گوگل الو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
گوگل الو
Google Allo App Logo.png
Google Allo.jpg
الو میں مستعمل "ذہین جواب" کی خصوصیت کا اسکرین شاٹ
تیار کردہ گوگل
ابتدائی اشاعت ستمبر 21، 2016؛ 3 سال قبل (2016-09-21)[1]
ارتقائی حالت فعال
آپریٹنگ سسٹم اینڈرائڈ، آئی او ایس
دستیاب زبانیں انگریزی
صنف فوری پیام رسانی
ویب سائٹ allo.google.com

الّو (انگریزی: Allo) فوری پیام رسانی کے لیے گوگل کی جانب سے تیار کردہ ایک موبائل اطلاقیہ ہے جس میں مجازی معاون اور "ذہین جواب" (smart reply) جیسے فنکشن شامل ہیں، واضح رہے کہ ذہین جواب فنکشن میں صارفین کو جواب تحریر کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی بلکہ اطلاقیہ خود جواب تجویز کرتا ہے۔[2] اس اطلاقیہ کا اعلان گوگل آئی او کے موقع پر 18 مئی 2016ء کو کیا گیا[3] اور 21 ستمبر 2016ء کو منظر عام پر پیش کیا گیا۔[1] فی الحال یہ اطلاقیہ اینڈرائڈ اور آئی او ایس کے لیے دستیاب ہے۔[1]

تاریخ[ترمیم]

18 مئی 2016ء کو گوگل آئی او کے موقع پر اس اطلاقیہ کے پیش کیے جانے کا اعلان کیا گیا۔[3] اس وقت گوگل نے کہا تھا کہ اسے 2016ء کے موسم گرما میں شائع کیا جائے گا۔[4] گوگل نے اس اطلاقیہ کو 21 ستمبر 2016ء کو منظر عام پر پیش کیا۔rabka uh allA[1]

خصوصیات[ترمیم]

الو صارفین کے فون نمبروں کی مدد سے کام کرتا ہے۔

ڈیفالٹ موڈ[ترمیم]

وسپر شاؤٹ خصوصیت جس کا 2016ء میں گوگل آئی او میں اعلان کیا گیا۔

الو میں زیر استعمال "ذہین جواب" فنکشن میں گوگل کی مشین لرننگ ٹکنالوجی کو استعمال کیا گیا ہے، یہ فنکشن صارفین کو پیغام کے متوقع جوابات تجویز کرتا ہے۔ نیز ذہین جواب کی اس خصوصیت کو مزید بہتر بنانے کے لیے صارف کو موصول ہونے والی تصویروں کا تجزیہ بھی کیا جاتا ہے اور اس کی بنياد پر جوابات تجویز کیے جاتے ہیں۔ گوگل کے ان باکس اطلاقیہ کی طرح یہاں بھی یہ فنکشن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ صارف کے رویوں سے سیکھتا ہے اور بروقت موزوں جواب تجویز دینے کی کوشش کرتا ہے۔[5] الو ان اطلاقیوں میں سے ایک ہے جو گوگل معاون (گفتگو کا مجازی معاون) استعمال کر رہے ہیں۔[1]

نیز الو میں یہ سہولت بھی ہے کہ صارفین تصویریں بھیجنے سے پہلے ان پر نقاشی کر سکتے ہیں۔[1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث Samuel Gibbs (21 ستمبر 2016)۔ "Google launches WhatsApp competitor Allo – with Google Assistant"۔ The Guardian۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 ستمبر 2016۔
  2. Don Reisinger (23 ستمبر 2016)۔ "What Makes Google's Allo a Smarter Approach to Messaging"۔ eWeek۔ QuinStreet Inc.۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2016۔
  3. ^ ا ب Ingrid Lunden (18 مئی 2016)۔ "Google debuts Allo, an AI-based chat app using its new assistant bot, smart replies and more"۔ TechCrunch۔ AOL Inc.۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2016۔
  4. Dieter Bohn (18 مئی 2016)۔ "Allo is a messaging app with Google built right in"۔ The Verge۔ Vox Media۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2016۔
  5. Nicole Lee (19 مئی 2016)۔ "Please don't send me Smart Replies"۔ Engadget (Opinion piece)۔ AOL Inc.۔ مورخہ 7 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2016۔