مندرجات کا رخ کریں

غزالہ رفیق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
غزالہ رفیق
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1939ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 24 جنوری 1977ء (37–38 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ادکارہ   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

غزالہ رفیق ( 1939 - جنوری 1977)، ایک پاکستانی ریڈیو، ٹی وی اور فلمی اداکارہ تھیں۔ وہ گلوکارہ اور ریڈیو پاکستان کراچی کی میزبان بھی تھیں۔ وہ 1960 اور 1970 کی دہائیوں میں ٹی وی کی مقبول ترین اداکارہ تھیں۔

سیرت[ترمیم]

وہ 1939 میں قمبر علی خان، ضلع لاڑکانہ (موجودہ قمبر-شہداد کوٹ ضلع ) میں پیدا ہوئیں۔ ان کا پیدائشی نام بلقیس انصاری تھا۔ وہ سندھی زبان کے معروف ادیب عثمان علی انصاری کی بھانجی تھیں۔ [1] پڑھے لکھے گھرانے سے تعلق رکھنے کی وجہ سے انھیں بچپن سے ہی پڑھنے اور گانے کا شوق تھا۔ انھوں نے اپنے گلوکاری اور اداکاری کا آغاز 1957 میں ریڈیو پاکستان کراچی سے کیا۔ خوش قسمتی سے، غزالہ رفیق کی صلاحیتوں کو اس وقت کے معروف براڈکاسٹر زیڈ اے بخاری نے نوٹ کیا، جنھوں نے نہ صرف ان کے گانے ریکارڈ کیے بلکہ انھیں بطور میزبان اور ڈراما آرٹسٹ کے ریڈیو پروگراموں میں حصہ لینے کی ترغیب دی۔ [2] ان کا پہلا اردو ریڈیو ڈراما آگ تھا جسے زاہد نقوی نے پروڈیوس کیا تھا۔ اس کے بعد انھوں نے کئی دوسرے ریڈیو ڈراموں میں مرکزی کردار ادا کیے۔ ریڈیو میں اس نے معروف موسیقاروں امراؤ بندو خان اور ماسٹر محمد ابراہیم سے موسیقی سیکھی۔ 1960 کی دہائی میں وہ ریڈیو پاکستان کراچی کی مقبول ترین میزبانوں میں سے ایک تھیں۔ ان کا پروگرام 'سبحہ ڈیم خاور دروازہ کھلا' ( اردو : صبحدم دروازہ خاور کھلا) اس وقت کے ریڈیو سننے والوں میں خاص طور پر مقبول تھا۔ [2] ایک متحرک آواز اور ان کرداروں کو سمجھنے کے گہرے احساس کے ساتھ جو اسے ادا کرنے کے لیے کہا گیا تھا، اس نے ٹی وی پروڈیوسروں کی توجہ اپنی جانب مبذول کرائی۔ وہ پہلی چند سندھی بولنے والی خواتین میں سے تھیں جو ٹی وی پر نمودار ہوئیں۔ مزید برآں، وہ واحد اداکارہ تھیں جنھوں نے اردو کے ساتھ ساتھ سندھی زبان کے ڈراموں/سیریلز دونوں میں بڑے پیمانے پر مقبولیت حاصل کی۔

اردو ڈراما[ترمیم]

غزالہ رفیق نے پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) سینٹر کراچی کے متعدد اردو ڈراموں اور سیریلز میں اداکاری کی۔ اس کے مقبول ترین ڈرامے/سیریلز ذیل میں درج ہیں۔

  • میں کون ہوں
  • اے ہم نفسو
  • اکیری ماں بتی
  • مرزا غالب
  • پت جھڑ کے بعد
  • گڑیا گھر

سندھی ڈرامے[ترمیم]

وہ 1977 میں اپنی اچانک موت تک سندھی ٹی وی ڈراموں کی مقبول ترین اداکاراؤں میں سے ایک تھیں۔ ان کے سندھی زبان کے کچھ یادگار سیریلز میں درج ذیل شامل ہیں: [3]

  • زینت ( سندھی : زينت)
  • ماؤ ( سندھی : ماءُ)
  • عمر ماروی ( سندھی : عمرمارئي)
  • سسی پنھو ( سندھی : سسئي پنھون)
  • نوری جام تماچی ( سندھی : نوري ڄام تماچی)
  • لیلا چنیسر ( سندھی : ليلا چنيسر)
  • پچھا اور پرلو ( سندھی : پاڇا اور پڑلاءُ)
  • اونداہ آئے روشن ( سندھی : اوندھ اور روشني)

وفات[ترمیم]

ان کا انتقال 24 جنوری 1977 کو کراچی میں ہوا۔ [4]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "معروف صدا کار، باکمال اداکار غزالہ رفیق کی برسی -"۔ ARYNews.tv | Urdu - Har Lamha Bakhabar۔ 2021-01-24۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2022 
  2. ^ ا ب "Tareekh e Pakistan - Death of Ghazala Rafique (غزالہ رفیق کا انتقال) | Online History Of Pakistan"۔ www.tareekhepakistan.com۔ 26 مئی 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2022 
  3. "Mention Of Ghazala Rafiq Whom We Forgot ... - IG News" (بزبان انگریزی)۔ 2022-01-24۔ 24 جنوری 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2022 
  4. "Ghazala Rafiq - Radio/TV/Stage"۔ pakmag.net۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2022