ٹھگ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
ٹھگ
Group of Thugs.gif
Group of Thugs ca. 1894
قیام 1356 سے قبل
نام منسوب سنسکرت لفظ sthaga स्थग مطلب ہوشیار یا مکار، ہوشیاری، دھوکہ دہی، بے ایمانی
مقام قیام وسطی ایشیاء
فعال سال 450 سال تقریبا
خطہ برصغیر
نسلیت بھارتی
مجرمانہ سرگرمیاں قتل، ڈاکہ

وہ جرائم پیشہ لوگ جو سادہ لوح لوگوں کو دھوکا اور فریب دے کر لوٹ لیتے تھے۔ بعض اوقات یہ لوگ اپنے شکار کو جان سے مار دینے سے بھی گریز نہیں کرتے ۔ ایسے لوگ تقریبا ہر ملک میں پائے جاتے ہیں۔ ہندوستان میں مغلوں کی سلطنت کو زوال آیا اور ملک میں طوائف الملوکی پھیل گئی تو یہاں ٹگی ایک منظم پیشہ بن گیا۔ یہ لوگ بڑی ہوشیاری سے مسافروں کو لوٹ لیاکرتے تھے۔ اگر ایک ٹھگ ناکام رہتا تو وہ اپنے شکار کو دوسرے علاقے کے ٹھگ کے ہاتھ فروخت کر دیتا۔ ان کا بڑا ہتھار رومال یا پھندا ہوتا تھا۔ جس سے وہ آناً فاناً اپنے شکار کا گلا گھونٹ کر اس کا خاتمہ کر دیتے تھے۔

یہ لوگ کالی دیوی کے پچاری تھے۔ ان کا خیال تھا کہ کالی دیوی ہی ان سے یہ جرائم کراتی اور ان کی حفاظت کرتی ہے۔ لاکھوں آدمی ان کے ہاتھوں موت کے گھاٹ اتر گئے۔ آخر 1829ء میں لارڈ نبٹنگ نے ٹھگوں کے خاتمے کے لیےنفاذ قانون کے ادارے (پاکستان) کاایک خاص محکمہ بنایا اور 1836ء میں ان کے انسداد کے لیے ایک خاص قانون وضع کرنا پڑا۔ تاکہ لوگوں کو سزا دی جائے۔ جو ان کی اعانت کرتے ہیں۔ بری مشکل کے بعد ان پر قابو پایا جاسکا۔

حوالہ جات[ترمیم]

‘‘https://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=ٹھگ&oldid=1375971’’ مستعادہ منجانب