موکھی اور متارا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

موکھی اور متارا ((سندھی: موکي ۽ متارا)‏) (ساقی اور بچنال) شراب خانے ، ہوٹل وغیرہ میں شراب بیچنے کی تختہ بندی کے پیچھے سے شراب پیش کرنے والی ایک سندھی عورت، "موکھی" کی مشہور کہانی ہے، جس نے ناخوشگوار طور پر متارا کے لیے زہریلی "ماندھ" (شراب) پیش کرنے کی خدمت کی، آٹھ بہادر نوجوان مرد جنہوں نے اس کے شراب خانے کا دورہ کیا اور اس جام سے بھاری شراب پینے کے بعد ان کی موت ہو گئی۔ یہ متارا (باچو کے عقیدت مند) کا تعلق چنہ، چوہان، سما اور سومرا ذات سے تھا جو سندھ کے علاقے کوہستان میں ایک علائقے ساری کی قابل ذکر نوجوان تھے۔ ان کی مقبرے تاحال کراچی کی تحصیل گڈاپ میں ناراتھر کے دامن پر پائے جاتے ہیں.[1]

کہانی[ترمیم]

ایک کاروباری خاتون، ناتر نے آج کل کے شہر گڈاپ قصبے میں واقع "کونکر" گاؤں کے مقام پر ایک شراب خانہ (بئیر کا کارخانہ) قائم کیا تھا اور بے فِکَر لوگوں کو دیکھ بھال کرنے کے لیے ایک شَراب کی بھَٹی کھول رکھی تھی۔ اس کی بیٹی موکھی، ایک سمجھدار اور شائستہ لڑکی تھی، جس نے بطور ساقی (بارمیڈ) کی خدمات انجام دیں۔ شراب خانہ اور موکی کے نام سے دور دور تک شہرت پائی اور شراب پینے والوں، بکثرت پینے والوں اور بدمستوں نے اس جگہ کو مُتعَدّد بار جانا شروع کیا۔ لیکن، ایک دن، باچس کے حقیقی عقیدت مند متارا آئے. وہ آٹھ بہادر جوان تھے، ان میں ہر ایک سما، سومرا، چنہ اور چوہان قبیلوں سے تھے۔ وہ اس مشہور شراب خانہ ہوٹل میں مدھ (شراب) کی اقسام پینے کے لیے اپنے دور دراز علاقوں سے آئے تھے۔ انہوں نے اپنے مشروبات سے لطف اٹھایا اور دوبارہ اس جگہ کا دورہ کرنے کا فیصلہ کیا۔ چھ مہینوں کے بعد، وہ دوبارہ آئے اور اس تجربے سے اتنا لطف اٹھایا کہ اب انہوں نے یہ طے کیا کہ ہر لمحے میں اس لمبے سفر کو ہر چھ ماہ بعد شراب خانہ تک لے جائیں گے۔ موکهی نے جب بھی تشریف لائے ان کی خدمت کی اور اور ہر بار وہ تسکین محسوس کرتے رہے۔

ایک بار، جب وہ پہنچے تو، یہ ہوا کہ ان کے لیے کوئی پرانی شراب باقی نہیں رہ گئی تھی۔ موکهی بہت مضطرب ھوگئی. لیکن پھر اسے یاد آیا کہ ایک پرانی شراب کی گھڑیا (مٹکا) طویل عرصے سے کونے میں چھوڑ دی گئی تھی اور اس نے اسے دیکھنے کے لیے جلدی کی۔ مٹکا کا کناّ بھرا ہوا تھا، لیکن ایسا لگتا ہے کہ ایک کوبرا ایک لمبے عرصے سے اس میں گرا پڑا ہے۔ اس کا گوشت تحلیل ہو گیا تھا اور صرف ڈھانچہ بچ گیا تھا۔ "خدمت کرنے یا نہ کرنے" کے لیے، موکی نے سوچ بچار کیا۔ واضح طور پر، اس شراب میں کوبرا کا زہر تھا، حالانکہ یہ بہت رنگین تھی اور اس نے ایک لمبے عرصے تک خمیر لگایا تھا۔ لہذا اپنے شوق مند صارفین کو مایوس کرنے کی بجائے، اس نے اس شراب کو ان کی خدمت کرنے کا فیصلہ کیا، اسی وقت معذرت خواہی بھی کی کہ چونکہ کوئی دوسری شراب دستیاب نہیں تھی، لہذا ان کے پاس شراب کے پرانے گھڑے کی شراب پیش کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں تھا۔ انہوں نے اس پیش کش کا خیرمقدم کیا، اس کا گھونٹ لیا اور اس کے ذائقہ سے بے حد لطف اٹھایا۔ انہوں نے اس میں سے کچھ زیادہ طلب کیا اور کپ کے بعد کپ پی لیا۔ "ہم نے کبھی بھی ایسی شراب کا ذائقہ نہیں چکھا"، انہوں نے بڑی تعریف سے کہا۔ وہ بھاری نشے میں تھے اور شراب کی عمدہ کیفیت سے لطف اندوز ہوتے ہوئے اور موکهی کے اس عظیم عمل کی تعریف کرتے ہوئے شراب خانہ چھوڑ گئے۔

ایک سال بعد وہ واپس آئے۔ موکهی ان کا خیرمقدم کرتے ہوئے خوش تھی، یہ جانتے ہوئے کہ اس بار ان کے لیے اچھی خاصی شراب موجود ہے۔ لیکن پہلے گھونٹ کے بعد انہوں نے پیالہ اس کے پاس واپس کر دیے اور انہیں گذشتہ سال پیش کی جانے والی شراب کے لیے کہا۔ موکی اس صورت حال پر گھبرا گئی۔ موکی نے بہترین معیار کی ایک اور شراب ان کو پیش کرنے کے لیے آزمائی لیکن وہ بھی واپس ہو گئی۔ انہوں نے اس سے وہی پرانی شراب پیش کرنے کی گزارش کی. انہیں مایوس پا کر موکی نے اب شراب کے بارے میں حقیقت بتانے کے سوا کوئی دوسرا راستہ نہیں دیکھا۔ "آپ کے پاس گذشتہ سال جو شراب پیش کی گئی تھی وہ ایک پرانے تَرک کَردہ مٹکا سے تھی اور اس میں کوبرا کا زہر تھا۔" "کیا؟ کوبرا! ایک کوبرا!" وہ ہم آہنگی کے ساتھ چیخے۔ زہر کے بارے میں بہت خیال اور اس کے اثر نے انہیں چونکا دیا اور وہ سب موقع پر ہی مر گئے اور وہیں دفن ہو گئے۔ ان حوصلہ افزا افراد متارا کی قبریں، آج بھی پہاڑی کے ایک پرانے قبرستان میں نظر آتے ہیں۔

تاریخ اور تاثیر[ترمیم]

اس کہانی میں قرون وسطی کے سندھ کے معاشرتی اور ثقافتی پہلوؤں کو دکھایا گیا ہے جس میں خواتین (ناتر اور اس کی بیٹی موکی) کے ذریعہ ایک مے خانے کے معاملات چلائے جاتے تھے۔ اس کہانی کا ابتدائی حوالہ سندھ کے نامور شاعر شاہ کریم، شاہ عنایت اور شاہ لطیف کی آیات میں ملتا ہے۔ بعد میں دوسرے شعرا نے بھی اشارے کنائیوں میں اس کی نشان دہی کی ہے۔ کہانی کے بارے میں سندھی لوک اشعار میں بے شمار حوالہ جات ملتے ہیں.[2] توجہ کا مرکز ایک لطیف نفسیاتی خیال ہے کہ "حقیقی جوش اور ولولے سے حقیقی خطرہ بچ جاتا ہے، لیکن خطرہ ختم ہونے کے بعد بھی ہوش کا احساس مہلک ہوسکتا ہے۔"

بھی دیکھو[ترمیم]

  • [مورڑو]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Famous Folktales of Sindh – Nabi Bux Khan Baloch – Sindhi Adabi Board. 1964. 
  2. Famous Folktales of Sindh – Nabi Bux Khan Baloch – Sindhi Adabi Board. 1964. 

بیرونی روابط[ترمیم]