پری بی بی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
پری بی بی
معلومات شخصیت
تاریخ وفات سنہ 1678ء  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن لال باغ قلعہ  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد شائستہ خان  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

پری بی بی (وفات: 1678ء) آصف خان چہارم کے بیٹا اور ممتاز محل کے بھائی شائستہ خان کی بیٹی تھیں۔ ان کی موت کے وقت، ان کی شادی شہزادہ اعظم سے ہوئی، جو مستقبل کے مغل شہنشاہ محمد اعظم شاہ بنے۔ وہ مغل شہنشاہ جہانگیر کی اہم ساتھی نور جہاں کی نواسی تھی۔ [1] 1678ء میں، پری بی بی کی قبل از وقت موت واقع ہوئی اور انھون نے اپنے والد کو دل شکستہ چھوڑ دیا۔ شائستہ خان ڈھاکہ میں لال باغ قلعہ تعمیر کر رہی تھیں، قلعہ کی تعمیر ان کے منگیتر شہزادہ محمد اعظم نے شروع کی تھی۔ شائستہ خان نے اب قلعہ کو ناگوار سمجھا اور قلعے کی تعمیر روک دی۔ انھوں نے اپنی بیٹی کی قبر قلعے کے احاطے کے ساتھ بنوائی۔پری بی بی کا مقبرہ ڈھاکہ، بنگلہ دیش میں ایک اہم تعمیراتی مقام سمجھا جاتا ہے۔ 1974ء سے پری بی بی کا مقبرہ اور لال باغ قلعہ کا انتظام محکمہ آثار قدیمہ کے پاس ہے۔

سوانح[ترمیم]

پری بی بی شائستہ خان کی بیٹی تھی اور ایران دخت رحمت بانو کے نام سے بھی جانی جاتی تھی۔ ان کی منگنی 3 مئی 1668ء کو مغل بادشاہ اورنگزیب عالمگیر کے بیٹے محمد اعظم سے ہوئی۔ وہ ڈھاکہ، بنگال سبھا (صوبہ) میں رہتی تھیں، ان کے والد صوبے کے گورنر تھے۔ اس دور کے مغل ریکارڈ سے پتہ چلتا ہے کہ انھوں نے گورنر خانے اور صوبے کی سیاست میں ایک بااثر کردار ادا کیا۔ [2]

موت اور قبر[ترمیم]

پری بی بی کا مقبرہ

1678ء میں، پری بی بی کی قبل از وقت موت واقع ہوئی اور انھون نے اپنے والد کو دل شکستہ چھوڑ دیا۔ شائستہ خان ڈھاکہ میں لال باغ قلعہ تعمیر کر رہی تھیں، قلعہ کی تعمیر ان کے منگیتر شہزادہ محمد اعظم نے شروع کی تھی۔ شائستہ خان نے اب قلعہ کو ناگوار سمجھا اور قلعے کی تعمیر روک دی۔ انھوں نے اپنی بیٹی کی قبر قلعے کے احاطے کے ساتھ بنوائی۔ [2] دیگر ذرائع نے بتایا ہے کہ مقبرہ خود شہزادہ اعظم نے تعمیر کیا تھا۔ [3] پری بی بی کا مقبرہ ڈھاکہ، بنگلہ دیش میں ایک اہم تعمیراتی مقام سمجھا جاتا ہے۔ [4] 1974ء سے پری بی بی کا مقبرہ اور لال باغ قلعہ کا انتظام محکمہ آثار قدیمہ کے پاس ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Syedur Rahman (2010)۔ Historical Dictionary of Bangladesh (بزبان انگریزی)۔ Scarecrow Press۔ صفحہ: 87۔ ISBN 978-0-8108-7453-4 
  2. ^ ا ب AKM Yakub Hossain، AM Chowdhury۔ "Bibi Pari"۔ en.banglapedia.org (بزبان انگریزی)۔ Banglapedia۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2017 
  3. Aniruddha Ray (2016)۔ Towns and Cities of Medieval India: A Brief Survey (بزبان انگریزی)۔ Taylor & Francis۔ صفحہ: 487۔ ISBN 978-1-351-99731-7۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2017 
  4. Muḥammad Shafīʻ Ṣābir (1970)۔ Pakistan: Culture, People & Places (بزبان انگریزی)۔ University Book Agency۔ صفحہ: 386۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2017