عبد الرؤف عروج

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
عبد الرؤف عروج
معلومات شخصیت
پیدائش 5 جنوری 1932  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
اورنگ آباد،  برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 17 مئی 1990 (58 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
کراچی،  پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
مدفن گلشن اقبال،  کراچی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام دفن (P119) ویکی ڈیٹا پر
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  محقق  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان اردو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل تحقیق،  مرثیہ،  غزل  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
P literature.svg باب ادب

عبد الرؤف عروج (پیدائش: 5 جنوری، 1932ء - وفات: 17 مئی، 1990ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے ممتاز شاعر، ماہرِ اقبالیات اور محقق تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

عبد الرؤف عروج 5 جنوری، 1932ء میں اورنگ آباد (مہاراشٹر) میں پیدا ہوئے۔ تقسیم ہند کے بعد وہ پہلے لاہور میں اور پھر کراچی میں سکونت پزیر ہوئے، جہاں وہ متعدد جرائد و اخبارات سے وابستہ رہے۔ ان اخبارات و جرائد میں روزنامہ امروز، روزنامہ مشرق، انجام، حریت اور ماہنامہ نیا راہی شامل تھے۔ ان کی تصانیف میں اُردو مرثیہ کے پانچ سو سال (1961ء)، میر اور عہد میر (1969ء)، خسرو اور عہد خسرو (1975ء)، اقبال اور بزمِ اقبال حیدرآباد دکن (ستمبر1978ء)، مصحفی کی مثنوی نگاری، فارسی گو شعرائے اُردو اور رجال اقبال (1988ء) کے نام شامل ہیں۔ اس کے علاوہ ان کا ایک شعری مجموعہ چراغ آفریدم کے نام سے شائع ہو چکا ہے، جبکہ مرثیوں کا مجموعہ لہو لہو اُجالا غیر مطبوعہ ہے۔[1]

نمونۂ کلام[ترمیم]

غزل

آج یادوں نے عجب رنگ بکھیرے دل میں مسکراتے ہیں سرِ شام سویرے دل میں
یہ تبسم کا اُجالا، یہ نگاہوں کی سحر لوگ یوں بھی تو چھپاتے ہیں اندھیرے دل میں
صورتِ بادِ صبا قافلۂ یاد آیا زخم در زخم کھلے پھول سے میرے دل میں
یاس کی رات کٹی آس کا سورج چمکاپھر بھی چمکے نہ کسی روز سویرے دل میں
اِک مری وحشتِ بے نام پہ اِس طرح نہ سوچ کتنی باتیں ہیں جو کھٹکی نہیں تیرے دل میں
دھیان کی شمع کی لو تیز بھی کر دیتے ہیں اکثر اوقات تری یاد کے پھیرے دل میں
نہ ملی فرصت آسائش تعبیر عروج ایک مدت سے ہیں خوابوں کے بسیرے دل میں[2]

وفات[ترمیم]

عبد الرؤف عروج 17 مئی، 1990ء کو کراچی، پاکستان میں وفات پاگئے۔ وہ گلشن اقبال کراچی کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]