وینکٹاماخن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وینکٹاماخن
معلومات شخصیت
عملی زندگی
پیشہ نغمہ ساز  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

وینکٹاماخن یا وینکٹا ماخن (انگریزی: Venkatamakhin) [1]بھارتی شاعر، نغمہ ساز، موسیقار اور کارناٹک موسیقی کے موسیقار تھے۔[1] وہ اپنے چتردندپریکاشیکا کے لئے مشہور ہے جس میں انہوں نے راگوں کی درجہ بندی کرنے کے میلکارتا نظام کو واضح کیا ہے۔[2] وینکٹاماخن نے گیت اور پرابندھا، تھرووارور کے تیاگ راج کی تعریف میں 24 اشٹپیڈیز تشکیل دیئے تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

وینکٹاماخن، شیوموگا کے قریب ہوننالی سے تعلق رکھنے والے گووندا دکشیتا کے بیٹا تھے۔ گووندا دکشیتا ایک کنڑ براہمن، موسیقار، اسکالر، اور پجاری کے بیٹا تھے، جو تنجاور کے رگوناتھ نائک کے وزیر بھی تھے۔[3] ان کو وینا کی تعلیم ان کے والد اور ان کے بھائی یگانارائن نے ہدایت دی تھی۔ بعد میں انہیں تاناپاچاریہ نے کلاسیکی موسیقی کے علمی پہلوؤں کو سکھایا۔[4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

ماخذ[ترمیم]

  • Katz، Jonathan (2001). "Veṅkaṭamakhin". Grove Music Online (بزبان انگریزی). Oxford University Press. 1. doi:10.1093/gmo/9781561592630.article.48134. 
  • Subramaniam، L. (1999). "The reinvention of a tradition: Nationalism, Carnatic music and the Madras Music Academy, 1900-1947". Indian Economic & Social History Review. 36 (2): 131–163. doi:10.1177/001946469903600201. 
  • Ries، Raymond E. (1969). "The Cultural Setting of South Indian Music". Asian Music. 1 (2): 22–31. JSTOR 833909. doi:10.2307/833909. 
  • Mahabharati، Sangit (2011). "Venkaṭamakhi". The Oxford Encyclopaedia of the Music of India (بزبان انگریزی). ISBN 9780195650983. اخذ شدہ بتاریخ 07 ستمبر 2018. 

کتابیات[ترمیم]

  • V. Raghavan: ‘Later Saṅgīta Literature’، Journal of the Music Academy، Madras، 4 (1933), 62–4
  • V. Raghavan: ‘Venkatamakhin and the 72 Melas’, Journal of the Music Academy, Madras, 12 (1941), 67–79
  • S. Seetha: Tanjore as a Seat of Music (Madras, 1981)
  • N. Ramanathan: ‘Influence of Śāstra on Prayoga: the Svara System in the Post-Saṅgītaratnākara Period with Special Reference to South Indian Music’, The Traditional Indian Theory and Practice of Music and Dance, ed. J.B. Katz (Leiden, 1992), 75–105