پی کے راجہ سینڈو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پی کے راجہ سینڈو

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1894  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پودوکوٹائی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1942 (47–48 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کویمبٹور  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت
عملی زندگی
پیشہ فلم ہدایت کار،  فلم ساز،  اداکار،  منظر نویس  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

راجہ سینڈو (پیدائشی پی کے ناگلنگم ) ایک بھارتی فلمی اداکار، فلم ہدایت کار اور پروڈیوسر تھے۔ [1] انھوں نے اپنی فنی زندگی کا آغاز خاموش فلموں میں بطور اداکار کیا اور بعد میں 1930ء کی دہائی کی تامل اور ہندی فلموں میں ایک ممتاز اداکار اور ہدایت کار بن گئے۔ انہیں ابتدائی ہندوستانی سنیما کا علمبردار سمجھا جاتا ہے۔ [2][3][4]

سوانح و فنی زندگی[ترمیم]

راجا سینڈو تامل ناڈو کے پڈوکوٹائی میں پیدا ہوئے۔ [5] انہوں نے بطور جمناسٹ تربیت حاصل کی اور اپنے فلمی کیریئر کا آغاز بمبئی میں ایس این پٹنکر کی نیشنل فلم کمپنی میں بطور اسٹنٹ اداکار کیا۔ [6] اسے اس کے جسم کی وجہ سے "راجہ سینڈو" کا نام دیا گیا تھا (طاقتور یوگن سینڈو کی مناسبت سے)۔ [7] ان کا پہلا مرکزی کردار پٹنکر کی بھکت بودھن (1922ء) میں تھا، جس کے لیے انہیں 101 روپیہ تنخواہ کے طور پر دیا گیا وہ ویر بھیمسن (1923)، دی ٹیلی فون گرل (1926) جیسی خاموش فلموں میں کام کرکے مشہور ہوئے۔ [8] چند خاموش فلموں میں کام کرنے کے بعد انھوں نے ماہانہ تنخواہ پر رنجیت اسٹوڈیو میں بطور ہدایت کار بھی کام کیا۔ [1] بطور ہدایت کار ان کی پہلی فلم سنیہ جیوتی (1928) تھی۔ [9]

میراث[ترمیم]

اندرا ایم اے (1934) میں سولوچنا (روبی مائرز) کے ساتھ راجہ سینڈو

سینڈو پہلے تامل فلم ہدایت کار تھے جنہوں نے فلم کے ٹائٹل میں اداکاروں کے نام استعمال کرنے کا رواج اپنایا۔ وہ پہلے شخص تھے جنہوں نے اس وقت کے قدامت پسند تامل فلمی صنعت میں بوسہ لینے والے مناظر اور رقاص متعارف کروائے۔ [10] وہ پہلے ہدایت کار اور پروڈیوسر بھی تھے جنہوں نے تمل سنیما کو اساطیری کہانیوں کی ریمیک فلموں کی بجائے سماجی موضوع پر مبنی فلمیں بنانے کی طرف منتقل کیا۔ یہاں تک کہ انھوں نے اپنی فلموں کی تشہیر بھی کی کہ "اپنی تصویر دیکھنا مت چھوڑیں"۔ [11] سینڈو پہلے ہدایت کار بھی تھے جنہوں نے 1931ء میں انادہائی پین کی ہدایت کاری کے ذریعے تامل ادبی کاموں کو فلم کے لیے استعمال کیا۔ ان کی فلم وائی مو کوتھنیاگی امل کے اسی نام کے ناول پر مبنی تھی۔ [12]

سینڈو کے بارے میں لکھتے ہوئے، فلمی مورخ تھیوڈور باسکرن کہتے ہیں:

فلم کے تاریخ دان رینڈر گائے نے بھی اسے ایک سخت ٹاسک ماسٹر قرار دیا ہے۔

تمل ناڈو حکومت نے ان کے نام پر سالانہ ایوارڈ قائم کیا ہے جسے راجا سینڈو میموریل اعزاز کہا جاتا ہے، جو تمل سنیما کی شاندار خدمات کے لیے دیا جاتا ہے۔ [13] ہندوستانی سنیما میں ان کی شراکت کے اعتراف میں ایک ڈاک ٹکٹ جاری کیا گیا ہے۔ [14]

فلموگرافی[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Baskaran، S. Theodore (1996). The eye of the serpent: an introduction to Tamil cinema. Chennai: East West Books. صفحہ 194. 
  2. Mylapore and movies, The Hindu 18 اکتوبر 2001
  3. Velayutham، Selvaraj (2008). Tamil cinema: the cultural politics of India's other film industry (ایڈیشن Hardback). New York: Routledge. صفحہ 3. ISBN 978-0-415-39680-6. 
  4. "Blazing new trails, The Hindu 2 مئی 2004". 17 اکتوبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 نومبر 2021. 
  5. Baliga، B.S (1957). Madras District Gazetteers: Pudukkottai. Chennai: Superintendent, Govt. Press. صفحہ 274. 
  6. Cinema vision India, Volume 1 Issue 1. Chennai. 1980. صفحہ 37. 
  7. Majumdar، Neepa (2009). Wanted Cultured Ladies Only!: Female Stardom and Cinema in India, 1930s–1950s. University of Illinois Press. صفحات 111–2. ISBN 978-0-252-07628-2. 
  8. Majumdar، Neepa (2009). Wanted Cultured Ladies Only!: Female Stardom and Cinema in India, 1930s–1950s. University of Illinois Press. صفحہ 98. ISBN 978-0-252-07628-2. 
  9. Chabria، Suresh (1994). Light of Asia: Indian silent cinema, 1912–1934. Wiley Eastern. صفحہ 138. ISBN 978-81-224-0680-1. 
  10. Blast from the past (Menaka 1935)، The Hindu, 4 جنوری 2008
  11. Journal of Tamil studies, Issues 8–13. International Institute of Tamil Studies. 1975. صفحہ 41. 
  12. Baskaran، S Theodore (2004). Em Thamizhar Seidha Padam (بزبان تمل) (ایڈیشن Paperback). Chennai: Uyirmmai Padippagam. صفحات 35–36. ISBN 81-88641-29-4. 
  13. "The stamp of honour, The Hindu 10 جولائی 2000". 6 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2009. 
  14. "Indianstampghar.com". 03 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 نومبر 2021. 

بیرونی روابط[ترمیم]