ثانی ابن یزید 6 فروری 743 - 17 اپریل 744
یزید سوم ابن الولید 17 اپریل 744 - 4 اکتوبر 744
ابراہیم بن الولید 4 اکتوبر 744 - 4 دسمبر 744
مروان ثانی ابن محمد 4 دسمبر 744 - 25 جنوری 750
عباسیوں کے ہاتھوں تختہ الٹنے کے بعد اموی خلافت میں خاندان کا خاتمہ ہوا۔

اموی امیر اور قرطبہ کے خلیفہ[ترمیم]

اندلس کے حکمران
قرطبہ کی امارت
امیر راج کرنا
عبدالرحمٰن اول ابن معاویہ العموی 15 مئی 756 - 30 ستمبر 788
ہشام ابن عبدالرحمن العماوی 6 اکتوبر 788 - 16 اپریل 796
الحکم اول ابن ہشام العماوی 12 جون 796 - 21 مئی 822
عبدالرحمن ثانی ابن الحکم العموی 21 مئی 822 - 852
محمد اول بن عبدالرحمٰن العماوی 852 - 886
المنظیر بن محمد العوماوی 886 - 888
عبداللہ بن محمد العوماوی 888 - 15 اکتوبر 912
عبدالرحمن سوم ابن محمد العوماوی 16 اکتوبر 912 - 16 جنوری 929
عبدالرحمٰن III کے اپنے آپ کو قرطبہ کا خلیفہ قرار دینے کے بعد نام کی تبدیلی
قرطبہ کی خلافت
خلیفہ راج کرنا
عبدالرحمن سوم النصر لدین اللہ 16 جنوری 929 - 15 اکتوبر 961
الحکم ثانی المستنصر باللہ 15 اکتوبر 961 - 16 اکتوبر 976
ہشام ثانی المعیاد باللہ 16 اکتوبر 976 - 1009
محمد ثانی المہدی باللہ 1009
سلیمان المستعین باللہ 1009 - 1010
ہشام ثانی المعیاد باللہ 1010 – 19 اپریل 1013
سلیمان المستعین باللہ 1013 - 1016
عبد الرحمٰن چہارم المرتضیٰ باللہ 1017
حمود خاندان (1017-1023) کے ذریعہ خاندان کا خاتمہ
خلافت قرطبہ (بحال)
عبد الرحمٰن و الم مستحضر باللہ 1023 - 1024
محمد III المستقفی باللہ 1024 - 1025
ہمودی خاندان کا عبوری دور (1025-1026)
خلافت قرطبہ (بحال)
ہشام سوم المعتد باللہ 1026 - 1031
خاندان کا تختہ الٹ دیا گیا۔

اموی حکمرانوں کا شجرہ نسب[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. History With Sohail (2023-11-06)۔ "جنگِ زاب جس کے بعد بنو اُمیہ کا خاتمہ ہوا اور عباسی خلافت کی شروعات ہوئی۔"۔ www.historyinurdu.com (بزبان انگریزی)۔ 06 نومبر 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 نومبر 2023