فلسطینی قومی عملداری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فلسطینی قومی عملداری
Palestinian National Authority
(سرکاری طور پر 'ریاست فلسطین' 2013ء سے)

السلطة الفلسطينية
Flag of فلسطین
Flag
قومی نشان of فلسطین
قومی نشان
ترانہ: فدائی
نقشہ فلسطینی قومی عملداری کے تحت علاقہ 2006.
نقشہ فلسطینی قومی عملداری کے تحت علاقہ 2006.
Administrative centerرام الله (مغربی کنارہ)
یروشلم
فلسطین کا دارالحکومت کے طور پر اعلان کیا گیا ہے
[1]
سرکاری زبانیں[2]عربی
حکومتعبوریl (نیم صدارتی)[3]
• صدر
محمود عباسa
رامی حمداللہ
اسٹیبلشمنٹ
• قائم
4 مئی 1994
آبادی
• 2012 (جولائی) تخمینہ
2124515[4]c (126 واں)
جی ڈی پی (پی پی پی)2009 تخمینہ
• کل
$12.79 بلین[4] ( –)
• فی کس
$2,900[4] ()
کرنسیاسرائیلی شیکل[5] (ILS)
منطقۂ وقتیو ٹی سی+2 ( )
• Summer (ڈی ایس ٹی)
یو ٹی سی+3 ( )
کالنگ کوڈ
آیزو 3166 رمز[[آیزو 3166-2:|]]
انٹرنیٹ ٹی ایل ڈی
  • .ps
اسحاق رابین، بل کلنٹن اور یاسر عرفات اوسلو معاہدے کے موقع پر، 13 ستمبر 1993ء

فلسطینی قومی عملداری (Palestinian National Authority) (عربی: السلطة الوطنية الفلسطينية) ایک عبوری خود مختار حکومت ہے جو 1993ء کے اوسلو معاہدے کے نتیجہ کے طور پر مغربی کنارے اور غزہ پٹی پر حکومت کے لیے قائم کی گئی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. The Palestinian law, approved by the PLC in May 2002, states in article 3 that "Jerusalem is the Capital of Palestine". رملہ serves as the administrative capital and the location of government institutions and representative offices of Australia, Brazil, Canada, Colombia, the Czech Republic, Denmark, Finland, Germany, Malta, the Netherlands, South Africa and Switzerland (more). Israel's claim over the whole of Jerusalem was not accepted by the UN which maintains that Jerusalem's status is pending final negotiation between Israel and Palestinians.
  2. The Palestine Basic Law, approved by the PLC in March 2003, states in article 4 that "Arabic shall be the official language."
  3. Elections have not been held since 2006 ("The Palestinian Authority". ).
  4. ^ ا ب پ "CIA – The World Factbook". cia.gov. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  5. According to Article 4 of the 1994 Paris Protocol ([1]). The Protocol allows the Palestinian Authority to adopt additional currencies. In the مغربی کنارہ, the Jordanian dinar is widely accepted, while the Egyptian pound is often used in the غزہ پٹی.