مندرجات کا رخ کریں

کومل جھا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
کومل جھا
 

معلومات شخصیت
پیدائش 15 مارچ 1987ء (37 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رانچی   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش ممبئی   ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ ادکارہ ،  سول انجیئنر   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان ملیالم   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

کومل جھا ایک بھارتی فلمی خاتون اداکارہ اور مصنف ہیں۔ اس نے تیلگو، کنڑ، ملیالم اور اب ہندی فلمی صنعتوں میں اپنا کیریئر قائم کیا اور اپنے کیریئر کو سول انجینئر سے ایک اداکارہ میں تبدیل کرنے اور چینا سنیما میں اپنے کرداروں کے لیے جانا جاتا ہے۔ اداکاری کے علاوہ وہ سٹیج شوز میں حصہ لیتی ہے [1] اور کچھ برانڈز کی توثیق کرتی ہے، خاص طور پر جنوبی ہندوستان میں۔ جھا نے اپنی اداکاری کا آغاز 2009ء کی بالی ووڈ فلم 3 ایڈیٹس سے کیا جب کالج میں تعلیم حاصل کی اور ان کی پہلی ملیالم فلم 2010ء میں ریلیز ہوئی، 24 گھنٹے ۔ اسی سال جھا دبئی چلی گئی اور دبئی، متحدہ عرب امارات میں واقع ایک بین الاقوامی تعمیراتی فرم میں ملازمت اختیار کر لی۔ 2011ء میں جھا نمبے ہولی [2] اور رامچاری کے لیے ہندوستان واپس آیا تھا۔ جھا اس وقت کے دوران کچھ برانڈز جیسے ایکسس بینک ، بی این پی پریباس میوچل فنڈز اور موتی صابن کے لیے ٹیلی ویژن اشتہارات اور پرنٹ اشتہارات میں بھی دکھائی دے رہے تھے۔

کیرئیر

[ترمیم]

جھا نے اپنی اداکاری کا آغاز 2009ء میں بالی ووڈ فلم 3 ایڈیٹس سے کیا جس میں اس نے ایک کالج کی طالبہ کا معمولی کردار ادا کیا تھا جس میں گانے "آل اِز ویل!" اس وقت وہ پیشے کے اعتبار سے اداکار نہیں تھیں اور دبئی چلی گئیں کیونکہ وہ کیمپس میں تھیں جسے وہاں ایک تعمیراتی کمپنی نے رکھا تھا۔ اپنی ملیالم فلم میں ڈیبیو کے بعد جھا نے دو تیلگو فلمیں کیں، یعنی کالچکرم اور پاروتی ، جو ریلیز نہیں ہوئیں اور بند کر دی گئیں۔ پراجیکٹس کے روکے جانے سے مایوس ہو کر جھا دبئی چلی گئی اور جب اس نے اس فضول کام میں ملوث نہ ہونے کا فیصلہ کیا تو اسے دو مختلف زبانوں میں دو فلمیں پیش کی گئیں، جن میں بالترتیب کنڑ اور تیلگو میں نمبے ہولی [3] اور رامچاری ہیں۔ ریلیز کی تاریخوں میں تاخیر کی وجہ سے جھا دونوں فلموں کی مجموعی کامیابی سے مطمئن نہیں تھے۔ [4]

سرگرمیاں

[ترمیم]

اداکاری کے علاوہ، جھا شاعری لکھتے ہیں اور اپنی ویب گاہ پر شاعری [5] شائع کرتے ہیں۔ وہ کبھی کبھار کچھ نیوز چینلز پر نوجوانوں کے موجودہ مسائل کے بارے میں بات کرنے کے لیے ایک مندوب کے طور پر نظر آتی ہیں۔ [6] جھا نے ممبئی میں واقع لٹل اینجلس یتیم خانے کے ساتھ کام کیا ہے تاکہ اس کے خصوصی ڈیزائنر لباس کو نیلام کرکے ان کے لیے فنڈز اکٹھے کیے جاسکیں۔ [7]

تنازعات

[ترمیم]

جھا کو کچھ تنازعات نے گھیر لیا۔ [8] [9] نمبے ہولی کے ہدایت کار نے فلم کی ریلیز سے قبل کرناٹک فلم چیمبر آف کامرس سے [8] کے بارے میں شکایت کی۔ جیسا کہ اس نے ٹائمز آف انڈیا کو اپنے ایک انٹرویو میں کہا تھا، ان تنازعات نے انھیں کنڑ فلم انڈسٹری میں مزید اسائنمنٹ لینے سے روک دیا۔ [10] مبینہ طور پر اس نے ٹائمز آف انڈیا سے اپنے ایک انٹرویو لینے والے کو یہ کہتے ہوئے الزام لگایا کہ فلم کی شوٹنگ کے دوران ان کے ساتھ پیشہ ورانہ سلوک نہیں کیا گیا۔ [11] [12]

حوالہ جات

[ترمیم]
  1. "Actress performances at FNCC New Year eve Stills"۔ telugu.zustcinema.com۔ 17 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 جون 2016 
  2. "Nimbe Huli Movie Review, Trailer, & Show timings at Times of India"۔ The Times of India۔ 24 ستمبر 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016 
  3. "Kannada industry needs a brand makeover"۔ 8 December 2011۔ 11 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  4. "I've stayed away from Kannada films after Nimbe Hulli: Komal Jha – Times of India"۔ The Times of India۔ 22 مارچ 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 جولا‎ئی 2016 
  5. "Things you didn't know about Komal Jha – The Fearless Indian"۔ The Fearless Indian۔ 18 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2016 
  6. Komal Jha speaks on blocking of social media by Indian government in a debate on Sahara Samay Mumbai news channel on 7 December 2011
  7. "Komal Jha to auction her designer clothes for charity"۔ www.ragalahari.com۔ 18 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 جون 2016 
  8. ^ ا ب "Hemanth to file complaint against Komal Jha"۔ The Times of India۔ 18 اگست 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016 
  9. "വിവാദങ്ങള്‍ വിട്ടൊഴിയാതെ കോമള്‍"۔ mathrubhuminews.in۔ 25 جولا‎ئی 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016 
  10. "I've stayed away from Kannada films after Nimbe Hulli: Komal Jha"۔ The Times of India۔ 22 مارچ 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016 
  11. "I was given old clothes for a Kannada film, says Komal Jha"۔ The Times of India۔ 08 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016 
  12. "Komal thinks she's Madhuri Dixit: Hemanth Hegde"۔ The Times of India۔ 08 اکتوبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مئی 2016