شمائلہ حسین شاہانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


Shumaila Hussain Shahani
معلومات شخصیت

شمائلہ حسین شاہانی [1] (پیدائش: سن 1989) ایک پاکستانی پاکستانی وکیل ہے [2] جو کراچی میں مقیم ہیں ۔

تعلیم[ترمیم]

شاہانی نے 2014 میں لندن یونیورسٹی سے بیچلر آف لا ( LLB ) مکمل کیا۔ اس سے قبل اس نے 2012 میں اسی مادر علمی سے ڈپلومہ ان لا حاصل کیا تھا۔ وہ 'قانون کی بہترین طالب علم' کے طور پر پہچان گئیں اور 2014 میں یونیورسٹی آف اسلام آباد سے کیپری ڈیم ایوارڈ وصول کنندہ تھیں۔

سرگرمیاں[ترمیم]

شاہانی ایک ماہر نسواں [3] اور ایک سماجی کارکن [4] ہیں جو اکثر پاکستانی معاشرتی نظام میں پدرسری نظام کے خلاف آواز اٹھاتی دیکھی گئی ہیں۔ اس نے عدالت میں سیکس ازم کے خلاف بات کی ہے اور پاکستانی قانونی دائرہ اختیار میں حقوق نسواں کی پالیسیوں کی ضرورت کی حمایت کرتی ہے۔

یہ ہونہار وکیل آل پاکستان فیمینسٹ الائنس کی بانی صدر بھی ہیں۔ وہ #BolneDo مہم شروع [5] پر سوشل میڈیا جس خاموشی اور سماجی دباؤ کے ملک میں بنیاد پرست عناصر کی خلاف اپنے ہونٹوں پر انگلی رکھی تصویر سے آغاز کیا۔ انہوں نے اس مہم کا آغاز 17 اپریل 2017 کو ایک طالب علم مشال خان کی یاد میں کیا تھا ، جسے توہین آمیز مواد آن لائن شائع کرنے کے الزامات کے تحت ایک مشتعل ہجوم نے ان کی یونیورسٹی میں قتل کیا تھا۔

شاہانی [6] معاشرے کے تمام پہلوؤں سے مختلف آرا کو سننے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے ' اظہار رائے کی آزادی ' پر پختہ یقین رکھتی ہیں۔ وہ مزید وضاحت کرتی ہیں کہ اسلام محبت اور امن کا پیغام دیتا ہے اور نسوانیت ، صنفی انصاف ، اور عدم تفریق کے نظریات کی تائید قرآن پاک ہی کرتی ہے۔

انجمنیں[ترمیم]

شاہانی متعدد تنظیموں کے سرگرم رکن ہیں جن میں کراچی بار ایسوسی ایشن ، سندھ بار کونسل ، اور یوتھ پارلیمنٹ آف پاکستان شامل ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Team، Cutacut Editorial (2018-03-07). "#WomanCrushWednesday: All the women you need in your life". cutacut (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  2. "Pre-Aurat March media conference". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  3. Shahid، Kunwar Khuldune (2019-03-13). "Women will march on despite public backlash". Asia Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  4. "Pakistan's Women Marched for Their Rights. Then the Backlash Came.". thediplomat.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  5. Joshi، Abhinav Joshi (2017-04-25). "After A Mob Lynched A Student For Alleged 'Blasphemy', Pakistan's Youth Demand Change In Blasphemy Laws". thelogicalindian.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020. 
  6. DelhiAugust 8، India Today Web Desk New؛ August 8، 2017UPDATED:؛ Ist، 2017 11:40. "Pakistan: Sindhi cleric accuses minority-friendly Hindu lawmaker of being a RAW agent". India Today (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2020.