سید وحید القادری عارفؔ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سید وحید القادری عارفؔ
عارفؔ قادری
عارفؔ قادری
ادیب
پیدائشی نامابو الحسین سید وحید القادری
عرفیتعارف
قلمی نامسید وحید القادری عارفؔ
تخلصعارف
ولادتحیدرآباد دکن
اصناف ادبشاعری
نثر
ذیلی اصنافنعتیہ شاعری
غزل


سید وحید القادری تخلص عارفؔ شاعر کی حثیت سے جانا جاتا ہے۔ آپ کا تعلق حیدرآباد دکن سے ہے۔

خاندانی پس منظر[ترمیم]

عارفؔ کے جدِ اعلیٰ ابو البرکات سید احمد نقشبندی کابل سے حیدرآباد دکن آنے والے پہلے بزرگ ہیں جنکے تلامذہ اور ارادتمندوں کی کثیر تعداد افغانستان ‘ سرزمینِ عرب اور ہندوستان میں موجود تھی۔ عارفؔ کے جدِ امجد سید عبد الرشید قادری مفتی بلدہ اور قاضی القضاۃ کے منصب پر فائز رہے۔ اپنے وقت کے جید علما میں شمار ہوتے تھے۔ ان کے صاحبزادے یعنی عارفؔ کے والد ابو الفضل سید محمود قادری تھے جو ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کے عہدہ پر فایز تھے۔[1] عارفؔ کے نانا سید وحید القادری الموسوی تھے۔ عارفؔ کا نام انہی کے نام پررکھا گیا۔

سخن گوئی[ترمیم]

عارف کے مزاج میں ذوقِ سخن بچپن سے موجود تھا۔ ان کی نشو و نما ادبی ماحول میں ہوئی جس کا ان کی شخصیت پرگہرا اثر ہوا۔ والد محمود قادری اردو، فارسی اور عربی کے کہنہ مشق اور قادر الکلام شاعر تھے ۔[2] اُن کی سرپرستی اور صدارت میں شہر ِ حیدرآباد اور دیگر شہروں میں ادبی اور شعری نشستیں منعقد ہوتیں جن میں عارفؔ کو بھی شرکت کا موقع ملتا۔ اپنے بزرگوں کے کلام کا مطالعہ ان کا محبوب مشغلہ تھا۔ پھر کمسنی میں ہی شعر گوئی کی جانب مائل ہوئے۔ نعت و منقبت سے ابتدا ہوئی اور رفتہ رفتہ نظم اور غزل کہنے لگے۔ والدِ گرامی سے ان کی وفات تک مشورہ لیتے رہے اور ان ہی کی حوصلہ افزائی نے عارف کی صلاحیتوں کو اجاگر کیا۔ خود کہتے ہیں ؎

رنگ لائی صحبتِ محمودؔ عارفؔ اس قدر۔ کچھ اثر آ ہی گیا تحریر میں تحریر کا

ایک اور مقام پر کہتے ہیں ؎ یہ فیضِ صحبتِ محمودؔ ہے عارفؔ کہ گویا ہوں۔ ادائے گفتگو ورنہ کہاں ان کی کہاں میری

اپنے والد کے علاوہ اپنے رشتہ کے چچا ولیؔ القادری اور ڈاکٹر غیاثؔ صدیقی (صاحبزادہ میر غیاث الدین علی خاں) سے بھی استفادہ کیا جو حیدرآباد دکن کے معروف شعرا میں شمار ہوتے تھے۔

قلمی نگارشات[ترمیم]

نعتیہ کلام “ا سرمایہء حیات“ منظرِ عام پر آچکا ہے جبکہ اس سے قبل نعتیہ اور منقبتی کلام کا ایک مجموعہ ‘‘نسیمِ گلستان’’ انٹرنیٹ پر شائع ہوچکا ہے۔ غزلیات کا مجموعہ ‘‘جذبِ عشق’’ ترتیب کے مراحل میں ہے۔

شعر و سخن کے علاوہ عارفؔ کو نثر میں بھی شغف رہا۔ ابو الفضل سید محمود قادری جس وقت سید شاہ غلام علی قادری الموسوی کی مایہ ناز تصنیف ‘‘مشکوٰۃِ نبوت’’ کا فارسی سے اردو ترجمہ فرما رہے تھے تو عارفؔ اپنے والدِ گرامی کے دستِ راست تھے۔ اس کتاب کی پہلی پانچ جلدوں کی طباعت کے بعد جب مترجم کی مزاج ناساز ہوئی تو انہوں نے اپنے فرزند کو باقی تین جلدوں کے ترجمہ کا حکم دیا۔[3] چنانچہ عارفؔ نے چھٹی’ ساتویں اور آٹھویں جلدوں کا ترجمہ کیا جو معارفِ اسلامیہ ٹرسٹ کے زیرِ اہتمام 1984ءمیں زیورِ طباعت سے آراستہ ہوا۔ عارفؔ نے غلام علی قادری الموسوی کی شخصیت اور علمی کارناموں پر ایک جامع کتاب ‘‘غلام علی الولی’’ بھی تحریر کی جو اقتباساَ مشکوٰۃ نبوت کی آخری جلد میں بطورِ ضمیمہ شائع ہوئی۔[4]

عارفؔ نے عصر حاضر کے نامور عراقی مورخ ڈاکٹر جمال الدین فالح کیلانی کی تحقیقی تصنیف " جغرافیۃ الباز الاشہب" کا عربی سے اردو میں ترجمہ کیا۔ یہ کتاب سیدنا شيخ عبدالقادر جيلانی کی سیرت اور ان کے مقامِ ولادت پر جامع تحقیق ہے۔[5]

عارفؔ نے اپنے جدِ اعلیٰ علامہ ابو الفضل سید محمود(اولیٰ) کی شخصیت پر ایک تصنیف ‘‘ذکرِ محمودؒ’’ تحریر کی جو شائع ہوچکی ہے۔ علاوہ ازیں اپنے والد کے نثری مضامین کا مجموعہ ‘‘ افکارِ محمودؒ ’’ کے نام سے مرتب کیا جو 2001ء میں منظرِ عام پر آچکا ہے۔

نمونہ کلام[ترمیم]

دل میں کوئی چراغ فروزاں نہ کر سکے۔ ہم زندگی میں کیف کا ساماں نہ کر سکے

امکانِ فہمِ سوزِ دروں بھی نہیں رہا۔ احساسِ دردِ دل لبِ خنداں نہ کر سکے

دامن بچا بچا کے چلے خارزار سے۔ خونِ وفا سے پھر بھی گریزاں نہ کرسکے

ہم کو نظر بچا کے گزرنا پڑا مگر۔ تم کو نظر ملا کے پشیماں نہ کر سکے

ارماں کئی کیے کئی پورے ہوئے مگر۔ ارمان جس کا تھا وہی ارماں نہ کر سکے

روشن کئی دئے تھے چراغاں کے واسطے۔ لیکن فروغِ شمعِ شبستاں نہ کر سکے

سمجھے الجھ کے حالِ پریشاں میں آج ہم۔ تعبیرِ حرفِ خوابِ پریشاں نہ کر سکے

لب بستگی ضرور تھی آنکھیں تو تھیں کھلی۔ اظہار اپنے حال کا ناداں نہ کر سکے

قائل ضرور سرمد و منصور کے رہے۔ پیدا وہ خود میں جذبہء ایماں نہ کر سکے

وہ تو نوازتے رہے ہر آن ہر گھڑی۔ ہم ہی علاجِ تنگیء داماں نہ کر سکے

جد و جہد میں کٹ گئی عارفؔ تمام عمر۔ اب تک حصولِ مقصدِ عرفاں نہ کرسکے

مطبوعات[ترمیم]

  • مشکوٰۃ نبوت (تصنیف سید شاہ غلام علی قادری الموسوی)۔ فارسی سے اردو ترجمہ۔ جلد ششم تا جلد ہشتم۔ مطبوعہ معارفِ اسلامیہ ٹرسٹ۔ حیدرآباد۔
  • جغرافیۃ الباز الاشہب، تصنیف ڈاکٹر جمال الدین فالح کیلانی عربی سے اردو ترجمہ -ریاستہائے متحدہ امریکا۔[6]
  • افکارِ محمود۔ مطبوعہ معارفِ اسلامیہ ٹرسٹ۔ حیدرآباد۔
  • ذکرِ محمود۔
  • سرمایہء حیات۔ نعتیہ کلام کا مجموعہ۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ذکرِ محمود از ابو الحسین سید وحید القادری عارف
  2. مقدمہ ’’فردوس‘‘ ڈاکٹر زینت ساجدہ
  3. مقدمہ مشکوٰۃ نبوت جلد ششم۔ تحریر ابو الفضل سید محمود قادریؒ
  4. مشکوٰۃ نبوت جلد ہشتم۔ ضمیمہ
  5. * كتاب جغرافية الباز الاشهب pdf (اردو ترجمہ).
  6. كتاب جغرافية الباز الاشهب للدكتور جمال الكيلاني بين مادحيه وناقديه بقلم محمد جيلاني، مجلة السبل، السودان، 2014، عدد 895

بیرونی روابط[ترمیم]