ترال

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
Incomplete-document-purple.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کرکے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔

ترال جموں و کشمیر کے پلوامہ ذلے ضلع کا ایک قصبہ ہے۔

کشمیر، سبز علاقہ پاکستان کے زیر انتظام ہے، نارنجی بھارت کے انتظام میں ہے جبکہ اسکائی چن پر چین کا کنٹرول ہے

جغرافیہ[ترمیم]

ترال 33°56′N 75°06′E / 33.93°N 75.1°E / 33.93; 75.1 پر واقع ہے۔ اس کی اوسط اونچائ ۲۶۶۱ میٹر ۲۵۴۵ فٹ ہے۔ یہ قومی شاہراہ سے دس کلومیٹر کی دوری پر واقع ہے۔ ترال اپنے قدرتی چشموں کے لئے جانا جاتا ہے۔ ترال کے کچھ متصلہ علاقے ہیں دیور، صوفیگُنڈ، مندورہ، منگہامہ، کچھمُلہ، نادر، آریپل، زوستان، نارستان، لام، ناگبیرن، امیرآباد، نائیبُک، کہلِل، اور شکارگاہ

تاریخ[ترمیم]

پانچ سو سال قبل ترال کا نام ترٕیہ لال (تین موتی) تھا کیونکہ یہ سارا علاقہ حضرت میر سعید علی ہمدالنیؒ نے تین موتیوں میں خریدا تھا جو بغداد سے یہاں اسلام پھیلانے آے تھے۔

شخصیات[ترمیم]

ترال کی سرزمین کشمیر کے کچھ مشہور اشخاص سے زرخیز رہی ہے، جن میں چند نام یوں ہے: ڈاکٹر ا۔ر۔تراگ(سابقہ ڈاریکٹر شیر کشمیر یونیورسٹی کشمیر)، ڈاکٹر جوہر قدوسی(پرافیسر اردو، مصنف اور ماہانہ الہیات اور کریسنٹ کے مدیر)، ڈاکٹر عبدالغنی آہنگر (پرافیسر اور سربراہ شعبہ سی وی ٹی ایس شیر کشمیر میڈیکل کالج سورہ )، ڈاکٹر مھمد اشرف شیکھ (رجسٹرار شیر کشمیر میڈیکل کالج بمینا سرینگر، مصنف، ایک اعلی صلاحیت کے محقق اور بہترین بال مرض کے ماہر)

‘‘http://ur.wikipedia.org/w/index.php?title=ترال&oldid=731685’’ مستعادہ منجانب