ارسطو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ارسطو
(قدیم یونانی میں: Ἀριστοτέλης)[1]،(انگریزی میں: Aristotle)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Aristotle Altemps Inv8575.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 384 ق م[2][3][4][5][1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 322 ق م[2][3][4][6][1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
خالسیس[7][8][9][10][1]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت[11]،  خود کشی[6]  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش ایتھنز (366 ق.م–347 ق.م)
ایتھنز (335 ق.م–323 ق.م)[12]  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نسل یونانی [11]  ویکی ڈیٹا پر (P172) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی اکادمی[11]  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استاذ افلاطون[13][11]  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلمیذ خاص سکندر اعظم[11]  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ماہر حیاتیات[11]،  ماہر کونیات[11]،  ماہر حیوانیات[11]،  ادبی تنقید نگار[11]،  ریاضی دان[11]،  سیاسی فلسفی[11]،  جامع العلوم[11]،  مصنف[14][11][15]،  فلسفی[16][11][17]،  ماہر فلکیات[11]،  جغرافیہ دان[11]،  معلم[18][11]،  اتالیق[19][20][21][11]  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان قدیم یونانی[11]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فلسفہ[11]  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کارہائے نمایاں بوطیقا  ویکی ڈیٹا پر (P800) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مؤثر افلاطون[11]،  سقراط،  ہیراکلیطس،  بارامانیاس،  دی مقراطیس،  اناکسی میندر،  بقراط،  امپی دوکلیز  ویکی ڈیٹا پر (P737) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تحریک مشائیت[11]  ویکی ڈیٹا پر (P135) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ارسطو

یونان کا ممتاز فلسفی، مفکر اور ماہر منطق تھا، جس نے سقراط جیسے استاد کی صحبت پائی اور سکندر اعظم جیسے شاگرد سے دنیا کو متعارف کروایا۔

حیات[ترمیم]

کی زندگی کے بارے میں بہت کم جانا جاتا ہے۔ ارسطو شمالی یونان کے شہر اسٹگیرا میں پیدا ہوا تھا ۔ اس کے والد نیکوماس کا انتقال اس وقت ہوا جب ارسطو بچپن میں تھا ، اور اس کی پرورش ایک سرپرست نے کی۔ سترہ یا اٹھارہ سال کی عمر میں وہ ایتھنز میں پلوٹو کی اکیڈمی میں شامل ہوا اور سینتیس سال (سن c 347 قبل مسیح) کی عمر تک وہیں رہا ۔ افلاطون کی وفات کے فورا بعد ہی ، ارسطو نے ایتھنز چھوڑ دیا اور ، میسیڈون کے فلپ دوم کی درخواست پر ، 343 قبل مسیح میں سکندر اعظم کی عظیم تعلیم کا درس لیا ۔ اس نے لائسیم میں ایک لائبریری قائم کیجس نے اس کو پاپائرس اسکرول پر اپنی سیکڑوں کتابیں تیار کرنے میں مدد فراہم کی ۔ اگرچہ ارسطو نے اشاعت کے لئے بہت سارے خوبصورت مقالے اور مکالمے لکھے ، لیکن اس کی اصل پیداوار کا صرف ایک تہائی حصہ ہی بچا ہے ، اس میں سے کسی نے اشاعت کا ارادہ نہیں کیا۔ طبعی سائنس کے بارے میں ارسطو کے خیالات نے قرون وسطی کے اسکالرشپ کو گہرا شکل دی۔ ان کا اثر مرحوم نوادرات اور ابتدائی قرون وسطی سے نشا . ثانیہ تک پھیل گیا ، اور جب تک کلاسیکی میکانکس جیسے روشن خیالی اور نظریات تک نظامی طور پر تبدیل نہیں ہوئے ۔ ارسطو کے کچھ علمی مشاہدے ان کی حیاتیات میں پائے گئے ، جیسے آکٹپس کے ہیکٹوکوٹیل (تولیدی) بازو پر ، 19 ویں صدی تک انکار نہیں کیا گیا تھا۔ اس کی تخلیقات میں منطق کا ابتدائی پہلا باقاعدہ مطالعہ ہے ، جس کا مطالعہ قرون وسطی کے علماء جیسے پیٹر ایبلارڈ اور جان باریڈان نے کیا تھا۔. منطق پر ارسطو کا اثر 19 ویں صدی تک بھی جاری رہا۔ وہ متاثر اسلامی فکر کے دوران مشرق وسطی کے ساتھ ساتھ عیسائی الہیات ، خاص طور پر Neoplatonism کے ابتدائی کلیسیا اور علمی کی روایت کیتھولک چرچ . ارسطو قرون وسطی کے مسلم اسکالروں میں "پہلا استاد" کے طور پر اور تھامس ایکناس جیسے قرون وسطی کے عیسائیوں میں محض "دی فلاسفر" کی حیثیت سے مشہور تھا۔ اس کی اخلاقیات، کے جدید آمد کے ساتھ ہمیشہ بااثر، حاصل کی تجدید دلچسپی

علمی مساعی[ترمیم]

ارسطو (دائیں) اور افلاطون (بائیں)

فلسفہ کے علاوہ جو چیز ارسطو کو سابق فلاسفہ سے ممتاز کرتی ہے وہ اس کا عملی طبیعیات، ہیئت اور حیاتیات میں ملکہ تھا۔ وہ پہلا عالم تھا جس نے علمی اصطلاحات وضع کیں۔ منطق کو باقاعدہ علم کا درجہ دیا۔ اور سیاست و معاشرت کے لیے باضابطہ اصول ترتیب دیے۔ اس کی قائم کردہ اکیڈمی عرصہ دراز تک مرکز علم و فن رہی۔

بنیادی نظریات[ترمیم]

  • خدا ایک نادیدہ مقناطیسی قوت ہے جو ہر شے کو اپنی جانب کھینچتی ہے۔ حرکت دراصل اسی کشش کا نتیجہ ہے جو زندگی کا موجب ہے۔
  • خدا بے نیاز ہے۔ وہ اپنی نمود و نمائش سے مبرا اور جنت جہنم، نیکی بدی سے منزا ہے۔
  • انسان کا شرف و اختصاص، اس کی قوت،عقل اور فکر میں مضمر ہے۔
  • کامل انسان اشرف المخلوق بن جاتا ہے اور منتشر و شریر ہو تو ارزل المخلوق۔
  • اعتدال بہترین راستہ ہے۔
  • عورت فطرتاً مرد سے ذہنی و جسمانی طور پر پست ہے۔

اہم تصانیف[ترمیم]

ارسطو صرف فلسفی ہی نہ تھا، بلکہ وہ علم طب، علم حیوانات، ریاضی، علم ہيئت، سیاسیات، مابعدالطبیعیات اور علم اخلاقیات پر قدیم حکما کے مابیں مستند اور صاحب الرائے عالم مانا جاتا ہے۔ اس کی کتب و تحقیقی رسائل کی تعداد ہزار سے اوپر ہے، جن میں سے اہم یہ ہیں۔

  • المقولات
  • الاخلاق
  • مابعدالطبیعیہ
  • العبارۃ
  • الب رہان
  • الجدل
  • الخطابہ
  • الشعر
  • النفس
  • الحیوان
  • الحس و المحسوس
  • بوطیقا

بیرونی روابط[ترمیم]

http://Aristotle.thefreelibrary.com

http://www.non-contradiction.com

http://www.utm.edu/research/iep/a/aristotl.htm

http://www.greek-literature-online.com/aristotle

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ Aristotle — اخذ شدہ بتاریخ: 25 اگست 2018
  2. ^ ا ب ربط : https://d-nb.info/gnd/118650130  — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اپریل 2014 — اجازت نامہ: CC0
  3. ^ ا ب مکمل کام یہاں دستیاب ہے: http://feb-web.ru/feb/kle/ — عنوان : Краткая литературная энциклопедия — ناشر: Great Russian Entsiklopedia, JSC
  4. ^ ا ب مکمل کام یہاں دستیاب ہے: http://feb-web.ru/feb/kle/ — مصنف: ارتھر بری — عنوان : A Short History of Astronomy — ناشر: جون مرے
  5. مکمل کام یہاں دستیاب ہے: http://feb-web.ru/feb/kle/ — عنوان : Aristoteles — شائع شدہ از: Real'nyj slovar' klassicheskih drevnostej po Ljubkeru
  6. ^ ا ب مکمل کام یہاں دستیاب ہے: http://feb-web.ru/feb/kle/ — عنوان : Аристотель — اقتباس: Он бежал с большею частью учеников своих в Халкиду, что на острове Эвбее, к родственникам своим по матери, и вскоре потом, в 322 г. до Р. X. отравил себя, как говорят, не желая отправиться в Афины, по требованию Ареопага.
  7. Arithmetizations of Syllogistic à la Leibniz — شائع شدہ از: 30 مئی 2012
  8. OUTLINES OF GREEK AND ROMAN MEDICINE
  9. Isocrates and Aristotle on Rhetoric
  10. Isocrates and Aristotle on Rhetoric — عنوان : Aristoteles — شائع شدہ از: Real'nyj slovar' klassicheskih drevnostej po Ljubkeru — اقتباس: Демофил обвинил Аристотеля в ἀσέβεια; тот бежал в евбейский город Халкиду (в 223 или 222 г.) и там умер.
  11. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ Aristotle — اخذ شدہ بتاریخ: 25 اگست 2018
  12. Aristotle — اخذ شدہ بتاریخ: 25 اگست 2018
  13. http://webspace.ship.edu/cgboer/athenians.html
  14. Animal social behaviour — اخذ شدہ بتاریخ: 1 مئی 2020
  15. Animal social behaviour — ناشر: SISMEL – Edizioni del Galluzzo
  16. Stanford Encyclopedia of Philosophy — ناشر: جامعہ سٹنفورڈ اور Center for the Study of Language & Information
  17. BeWeb person ID: https://www.beweb.chiesacattolica.it/persone/persona/1238/ — اخذ شدہ بتاریخ: 4 اگست 2020
  18. Why do English state school summer holidays start in late July, thereby ensuring that children miss the longest days and the best chance of good weather? — اخذ شدہ بتاریخ: 1 مئی 2020 — ناشر: TheGuardian.com
  19. http://www.tandfonline.com/doi/pdf/10.1300/J082v49n03_02
  20. http://www.jstor.org/stable/284424
  21. http://www.britannica.com/EBchecked/topic/456053/Philip-II/5673/Assessment