مندرجات کا رخ کریں

رچیتا رام

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
رچیتا رام
 

معلومات شخصیت
پیدائش 2 اکتوبر 1992ء (32 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کرناٹک   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ادکارہ   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان کنڑ زبان   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

رچیتا رام (پیدائش بندھیا رام ؛ 3 اکتوبر 1991ء) ایک ہندوستانی اداکارہ ہے جو کنڑ فلموں میں کام کرتی ہے۔ مختلف ٹیلی ویژن شوز میں نمودار ہونے کے بعد، رچیتا نے 2013ء کی فلم، بلبل سے اپنی فلمی شروعات کی، جس کے لیے اسے بہترین اداکارہ کا فلم فیئر ایوارڈ ملا - کنڑ نامزدگی۔ رچیتا نے مختلف ایوارڈز جیتے ہیں جن میں ایک فلم فیئر ایوارڈ ساؤتھ اور تین سیما ایوارڈز شامل ہیں ۔ [1] رچیتا نے رنا (2015ء) میں اپنی اداکاری کے لیے بہترین اداکارہ نقاد – کنڑ کا پہلا فلم فیئر ایوارڈ جیتا تھا۔ اس نے چکرویوہا (2016ء)، پشپاکا ویمانا (2017ء)، بھرجاری (2017)، نتاساروبھوما (2019ء)، لو یو رچھو (2021ء)، مانسون راگا (2022ء) اورکرانتی (2023ء) جیسی فلموں سے خود کو قائم کیا۔ رچیتا نے بہترین اداکارہ کا تین سیما ایوارڈ جیتا – کنڑ فلموں رنا ( 2015ء) ، آیوگیا (2018ء) اور آیوشمان بھا (2019ء) کے لیے ایوارڈ جیتے۔ [2]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

وہ ایک تربیت یافتہ کلاسیکل بھرتا ناٹیم ڈانسر ہے جس نے 50 سے زیادہ فلموں میں پرفارمنس دی ہیں۔ اس کی ایک بہن ہے، نتھیا رام ، جو ایک ٹیلی ویژن اور فلم اداکارہ بھی ہیں۔ [3]

کیرئیر[ترمیم]

سینما میں ابتدائی کام اور کامیابی (2010-2017)[ترمیم]

2012ء میں، اس نے 200 شرکاء کے ساتھ بلبل میں مرکزی کردار کے لیے آڈیشن دیا اور اسے منتخب کیا گیا۔ اس سے پہلے اس نے اپنی بہن نتھیا رام کے ساتھ کنڑ ٹیلی ویژن صابن بینکیالی ارالیدا ہووو میں کام کیا۔[4] اس فلم میں درشن کے مدمقابل جوڑی بنائی گئی جو تجارتی طور پر کامیاب رہی۔ [5]ان کی کارکردگی پر ٹائمز آف انڈیا کے جی ایس کمار نے لکھا، "رچیتا رام نے اپنی پہلی فلم میں بہترین پرفارمنس پیش کی ہے" اور مزید کہا، "رچیتا رام اپنی ڈائیلاگ ڈیلیوری، باڈی لینگویج اور بہترین اظہار کے ساتھ حیرت انگیز ہیں۔"[6] 2014 میں ان کی پہلی ریلیز فلم دل رنگیلا تھی، جس میں وہ گنیش کے مدمقابل بنی تھیں۔ دکن ہیرالڈ کی بی ایس سریوانی نے محسوس کیا کہ وہ فلم میں "ایک تجربہ کار پرفارمنس پیش کرتی ہیں"۔[7] سال کی اس کی دوسری ریلیز امباریشا میں ایک بار پھر درشن کے مقابل نظر آئی۔ فلم اور اس کی کارکردگی نے ناقدین سے منفی جائزے حاصل کیے۔[8][9] رنا میں، اس نے رکمنی کا کردار ادا کیا، جو سدیپ کی محبت کی دلچسپی تھی، جو ایک چھوٹے لیکن اہم کردار میں نظر آتی ہے۔[10] راٹھاوارا میں، وہ سریمورلی کی محبت کی دلچسپی کے طور پر نمودار ہوئی، جو ایک گینگسٹر اور ایم ایل اے کے اہم معاون کا کردار ادا کرتی ہے۔ ٹائمز آف انڈیا کی سنایانا سریش نے لکھا، "رچیتا رام بہت خوبصورت لگ رہی ہیں اور اس نے ہر اس پیاری لڑکی کے ساتھ کام کیا ہے جو اس کے لیے ضروری ہے"۔ [11] رچیتا نے 2016 کی کنڑ فلم چکرویوہا میں پونیتھ راجکمار کے ساتھ کام کیا۔ اس نے جگگو دادا اداکاری میں ایک مختصر کردار ادا کیا۔ وہ مکندا مراری میں سدیپ کے مقابل ایک گانے میں بھی نظر آئیں۔ رچیتا کی 2017ء کی پہلی ریلیز پشپاکا ویمانا رمیش اراوند کے مقابل تھی، جہاں اس نے ان کی بیٹی کا کردار ادا کیا تھا۔ اس کی اگلی ریلیز چیتھن کمار کی بھرجاری تھی جس میں دھروا سرجا کے ساتھ تھی۔ رنا کے بعد اداکارہ ہری پریہ کے ساتھ یہ ان کی دوسری فلم ہے۔

کیریئر کے اتار چڑھاؤ اور مستقبل کے منصوبے (2018 تا حال)[ترمیم]

2018 میں اس کی پہلی ریلیز پریتھم گبی کی جانی جانی یس پاپا تھی جو دنیا وجے کے مقابل تھی۔ اس کی اگلی ریلیز مہیش کمار کی آیوگیہ تھی جس میں ستیش نناسم تھے ۔ وہ فلم دی ولن میں شیوا راجکمار کے مقابل ایک گانے میں بھی نظر آئیں۔ 2019 میں اس کے پاس مٹھی بھر ریلیز تھیں۔ اس کی پہلی ریلیز سیتھاراما کلیانہ تھی، جو نکھل کمار کے ساتھ تھی، جو ایک بلاک بسٹر ہٹ کے طور پر ابھری۔ اس کی اگلی ریلیز پونیت راجکمار کی نتاساروبھوما تھی جس کی ہدایت کاری پون وڈیار نے کی تھی، جو چکریووا کے بعد پونیتھ کے ساتھ ان کا دوسرا تعاون تھا۔ وہ ابھیشیک گوڈا کی اداکاری والی فلم امر کے ایک گانے میں نظر آئیں۔ اس کی اگلی ریلیز آر چندرو کی آئی لو یو تھی جس کے مقابل اسٹار اوپیندر تھے ۔ وہ شیوا راجکمار کی روی ورما کی ہدایت کاری میں بنی رستم میں بھی نظر آئیں، جہاں ان کی بالی ووڈ اداکار وویک اوبرائے کے ساتھ جوڑی بنی۔ اس نے سریمورلی کے مقابل بھراٹے میں ایک گانے میں ایک خاص کردار ادا کیا۔ اس کے بعد آیوشمان بھا آیا جہاں اس نے شیوا راجکمار کے مقابل کردار ادا کیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Rachita Ram finally selected for 'Bulbul'"۔ The Times of India۔ 16 July 2012۔ 16 فروری 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  2. "Exclusive - These are the highest-paid Kannada actresses"۔ Zee News Kannada۔ 23 April 2023۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مئی 2023 
  3. "Rachita Ram's sister to debut in Sandalwood"۔ The Times of India۔ 6 November 2013 
  4. "Way to go, Rachita"۔ The Indian Express۔ 1 May 2013۔ 02 اپریل 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  5. "'Arasi' Bindya gets 'Bulbul'"۔ The Indian Express۔ 9 July 2012۔ 02 اپریل 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  6. "Bul Bul Movie Review"۔ The Times of India۔ 10 May 2013۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  7. "Lies never could get the girl or golden egg!"۔ Deccan Herald۔ 7 March 2014۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  8. "Ambareesha Movie Review"۔ The Times of India۔ 23 November 2014۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  9. "Resurrecting Kempegowda to right a wrong"۔ Deccan Herald۔ 21 November 2014۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مارچ 2015 
  10. Muralidhara Khajane (5 June 2015)۔ "A right royal Kichcha show"۔ The Hindu۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اکتوبر 2015 
  11. Sunayana Suresh (7 December 2015)۔ "Rathaavara Movie Review"۔ The Times of India۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 دسمبر 2015 

بیرونی روابط[ترمیم]