عمرکوٹ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

سانجہ:تاریخ سندھ عمرکوٹ عمر ماروی عمرکوٹ بہت پرانا شہر ہے. یہ شہر اب بھی آثار قدیمہ میں بہت اہمیت رکھتا ہے. عمرکوٹ پاکستان کے صوبہ سندھ میں واقع ہے. عمرکوٹ کو اب حکومت سندھ کی طرف سے ضلع کی حیثیت حاصل ہے. عمرکوٹ قلعے کی وجہ سے اس شہر کا نام ہی عمرکوٹ پڑ گیا جس کا مطلب ہے (عمر= اس بادشاہ کا نام جس نے یہ قلعہ بنوایا تھا. اور کوٹ= قلعہ ) عمر+کوٹ= عمر کا قلعہ. یہ قلعہ بادشاہ عمر سومرو نے بنوایا تھا. یہ وہ ہی عمر بادشاہ ہے جس نے مارئی کو زبردستی اغوا کر لیا تھا. کہا جاتا ہے کہ عمر سومرو نے مارئی کو اسی قلعے میں قید کر کے رکھا تھا. عمر مارئی کا قصہ آج بھی سندھ خاص طور پر گھر میں بڑی ہی چاہ کے ساتھ سنا اور سنایا جاتا ہے. اور سندھ کے صوفی شاعر حضرت شاہ عبدالطیف نے اپنی شاعری کا ایک بڑا حصہ عمر مارئی پر لکھا ہے. ﺳﻔﺮ، ﮐﺘﺎﺏ ﺍﻭﺭ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﺫﺭﺍﯾﻊ ﮨﯿﮟ، ﺟﻦ ﺳﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺑﮩﺖ ﮐﭽﮫ ﺳﯿﮑﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﻔﺮ ﻭﮦ ﻭﺍﺣﺪ ﺫﺭﯾﻌﮧ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺳﻮﭺ ﮐﻮ ﮔﮩﺮﺍﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﺳﻌﺖ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺳﻔﺮ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺁﭖ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﺗﺒﺪﯾﻠﯽ ﮐﮯ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﮔﺰﺭﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻗﺎﻓﻠﮧ ﺗﮭﺮ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺷﮩﺮ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﻭﺍﮞ ﺩﻭﺍﮞ ﮨﮯ۔ ﮨﺮ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺮ ﮐﺎ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺭﻭﭖ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺻﺤﺮﺍﺋﮯ ﺗﮭﺮ ﮐﮯ ﻣﺸﺮﻕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺟﻮﺩﮪ ﭘﻮﺭ، ﺑﺎﮌﻣﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﺷﻤﺎﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﺎ ﻗﻠﻌﮧ، ﺳﺎﻧﮕﮭﮍ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻘﮧ ﮐﮭﭙﺮﻭ ﻭﺍﻗﻊ ﮨﮯ۔ ﺗﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺯﺑﺎﻧﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺳﻨﺪﮬﯽ، ﮈﮬﺎﭨﮑﯽ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﺭﮐﺮﯼ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﮯ۔ ﻣﺎﺭﻭﺍﮌﯼ، ﺭﺍﺟﺴﺘﮭﺎﻧﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﺎﺭﻭﺍﮌﮦ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﯿﮕﮭﻮﺍﮌ، ﻣﺎﻟﮭﯽ، ﭼﺎﺭﻥ ﺍﻭﺭ ﺑﮭﯿﻞ ﺑﻮﻟﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﻟﮩﺠﮧ ﺑﮍﺍ ﻣﯿﭩﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺩﮔﯽ ﺳﮯ ﻣﺰﯾﻦ ﮨﮯ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﯽ ﺣﺪﻭﺩ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯽ ﯾﮧ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮐﮩﺎﻭﺕ ﯾﺎﺩ ﺁ ﮔﺌﯽ ﮐﮧ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﯽ ﭼﺎﺭ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺗﮭﯿﮟ، ﺍﺱ ﻋﻼﻗﮯ ﮐﮯ ﻣﺮﺩ ﻋﻘﻠﻤﻨﺪ ﺗﮭﮯ۔ ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺑﮯ ﺣﺪ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺗﮭﯿﮟ، ﻗﻠﻌﮯ ﮐﺎ ﻃﻠﺴﻢ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﮐﮭﯿﻨﭽﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﻻﻣﺒﯽ ﺗﺎﻻﺏ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﭘﺮ ﺑﺮﮔﺪ ﮐﮯ ﺩﺭﺧﺖ ﮨﻤﺠﻮﻟﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺮﮔﻮﺷﯿﺎﮞ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺧﻮﺩ ﺭﻭ ﭘﻮﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﻣﺴﺤﻮﺭ ﮐﻦ ﻣﮩﮏ ﺗﺎﺯﮦ ﮨﻮﺍ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻓﻀﺎ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﯽ ﮐﺮﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﺒﺰﮮ ﮐﺎ ﺭﻧﮓ ﮐﮭﻼ ﻟﮓ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﺳﺮﺍﮨﭧ ﮐﯽ ﻣﻮﺳﯿﻘﯽ ﮐﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﺱ ﮔﮭﻮﻝ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﻨﻈﺮ ﺍﺟﻼ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻟﺺ ﺗﮭﺎ۔ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﮐﺒﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﭘﮩﻨﭽﮯ، ﺟﺐ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﭘﺎﭦ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﻮﺗﯿﻠﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮨﻨﺪﺍﻝ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﭘﺮ ﮨﻨﺪﺍﻝ ﮐﮯ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻣﯿﺮ ﺑﺎﺑﺎ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺣﻤﯿﺪﮦ ﺩﯾﮑﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺗﯽ ﭘﺮ ﻓﺮﯾﻔﺘﮧ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺭﺷﺘﮯ ﭘﺮ ﻣﺮﺯﺍ ﮨﻨﺪﺍﻝ ﺑﮩﺖ ﺑﺮﮨﻢ ﮨﻮﺍ ﻣﮕﺮ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﻮﺗﯿﻠﯽ ﻣﺎﮞ ﺩﻟﺪﺍﺭ ﺑﯿﮕﻢ ﻧﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﻟﯿﺎ۔ ﯾﻮﮞ ﺟﻤﺎﺩﯼ ﺍﻻﻭﻝ 949 ﮨﺠﺮﯼ ‏( 1541ﺀ ﺳﺘﻤﺒﺮ ‏) ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﺣﻤﯿﺪﮦ ﺑﺎﻧﻮ ﺳﮯ ﭘﺎﭦ ﺷﮩﺮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ۔ ﻋﻤﺮﮐﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﮐﺎ ﺗﺬﮐﺮﮦ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮔﻠﺒﺪﻥ ﺑﯿﮕﻢ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﮨﯿﮟ ’’ﻋﻤﺮﮐﻮﭦ ﺑﮩﺖ ﻋﻤﺪﮦ ﺟﮕﮧ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﮐﺌﯽ ﺗﺎﻻﺏ ﮨﯿﮟ۔ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺳﺴﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﭘﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﺭ ﺑﮑﺮﯾﺎﮞ ﻣﻞ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﮯ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﻧﮯ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺣﻀﺮﺕ ﮐﯽ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﭘﺬﯾﺮﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺯﺑﺎﻥ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺪﺡ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﻗﺎﺻﺮ ﮨﮯ۔‘‘ ﺍﮐﺒﺮ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺗﺮﺧﺎﻥ ﻧﺎﻣﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﮨﮯ ﮐﮧ ’’ ﺟﺐ ﮨﻤﺎﯾﻮﮞ ﺑﺎﺩﺷﺎﮦ ﺭﺍﺟﭙﻮﺗﺎﻧﮧ ﺳﮯ ﻣﺎﯾﻮﺱ ﮨﻮ ﮐﺮ ﻟﻮﭨﺎ ﺗﻮ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍﺳﯽ 949 ﮨﺠﺮﯼ 1542 ﮪ ‏( ﮨﺠﺮﯼ ‏) ﻣﯿﮟ ﺍﮐﺒﺮ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺍ۔ ﺍﮐﺒﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﭘﺮ ﺟﮩﺎﮞ ﮨﻢ ﮐﮭﮍﮮ ﺗﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﺘﺮﯼ ﯾﺎﺩﮔﺎﺭ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﭽﮫ ﻭﻗﺖ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﺧﺴﺘﮧ ﺣﺎﻝ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﺱ ﻣﺤﺮﺍﺑﯽ ﭼﮭﺘﺮﯼ ﮐﻮ ﻧﺌﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﮨﻢ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﮯ ﻗﻠﻌﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﺎ ﻭﮨﯽ ﺗﺼﻮﺭ ﺗﮭﺎ، ﺟﻮ ﭼﻨﺪ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻭﻗﺖ ﮐﯽ ﺟﮭﺮﯾﺎﮞ ﻧﻤﻮﺩﺍﺭ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻗﺪﯾﻢ ﻋﻤﺎﺭﺗﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺎﺿﯽ ﮐﺎ ﻭﺭﺛﮧ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﮐﮯ ﮐﮭﮍﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﮔﮩﺮﯼ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻣﻌﻨﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺍﻟﻤﯿﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﺮ ﺩﻭﺭ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻓﻘﻂ ﻧﺸﺎﻧﯿﺎﮞ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﺎﺿﯽ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮩﺖ ﮐﭽﮫ ﺳﯿﮑﮫ ﮐﺮ ﺣﺎﻝ ﮐﻮ ﺑﮩﺘﺮ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻗﻠﻌﮯ ﭘﺮ ﻧﮧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺘﻨﮯ ﺣﻤﻠﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ۔ ﯾﮧ ﻋﻼﻗﮧ ﮔﮭﻮﮌﻭﮞ ﮐﯽ ﭨﺎﭘﻮﮞ، ﮨﻨﮩﻨﺎﻧﮯ، ﺗﻮﭘﻮﮞ ﮐﯽ ﮔﺮﺝ ﺍﻭﺭ ﺯﺭﮦ ﺑﮑﺘﺮ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻠﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺟﮭﻨﮑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻋﺠﯿﺐ ﺳﺎ ﺳﻤﺎﮞ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﯽ ﺯﻣﯿﻦ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺳﮯ ﺁﺋﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺣﻤﻠﮧ ﺁﻭﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺷﮑﻨﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ، ﺳﻨﺪﮪ ﮐﮯ ﻭﺳﺎﺋﻞ ﺟﻨﮭﯿﮟ ﺩﻭﺭ ﺳﮯ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﻻﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﮯ ﺩﺭﯾﺎﺅﮞ ﮐﯽ ﺭﻭﺍﻧﯽ، ﺭﻧﮕﺎﺭﻧﮓ ﺗﮩﺬﯾﺐ، ﺧﻠﻮﺹ ﻭ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﻧﻮﺍﺯﯼ ﮐﮯ ﺟﻮﮨﺮ ﻭ ﺧﻮﺷﺤﺎﻟﯽ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﯾﻞ ﻋﺮﺻﮯ ﺗﮏ ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﺗﺴﻠﻂ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﺍ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻟﻮﮒ ﺧﻮﺩ ﺭﺣﻤﯽ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺭﮦ ﮔﺌﮯ۔ ﭘﺎﻧﭻ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﮐﮯ ﻭﺍﺭﺙ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻗﺪﯾﻢ ﻭﺭﺛﮯ ﮐﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ۔ ﺳﻨﺪﮪ ﮐﯽ ﺳﻤﺎﺟﯽ ﻧﻔﺴﯿﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﺿﯽ ﻭ ﺣﺎﻝ ﮐﯽ ﺑﮯ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﮐﺎ ﻋﮑﺲ ﺻﺎﻑ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﭘﺮ ﺳﻮﺭﺝ ﻣﮑﮭﯽ ﮐﺎ ﭘﮭﻮﻝ ﮐﻨﻨﺪﮦ ﮨﮯ۔ ﺳﻮﺭﺝ ﻣﮑﮭﯽ ﮐﺎ ﭘﮭﻮﻝ ﻗﺪﯾﻢ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﯾﻘﯿﻦ، ﺭﻭﺣﺎﻧﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﺗﻤﺜﯿﻞ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﻌﺾ ﻣﻮﺭﺥ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﺸﺎﻥ ﻋﻤﺮ ﺳﻮﻣﺮﻭ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﻮﭨﮭﯽ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﮐﻨﻨﺪﮦ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻭﭘﺮ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﯽ ﺑﺮﺝ ﭘﺮ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻋﻤﺮﮐﻮﭦ ﺷﮩﺮ ﮐﺎ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻣﻨﻈﺮ ﺻﺎﻑ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﮮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻭﭘﺮ ﺗﻮﭘﯿﮟ ﺍﯾﺴﺘﺎﺩﮦ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﻮﻣﺮﺍ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﺳﺘﺮﮨﻮﯾﮟ ﺣﺎﮐﻢ ﻋﻤﺮ ﺳﻮﻣﺮﯼ ﻧﮯ 1355 ﻉ ﺳﮯ 1390 ﻉ ﺗﮏ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﭘﺮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﺐ ﮐﮧ ﻗﺪﯾﻢ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺷﮩﺮ ﺍﻣﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﮩﻼﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮﯾﮟ ﻭﮦ ﺟﮕﮧ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﮯ ﻟﮕﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﺭﺗﻦ ﺳﻨﮕﮫ ﮐﻮ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺗﮭﺮ ﻣﯿﮟ 1846 ﻉ ﻣﯿﮟ ﺭﺗﻦ ﺳﻨﮕﮫ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﺎ ﭼﺮﭼﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺭﺗﻦ ﺳﻨﮕﮫ ﮐﻮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺳﺮﮐﺎﺭ ﻧﮯ 1866ﺀ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﮯ ﻗﻠﻌﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﺎﻧﺴﯽ ﺩﮮ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ۔ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﮐﺎ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﻟﮓ ﺗﺎﺛﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﯿﺴﮯ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﻭﺣﺸﺖ ﺯﺩﮦ ﻟﮩﺮﯾﮟ ﺍﭨﮭﺘﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﭘﯿﭩﺮﮎ ﻣﯿﮏ ﻣﻨﺎﻭﮮ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺟﺐ ﮐﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺫﮨﻨﯽ ﻭ ﺟﺬﺑﺎﺗﯽ ﺩﺑﺎﺅ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﯾﺎ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﺟﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺯﯾﺎﮞ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﻣﻨﻔﯽ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﮨﯿﮟ۔‘‘ ﻋﻤﺮ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﮐﯽ ﻻﺯﻭﺍﻝ ﺩﺍﺳﺘﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺧﻄﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﭘﺮ ﻋﻤﺮ ﺳﻮﻣﺮﻭ ﮐﯽ ﺣﮑﻤﺮﺍﻧﯽ ﺗﮭﯽ ﯾﮧ ﺍﺳﯽ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﻗﺼﮧ ﮨﮯ۔ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﻣﻠﯿﺮ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ۔ ﺑﮭﺎﻟﻮﺍ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻗﻊ ﻭﮦ ﮐﻨﻮﺍﮞ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ، ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﮐﻮ ﺍﻏﻮﺍ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺤﻞ ﻣﯿﮟ ﻻ ﮐﺮ ﻗﯿﺪ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﺗﮭﺮ ﮐﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﺍﺳﯿﺮ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺳﮯ ﮐﮭﻠﯽ ﻓﻀﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺗﮭﯽ، ﻟﮩٰﺬﺍ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻣﺤﻞ ﮐﮯ ﻋﯿﺶ ﻭ ﻋﺸﺮﺕ، ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮐﭙﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﻟﺬﯾﺬ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﭨﮭﮑﺮﺍ ﺩﯾﮯ۔ ﺩﻥ ﺭﺍﺕ ﻭﮦ ﺍﺩﺍﺱ ﺭﮨﺘﯽ۔ ﺑﺎﻵﺧﺮ ﻋﻤﺮ ﺳﻮﻣﺮﻭ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﮭﺮ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﮐﻮ ﺁﺯﺍﺩ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﺷﺎﮦ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠﻄﯿﻒ ﺑﮭﭩﺎﺋﯽ ﮐﮯ ﺭﺳﺎﻟﮯ ﮐﮯ ﺳﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻻﺯﻭﺍﻝ ﺳﺮ ﻋﻤﺮ ﻣﺎﺭﻭﯼ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺣﺐ ﺍﻟﻮﻃﻨﯽ، ﺣﺮﯾﺖ ﭘﺴﻨﺪﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻇﺮﻓﯽ ﮐﺎ ﻣﻈﮩﺮ ﮨﮯ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﮯ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﺎ ﻣﯿﻮﺯﯾﻢ ﮔﮭﻮﻣﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺫﮨﻦ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﻣﺎﺿﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﭩﮑﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺳﻔﺮ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﮐﺎ ﻓﺎﺻﻠﮧ ﻃﮯ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻣﯿﻮﺯﯾﻢ ﻣﯿﮟ ﻗﯿﺪ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﻣﯿﻮﺯﯾﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺮ ﮐﯽ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻐﻠﯿﮧ ﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﻧﻮﺍﺩﺭﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﺳﺠﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﻐﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﮐﮯ ﻗﻠﻤﯽ ﻧﺴﺨﮯ، ﺳﮑﮯ، ﺗﺼﺎﻭﯾﺮ، ﮨﺘﮭﯿﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﺧﻄﺎﻃﯽ ﮐﮯ ﻧﻤﻮﻧﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﻮﺯﯾﻢ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﺍﻧﮯ ﺩﻭﺭ ﮐﯽ ﺯﺭﮦ ﺑﮑﺘﺮ، ﮈﮬﺎﻟﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻠﻮﺍﺭﯾﮟ ﺁﻭﯾﺰﺍﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻮ ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ ﻣﺎﺿﯽ ﮐﯽ ﺣﺸﻤﺖ، ﺟﺎﮦ ﻭ ﺟﻼﻝ ﮐﯽ ﻋﮑﺎﺳﯽ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﺭﻭﺩﯼ ﺍﺳﻠﺤﮧ ﺍﮐﺒﺮ ﮐﮯ ﺩﺍﺩﺍ ﺑﺎﺑﺮ ﻧﮯ ﻣﺘﻌﺎﺭﻑ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﻣﯿﮟ ﺗﻌﯿﻨﺎﺕ ﮈﭘﭩﯽ ﮐﻤﺸﻨﺮ ﻣﺴﭩﺮ ﮨﺮﺑﺮﭦ ﺍﯾﮉﻭﺭﮈ ﻭﺍﭨﺴﻦ ﮐﯽ ﻗﺒﺮ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﮯ۔ ﻗﻠﻌﮯ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﮯ ﺗﻮ ﺷﺎﻡ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﻮ ﺗﮭﯽ۔ ﮈﻭﺑﺘﮯ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﯽ ﻧﺎﺭﻧﺠﯽ ﺷﻌﺎﻋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﺮ ﮐﻮﭦ ﮐﺎ ﻗﻠﻌﮧ ﭘﺮﻓﺴﻮﮞ ﺩﮐﮭﺎﺋﯽ ﺩﯾﺎ۔ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﮩﺎﻧﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﻮﺍ ﻗﻠﻌﮯ ﮐﯽ ﺍﻭﻧﭽﯽ ﻓﺼﯿﻠﻮﮞ ﮐﮯ ﻗﺮﯾﺐ ﺑﮭﻮﻻ ﺑﺴﺮﺍ ﮔﯿﺖ ﮔﻨﮕﻨﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ‎