شیخ صدوق

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(شیخ الصدوق سے رجوع مکرر)
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
مسلمان scholar
Muhammad ibn Ali ibn-e Babuyeh
معروفیت al-Shaykh al-Saduq
وفات 381 AH / 991 AD
مذہب اہل تشیع Jafari
شعبۂ عمل فقہ and حدیث
کارہائے نمایاں من لا يحضره الفقيہ
مؤثر شخصیات محمد بن یعقوب الکلیانی

ابو جعفر محمد بن علی بن حسین بن موسیٰ بن بابویہ صدوقی قمی رحمۃ اللہ علیہ بارھویں شیعہ امام زمانہ حضرت مہدی علیہ السلام کی دعا کی برکت سے قم شہر میں 306 ہجری میں پید اہوئے۔بنی بابویہ قم کے خاندانوں میں سے ایک ایسا خاندان ہے جس کی علمی شہرت دور دور تک پھیلی ہوئی ہے، جس کسی نے بھی تیسری اور چوتھی صدی کی علمی تاریخ کا مطالعہ کیاہے اسے معلوم ہے کہ ایران کا شہر قم علم کا گہوارہ رہاہے ۔ اس سرزمین نے ایسے محدثین و مصلحین پیداکئے ہیں اور اسکی فضاؤں سے رشد و ہدائت کے ایسے ایسے ستارے اور چاند سورج طلوع ہوئے ہیں کہ جن سے قم کی تاریخ اور اسلامی تہذیب ہمیشہ ہمیشہ درخشاں و تابندہ رہے گی۔

سن ولادت[ترمیم]

انکی ولادت قم میں 305 ہجری کے بعد ہوئی جو حسین ابن روح کی سفارت کا پہلا سال تھا ،جیساکہ الکامل فی التاریخ سے ظاہر ہوتاہے چنانچہ انہوں نے سال 305ہجری کے حادثات کے حوالے سے تحریر کیاہے کہ اس سال ماہ جمادی الاول میں ابو جعفر عثمان بن عسکری کی وفات ہوئی ،یہ شیعہ کے رئیس اور سردار تھے اور امام منتظر علیہ الاسلام تک رسائی کا ذریعہ تھے انہوں نے اپنی رحلت کے وقت ابوالقاسم حسین بن روح کو اپنا وصی بنایا۔

نشونما اور اساتذہ[ترمیم]

شیخ صدوق کی پرورس علم ودانش کی آغوش میں وہوئی، انکے پدربزرگوار انہیں علوم و معارف کی غذا کھلاتے رہےاور اپنے علوم و آداب کی ان پر بارشیں برساتے رہے۔اپنی صفات و زہد و تقویٰ و ورع کی روشنیوں سے انکے وجود کو جگمگاتے رہے۔ انکے والد قمیین کے شیخ اور فقیہہ تھے ۔ شیخ صدوق نے اپنے والد کی قربت قریب قریب بیس سال حاصل کی اور ان کے علوم و معارف سے فیضیاب ہوتے رہے۔بہت زیادہ عرصہ نہیں گزراتھا کہ شیخ صدوق جوان ہوگئے اور حفظ و ذکاوت کی مثالی شخصیت بن کر ابھرے۔شیوخ کی مجالس میں حاضری دیتے ان سے احادیث سنتے اور روائت کرتے اور بہت جلد لوگوں کی انکی طرف توجہ ہونے لگے۔آپ نے شیوخ قم جیساکہ محمد بن حسن بن احمد بن ولید اور حمزہ بن احمد بن جعفر بن محمد بن زید بن علی علیہ السلام سے بہت کچھ سنا اور کسب فیض کیا ۔ شیخ صدوق نے اسی پر بس نہیں کیا بلکہ و ہ رجب 339ہجری میں وطن سے نکلے اور مختلف شہروں کے شیوخ و علماء سے استماع حدیث کرتے رہے۔ اس زمانے میں ایران پر آل زیاد اور آل بابویہ کی حکومت تھی اور یہ دونوں خاندان علم پرور تھے۔اس لئے انکے گرد بہت سے شعراء و علماء جمع ہوگئے جن میں سے صاحب ابن عباد کا نام لیاجاسکتاہے جبکہ اسی دور میں ایران کے دیگر شہروں خراسان، اصفہان اور نیشاپور میں علمی مراکز قائم ہوگئے جو کہ علماء و فضلاء سے پر تھے، طلباء وہاں حصول علم کیلئے جاتے جبکہ حکمران اساتذہ و طلباء کیلئے وظائف وغیرہ مقرر کرتے۔ جن اساتذہ سے شیخ صدوق نے کسب فیض کیا ان میں سے چند ایک کے نام درج ذیل ہیں:

  1. شیخ صدوق کے والد ماجد علی بن بابویہ قمی
  2. محمد بن حسن ولید قمی
  3. احمد بن علی بن ابراهیم قمی
  4. علی بن محمد قزوینی
  5. جعفر بن محمد بن شاذان
  6. جعفر بن محمد بن قولویہ قمی
  7. علی بن احمد بن مہریار
  8. ابوالحسن خیوطی
  9. ابوجعفر محمد بن علی بن اسود
  10. ابوجعفر محمد بن یعقوب کلینی
  11. احمد بن زیاد بن جعفر ہمدانی

تصانیف[ترمیم]

شیخ صدوق نے مختلف علوم و فنون پر تین سو سے زائد کتب تصنیف کیں۔ آپ کے زمانے میں ہی لوگ آپکی کتب کی نقول تیار کروانے لگے تھے چنانچہ شریف نعمت نے آپکی دوسوپنتالیس کتب نقل کروالیں مگر صد افسوس کہ اس علمی خزانے میں سے اب صرف چند کتب ہمارے پاس موجود ہیں، ان تصانیف سے شیخ صدوق کی عظمت و سچائی کی دلیل مہیاہوتی ہےنجاشی و شیخ طوسی نےاپنی کتاب رجال میں ، علامہ حلی نے خلاصۃالاقوال میں ابن شہر آشوب نے معالم العلماء میں شیخ صدوق کی 199 کتب کا تذکرہ کیاہے۔

تلامذہ[ترمیم]

اگر ہم ان تمام لوگوں کے نام تلاش کرنا چاہیں جنہوں نے شیخ صدوق سے کسب علم کیا ہے تو بحث بہت طویل ہوجائے گی۔ان کے مشہور تلامذہ کے سوا جن کے نام زبان زد عام و خلائق ہیں انکی تعداد بیس کے قریب ہے۔

  1. شیخ مفید
  2. حسین بن عبیدالله غضائری
  3. برادرش حسین بن علی بن بابویه قمی
  4. ابوالحسن جعفر بن حسین حسکه قمی (استاد شیخ طوسی)
  5. ابوجعفر محمد بن احمد بن عباس بن فاخر دوریستی (معاصر شیخ طوسی)
  6. برادر زاده اش شیخ ثقة الدین حسن بن حسین بن علی بن موسی بن بابویه
  7. حسن بن محمد قمی (مؤلف تاریخ قم)
  8. علی بن احمد بن عباس نجاشی (پدر نجاشی)
  9. سید ابوالبرکات علی بن حسن خوزی حسینی حلی
  10. ابو القاسم علی بن محمد بن علی خزاز
  11. ابو زکریا محمد بن سلیمان حمرانی
  12. احمد بن زیاد بن جعفر همدانی
  13. هارون بن موسی تلعکبری
  14. علم‌الهدی، سید مرتضی

شیخ صدوق کے خاندان کے علماء[ترمیم]

آپکے خاندان کو علماء مشائخ کے ہاں بہت مقام و مرتبہ حاصل ہےا سلئے کہ اس خاندان میں بہت سے علماء و محدثین اور فقیہان پیداہوئےجنہوں نے اپنی تالیفات اور مرویات سے دین اسلام کی خدمت کی اور علوم و آثار اہل بیت کی حفاظت کی۔اس خاندان کے علماء اعلام شیعہ کیلئے باعث افتخار اور آسمان علم کے درخشاں ستارے ہیں۔

وفات و مزار[ترمیم]

شیخ صدوق کی وفات شہر رے میں 381 ہجری کوہوئی۔انکی قبر شہر رے میں شیخ عبدالعظیم حسنی کی قبر کے قریب ایک قطعہ زمین پر واقع ہے،جو آپکی قبر مبارک کی وجہ سے زیارت گاہ بن گئی ہےسلطان فتح علی قاچار نے 1238ہجری میں انکی قبر پر تعمیر جدید کروادی۔شیخ صدوق کی قبر چندمزارات میں سے ایک ہے جہاں شیعہ حصول برکت کیلئے تمام اقطار و امصار سے پہنچتے ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی ربط[ترمیم]

کتاب اعتقادات از شیخ صدوق اردو ترجمہ صفحہ 7