ڈبل میجک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

نویاتی طبیعیات (nuclear physics) میں جادوئی نمبر (magic number) سے مراد ایسا ایٹمی مرکزہ (nucleus) ہوتا ہے جس میں نیوکلیون (یعنی نیوٹرون یا پروٹون) کی تعداد اتنی ہوتی ہے کہ مرکزے کے اندر کے شیل (shell) پوری طرح بھر جاتے ہیں اور ایسا مرکزہ زیادہ بائنڈنگ انرجی ہونے کی وجہ سے نسبتاً زیادہ پائیدار ہوتا ہے۔ یہ نمبر 2, 8, 20, 28, 50, 82, 126 ہیں۔ یہ سارے نمبر جفت (even) ہیں اور ان میں کوئی بھی طاق (odd) نمبر نہیں ہے-

Low-lying energy levels in a single-particle shell model with an oscillator potential (with a small negative l2 term) without spin-orbit (left) and with spin-orbit (right) interaction. The number to the right of a level indicates its degeneracy, (2j+1). The boxed integers indicate the magic numbers.

ایسے ایٹمی مرکزے جن میں نیوٹرون اور پروٹون دونوں کی تعداد ان نمبروں میں سے کوئی ہو وہ اور بھی زیادہ پائیدار ہوتے ہیں اور ڈبل میجک نمبر والے کہلاتے ہیں۔ مثال کے طور پر

  • ہیلیئم4 (دو نیوٹرون اور دو پروٹون)
  • آکسیجن16 (آٹھ نیوٹرون اور آٹھ پروٹون)
  • کیلشیئم40 (بیس نیوٹرون اور بیس پروٹون)۔ اس سے بڑے اور پائیدار ایٹمی مرکزوں میں نیوٹرون اور پروٹون برابر تعداد میں نہیں ہو سکتے۔
  • کیلشیئم48 (28 نیوٹرون اور 20 پروٹون)
  • نکل48 (20 نیوٹرون اور 28 پروٹون)۔ یہ ایٹم 1999 میں ایجاد ہوا۔
  • نکل78 (50 نیوٹرون اور 28 پروٹون)
  • سیسہ208 (126 نیوٹرون اور 82 پروٹون)

کائنات میں صرف ہائیڈروجن1 ایسا ایٹم ہے جس میں نیوٹرون نہیں ہوتا۔
صرف دو ایسے ایٹمی مرکزے وجود رکھتے ہیں جن میں نیوٹرون کی تعداد پروٹون کی تعداد سے کم ہوتی ہے۔ وہ ہیلیئم3 اور نکل48 ہیں۔ باقی سارے ایٹمی مرکزوں میں نیوٹرون کی تعداد یا تو پروٹون کی تعداد کے برابر ہوتی ہے یا پروٹون سے زیادہ ہوتی ہے۔

ہلکے ایٹموں میں کیلشیئم48 ایسا ایٹم ہے جس میں نیوٹرون کی بڑی بہتات ہوتی ہے۔
نکل48 ایسا ایٹم ہے جس میں پروٹون کی بڑی بہتات ہوتی ہے۔ عام طور پر (بہت ہلکے ایٹموں کے علاوہ) ہر ایٹم میں نیوٹرون کی تعداد پروٹون سے زیادہ ہوتی ہے۔
قلعی یعنی Tin کے ایٹمی مرکزے میں 50 پروٹون ہوتے ہیں اور ٹِن کے دس پائیدار ہمجاء (isotopes) پائے جاتے ہیں۔ اینٹیمنی میں 51 پروٹون ہوتے ہیں اور اینٹیمنی کے صرف دو ہمجاء پائیدار ہوتے ہیں۔

نیوٹرون کی تعداد پروٹون کی تعداد پائیدار آئسوٹوپ کی تعداد
جفت (even) جفت (even) 168
جفت (even) طاق (odd) 50
طاق (odd) جفت (even) 52
طاق (odd) طاق (odd) 4

[1]

Graph of isotope stability.

ڈبل میجک نمبروں سے ملنے والی پائیداری کی وجہ سے ہیلیئم4 کائنات میں اتنی فراواں ہےجبکہ ہیلیئم3 یا لیتھیئم بہت نایاب ہے۔ اسی طرح بھاری ایٹموں میں سیسہ208 بھاری ترین پائیدار مرکزہ رکھتا ہے۔

مزید دیکھیئے[ترمیم]

Incomplete-document-purple.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کرکے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔
  1. ^ [1]