دولہ دریا خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دولہ دریا خان
سپہ سالار/وزیر سما سلطنت
مدت منصب
1508 – 1512
حکمران جام فیروز
معلومات شخصیت
وفات سنہ 1521  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سندھ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
اولاد محمود خان لاشاری، موتن خان لاشاری
والد جام نظام الدین دوم  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
جام فیروز الدین  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
کمانڈر سما فوج
لڑائیاں اور جنگیں جلوہ خیر کی لڑائی
فتح پور کی لڑائی

مبارک خان لاشاری یا زیادہ مقبول نام دریا خان لاشاری (سندھی: دريا خان لاشاری)، کے ایک مشہور جنرل تھا سما سلطنت سندھ کا ایک مشہور جنرل تھا۔ وہ ایک طاقتور سیاست دان اور سما سلطنت جام فیروز کے دربار میں ریجنٹ تھا۔ [1] اس کی بہادری کے گن سندھسکے لوگ آج تک گاتے ہیں۔دریا خان جام نظام الدین دوم [2] کا لے پالک بیٹا اور وزیر اعظم تھا جنہوں نے درہ بولان میں بی بی نانی کے قریب جلوہ خیر کی لڑائی میں ارگن کی فوج کو شکست دی۔ اس جیت نے دریا خان لاشاری کو سندھ کا 'دولہ' (ہیرو) بنا دیا۔ جام نظام الدین نے ان کی موت کے بعد دریا خان کو اپنی بادشاہی، اپنے خزانے، اپنے کنبے اور اپنے بیٹے جام فیروز کی نگہداشت سونپ دی۔ دریا خان لاشاری زمین کا اصل بیٹا اور محب وطن تھا جو اپنی موت تک وطن کی آزادی کی جنگ لڑا [3] اور فتح پور کی جنگ میں بہادری سے لڑتے ہوئے شہید ہوا۔ 21 دسمبر 1521 ء کو ایک تیر اس کے گلے میں لگا اور اس کی موت واقع ہو گئی۔ اس طرح جام فیروز کی بطور آزاد حکمرانی کا دور اختتام پزیر ہوا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

دریا خان لاشاری کو جام نظام الدین نے بیٹے کی حیثیت سے اپنایا تھا۔ اس کا اصل نام قبلو (یا قبول محمد) تھا۔ اس کا تعلق بلوچ قبیلہ لاشاری سے تھا۔ وہ مدار المہم (وزیر اعظم) بن گیا اور اس کا نام مبارک خان لاشاری پڑ گیا۔

عسکری خدمات[ترمیم]

منگول کے دنوں میں خراسان کے سلطان حسین مرزا بائقرا نے وسطی ایشیا (ہرات اور قندھار) کے تاجروں کی شکایت پر کہ ان کو سندھ کر سرحد پر لوٹا گیا تھا، سلطان نے سندھ کی سرحد پر مسلح مہم بھیجی، جو ان پر کچھ چھاپے مارنے کے بعد اپنے ملک لوٹ گئی۔ 892 ھ (1487 ء) میں ہرات میں فتح کا اعلان جاری کیا گیا۔ کہا جاتا ہے کہ کفار (سندھیوں) کو منگول کی نقل و حرکت کا پتہ چلنے کے بعد، انہوں نے ایک بہت بڑی فوج اکٹھی کی اور اچانک حملہ کرنا چاہا لیکن اسلامی افواج (منگولوں) کو اس کا علم ہوا اور انہوں نے جارحانہ حملہ کیا، جس سے ( جام نظام الدین کی افواج) میں سے بہت سے ہندو ہلاک ہو گئے ۔ اس کامیابی کے نتیجے میں فتح کا اعلان جاری کیا گیا۔

ہوسکتا ہے کہ یہ حملہ بغیر کسی نتیجہ کے سندھ کی سرحد پر ہوا ہو۔ اس وقت قندھار میں امیر ذوالنون ارغون، ہرات کا نائب تھا۔ ایسا لگتا ہے کہ اس نے اپنے بیٹے شاہ بیگ کو اس مہم پر روانہ کیا تھا۔ بعد میں نے سبی قلعے کو جام نظام الدین کے ایجنٹ بہادر خان سے قبضہ میں لے لیا اور اپنے بھائی سلطان محمد کے سپرد کر دیا، جسے بعد میں بی بی نانی کے قریب بولان پاس میں جلوگیر کے قریب مبارک خان لاشاری (دریا خان لاشاری اللہ) نے مار ڈالا۔

اس واقعے کے بعد جام نظام الدین کی زندگی میں سندھ میں منگول پروان نہ چڑھ سکے۔ اس وقت منگول کی فوج چندوکا ، سردچا اور کوٹ مچھی تک جا پہنچی تھی، لیکن دریا خان لاشاری کے ذریعہ ملک بدر کیے جانے کے بعد وہ جام نظام الدین کی زندگی میں کبھی پیچھے نہیں ہٹے۔

سندھ پر 48 سال حکمرانی کے بعد جام نظام الدین سما کی وفات ہوئی اور اس کے بعد ان کے بیٹے ناصرالدین ابوالفتح فیروز شاہ ثانی نے ان کی جگہ لی۔ اس وقت جام فیروز نے ریاست کے امور کو نظرانداز کیا تھا اور دریا خان لاشاری کے مشورے کو ماننے سے انکار کر دیا تھا، جنھیں سہون کے قریب گاؤں گھاہ (کاہان) میں اپنے جاگیر سے ریٹائر ہونا پڑا تھا اور یہ ناکامیاں سندھ کے حکمران صلاح الدین سے شکست کا باعث بنیں۔ فیروز شاہ اپنی والدہ مدینہ مچھانی کے ساتھ دریا خان لاشاری کے پاس گھاھا کے لیے روانہ ہوئے، جو مدینہ کی درخواست پر مدد کرنے پر راضی ہوئے، سیہون سے فوجیں جمع کیں ، لیکن جامع صلاح الدین کے وزیر حاجی کے ہاتھوں پہلا سیٹ بیک ملا۔ دریا خان لاشاری نے پھر فیروز شاہ سےٹھٹھہ منتقل کیا اور یکم شوال 918 ہجری (1512 اے ڈی 12 اکتوبر) کو اسے منتقل کیا۔ اس کے بعد صلاح الدین گجرات واپس آئے۔ وہ تقریبا آٹھ مہینوں تک ٹھٹھہ پر قبضہ رہا تھا اور اس نے ٹھٹھہ سے بڑی رقم اکٹھی کی ہوگی اور ایک اور جنگ کا اہتمام کیا ہوگا۔

دریا خان لاشاری کے آخری دن[ترمیم]

اس کی زندگی کے آخری ایام کے بارے میں مختلف نسخے موجود ہیں۔

دریا خان لاشاری کا مزار[ترمیم]

مبارک خان کی قبر کے شمال میں ایک تحریر میں اسے الخان الاعظم و شاہد مبارک خان ابن سلطان نظام الدین لکھا گیاہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Desecrated Heritage". Newsline (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 27 ستمبر 2019. 
  2. InpaperMagazine، From (2013-03-09). "Heritage: Setting history right". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 27 ستمبر 2019. 
  3. "Sindh Sujagi Forum pays tribute to Dollah Darya Khan". Daily Times (بزبان انگریزی). 2017-12-27. اخذ شدہ بتاریخ 27 ستمبر 2019.